اثاثے کی مختصی اور تنوع کی تفصیل
امواد کا جدول
تعارف
اثاثے کی تفویض کاری اور تنوع کیا ہے؟
جدید پورٹ فولیو تھیوری
اثاثے کی کلاسز اور مختصی کی حکمت عملیوں کی اقسام
کسی پورٹ فولیو میں اثاثے کی مختصی اور تنوع کو عائد کرنا
کرپٹو اثاثے کے حامل پورٹ فولیو کے ساتھ تنوع
اثاثے کی مختصی کے ساتھ منسلک مسائل
اختتامی خیالات
اثاثے کی مختصی اور تنوع کی تفصیل
ہوم
آرٹیکلز
اثاثے کی مختصی اور تنوع کی تفصیل

اثاثے کی مختصی اور تنوع کی تفصیل

نو آموز
شائع کردہ Jan 27, 2020اپڈیٹ کردہ Feb 1, 2023
6m

تعارف

رقم کی بات آنے پر، خطرہ ہمیشہ موجود ہوتا ہے۔ کسی بھی سرمایہ کاری میں نقصان ہو سکتا ہے، جبکہ صرف کیش پوزیشن میں بذریعہ افراط زر، قدر میں سُستی سے کمی دکھائی دے گی۔ جیسا کہ خطرے کو نکالا نہیں جا سکتا، اسے کسی فرد کی سرمایہ کاری کے مخصوص اہداف سے مسابقت میں ایڈجسٹ کیا جا سکتا ہے۔

اثاثے کی مختصی اور تنوع خطرات کے ان پہلوؤں کا تعین کرنے میں کلیدی کردار ادا کرنے والے نظریات ہیں۔ آپ کے سرمایہ کاری میں نئے ہونے کی صورت میں بھی، آپ ممکنہ طور پر ان کے پس پردہ موجود اصولوں سے واقفیت رکھتے ہوں گے، کیونکہ یہ ہزاروں سالوں سے وجود رکھتے ہیں۔ 

اس آرٹیکل کے ذریعے ان کے متعلق اور ان کی جانب سے رقم نظم کاری کی جدید حکمت عملیوں سے منسلک ہونے کا جائزہ پیش کیا جائے گا۔ 

آپ کی جانب سے ایسے ہی موضوع کے متعلق مزید پڑھنے کا خواہش مند ہونے کی صورت میں، مالیاتی خطرے کی تفصیل چیک کریں۔ 


اثاثے کی تفویض کاری اور تنوع کیا ہے؟

اصطلاح اثاثے کی مختصی اور تنوع کو اکثر اوقات ایک دوسرے کی جگہ استعمال میں لایا جاتا ہے۔ تاہم، ان سے مراد خطرے کی نظم کاری کے قدرے مختلف پہلو ہو سکتے ہیں۔ 

اثاثے کی مختصی کے ذریعے رقم نظم کاری کی ایسی حکمت عملی بیان کی جاتی ہے، جو سرمایہ کاری پورٹ فولیو میں اثاثے کی کلاسز کے مابین سرمائے کی تقسیم کا خاکہ پیش کرتی ہے۔ دوسری طرف، تنوع کی جانب سے اثاثے کی اُن کلاسز کے مابین سرمائے کی تقسیم کا عمل بیان کیا جا سکتا ہے۔ 

ان حکمت عملیوں کا مرکزی مقصد، متوقع منافع جات کو زیادہ سے زیادہ کرنا جبکہ ممکنہ خطرے کو کم سے کم کرنا ہے۔ روایتی طور پر، اس عمل میں سرمایہ کار کے سرمائے کے وقت کا دائرہ کار، خطرے کی برداشت کا تعین کرنا، اور اکثر اوقات وسیع مالیاتی حالات پر توجہ دینے کا عمل شامل ہوتا ہے۔ 

آسان لفظوں میں، اثاثے کی مختصی اور تنوعاتی حکمت عملیوں کے پس پردہ مرکزی خیال ایک ہی مقام پر تمام سرمائے کی سرمایہ کاری انجام یہ دینا ہے۔ غیر منسلک اثاثے کی کلاسز اور اثاثہ جات کو یکجا کرنا، متوازن پورٹ فولیو تشکیل کرنے کا سب سے زیادہ موثر طریقہ کار ہے۔

ان دونوں حکمت عملیوں کو یکجا کرنے پر، انہیں اس امر کے ذریعے طاقت ور بنایا جاتا ہے کہ خطرہ صرف اثاثے کی مخلتف کلاسز کے مابین موجود نہیں ہے، لیکن اثاثے کی اُن کلاسز کے مابین بھی موجود ہے۔ 

چند مالیاتی ماہرین کی جانب سے اس امر پر یقین کیا جاتا ہے کہ اثاثے کی مختصی پر مشتمل حکمت عملی، انفرادی سرمایہ کاری کے انتخابات سے زیادہ اہم ہو سکتی ہے۔ 


جدید پورٹ فولیو تھیوری

جدید پورٹ فولیو تھیوری (MPT) ایک ایسا فریم ورک ہے، جو حسابی ماڈل کے ذریعے ان اصولوں کو باضابطہ بناتا ہے۔ اسے 1952 میں Harry Markowitz کی جانب سے شائع کردہ پیپر میں متعارف کروایا گیا تھا، جس کے لیے اس نے بعد میں اقتصادیات میں نوبل انعام حاصل کیا تھا۔

اثاثے کے مرکزی زمرہ جات الگ طریقہ کار میں حرکت کرتے ہیں۔ ایسے مارکیٹ حالات جو کسی اثاثے کی مخصوص کلاس کی کارکردگی بہتر بناتے ہیں، وہ اثاثے کی کسی دیگر کلاس کی بُری کارکردگی ظاہر کر سکتے ہیں۔ مرکزی مفروضہ یہ ہے کہ اثاثے کی کسی ایک کلاس کی جانب سے بُری کارکردگی دکھانے پر، بہتر کارکردگی دکھانے والی اثاثے کی کلاس کی جانب سے نقصانات کو متوازی کیا جا سکتا ہے۔  

MPT کی جانب سے یہ امر فرض کیا جاتا ہے کہ اثاثے کی غیر منسلک کلاسز سے اثاثہ جات یکجا کرنے سے، پورٹ فولیو کا اتار چڑھاؤ کم کیا جا سکتا ہے۔ اس کی جانب سے خطرے کی ایڈجیسٹ کردہ کارکردگی بڑھائی جا سکتی ہے، یعنی خطرے کی ایک جیسی مقدار کا حامل پورٹ فولیو، بہتر منافع جات تیار کرے گا۔ اس کی جانب سے یہ امر بھی فرض کیا جاتا ہے کہ دو پورٹ فولیوز کی جانب سے ایک جیسے منافع جات کی پیشکش کرنے پر، کوئی بھی دانش مند سرمایہ کار کم خطرے کا حامل پورٹ فولیو منتخب کرے گا۔ 

آسان لفظوں میں، MPT کی جانب سے بیان کیا جاتا ہے کہ غیر منسلک شدہ پورٹ فولیو میں اثاثہ جات یکجا کرنا زیادہ موثر ہے۔


اثاثے کی کلاسز اور مختصی کی حکمت عملیوں کی اقسام

اثاثے کی مختصی کے روایتی فریم ورک میں، اثاثے کی کلاسز کو درج ذیل انداز میں زمرہ جات میں تقسیم کیا جا سکتا ہے: 

  • روایتی اثاثہ جات — اسٹاکس، بانڈز، اور کیش۔ 

  • متبادل اثاثہ جات — ریئل اسٹیٹ، اشیاء تجارت، ڈیریویٹوز، انشورنس پراڈکٹس، نجی ایکویٹی، اور یقیناً، کرپٹو اثاثہ جات۔

عمومی طور پر، اثاثے کی مختصی پر مشتمل حکمت عملیوں کی دو مرکزی اقسام ہیں، دونوں کی جانب سے MPT میں بیان کردہ مفروضہ جات استعمال میں لائے جاتے ہیں: اثاثے کی اسٹریٹیجک مختصی اور اثاثے کی ٹیکٹیکل مختصی۔ 

اثاثے کی اسٹریٹیجک مختصی کو روایتی پہلو سمجھا جاتا ہے، جو سرمایہ کاری کے غیر فعل طرز کے لیے زیادہ مناسب ہے۔ اس حکمت عملی پر مشتمل پورٹ فولیوز، صرف اُس صورت میں دوبارہ سے متوازن بنائے جائیں گے، اگر سرمایہ کار کے وقت کے دائرہ کار یا خطرے کی پروفائل میں تبدیلی کے باعث مطلوبہ مختصی میں ترمیم کی جائے۔ 

اثاثے کی ٹیکٹیکل مختصی، سرمایہ کاری کی زیادہ فعال طرز کے لیے زیادہ مناسب ہے۔ اس کی جانب سے سرمایہ کاران کو مارکیٹ میں بہتر کارکردگی دکھانے والے اثاثہ جات پر، اپنے پورٹ فولیو پر قائم رکھنے کی اجازت دی جاتی ہے۔ اس کی جانب سے یہ امر فرض کیا جاتا ہے کہ مارکیٹ میں کسی شعبے کی جانب سے بہتر کارکردگی دکھانے پر، یہ طویل دورانیے کے لیے بہتر کارکردگی دکھانے کا عمل جاری رکھ سکتا ہے۔ جیسا کہ یہ MPT میں بیان کردہ اصولوں پر مبنی ہے، اس کی جانب سے کچھ حد تک تنوع کی اجازت بھی دی جاتی ہے۔

یہ امر قابل توجہ ہے کہ تنوع کی طرف سے فائدہ مند اثر حاصل کرنے کے لیے، اثاثہ جات کی جانب سے مکمل طور پر غیر منسلک ہونا یا متضاد طور پر منسلک ہونا لازم نہیں ہے۔ یہ صرف ان کی جانب سے مکمل طور پر منسلک نہ ہونے کا تقاضا کرتا ہے۔ 


کسی پورٹ فولیو میں اثاثے کی مختصی اور تنوع کو عائد کرنا

آئیے ایک بطور مثال پیش کیے گئے پورٹ فولیو کے ذریعے، ان اصولوں پر توجہ دیں۔ اثاثے کی مختصی کی حامل حکمت عملی کی جانب سے، پورٹ فولیو میں اثاثے کی مختلف کلاسز کے مابین درج ذیل مختصی کی موجودگی کا تعین کیا جا سکتا ہے:

  • اسٹاکس میں %40 سرمایہ کاری

  • بانڈز میں %30

  • کرپٹو اثاثہ جات میں %20

  • کیش میں %10 

تنوع کی حکمت عملی کی جانب سے کرپٹو اثاثہ جات میں %20 سرمایہ کاری کے لیے کہا جا سکتا ہے: 

  • Bitcoin کے لیے %70 مختص کیا جانا چاہیئے

  • بڑے کیپس کے لیے %15

  • درمیانے کیپس کے لیے %10

  • چھوٹے کیپس کے لیے %5

ایک بار مختصی کا عمل انجام دیے جانے کے بعد، پورٹ فولیو کارکردگی کی باقاعدہ انداز میں نگرانی اور جائزہ کیا جا سکتا ہے۔ مختصی کے تبدیل ہونے کی صورت میں، یہ ان کے دوبارہ متوازن بنانے کا وقت ہو سکتا ہے — یعنی پورٹ فولیو کو واپس مطلوبہ تناسب میں ایڈجیسٹ کرنے کے لیے اثاثہ جات کی خرید اور فروخت کا عمل۔ اس میں عمومی طور پر بہترین کارکردگی دکھانے والوں کی فروخت اور کم کارکردگی دکھانے والوں کی خرید کا عمل شامل ہے۔ یقیناً، اثاثہ جات کو منتخب کرنے کا عمل مکمل طور پر حکمت عملی اور انفرادی سرمایہ کاری کے اہداف پر منحصر ہے۔ 

کرپٹو اثاثہ جات، اثاثے کی سب سے زیادہ خطرے کی حامل کلاسز کے مابین موجود ہیں۔ یہ پورٹ فولیو نہایت پُر خطر تصور کیا جا سکتا ہے، جیسا کہ کا خاطر خواہ حصہ کرپٹو اثاثہ جات کو مختص کیا گیا ہے۔ خطرے سے اجتناب کرنے والے سرمایہ کار کی جانب سے پورٹ فولیو کا زیادہ تر حصہ بانڈز کو مختص کرنے کی خواہش کا اظہار کیا جا سکتا ہے – جو کم خطرے کی حامل اثاثے کی ایک کلاس ہے۔ 

آپ کی جانب سے متنوع قسم کے متعدد اثاثہ جاتی پورٹ فولیو میں Bitcoin کے فوائد پر وسیع تحقیقی رپورٹ پڑھنے کے خواہش مند ہونے کی صورت میں، Binance تحقیق کی اس رپورٹ کو ملاحظہ کریں: پورٹ فولیو نظم کاری کی سیریز #1 - Bitcoin کے ساتھ تنوع کے فوائد دریافت کرنا۔


کرپٹو اثاثے کے حامل پورٹ فولیو کے ساتھ تنوع

جیسا کہ نظریاتی طور پر ان طریقہ کار کے پس پردہ موجود اصولوں کو کرپٹو اثاثے کے حامل پورٹ فولیو پر عائد ہونا چاہیئے، انہیں مکمل درست نہیں سمجھنا چاہیئے۔ کرپٹو کرنسی مارکیٹ Bitcoin قیمت کی حرکات سے کافی حد تک منسلک ہیں۔ یہ عمل تنوع کو نامناسب ٹاسک بنا دیتا ہے – کوئی فرد کافی حد تک منسلک اثاثہ جات سے، غیر منسلک اثاثہ جات کس طرح تخلیق کر سکتا ہے؟

اکثر اوقات، مخصوص Altcoins کی جانب سے Bitcoin کے ساتھ منسلک ہونے کا کم عمل دکھایا جاتا ہے، اور فعال ٹریڈرز اس امر سے مستفید ہو سکتے ہیں۔ تاہم، یہ عمل عمومی طور پر ایسی طرز سے باقی نہیں رہتا، جو روایتی مارکیٹس میں ایک جیسی حکمت عملیوں پر مستقل انداز میں عائد ہوتا ہے۔  

تاہم، یہ امر فرض کیا جا سکتا ہے کہ ایک بار مارکیٹ کے پختہ ہونے پر، کرپٹو اثاثے کے حامل پورٹ فولیو میں تنوع کا ایک مزید منظم پہلو فعال ہو سکتا ہے۔ اس امر میں کوئی شک نہیں کہ مارکیٹ کا مزید سفر باقی ہے۔


اثاثے کی مختصی کے ساتھ منسلک مسائل

جیسا کہ یہ ایک ناقابل تسخیر تکنیک ہے، مخصوص سرمایہ کاران اور پورٹ فولیوز کے لیے اثاثے کی مختصی کی چند حکمت عملیاں مناسب نہیں بھی ہو سکتی۔ 

گیم کا منصوبہ تشکیل کرنا نسبتاً آسان ہو سکتا ہے، لیکن اثاثے کی مختصی کی بہتر حکمت عملی کے لیے، ایک کلیدی عنصر نفاذ کا عمل ہے۔ سرمایہ کار کی جانب سے اپنی ترجیحات الگ رکھنے میں ناکامی کی صورت میں، پورٹ فولیو کم موثر ہو سکتا ہے۔ 

سرمایہ کار کی خطرے کی برداشت کا قبل از وقت اندازہ لگانے کی دشواری سے ایک اور ممکنہ مسئلہ ہو سکتا ہے۔ دیے گئے دورانیے کے بعد نتائج آنے پر، سرمایہ کار کو کم خطرے (یا مزید) کا خواہش مند ہونے کا احساس ہو سکتا ہے۔ 


اختتامی خیالات

اثاثے کی مختصی اور تنوع، ہزاروں سال سے قائم رہنے والے خطرے کی نظم کاری کے بنیادی نظریات ہیں۔ یہ، پورٹ فولیو نظم کاری کی جدید حکمت عملیوں کے پس پردہ موجود کلیدی نظریات میں سے ایک ہیں۔ 

اثاثے کی مختصی کی حکمت عملی ترتیب دینے کا مقصد، متوقع منافع جات کو زیادہ سے زیادہ، جبکہ خطرے کو کم سے کم کرنا ہے۔ اثاثے کی کلاسز کے مابین خطرے کی تقسیم سے پورٹ فولیو زیادہ موثر ہو سکتا ہے۔

جیسا کہ Bitcoin کے ساتھ مارکیٹس کافی حد تک منسلک ہیں، اثاثے کی مختصی پر مشتمل حکمت عملیوں کو کرپٹو اثاثوں کے پورٹ فولیوز پر احتیاط کے ساتھ عائد کیا جانا چاہیئے۔