معیشت کیسے کام کرتی ہے؟
امواد کی فہرست
تعارف
معیشت کون مرتب کرتا ہے؟
معیشتی سرگرمی کی پیمائش
کریڈٹ، قرضہ، اور شرح سود
مرکزی بینکس، افراطِ زر، اور افراطِ زر میں کمی
جب معاشی سرگرمیوں ترقی اچانک رک جاتی ہے تو کیا ہوتا ہے؟
یہ تمام چیزیں ایک دوسرے کے ساتھ کیسے مربوط ہوتی ہیں؟
اختتامی خیالات
معیشت کیسے کام کرتی ہے؟
ہومآرٹیکلز
معیشت کیسے کام کرتی ہے؟

معیشت کیسے کام کرتی ہے؟

نو آموز
Published Aug 9, 2020Updated Feb 23, 2022
10m

TL؛DR

  • کریڈٹ – موصول ہونے والی وہ رقم جو آپ کو بعد میں ادا کرنا ہو گی – معیشت کو چلاتا ہے۔
  • زیادہ کریڈٹ کا مطلب ہے کہ اخراجات زیادہ ہوں گے۔ زیادہ اخراجات کا مطلب ہے زیادہ آمدنی، اور زیادہ آمدنی کا مطلب ہے قرض دینے والوں سے وصول کرنے کے لیے زیادہ کریڈٹ دستیاب ہے۔
  • کریڈٹ کی وجہ سے قرضہ بھی پیدا ہوتا ہے: ادھار لی گئی رقم واپس بھی ادا کرنا لازمی ہے، چنانچہ بعد میں اخراجات بھی لازماً کم ہوں گے۔
  • حکومتیں معیشت کو کنٹرول میں رکھنے کے لیے شرح سود میں اضافہ اور کمی کرتی ہیں۔


تعارف

دنیا معیشت ہی کے بل بوتے پر چلتی ہے۔ یہ ہماری روزمرہ کی زندگیوں میں ہم میں سے ہر ایک پر گہرا اثر ڈالتا ہے، لہذاٰ اس کو سمجھنا یقیناً بہت ضروری ہے، چاہے وہ کس قدر اعلیٰ سطح پر ہی کیوں نہ ہو۔

"معیشت" کی تعریفیں مختلف ہوتی ہیں، لیکن، وسیع پیمانے پر، معیشت کی وضاحت ایک ایسی چیز کے طور پر کی جا سکتی ہے جسس میں اشیاء کی پیداوار، استعمال اور تجارت ہوتی ہے۔ عموماً، اس پر قومی سطح پر بات ہوتی ہے، بشمول امریکی معیشت، چینی معیشت، وغیرہ کا حوالہ دینے والے ادارتی صفحات اور نیوز رپورٹرز کے۔ تاہم، ہم ہر ملک کی سرگرمیوں اور معاملات کو مدنظر رکھ کر معاشی سرگرمیوں کو عالمی تناظر سے بھی پرکھا جا سکتا ہے۔

اس مضمون میں، ہم رے ڈالیو (Ray Dalio) کے ماڈل ( جس کی وضاحت معیشت کا نظام کیسے کام کرتا ہے میں کی گئی ہے) کا استعمال کرتے ہوئے، ان تصورات پر نظر دوڑائیں گے جو کہ معیشت مرتب کرتے ہیں۔


معیشت کون مرتب کرتا ہے؟

آئیں بڑے امور کی طرف جانے سے پہلے کہ چھوٹے سطح سے آغاز کرتے ہیں۔ ہر روز، ہم خریداری (مثلاً، گروسریز) کر کے اور بیچ کر (مثلاً ادائیگی کے بدلے میں کام کرتے ہوئے) معیشت میں حصہ ڈالتے ہیں۔ دیگر افراد، طبقات، حکومتیں، اور کاروبار دنیا بھر میں مارکیٹ کے تین شعبوں میں ایسا ہی کرتے ہیں۔

بنیادی شعبہ خود قدرتی وسائل کے حصول سے متعلق ہے۔ اس میں، آپ درختوں کو کاٹنے، سونے کی کان کنی کرنے، اور کھیتی باڑی جیسی چیزوں پر نظر دوڑاتے ہیں (جو کہ صرف چند ایک مثالیں ہیں)۔ اس کے بعد اس مواد کو ثانوی شعبے میں استعمال کیا جاتا ہے، جو کہ بنانے اور پیداوار کے عمل کے لیے ذمہ دار ہے۔ آخر میں، ثالثی شعبہ اشتہارات سے لے کر تقسیم تک کی سروسز کا احاطہ کرتا ہے۔ 
عموماً یہ "تین-شعبہ جاتی" تقسیم ایک متفقہ ماڈل کے طور پر تسلیم کیا جاتا ہے۔ تاہم، کچھ لوگوں نے اس کی توسیع کر کے اس میں ایک چوتھے شعبے اور پانچویں شعبے کو بھی شامل کیا ہے تاکہ ثالثی شعبے کے سروسز میں فرق روا رکھا جا سکے۔


معیشتی سرگرمی کی پیمائش

معیشت کی صحت کا تعین کرنے کے لیے، یہ ضروری ہے کہ ہم کسی طور اس کی پیمائش کر سکیں۔ تاحال، اس کا سب سے مقبول طریقہ GDP، یا Gross Domestic Product استعمال کرنا ہے۔ یہ پیمانہ ایک مخصوص مدت میں ملک میں پیدا ہونے والی اشیاء اور سروسز کی کل قیمت کا حساب لگانے کی کوشش کرتا ہے۔

وسیع تناظر میں، بڑھتی ہوئی GDP پیداوار، آمدنی، اور اخراجات میں اضافے کی نشاندہی کرتی ہے۔ اس کے برعکس، گرتی ہوئی GDP پیداوار، آمدنی، اور اخراجات میں کمی کی نشاندہی کرتی ہے۔ یہ بات ذہن نشین رکھیں کہ کچھ ایسی تغیرات ہیں جن کا آپ استعمال کر سکتے ہیں: حقیقی GDP افراطِ زر کا حوالہ دیتی ہے، جبکہ علامتی GDP ایسا نہیں کرتی۔

GDP اب بھی صرف ایک تخمینہ ہی ہے، لیکن یہ قومی اور بین الاقوامی سطح پر تجزیوں میں بہت زیادہ اہمیت کی حامل ہے۔ اسے چھوٹے مالیاتی مارکیٹ کے شرکاء سے لے کر International Monetary Fund تک سبھی ممالک کی معیشتی صحت کے بارے میں آگاہی حاصل کرنے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔

GDP کسی ملک کی معیشت کی نشاندہی قابل انحصار طور پر کرتی ہے، لیکن، تکنیکی تجزیہ کی طرح، زیادہ جامع سمجھ بوجھ حاصل کرنے کے لیے دوسرے ڈیٹا کے ساتھ اس کا موازنہ کرنا بہتر ہے۔


کریڈٹ، قرضہ، اور شرح سود

قرض دینے والے اور ادھار لینے والے

ہم نے اس حقیقیت پر نظر ڈالی ہے کہ ہر چیز آخر کار خریدنے اور بیچنے تک ہی پہنچتی ہے۔ یہ بھی ذہن نشین کرنے والی بات ہے کہ قرض دینا اور ادھار لینا بھی لازمی ہیں۔ فرض کریں کہ آپ کے پاس بڑی تعداد میں ایسی رقم ہے جو آپ فی الحال کسی استعمال میں نہیں لا رہے۔ آپ کی خواہش ہو گی کہ اس رقم کو کسی ایسے کام میں لگائیں کہ جس سے مزید رقم پیدا ہو۔

ایسا کرنے کا ایک طریقہ یہ ہے کہ اسے کسی ایسے شخص کو قرضہ کے طور پر دیا جائے جس کو کچھ خریدنے کی ضرورت ہو، جیسے کہ اپنے کاروبار کے لیے مشینری۔ ان کے پاس فی الحال رقم دستیاب نہیں ہے، لیکن ایک بار جب وہ مشینری خرید لیتے ہیں، تو وہ اپنی تیار شدہ پراڈکٹس کی فروخت سے اسے واپس ادا کر سکتے ہیں۔ آپ قرض دینے والے کے طور پر کام کرتے ہیں، اور دوسرا فریق ادھار لینے والے کے طور پر کام کرتا ہے۔
اس سے فائدہ حاصل کرنے کے لیے، آپ اپنے قرضے میں دی گئی رقم پر ایک فیس سیٹ کرتے ہیں۔ اگر آپ $100,000 قرضہ دیتے ہیں، تو آپ کچھ ایسا طے کر سکتے ہیں کہ "آپ اس شرط پر یہ رقم لے سکتے ہیں کہ جب تک آپ مجھے یہ رقم واپس نہیں کرتے آپ مجھے ہر ماہ اس کا 1% ادا کریں گے۔" اس اضافی چارج کردہ رقم کو سود کہا جاتا ہے۔

سادہ سود کے استعمال کا مطلب یہ ہوگا کہ جب تک کہ رقم واپس نہ ہوجائے دوسرا فریق ہر ماہ آپ کا $1,000 کا مقروض ہے۔ اگر اسے تین ماہ کے بعد دوبارہ ادا کر دیا گیا ، تو آپ $103,000، اور جو بھی اضافی فیس آپ نے وضع ہے، وصول کرنے کی امید رکھیں گے۔

اس رقم کی پیشکش کر کے، آپ کریڈٹ تخلیق کرتے ہیں: ایک ایسا معاہدہ کہ جس کی بنیاد پر ادھار لینے والا بعد میں آپ کو دوبارہ ادائیگی کرے گا۔ کریڈٹ کارڈ استعمال کرنے والے اس تصور سے واقف ہوں گے۔ کارڈ کے ذریعے ادائیگی کرتے وقت، رقم فوری طور پر آپ کے بینک اکاؤنٹ سے نہیں ہٹائی جاتی۔ اس رقم کا وہاں موجود ہونا بھی ضروری نہیں ہے، بشرطیکہ آپ اس کے بعد اپنے بل کا تصفیہ کر لیں۔
کریڈٹ کے ساتھ قرضے کا تصور آتا ہے۔ قرض دینے والے کے طور پر کام کرتے ہوئے، آپ کی رقم واجب الادا ہوتی ہے، اور ادھار لینے والے کے طور پر کام کرتے ہوئے، آپ پر رقم واجب الادا ہوتی ہے۔ جب سود سمیت قرضے کی دوبارہ ادائیگی ہو جائے، تو قرضہ ختم ہو جاتا ہے۔


بینک اور شرح سود کیا ہیں

عصر حاضر میں شاید قرض دینے والوں کی سب سے نمایاں قسم بینکس ہیں۔ آپ کچھ یوں تصور کر سکتے ہیں کہ وہ قرض دینے والوں اور ادھار لینے والوں کے بیچ میں ایک مربوط کار (بروکرز) کے طور پر کام کرتے ہیں۔ یہ مالیاتی ادارے دراصل دونوں کا کردار نبھاتے ہیں۔

جب آپ بینک میں رقم رکھتے ہیں، تو آپ ایسا اس صورت میں کرتے ہیں کہ وہ آپ کو یہ واپس کریں گے۔ بہت سے دیگر لوگ بھی ایسا کرتے ہیں۔ اور، چونکہ اب بینک کے پاس اتنی بڑی رقم دستیاب ہو جاتی ہے، اس لیے وہ اسے ادھار لینے والوں کو قرض دیتا ہے۔

یقیناً، اس کا مطلب یہی ہے کہ بینک کے ذمے جتنی رقم واجب الادا ہوتی ہے وہ تمام یہ ایک ہی وقت میں اپنے پاس برقرار نہیں رکھتا۔ یہ جزوی ریزرو سسٹم کے طور پر کام کرتا ہے۔ اگر سب ایک ہی وقت میں اپنی رقم کی واپسی کا مطالبہ کریں تو یہ مشکلات پیدا کر سکتا ہے، لیکن ایسا کبھی کبھار ہی ہوتا ہے۔ اس کے باوجود بھی، اگر ایسا ہو جاتا ہے (مثلا، سبھی کا بینک سے بھروسہ اٹھ جاتا ہے)، تو بینک سے بڑے پیمانے پر پیسے نکالنے کا عمل واقع ہو جاتا ہے، جو کہ ممکنہ طور پر بینک کے ختم ہو جانے کا سبب بنتا ہے۔ 1929 اور 1933 میں U.S. Great Depression کے دوران بینک سے رقم نکلوانے کے عوامل اس کی اچھی مثالیں ہیں۔
بینک عام طور پر آپ کو شرح سود کی شکل میں اپنی رقم قرضہ دینے کے لیے ترغیب دیتے ہیں۔ قدرتی طور پر، زیادہ شرح سود قرضہ دینے والوں کے لیے زیادہ پرکشش ہو گا (کیونکہ انہیں زیادہ رقم ملے گی)۔ ادھار لینے والوں کے لیے، اس کا الٹ درست ہے – کم شرح سود کا مطلب ہے کہ انہیں اصل رقم کے مجموعے کے اوپر زیادہ ادائیگی کرنے کی ضرورت نہیں ہو گی۔


کریڈٹ ضروری کیوں ہے؟

کریڈٹ کو معیشت کو ہموار طور پر چلانے کے لیے درکار ایک عنصر کے طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔ یہ افراد، کاروباری اداروں اور حکومتوں کو وہ رقم خرچ کرنے کی اجازت دیتا ہے جو ان کے پاس فوری طور پر دستیاب نہیں ہے۔ معیشت کے کچھ ماہرین کے نزدیک، یہ ایک مسئلہ ہے، لیکن بہت سارے لوگوں کا ماننا ہے کہ اخراجات میں اضافہ ایک بہتر ہوتی ہوئی معیشت کی نشانی ہے۔ 

اگر زیادہ رقم خرچ ہو رہی ہے، تو زیادہ لوگوں کو آمدنی حاصل ہو گی۔ بینک ان لوگوں کو قرضہ دینے کا رجحان زیادہ رکھتے ہیں جن کی آمدنی زیادہ ہو، جس کا مطلب ہے کہ اب افراد کو زیادہ رقم اور کریڈٹ تک رسائی حاصل ہے۔ زیادہ نقد اور کریڈٹ کے ساتھ، افراد زیادہ خرچ کر سکتے ہیں، جس کا مطلب یہ ہے کہ زیادہ لوگ آمدنی وصول کرتے ہیں، اور یہ سلسلہ جاری رہتا ہے۔

زیادہ آمدنی → زیادہ کریڈٹ → زیادہ خرچ → زیادہ آمدنی۔


یقینا، یہ سلسلہ غیر معینہ مدت تک جاری نہیں رہ سکتا۔ آج $100,000 ادھار لے کر، کل آپ کو $100,000+ ادا کرنا پڑے گا۔ لہذا، جب آپ عارضی طور پر اپنے اخراجات میں اضافہ کر سکتے ہیں، تو آپ کو آخر کار اسے واپس کرنے کے لیے اپنے اخراجات کو کم کرنا پڑے گا۔

رے ڈالیو اس تصور کو مختصر-مدتی قرضے کے سلسلے کے طور پر بیان کرتا ہے، جس کا خاکہ ذیل میں کھینچا گیا ہے۔ وہ اندازہ لگاتا ہے کہ یہ ترتیب 5-8 سال کی مدت میں خود کو دہراتے ہیں۔

سرخ رنگ میں پیداوار کی نشاندہی کی گئی ہے، جو وقت کے ساتھ بڑھ جاتی ہے۔ سبز رنگ میں دستیاب کریڈٹ کی متعلقہ رقم ہے۔


تو ہم اصل میں کیا دیکھ رہے ہیں؟ چلیں، پہلے یہ نوٹ کرتے ہیں کہ پیداوار کی شرح آہستہ آہستہ بڑھ رہی ہے۔ کریڈٹ کی غیر موجودگی میں، بالآخر – ہم بڑھوتری کے واحد ماخذ کے طور پر یہ توقع کریں گے کہ آپ کو آمدن وصول کرنے کے لیے پیداوار کی ضرورت ہو گی۔

چارٹ کے پہلے حصے میں، ہم یہ دیکھ سکتے ہیں کہ کریڈٹ کی وجہ سے، آمدنی پیداوار سے زیادہ تیز رفتار کے ساتھ نمو پاتی ہے ( جس سے معیشت میں وسعت آتی ہے)۔ آخرکار، وسعت رک جاتی ہے اور معیشت کو سکڑاؤ کی جانب لے جاتی ہے۔ دوسرے حصے میں، کریڈٹ کی دستیابی خاطرخواہ طور پر کم ہو جاتی ہے جو کہ ابتدائی "تیز رفتار اضافے" کے سبب ہے۔ نتیجتاً، قرضہ جات کا حصول زیادہ مشکل ہو جاتا ہے، اور افراطِ زر پیدا ہو جاتی ہے، جو حکومت کو تدارک کے اقدامات کرنے پر مجبور کرتی ہے۔

آئیں اگلے حصے میں اس پر مزید بات کریں۔


مرکزی بینکس، افراطِ زر، اور افراطِ زر میں کمی

افراط زر

فرض کریں کہ ہر ایک کو بہت سارے کریڈٹ تک رسائی حاصل ہے (پچھلے حصے کے گراف کا ایک حصہ)۔ وہ اس سے بہت زیادہ خریداری کر سکیں گے کہ جو اس کے بغیر وہ کرنے کے قابل نہیں ہوں گے۔ لیکن چونکہ اخراجات آسمان کو چھو رہے ہیں، اور پیداوار میں اس قدر اضافہ نہیں ہو رہا۔ در اصل، مادی طور پر اشیاء اور سروسز کی سپلائی نہیں بڑھ رہی، لیکن اس کی مانگ بڑھ رہی ہے۔

پھر اس سے اگلا مرحلہ افراطِ زر کے وقوع کا ہوتا ہے: یہ وہ وقت ہے جب آپ زیادہ مانگ کی وجہ سے اشیاء اور سروسز کی قیمتوں میں اضافہ دیکھیں گے۔ اس کی پیمائش کرنے کے لیے ایک مشہور انڈیکیٹر صارفی قیمت کا انڈیکس (CPI) ہے، جو وقت کے ساتھ ساتھ عام صارفین کے سامان اور سروسز کی قیمتوں کی نشاندہی کرتا ہے۔


ایک مرکزی بینک کیسے کام کرتا ہے؟

جن بینکس کا ہم نے پہلے ذکر کیا ہے وہ عام طور پر کمرشل بینکس ہیں – وہ بنیادی طور پر افراد اور کاروبار پر توجہ مرکوز کرتے ہیں۔ مرکزی بینکس حکومتی ادارے ہیں جو کسی ملک کی مانیٹری پالیسی کی نظم کاری کے لیے ذمہ دار ہوتے ہیں۔ اس زمرے میں، آپ کے مالیاتی ادارے آتےے ہیں جیسے کہ امریکہ کی Federal Reserve، Bank of England، Bank of Japan، اور People’s Bank of China۔ ان کے قابلِ ذکر فنکشنز میں گردشی رقم میں اضافہ کرنا (بذریعہ مقدار کی فراہمی کے) اور شرح سود پر گرفت رکھنا ہے۔

شرح سود میں اضافہ ایک ایسا کام ہے جو مرکزی بینک اس وقت کر سکتے ہیں جب افراط زر بے قابو ہو جاتا ہے۔ جب شرحیں بڑھائی جاتی ہیں، تو واجب الادا سود زیادہ ہوتا ہے، اس لیے ادھار لینا اتنا پرکشش نہیں لگتا۔ چونکہ افراد کو قرضہ جات کی دوبارہ ادائیگی کرنے کی ضرورت ہوتی ہے، اس لیے اخراجات میں کمی کی توقع کی جاتی ہے۔

ایک مثالی دنیا میں، زیادہ شرح سود کم مانگ کی وجہ سے قیمتوں کو دوبارہ کم کرتی ہے۔ لیکن عملی طور پر، یہ انحطاط کا سبب بھی بن سکتا ہے، جو بعض سیاق و سباق میں پریشانی کا باعث ہو سکتا ہے۔


افراط زر میں کمی

جیسا کہ آپ اندازہ لگا سکتے ہیں، افراطِ زر میں کمی افراط زر کے برعکس عمل ہے۔ ہم اس کی تعریف وقت کی ایک مدت کے دوران قیمتوں میں عمومی کمی کے طور پر کریں گے، جو عمومی طور پر اخراجات میں کمی کی وجہ سے واقع ہوتی ہے۔ چونکہ اخراجات کم ہوتے ہیں، تو بعد ازاں اس کے ساتھ کساد بازاری بھی واقع ہو سکتی ہے (2008 کے مالیاتی بحران کی وضاحت ملاحظہ کریں)۔
افراط زر میں کمی کا ایک مجوزہ حل شرح سود میں کمی ہے۔ کریڈٹ میں واجب الادا سود میں کمی کر کے، افراد کو مزید ادھار لینے کی ترغیب دی جا سکتی ہے۔ پھر، زیادہ دستیاب کریڈٹ کے ساتھ، حکومت یہ اندازہ لگاتی ہے کہ ان کی معیشت میں موجود گروہ اپنے اخراجات میں اضافہ کریں گے۔ 

افراط زر کی طرح، افراط زر میں کمی کی پیمائش صارفی قیمت کے انڈیکس کے ذریعے کی جا سکتی ہے۔



جب معاشی سرگرمیوں ترقی اچانک رک جاتی ہے تو کیا ہوتا ہے؟

ڈالیو وضاحت کرتا ہے کہ اوپر ہم نے جس چارٹ کا خاکہ بیان کیا ہے (مختصر مدت کے قرضے کا سلسلہ) وہ طویل مدت کے قرضے کے سلسلے کے اندر ایک چھوٹا سا سلسلہ ہے۔

طویل مدت کے قرضے کا سلسلہ۔


اوپر بیان کردہ ترتیب (کریڈٹ کی دستیابی میں اضافہ اور کمی) وقت کے ساتھ ساتھ خود کو دہراتا ہے۔ تاہم، ہر سلسلے کے اختتام پر، قرضہ زیادہ ہو جاتا ہے۔ آخر کار، قرض ناقابل انتظام ہو جاتا ہے، جس سے بڑے پیمانے پر ڈی لیوریجنگ ٹریگر ہو جاتی ہے (جہاں افراد اپنے قرضے کو کم کرنے کی کوشش کرتے ہیں)۔ اس کی نشاندہی چارٹ میں اچانک کمی سے کی گئی ہے۔

جب ڈی لیوریجنگ ہوتی ہے، تو آمدنی کم ہونے لگ جاتی ہے، اور کریڈٹ ختم ہو جاتا ہے۔ قرض ادا کرنے سے قاصر، افراد اپنے اثاثہ جات بیچنے کی کوشش کرتے ہیں۔ لیکن بہت سے لوگوں کے اسی ایک عمل میں ملوث ہونے کی وجہ سے، سپلائی کی کثرت کے نتیجے میں اثاثوں کی قیمتیں گر جاتی ہیں۔

اسٹاک مارکیٹ اس طرح کے حالات میں کریش کر جاتی ہے، اور اس مرحلے پر، اگر وہ پہلے سے ہی 0% پر ہوں تومرکزی بینک اس بوجھ کو کم کرنے کے لیے شرح سود میں مزید کمی نہیں لا سکتا۔ ایسا کرنے سے منفی شرح سود پیدا ہوتی ہے، جو کہ ایک ایسا حل ہے جو ہمیشہ موثر ہونے کی بنا پر متنازعہ ہے۔

تو وہ کیا کر سکتے ہیں؟ اس صورت میں، سب سے آسان طریقہ اخراجات میں کمی اور قرضے کی معافی ہے۔ اگرچہ اس سے دوسرے مسائل بھی پیدا ہوتے ہیں: اخراجات میں کمی کا مطلب ہے کہ کاروبار اتنے منافع بخش نہیں ہوں گے، یعنی ملازمین کی آمدنی کم ہو جائے گی۔ انڈسٹریز کو اپنی افرادی قوت میں کمی کرنے کی ضرورت ہو گی، جس سے بے روزگاری کی شرح بلند ہوگی۔

پھر، کم آمدنی اور کم افرادی قوت کا مطلب ہے کہ حکومت زیادہ ٹیکس جمع نہیں کر سکتی۔ بیک وقت، اسے بے روزگار شہریوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کو سہولیات فراہم کرنے کے لیے مزید اخراجات کرنے کی ضرورت پڑتی ہے۔ چونکہ یہ اپنی وصولی سے زیادہ خرچ کر رہا ہے، اس لیے اس کا بجٹ خسارے میں چلا جاتا ہے۔
اس کا ایک مجوزہ حل یہ ہے کہ پیسے کی پرنٹنگ شروع کی جائے (کرپٹو کرنسی کے حلقہ جات میں اسے پیسہ پرنٹر کو بے لگام چھوڑ دینا کہا جاتا ہے)۔ اس دستیاب رقم کے ساتھ، مرکزی بینک حکومت کو قرض دے سکتا ہے، جو پھر معیشت کو متحرک کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ لیکن یہ بھی مسائل کا باعث بن سکتا ہے۔
غیر متوقع طور پر بے تحاشہ پیسہ چھاپنا افراط زر کا سبب بنتا ہے کیونکہ یہ پیسے کی فراہمی میں اضافہ کرتا ہے۔ یہ ایک خطرناک راستہ ہے جو کہ شدید افراط زر کاکی طرف لے کے جا سکتا ہے، جہاں افراط زر اس قدر تیزی سے بڑھتا ہے کہ کرنسی کی مالیت تباہ ہو جاتی ہے اور معیشت تباہی کے دہانے تک پہنچ جاتی ہے۔ شدید افراط زر کے اثرات کو دیکھنے کے لیے آپ کو صرف 1920 کی دہائی میں ویمار ریپبلک، 2000 کی دہائی کے اوخر میں زمبابوے، یا 2010 کی دہائی کے آخر میں وینزویلا کی صورتحال پر نظر دوڑانے کی ضرورت ہے۔

جب مختصر مدت کے سلسلوں سے موازنہ کیا جائے تو، طویل مدتی قرضہ جات کا سلسلہ بہت زیادہ طویل مدت تک عمل میں رہتا ہے، جو کہ اندازتاً ہر 50 تا 75 سال تک واقع ہوتا ہے۔


یہ تمام چیزیں ایک دوسرے کے ساتھ کیسے مربوط ہوتی ہیں؟

ہم نے یہاں پر چند ایک موضوعات کا احاطہ کیا ہے۔ حتمی طور پر، ڈالیو کا مڈل کریڈٹ کی دستیابی کے ارد گرد ہی گھومتا ہے – زیادہ کریڈٹ کے ساتھ، معیشت تیزی سے اوپر جاتی ہے۔ کم کریڈٹ کے ساتھ، یہ سکڑ جاتی ہے۔ ان واقعات کے تسلسل کے نتیجے میں مختصر مدت کے قرضہ جاتی سلسلے پیدا ہوتے ہیں جو کہ، نتیجتاً، طویل مدتی قرضے کے سلسلے کا حصہ بنتے ہیں۔

شرح سود معیشت کے شرکاء کے زیادہ تر رویے کو متاثر کرتی ہے۔ جب شرحیں زیادہ ہوتی ہیں، تو بچت زیادہ معقول معلوم ہوتی ہے، کیونکہ خرچ کرنا زیادہ ترجیحی عمل نہیں ہوتا۔ جب ان کو کم کیا جاتا ہے، تو خرچ کرنا زیادہ معقول فیصلہ لگتا ہے۔


اختتامی خیالات

میعشت کی مشین اتنی بھاری بھرکم ہے کہ اس کے مختلف اجزاء کو سمجھنا مشکل ثابت ہو سکتا ہے۔ تاہم، قریب سے دیکھنے پر، ہمیں نظر آتا ہے کہ جب شرکاء باہمی ٹرانزیکشنز میں ملوث ہوتے ہیں تو یکساں قسم کی ترتیبات خود کو بار بار دہراتی ہیں۔

اس مرحلے پر، امید ہے کہ آپ قرض دینے والوں اور ادھار لینے والوں کے درمیان تعلقات، کریڈٹ اور قرضہ کی اہمیت، اور مرکزی بینک معیشت کی تباہی کو کم کرنے اور اس سے بچنے کے لیے جو اقدامات اٹھاتی ہے اس کا ایک بہتر فہم حاصل کر چکے ہوں گے۔