بلیک منڈے اور اسٹاک مارکیٹ کریشز کی تفصیلات
امواد کی فہرست
بلیک منڈے کیا ہے؟
کیا چیز مارکیٹ کریشز کا سبب بنتی ہے؟
سرکٹ بریکر کیا ہوتا ہے؟
مارکیٹ کریشز کی تیاری کیسے کی جائے
دیگر قابل غور بلیک منڈیز
اختتامی خیالات
بلیک منڈے اور اسٹاک مارکیٹ کریشز کی تفصیلات
ہومآرٹیکلز
بلیک منڈے اور اسٹاک مارکیٹ کریشز کی تفصیلات

بلیک منڈے اور اسٹاک مارکیٹ کریشز کی تفصیلات

نو آموز
Published May 4, 2020Updated Feb 23, 2022
7m

بلیک منڈے کیا ہے؟

بلیک منڈے کی اصطلاح 19 اکتوبر، 1987 میں اسٹاک مارکیٹ میں اچانک پیش آنے والے شدید کریش کی وضاحت کے لیے استعمال کی جاتی ہے۔ US اسٹاک مارکیٹ کی کارکردگی کی پیمائش کرنے والے ڈاؤ جونز صنعتی اوسط (DJIA) نامی انڈیکس میں، 22% سے بھی زائد کمی واقع ہوئی۔ اس کریش سے ایک ہی ہفتہ قبل مارکیٹ میں اتار کے مزید دو واقعات کا سامنا ہو چکا تھا۔


بلیک منڈے کی مدت کے آس پاس ڈاؤ جونز صنعتی اوسط کی کارکردگی۔


بلیک منڈے کو عالمی سطح پر اسٹاک مارکیٹ میں اتار کے آغاز کے طور پر یاد کیا جاتا ہے۔ آج تک، اسے اسٹاک مارکیٹ کی تاریخ کے بدترین دنوں میں سے ایک مانا جاتا ہے۔

ایکسچینجز پر ٹریڈنگ کا کل حجم اتنا زیادہ تھا کہ اس وقت کے کمپیوٹرز اچانک آن پڑنے والے اس اضافی بوجھ سے نمٹنے سے قاصر تھے۔ کئی گھنٹوں تک آرڈرز پورے نہ ہو سکے، اور ایک بڑے پیمانے پر فنڈز کے ٹرانسفرز میں بھی تاخیر کا سامنا ہونے لگا۔
اس طرح کا بڑا کریش قدرتی طور پر Futures اور آپشنز مارکیٹس میں بھی پیش آ جاتا ہے۔ اس کریش نے عالمی سطح پر موجود مارکیٹس کو بھی شدید متاثر کیا۔ دنیا بھر میں موجود زیادہ تر بڑے انڈیکسز میں اسی ماہ کے اختتام تک 20-30% کمی واقع ہوئی۔

"بلیک منڈے" کی اصطلاح عموماً 1987 میں ہونے والے کریش کا حوالہ دیتی ہے۔ لیکن، یہ مارکیٹ میں پیش آنے والے دیگر شدید کریشز کا حوالہ دینے کے لیے بھی استعمال کی جاتی ہے۔


کیا چیز مارکیٹ کریشز کا سبب بنتی ہے؟

عموماً، اسٹاک مارکیٹ میں کریشز کی وجہ کو کسی ایک عنصر سے منسوب نہیں کیا جا سکتا۔ دلچسپ بات یہ، کہ 1987 کے بلیک منڈے سے متعلقہ کوئی بڑی خبر نہیں دی گئی تھی۔ تاہم، ایسے کئی عناصر پیدا ہو گئے، جنہوں نے مل کر، ماحول میں ہلچل اور غیر یقینی کا عالم برپا کر دیا۔ تو آخر یہ عناصر تھے کیا؟

سب سے پہلا تو کمپیوٹرائزڈ ٹریڈنگ سسٹمز کا تعارف تھا۔ آج کے دور میں، ٹریڈنگ کی زیادہ تر سرگرمیوں کی سہولت کاری کمپیوٹرز ہی کرتے ہیں، تاہم ہمیشہ سے ایسا نہ تھا۔ 1980 کی دہائی سے قبل، اسٹاک مارکیٹس کا اہتمام عموماً ایسے شور شرابے والے اور پرہجوم مقامات پر کیا جاتا تھا جہاں ٹریڈرز براہ راست ہی ایکسچینج کے ٹریڈنگ فلور پر اثاثہ جات کا تبادلہ کیا کرتے تھے۔


کمپیوٹرائزڈ ٹریڈنگ سسٹمز کے تعارف سے قبل، اس مقصد کے لیے 1963 میں نیویارک اسٹاک ایکسچینج (NYSE) کا ٹریڈنگ فلور استعمال کیا جاتا تھا۔ ذریعہ: لائبریری آف کانگریس۔ اصل تصویر میں ترمیم کی گئی ہے۔


تاہم، 1980 کی مکمل دہائی کے دوران، ٹریڈنگ کی سرگرمیوں کا انحصار کمپیوٹر سافٹ ویئر پر بڑھتا چلا گیا۔ کمپیوٹرائزڈ ٹریڈنگ پر اس منتقلی نے ایسے سسٹمز کے ذریعے ٹریڈنگ کی نسبتاً تیز رفتار سرگرمی کو ممکن بنایا جو سیکنڈز میں ہزاروں آرڈرز دے سکتے تھے۔ قدرتی طور پر، اس قسم کی ترقیاں قیمت میں بڑی تبدیلیوں کی رفتار پر بھی اثرانداز ہونے لگیں۔ اس کے برعکس، آج کے ٹریڈنگ بوٹس کسی غیر متوقع خبر کی صورت میں سیکنڈز کے اندر کھربوں ڈالرز منتقل کر سکتے ہیں۔

کہنے کے مطابق دیگر وجوہات میں، امریکہ میں ٹریڈ میں خسارے، بین الاقوامی کشیدگی، اور جغرافیائی حالات جیسے دیگر عوامل شامل ہیں۔ اوپر سے، میڈیا کی بڑھتی ہوئی رسائی بھی کسی حادثے کے اثرات اور شدت میں اضافے کا سبب بن چکی ہے۔

یہ نوٹ کرنا اہم ہے کہ جہاں یہ ممکن ہے کہ ان تمام عوامل نے کریش میں کردار ادا کیا ہو، وہیں فیصلے لینے والے لوگ ہی تھے۔ مارکیٹ کی نفسیات کسی بھی فروخت میں اہم کردار ادا کرتی ہے، اور عموماً ایک بڑے پیمانے پر مچنے والی ہلچل کا ہی نتیجہ ہوتی ہیں۔


سرکٹ بریکر کیا ہوتا ہے؟

بلیک منڈے کے واقعات کے بعد، US کی سیکورٹیز اور ایکسچینج کمیشن (SEC) کی جانب سے کئی میکانزمز مقرر کیے گئے تاکہ اس قسم کے واقعات دوبارہ رونما ہونے سے روکے جا سکیں۔ یا اگر، انہیں مکمل طور پر روکنا ممکن نہ ہو، تو کم از کم ان کے اثرات کو کم کیا جا سکے۔
انہیں طریقوں میں سے ایک سرکٹ بریکر کہلاتا ہے۔ یہ ایک ضابطہ کار تدبیر ہوتی ہے جو اس صورت میں ٹریدنگ روک دیتی ہے جب قیمت روزمرہ کی ابتدائی قیمت کے مقابلے میں مخصوص سطحوں تک پہنچ جائے۔ اگرچہ ہم بنیادی طور پر امریکہ کی بات کر رہے ہیں، تاہم دیگر بہت سی مارکیٹس میں بھی سرکٹ بریکرز کا اطلاق کیا گیا تھا۔
سرکٹ بریکرز Dow یا S&P 500 جیسے مرکزی انڈیکسز کے ساتھ ساتھ، انفرادی سکیورٹیز پر بھی لاگو ہوتے ہیں۔ ان کے کام کا طریقہ پیش ہے۔

اگر ٹریڈنگ کے ایک دن کے اندر اندر S&P 500 میں 7% تک کمی واقع ہوتی ہے، تو ٹریڈنگ 15 منٹ کے لیے روک دی جاتی ہے، اور پھر دوبارہ سے شروع کی جاتی ہے۔ اسے سرکٹ بریکر کا درجہ 1 کہا جاتا ہے۔ اگر مارکیٹ مزید گرتی ہے اور روزمرہ کی ابتدائی قیمت سے 13% کو پہنچ جاتی ہے، تو اسے پھر روک دیا جاتا ہے۔ اسے سرکٹ بریکر کا درجہ 2 کہا جاتا ہے۔ پھر، 15 منٹ کے وقفے کے بعد، ٹریڈنگ دوبارہ سے شروع کی جاتی ہے۔ اگر قیمت میں مارکیٹ کی ابتدائی قیمت سے 20% کا نقصان ہوتا ہے، تو باقی پورے دن کے لیے ٹریڈنگ روک دی جاتی ہے۔ اسے سرکٹ بریکر کا درجہ 3 کہا جاتا ہے۔


سرکٹ بریکرز کے فوائد اور نقصانات

جہاں سرکٹ بریکرز فلیش کریشز کی روک تھام میں مؤثر ثابت ہو سکتے ہیں، وہیں یہ ایک تنازعاتی موضوع ہے۔

سرکٹ بریکرز کے کچھ تنقید نگاروں کا کہنا ہے کہ یہ مارکیٹس پر منفی اثرات مرتب کرتے ہیں اور درحقیقت کریشز کی شدت میں اضافے کا سبب بنتے ہیں۔ لیکن کیسے؟ کیونکہ پہلے سے متعین فیصد کی یہ سطحیں مارکیٹ کی ابتدائی قیمت پر مشتمل ہوتی ہیں، لہٰذا یہ معلومات عام ہوتی ہیں۔ اسی لیے، یہ آرڈر دینے کے عمل پر اثرانداز ہو سکتے ہیں اور آرڈر بک میں قیمت کی مخصوص سطحوں پر جعلی طریقے سے لیکویڈیٹی کو کم کر سکتے ہیں۔

کم لیکویڈیٹی مزید اتار چڑھاؤ کا سبب بن سکتی ہے، جیسا کہ ممکن ہے کہ سپلائی میں ایک غیر متوقع چڑھاؤ سے نمٹنے کے لیے معقول تعداد میں آرڈرز موجود نہ ہوں۔ تنقید نگاروں کا کہنا ہے کہ لیکویڈیٹی کے پہلو پر سرکٹ بریکرز کے اثرات کے بغیر، مارکیٹس میں قدرتی توازن قائم ہونے کا امکان زیادہ ہے۔

جب بات S&P 500 جیسے عالمی مارکیٹ کے انڈیکسز کی ہو، تو سرکٹ بریکرز صرف ان میں اتار کی صورت میں ہی حرکت میں آتے ہیں۔ دوسری طرف، یہ اتار کی صورت میں انفرادی سکیورٹیز پر بھی فعال کیے جا سکتے ہیں۔


مارکیٹ کریشز کی تیاری کیسے کی جائے

مارکیٹس اور ہجوم کی نفسیات کی نوعیت کے سبب، عموماً کریشز سے فرار ممکن نہیں۔ لیکن آپ مارکیٹ کریش کی تیاری کے لیے کیا کر سکتے ہیں؟ 

ایک سرمایہ کاری کا منصوبہ بنانے یا پھر ٹریڈنگ کی مجموعی حکمت عملی تیار کرنے پر غور کریں۔ مارکیٹ کریش ہونے پر جہاں بہت سے سرمایہ کاران پریشانی میں فروخت انجام دے رہے ہوتے ہیں، وہیں اس صورت میں پرسکون رہنا، عقل سے کام لینا، اور جذبات میں آ کر فیصلے لینے سے اجتناب برتنا اہم ہے۔ اس کے لیے ایک طویل مدتی سرمایہ کاری کا منصوبہ یا ٹریڈنگ کی حکمت عملی بنانا ضروری ہے، کیونکہ یہ آپ کو اس قابل بنائے گی کہ آپ جذباتی فیصلے نہ لیں۔

اسٹاپ خسارہ ترتیب دینے پر بھی غور کرنا چاہیئے۔ ایک کامیاب ٹریڈر بننے کے لیے قلیل مدتی ٹریڈز میں اتار سے بچاؤ کی تدبیر کرنا نہایت ضروری ہے۔ تاہم، طویل مدتی سرمایہ کاران میں سے بہت ہی کم لوگ اس پر عمل کرتے ہیں۔ حتیٰ کہ اگر آپ کا اسٹاپ خسارہ قیمت میں بڑی تبدیلیوں کی گنجائش چھوڑ بھی دے، تب بھی یہ آپ کو مارکیٹ میں تباہ کن کریش پیش آںے کی صورت میں بڑے نقصانات سے بچا سکتا ہے۔

جہاں تک بات ہے عالمی مارکیٹ کریشز کی، اب تک یہ سب عارضی ہی رہے ہیں۔ اگرچہ اقتصادی ارتداد کی مدت کئی سالوں پر محیط ہو سکتی ہے، تاہم بعد میں مارکیٹس بحال ہو ہی جاتی ہیں۔ اگر آپ کئی برسوں پہلے کا جائزہ لیں، تو آپ دیکھیں گے کہ عالمی اقتصاد میں صدیوں سے بہتری آتی چلی جا رہی ہے، اور اس قسم کی اصلاحات محض عارضی رکاوٹیں ہیں۔


1915 سے 2020 کے دوران ڈاؤ جونز صنعتی اوسط کی کارکردگی۔


جہاں اقتصادی ترقی سے جڑی عالمی مارکیٹس کے لیے یہ مشاہدہ درست ہو سکتا ہے، وہیں یہ کرپٹو کرنسی مارکیٹس پر لاگو نہیں ہوتا۔ بلاک چین کی صنعت اب بھی نئی ہے اور کرپٹو کرنسیز اثاثے کی ایک خطرناک قسم ہیں۔ اسی لیے، ممکن ہے کہ بعض کرپٹو کرنسیز مارکیٹ میں شدید کریش کے بعد کبھی بھی بحال نہ ہو پائیں۔


کرپٹو کرنسی پر آغاز کرنا چاہتے ہیں؟ Binance پر Bitcoin خریدیں!


دیگر قابل غور بلیک منڈیز

28 اکتوبر، 1929

1930 کے اقتصادی بحران سے قبل، اسٹاک مارکیٹ میں پیش آنے والا کریش۔ اس کے طویل مدتی اقتصادی اثرات کو مدنظر رکھتے ہوئے، 1929 کے موسم خزاں میں آنے والا کریش اسٹاک مارکیٹ میں اب تک کا بدترین کریش رہا ہے۔

29 ستمبر، 2008

US ہاؤسنگ ببل پھٹنے کے بعد، اسٹاک مارکیٹس کریش ہونے لگیں۔ بالآخر یہ سنہ 2000 کے آخری اور سنہ 2010 کے اوائل ایام کے دوران اقتصادی بحران کا سبب بنا۔ اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو 2008 کے مالی بحران کی تفصیل چیک کریں۔

9 مارچ، 2020

اقتصادی بحران کے بعد US اسٹاک مارکیٹ کے لیے بدترین دن، جس کا سبب کرونا وائرس کی عالمی وباء اور تیل کی قیمت پر ہونے والی جنگ بنی۔ 2008 سے لے کر اب تک، ایک ہی دن میں قیمت میں آنے والا یہ سب سے بڑا اتار تھا۔ لیکن، جیسا کہ آپ اگلے پیراگراف میں ملاحظہ کریں گے، یہ ریکارڈ صرف ایک ہی ہفتے تک قائم رہا۔

16 مارچ، 2020

کرونا وائرس کی عالمی وباء کے سبب اقتصاد پر ممکنہ اثرات کے حوالے سے لاحق تشویشات میں اضافہ ہوتا چلا گیا۔ نتیجتاً، US مارکیٹ کو ایک ہی دن میں اس سے بھی بڑی گراوٹ کا سامنا ہوا جو انہوں نے ایک ہفتہ قبل ہونے والے کریش کے دوران برداشت کیا تھا۔ اس دن کو مالی مارکیٹس پر کرونا وائرس کے اثرات کا اولین ابتدائی جھٹکا مانا جا سکتا ہے۔


اختتامی خیالات

مختصراً، بلیک منڈے 1987 میں پیش آنے والا شدید مارکیٹ کریش تھا۔ جیسا کہ ذکر کیا گیا، یہ اصطلاح مارکیٹ میں پیش آنے والے دیگر کریشز کا حوالے دینے کے لیے بھی استعمال کی جا سکتی ہے، جیسے کہ وہ جو 1929، 2008، اور 2020 میں پیش آئے۔

بلیک منڈے کے واقعات کے بعد، اسٹاک مارکیٹ میں فلیش کریشز کے اثرات کو کم کرنے کے لیے نئے ضوابط کا اطلاق کیا گیا۔ ان ضوابط میں سے مؤثر ترین اور متنازعہ ترین میں سے ایک سرکٹ بریکر ہے، جو پہلے سے متعین فیصد میں نقصان کی سطحوں تک پہنچنے کی صورت میں ٹریڈنگ روک دیتا ہے۔

آپ مارکیٹ میں ناقابل فرار کریشز کی تیاری کے لیے کیا کر سکتے ہیں؟ سرمایہ کاری کا ایک مناسب منصوبہ یا ٹریڈنگ کی حکمت عملی تیار کرنے کے لیے ممکنہ صورتحالوں کے بارے میں سوچیں۔ خطرے کی مینجمنٹ، پورٹفولیو کا تنوع اور مارکیٹ کی نفسیات چند ایسے موضوعات ہیں جوکہ مارکیٹ میں کریشز کے دوران بڑے نقصانات سے بچنے میں آپ کی مدد کر سکتے ہیں۔