Ethereum کیا ہے؟
امواد کا جدول
ابواب
باب 1 - Ethereum کے بنیادی اصول
Ethereum کیا ہے؟
Ethereum اور Ether (ETH) کے مابین فرق کیا ہے؟
کیا چیز Ethereum کو قابل قدر بناتی ہے؟
بلاک چین کیا ہے؟
Ethereum بمقابل Bitcoin – فرق کیا ہے؟
Ethereum کیسے کام کرتا ہے؟
اسمارٹ معاہدہ کیا ہوتا ہے؟
Ethereum کا تخلیق کار کون ہے؟
Ether تقسیم کیسے کی گئی؟
DAO کیا ہے اور Ethereum کلاسیک کیا ہے؟
باب 2 - Ether کہاں سے آتا ہے؟
Ether کیسے تخلیق کیا جاتا ہے؟
اس وقت کتنے Ether موجود ہیں؟
Ethereum مائننگ کس طرح سے کام کرتی ہے؟
Ethereum گیس کیا ہوتی ہے؟
گیس اور گیس کی حد
Ethereum بلاک مائن کرنے میں کتنا وقت لگتا ہے؟
Ethereum ٹوکنز کیا ہوتے ہیں؟
باب 3 - Ethereum کے ساتھ شروعات کرنا
میں ETH کیسے خرید سکتا ہوں؟
Ether (ETH) کے ساتھ میں کیا خرید سکتا ہوں؟
Ethereum کس لیے استعمال کی جاتی ہے؟
ETH سے محروم ہو جانے کی صورت میں کیا ہو گا؟
کیا میں Ethereum کی ٹرانزیکشنز واپس کر سکتا ہوں؟
کیا Ethereum کی ٹرانزیکشنز نجی ہیں؟
کیا میں Ethereum سے پیسہ بنا سکتا ہوں؟
میں اپنا ETH کیسے محفوظ کروں؟
Binance پر ETH کیسے ڈپازٹ کریں
Binance پر ETH کیسے محفوظ کریں
Binance سے NFT کو کیسے نکلوائیں
Ethereum والیٹ پر اپنا ETH کیسے محفوظ کیا جائے
Ethereum لوگو اور علامت کیا ہوتی ہے؟
باب 4 - قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت، ETH 2.0 اور Ethereum کا مستقبل
قابل اسکیل ہونے کی علامت کیا ہے؟
Ethereum کو اسکیل کیوں کرنا پڑتا ہے؟
بلاک چین کی قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت کا مسئلہ
Ethereum کتنی ٹرانزیکشنز پر عمل درآمد کر سکتا ہے؟
Ethereum 2.0 کیا ہے؟
Ethereum شارڈنگ سے کیا مراد ہے؟
Ethereum پلازما کیا ہوتا ہے؟
Ethereum رول اپس کیا ہوتے ہیں؟
Ethereum پروف آف اسٹیک (PoS) کیا ہے؟
Ethereum اسٹیکنگ کیا ہے؟
باب 5 - Ethereum اور غیر مرکزی فنانس (DeFi)
غیر مرکزی فنانس (DeFi) کیا ہوتا ہے؟
غیر مرکزی فنانس (DeFi) کو کس مقصد کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے؟
کیا غیر مرکزی فنانس (DeFi) کبھی مین اسٹریم تک پہنچ پائے گا؟
غیر مرکزی فنانس (DeFi) کی کون سی ایپلیکیشنز موجود ہیں؟
Ethereum پر غیر مرکزی ایکسچینجز (DEXs)
Ethereum نیٹ ورک میں حصہ لینا
Ethereum 2.0 کیا ہے؟
Ethereum 2.0 کیسے کام کرتا ہے؟
Ethereum کے مکمل نوڈز
Ethereum کے ہلکے نوڈز
Ethereum کے مائننگ نوڈز
Ethereum نوڈ کو کیسے چلایا جاتا ہے
Ethereum پر کیسے مائن کیا جائے
Ethereum گیس کیا ہوتی ہے؟
Ethereum کے سافٹ ویئر کو کون چلاتا ہے؟
Solidity کیا ہے؟
Ethereum کیا ہے؟
ہومآرٹیکلز
Ethereum کیا ہے؟

Ethereum کیا ہے؟

نو آموز
شائع کردہ Mar 18, 2020اپڈیٹ کردہ Aug 30, 2022
48m

ابواب

  1. Ethereum کے بنیادی اصول
  2. Ether کہاں سے آتی ہے؟
  3. Ethereum پر شروعات
  4. قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت، ETH 2.0 اور Ethereum کا مستقبل
  5. Ethereum اور غیر مرکزی فنانس (DeFi)
  6. Ethereum نیٹ ورک میں حصہ لینا


باب 1 - Ethereum کے بنیادی اصول

مشمولات


Ethereum کیا ہے؟

Ethereum ایک غیر مرکزی کمپیوٹنگ پلیٹ فارم ہے۔ آپ اسے کسی لیپ ٹاپ یا PC کی طرح سمجھ سکتے ہیں، تاہم یہ محض ایک ہی ڈیوائس پر نہیں چلتی۔ اس کی بجائے، یہ دنیا بھر میں بیک وقت کئی مشینوں پر چلتی ہے، یعنی اس کا کوئی مالک نہیں ہوتا۔

Bitcoin کی طرح، Ethereum بھی آپ کو ڈیجیٹل رقم کے ٹرانسفر کے قابل بناتی ہے۔ تاہم، یہ مزید بہت کچھ انجام دے سکتی ہے – آپ اپنا ذاتی کوڈ ڈال سکتے ہیں، اور دیفر صارفین کی جانب سے تخلقی کردہ ایپلیکیشنز کے ساتھ تعامل انجام دے سکتے ہیں۔ کیونکہ یہ انتہائی لچک پذیر ہے، لہٰذا Ethereum پر ہر قسم کا معقول پروگرام لانچ کیا سکتا ہے۔

آسان الفاظ میں، Ethereum کے پیچھے مرکزی خیال یہ ہے کہ ڈویلپرز ایسا کوڈ تخلیق اور لانچ کر سکیں جو ایک مرکزی سرور پر موجودگی کی بجائے منقسم نیٹ ورک میں چلے۔ اس کا مطلب ہے، کہ در حقیقت، یہ ایپلیکیشنز بند یا سینسر نہیں کی جا سکتیں۔


Ethereum اور Ether (ETH) کے مابین فرق کیا ہے؟

یہ بات غیر فطری معلوم ہو سکتی ہے، تاہم Ethereum میں استعمال کردہ یونٹس کو Ethereum یا Ethereums نہیں کہا جاتا۔ Ethereum از خود ایک پروٹوکول ہے، تاہم اسے تقویت فراہم کرنے والی کرنسی کو محض Ether (یا ETH) کہا جاتا ہے۔


کیا چیز Ethereum کو قابل قدر بناتی ہے؟

ہم نے اس موضوع کو چھیڑا کہ Ethereum ایک منقسم سسٹم میں کوڈ چلا سکتا ہے۔ اسی لیے، بیرونی فریقین پروگرامز کے ساتھ چھیڑ چھاڑ نہیں کر سکتیں۔ انہیں Ethereum کے ڈیٹا بیس (یعنی بلاک چین) میں داخل کیا جاتا ہے، اور پروگرام بھی کیا جا سکتا ہے تاکہ کوڈ کو ایڈٹ نہ کیا جا سکے۔ مزید براں، یہ ڈیٹا بیس ہر ایک کو نظر آ سکتا ہے، لہٰذا صارفین کوڈ کے ساتھ تعامل انجام دینے سے قبل اسے آڈٹ کر سکتے ہیں۔
اس کا یہ مطلب ہے کہ کوئی بھی، کہیں بھی، ایسی ایپلیکیشنز لانچ کر سکتا ہے جنہیں آف لائن استعمال کرنا ممکن نہیں۔ مزید دلچسپ بات یہ کہ، کیونکہ اس کا مقامی یونٹ – Ether – قدر محفوظ کر لیتا ہے، لہٰذا یہ ایپلیکیشنز اس حوالے سے شرائط طے کر سکتی ہیں کہ اس قدر کو کس طرح سے ٹرانسفر کیا جائے گا۔ ہم ایپلیکیشنز بنانے والے پروگرامز کو اسمارٹ معاہدے کہتے ہیں۔ زیادہ تر صورتوں میں، انہیں یوں سیٹ کیا جاتا ہے کہ یہ انسانی مداخلت کے بغیر کام کر سکیں۔

ظاہر ہے، کہ "قابل پروگرام" رقم کے تصور نے دنیا بھر میں موجود صارفین، ڈویلپرز، اور کاروباری اداروں کی توجہ کھینچی ہے۔


Gia Ethereum (ETH) hôm nay là۔


بلاک چین کیا ہے؟

بلاک چین Ethereum کا دل ہے – یہ ایک ایسا ڈیٹا بیس ہوتا ہے جس میں پروٹوکول کی جانب سے استعمال کردہ معلومات محفوظ ہوتی ہیں۔ اگر آپ نے ہمارا آرٹیکل Bitcoin کیا ہے؟ پڑھ رکھا ہے، تو آپ کو بلاک چین کے کام کے طریقے کے حوالے سے بنیادی معلومات حاصل ہوں گی۔ Ethereum بلاک چین بھی Bitcoin ہی کی طرح ہوتی ہے، اگرچہ اس کی جانب سے محفوظ کیا جانے والا ڈیٹا – اور انہیں محفوظ کرنے کا طریقہ – مختلف ہوتا ہے۔
اس سے ہمیں Ethereum بلاک چین کے بارے میں یوں سوچنے میں مدد ملتی ہے کہ یہ ایک ایسی کتاب ہے جس میں آپ صفحات کا اضافہ کرتے جاتے ہیں۔ ہر صفحہ ایک بلاک کہلاتا ہے، اور اسے ٹرانزیکشنز کی معلومات سے پُر کیا جاتا ہے۔ جب ہم کوئی نیا صفحہ شامل کرنا چاہتے ہیں، تو ہمیں اس صفحے کے اوپر ایک خاص قدر شامل کرنی ہو گی۔ یہ قدر ہر فرد کو یہ دیکھنے کے قابل بنائے گی کہ یہ صفحہ پچھلے صفحے کے بعد شامل کیا گیا تھا، اور بے ترتیب انداز میں کتاب میں شامل نہیں کیا۔
اپنی نوعیت کے اعتبار سے، یہ کسی حد تک اس صفحہ نمبر کی طرح ہوتا ہے جو پچھلے صفحات کا حوالہ دیتا ہے۔ نئے صفحے کو دیکھتے ہوئے، ہم یقین سے یہ کہہ سکتے ہیں کہ یہ پچھلے صفحے کا ہی تسلسل ہے۔ ایسا کرنے کے لیے، ہم ہیشنگ نامی طریقہ کار استعمال کرتے ہیں۔ 
ہیشنگ ڈیٹا کا ایک حصہ لیتا ہے – یعنی اس صورت میں، ہمارے صفحے پر موجود ہر چیز لیتا ہے – اور ایک منفرد شناخت کار فراہم کرتی ہے (ہمارا ہیش)۔ اس بات کے امکانات نہایت کم ہیں کہ ڈیٹا کے دو حصے ہمیں ایک ہی ہیش فراہم کریں گے۔ ایک یکطرفہ طریقہ کار میں بھی: آپ آسانی کے ساتھ ہیش کا حساب لگا سکتے ہیں، تاہم آپ کے لیے ہیش کی تخلیق میں استعمال کردہ معلومات کو تبدیل کرنا ورچوئل سطح پر ناممکن ہے۔ ہم بعد ازاں کسی باب میں اس امر کا جائزہ لیں گے کہ مائننگ کے لیے یہ ضروری کیوں ہے۔

اب، ہمارے پاس ایک درست ترتیب میں اپنے صفحات کو مربوط کرنے کا میکانزم موجود ہے۔ اس ترتیب کو تبدیل کرنے یا صفحات ہٹانے کی کسی بھی قسم کی کوشش یہ واضح کر دے گی کہ ہماری بُک کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کی گئی ہے۔ 

بلاک چینز کے بارے میں مزید جاننا چاہتے ہیں؟ ہمارا بلاک چین ٹیکنالوجی سے متعلقہ ہدایت نامہ برائے نوآموز افراد ملاحظہ کرنا یقینی بنائیں۔


Ethereum بمقابل Bitcoin – فرق کیا ہے؟

ایک عالمی ڈیجیٹل کیش سسٹم کی تخلیق کے لیے Bitcoin کا انحصار بلاک چین ٹیکنالوجی اور مالی مراعات پر ہوتا ہے۔ اس نے چند اہم اختراعات متعارف کروائی ہیں جوکہ ثالثی فریق کی ضرورت پڑے بغیر دنیا بھر میں صارفین کے مابین تعاون کی اجازت دیتی ہیں۔ ہر شریک سے اپنے کمپیوٹر پر ایک پروگرام چلوا کر، Bitcoin نے صارفین کے لیے یہ امر ممکن بنا دیا ہے کہ ایک ٹرسٹ سے مبرا، اور غیر مرکزی ماحول میں ایک مالیاتی ڈیٹا بیس کی حالت پر اتفاق کیا جا سکے۔
Bitcoin کو اکثر پہلی جنریشن کی بلاک چین بھی کہا جاتا ہے۔ اسے ایک نہایت پیچیدہ سسٹم کے طور پر تیار نہیں کیا گیا، اور تحفظ کے اعتبار سے یہ ایک مثبت پہلو ہے۔ یہ تحفظ کو بہترین سطح پر برقرار رکھنے کے لیے ارادی طور پر غیر لچک پذیر رکھی جاتی ہے۔ بلاشبہ، Bitcoin کے اسمارٹ معاہدے کی زبان نہایت محدود ہے، اور یہ ٹرانزیکشنز کے باہر ہونے والی ایپلیکیشنز کی خاص سہولت کاری نہیں کرتی۔
اس کے برعکس، دوسری جنریشن کی بلاک چین، مزید بہت کچھ کرنے کے قابل ہیں۔ مالی ٹرانزیکشنز کے علاوہ، یہ پلیٹ فارمز قابل پروگرام ہونے کی صلاحیت کو مزید فعال کرتے ہیں۔ Ethereum ڈویلپرز کو کہیں گنا آزادی فراہم کرتا ہے کہ وہ اپنے کوڈز کے ساتھ تجربہ کر سکیں اور غیر مرکزی ایپلیکیشنز (DApps) تخلیق کر سکیں۔

Ethereum بلاک چینز کی دوسری جنریشن کی لہر میں سے پہلی قسم تھی اور آج تک مقبول ہے۔ یہ Bitcoin سے مماثلت رکھتی ہے اور بہت سے یکساں افعال انجام دے سکتی ہے۔ تاہم، اندر سے، یہ یکسر مختلف ہیں، اور ہر کسی کو کسی نہ کسی طرح دوسرے پر فوقیت حاصل ہے۔


Ethereum کیسے کام کرتا ہے؟

ہم Ethereum کو حالت کی مشین کہہ سکتے ہیں۔ اس کا یہ مطلب ہے، کہ کسی بھی مذکورہ وقت کے دوران، آپ تمام اکاؤنٹ بیلنسز اور اسمارٹ معاہدوں کا بالکل اسی صورت میں اسنیپ شاٹ حاصل کر سکتے ہیں جیسے یہ فی الوقت دکھائی دیتے ہیں۔ بعض افعال اس حالت کے اپڈیٹ ہونے کا سبب بنیں گے، یعنی تمام نوڈز اس تبدیلی کی عکاسی کے لیے اپنے اپنے اسنیپ شاٹس اپڈیٹ کریں گے۔

Ethereum کی حالت میں تبدیلی۔


Ethereum پر چلنے والے اسمارٹ معاہدے ٹرانزیکشنز کی جانب سے حرکت کرتے ہیں (یا تو صارفین یا پھر معاہدوں کی جانب سے)۔ جب کوئی صارف کسی معاہدے پر ٹرانزیکشن بھیجتا ہے، تو نیٹ ورک پر موجود ہر نوڈ معاہدے کے کوڈ کو چلاتا ہے اور نتیجہ ریکارڈ کر لیتا ہے۔ یہ Ethereum ورچوئل مشین (EVM) کا استعمال کرتے ہوئے یہ عمل انجام دیتا ہے، جوکہ اسمارٹ معاہدوں کو ایسی ہدایات میں تبدیل کر دیتا ہے جو کمپیوٹرز پڑھ سکتے ہیں۔
اس حالت کو اپڈیٹ کرنے کے لیے، مائننگ نامی خاص میکانزم کا استعمال کیا جاتا ہے (فی الحال)۔ مائننگ ایک پروف آف ورک الگورتھم کے ذریعے انجام دی جاتی ہے، بالکل Bitcoin کی طرح۔ ہم جلد ہی اس عمل کا تفصیلی جائزہ لیں گے۔


اسمارٹ معاہدہ کیا ہوتا ہے؟

ایک اسمارٹ معاہدہ صرف ایک کوڈ ہوتا ہے۔ یہ کوڈ نہ تو اسمارٹ ہوتا ہے، اور نہ ہی یہ روایتی اعتبار سے ایک معاہدہ ہوتا ہے۔ تاہم ہم اسے اسمارٹ کہتے ہیں کیونکہ یہ چند خصوصی صورتوں کے تحت انجام پاتا ہے، اور اسے ایک معاہدہ اس اعتبار سے سمجھا جا سکتا ہے کیونکہ یہ فریقین کے مابین معاہدات کا اطلاق کرتا ہے۔

اس تصور کا سہرا کمپیوٹر سائنسدان Nick Szabo کے سر جاتا ہے، کیونکہ انہوں نے ہی 1990 کی دہائی کے آخری ایام میں یہ تصور پیش کیا۔ انہوں نے اس تصور کی وضاحت کے لیے ایک وینڈنگ مشین کی مثال استعمال کی، اور بیان کیا کہ اسے جدید اسمارٹ معاہدے کا پیش خیمہ مانا جا سکتا ہے۔ ایک وینڈنگ مشین کی صورت میں، ایک سادہ سے معاہدے پر عمل درآمد کیا جاتا ہے۔ صارفی کوائنز ڈالتے ہیں، اور بدلے میں، مشین ان کی پسند کا کوئی پراڈکٹ دے دیتی ہے۔

ایک اسمارٹ معاہدہ ایک ڈیجیٹل ترتیب میں اسی قسم کی منطق کا اطلاق کرتا ہے۔ آپ کسی کوڈ میں کوئی سادہ سی بات واضح کر سکتے ہیں جیسے کہ جب اس معاہدے پر 2 Ether بھیجے جائیں تو جواباً "ہیلو، دنیا!" کہا جائے۔


Ethereum میں، ڈویلپر اسے ایک کوڈ کی شکل دے گا تاکہ بعد ازاں اسے EVM کی جانب سے پڑھا جا سکے۔ پھر یہ اسے ایک خاص ایڈریس پر بھیجتے ہوئے شائر کرتے ہیں جوکہ اس ایڈریس کو رجسٹر کرتا ہے۔ اس مقام پر، کوئی بھی اسے استعمال کر سکتا ہے۔ اور اس معاہدے کو حذف نہیں کیا جا سکتا، تاوقتیکہ اس کی تحریر کے دوران ڈویلپر نے کوئی شرط واضح کی ہو۔

اب، یہ معاہدہ ایک ایڈریس کا حامل ہے۔ اس کے ساتھ تعامل انجام دینے کے لیے، صارفین کو اس ایڈریس پر صرف 2 ETH بھیجنے ہوں گے۔ یہ معاہدے کے کوڈ کو حرکت دے گا – نیٹ ورک پر موجود تمام کمپیوٹرز اسے چلائیں گے، یہ دیکھیں گے کہ آیا معاہدے کو ادائیگی کی جا چکی ہے، اور اس کا نتیجہ ("ہیلو، دنیا!") ریکارڈ کریں گے۔

مذکورہ بالا ممکنہ طور پر اس امر کی سب سے عام مثالوں میں سے ایک ہے کہ Etheereum کے ساتھ کیا کچھ کیا جا سکتا ہے۔ بہت سے معاہدات کو مربوط کرنے والی مزید بہتر ایپلیکیشنز تیار کی جا سکتی ہیں – اور – تیار کی جا چکی ہیں۔


Ethereum کا تخلیق کار کون ہے؟

2008 میں، ایک نامعلوم ڈویلپر (یا ڈویلپرز کے ایک گروپ) نے Satoshi Nakamoto نامی تخلص کے تحت Bitcoin وائٹ پیپر شائع کیا۔ اس امر نے ڈیجیٹل پیسے کا منظر یکسر بدل کر رکھ دیا۔ چند سالوں بعد، Vitalik Buterin نامی ایک جوان پروگرام نے اس خیال کو آگے لے جانے کا طریقہ نکالا اور ہر قسم کی ایپلیکیشن پر اس کا اطلاق کیا۔ بالآخر یہ تصور Ethereum کی صورت میں مکمل طور پر نافذ کیا گیا۔
Buterin نے 2013 میں Ethereum: ایک حتمی اسمارٹ معاہدہ اور غیر مرکزی ایپلیکیشن کا پلیٹ فارم نامی بلاگ پوسٹ میں Ethereum پیش کیا۔ اپنی پوسٹ میں اس نے ایک مکمل ریاضی دان بلاک چین کا تصور پیش کیا – اگر کسی غیر مرکزی کمپیوٹر کو معقول وقت اور وسائل دیے جائیں، تو یہ کسی بھی ایپلیکیشن کو چلا سکتا ہے۔ 
وقت کے ساتھ ساتھ، کسی بلاک چین پر ڈالی والی ایپلیکیشنز کی اقسام صرف ڈویلپرز کی سوچ میں ہی محدود ہوں گی۔ Ethereum یہ جاننا چاہتی ہے کہ آیا Bitcoin کے ڈیزائن کی ارادی حدود سے باہر بھی بلاک چین ٹیکنالوجی کے استعمال صورتیں ہیں۔


Ether تقسیم کیسے کی گئی؟

Ethereum کا 2015 میں 72 ملین Ether کی فراہمی کے ساتھ لانچ کیا گیا۔ ابتدائی کوائن کی آفر (ICO) نامی عوامی ٹوکن کی فروخت میں 50 ملین سے زائد ٹوکنز تقسیم کیے گئے، جہاں حصہ لینے کے خواہشمند افراد Bitcoin یا فیاٹ کرنسی کے عوض Ether ٹوکنز خرید سکتے تھے۔


DAO کیا ہے اور Ethereum کلاسیک کیا ہے؟

Ethereum کے ساتھ، انٹرنیٹ پر کھلے تعاون کے مکمل طور پر نئے طریقے اب ممکنات میں سے ہیں۔ مثال کے طور پر، DAOs (غیر مرکزی خود مختار تنظیمیں)، جوکہ کمپیوٹر پروگرام کی طرح، کمپیوٹر کوڈ کی جان سے چلائی جانے والی اکائیاں ہوتی ہیں۔
اس قسم کی تنظیموں کی سب سے پرانی اور سے زیادہ پر عزم کوششوں میں سے ایک تھی "DAO"۔ یہ Ethereum پر چلنے والے پیچیدہ اسمارٹ معاہدوں سے بنائی جاتی، جوکہ ایک خودمختار نظام کے فنڈ کے طور پر کام کرتی۔ DAO کے ٹوکنز ایک ICO میں تقسیم کیے گئے، اور انہوں نے ٹوکن ہولڈرز کو ووٹنگ کے حقوق کے ساتھ ساتھ، ملکیت کی اسٹیک بھی فراہم کی۔

تاہم، اس کے لانچ کے کچھ ہی عرصے بعد، مشکوک سرگرمیوں نے اس کی کمزوری کا فائدہ اٹھایا اور DAO کے تقریباً ایک تہائی فنڈز نکال لیے۔ یہ یاد رکھنا اہم ہے کہ اس وقت، کل Ether کی 14% سپلائی DAO میں لاک تھی۔ ابتدائی مراحل میں ہونے والے Ethereum نیٹ ورک کے لیے یہ ایک تباہ کن امر تھا۔

تھوڑی بہت سوچ بچار کے بعد، اس چین کو دو چینز میں ہارڈ فورک کیا گیا۔ ایک میں، بدنیتی پر مبنی سرگرمیوں کو فنڈز بحال کرنے کے لیے مؤثر انداز میں "پلٹا" جاتا – یہی چین آج Ethereum بلاک چین کہلاتی ہے۔ اصل چین، جہاں یہ ٹرانزیکشنز پلٹی نہیں جاتیں، اور ان کے ناقابل تغیر پہلو کو برقرار رکھا جاتا ہے، آج Ethereum کلاسیک کہلاتی ہے۔
اس واقعے نے اس ٹیکنالوجی کے خطرات کی حقیقت پسندانہ یاددہانی کروائی، اور یہ کہ کس طرح سے ایک خودمختار کوڈ کو بڑی تعداد میں دولت سونپنا خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔ یہ اس بات کی بھی ایک دلچسپ مثال ہے کہ کس طرح آزاد ماحول میں اجتماعی فیصلے کرنا اہم نشکلات کا باعث بن سکتا ہے۔ تاہم، اپنی حفاظتی کمزوریوں کو نظر انداز کرتے ہوئے، DAO نے انٹرنیٹ پر ایک بڑے پیمانے پر ٹرسٹ سے مبرا تعاون کو فعال کرنے کے لیے اسمارٹ معاہدوں کی صلاحیت کی عین وضاحت کی۔



باب 2 - Ether کہاں سے آتا ہے؟

مشمولات


Ether کیسے تخلیق کیا جاتا ہے؟

ہم نے اس سے قبل مائننگ کا مختصر جائزہ لیا۔ اگر آپ Bitcoin سے واقف ہیں، تو آپ جانتے ہوں گے مائننگ کا عمل بلاک چین کی حفاظت اور اپڈیٹ کے لیے ضروری ہے۔ Ethereum میں بھی یہی اصول لاگو ہوتا ہے: مائن کرنے والے صارفین کو انعام سے نوازنے کے لیے (جوکہ مہنگا پڑتا ہے)، پروٹوکول انہیں Ether عطا کرتا ہے۔


اس وقت کتنے Ether موجود ہیں؟

فروری 2020 تک، Ether کی کل سپلائی تقریباً 110 ملین تھی۔ 
Bitcoin کے برعکس، لانچ کے وقت Ethereum کے ٹوکن کی تخلیق کا معمول ارادی طور پر مقرر نہیں کیا گیا تھا۔ Bitcoin اپنی سپلائی محدود کرتے ہوئے، اور وجود میں آنے والے نئے کوائنز کی تعداد کو رفتہ رفتہ کم کرتے ہوئے، اپنی قدر برقرار رکھنے کی متمنی ہے۔ دوسری جانب، Ethereum کا مقصد غیر مرکزی ایپلیکیشنز (DApps) کے لیے بنیاد فراہم کرنا ہے۔ جیسا کہ ابھی یہ واضح نہیں کہ ٹوکن کی تخلیق کا کس قسم کا معمول اس مقصد کے لیے بہترین ہے، لہٰذا اس سوال کا اب تک کوئی خاطر خواہ جواب موجود نہیں۔


Ethereum مائننگ کس طرح سے کام کرتی ہے؟

مائننگ نیٹ ورک کی سکیورٹی کے لیے ناگزیر ہے۔ یہ اس امر کو یقینی بناتی ہے کہ بلاک چین کو منصفانہ طور پر اپڈیٹ کیا جا سکے اور نیٹ ورک کو واحد فیصلہ ساز کے بغیر فعال رہنے کا موقع دیتا ہے۔ مائننگ میں، نوڈز کا ذیلی سیٹ (جسے موزوں طور پر مائنرز کہا جاتا ہے) کمپیوٹنگ کی طاقت کو کرپٹوگرافک پزل حل کرنے میں وقف کر دیتا ہے۔

درحقیقت وہ کچھ دیگر ڈیٹا کے ساتھ بقایا ٹرانزیکشنز کے سیٹ کی ہیشنگ کر رہے ہیں۔ بلاک کو درست سمجھنے کے لیے، ہیش کو اس قدر سے نیچے جانا ہو گا جو پروٹوکول کے مطابق سیٹ کردہ ہے۔ اگر وہ ناکام ہوئے، تو وہ کچھ ڈیٹا میں تجدید کر کے دوبارہ کوشش کر سکتے ہیں۔

دوسروں کے ساتھ مقابلے میں آنے کے لیے، مائنرز کو حتی الامکان تیزی سے ہیش کرنے کے قابل ہونا ہوتا ہے – ہم ان کی طاقت کی ہیش ریٹ میں پیمائش کرتے ہیں۔ جتنا نیٹ ورک پر ہیش ریٹ زیادہ ہو گا، اتنا ہی پزل کو حل کرنا مشکل ہوتا جائے گا۔ صرف مائنرز کو ایک حقیقی حل تلاش کرنا ہو گا – ایک بار جب یہ معلوم ہو جائے، تو دیگر تمام شرکاء کے لیے یہ چیک کرنا آسان ہو جائے گا کہ یہ درست ہے۔
جیسا کہ آپ فرض کر سکتے ہیں، تیز رفتاروں پر مسلسل ہیشنگ مہنگی ہوتی ہے۔ نیٹ ورک کو سکیور کرنے کے لیے مائنرز کو سہولت دینے کی خاطر، وہ ایک انعام حاصل کرتے ہیں۔ یہ بلاک میں موجود تمام تر فیس برائے ٹرانزیکشنز سے بنا ہوتا ہے۔ بوقتِ تحریر وہ حالیہ تشکیل شدہ Ether – 2 ETH بھی حاصل کرتے ہیں۔


Ethereum گیس کیا ہوتی ہے؟

گزشتہ بیان کردہ ہمارا ہیلو، دنیا! معاہدہ یاد ہے؟ وہ پروگرام چلانے میں آسان تھا۔ یہ حسابی اعتبار سے بہت زیادہ مہنگا بالکل بھی نہیں تھا۔ لیکن آپ اسے صرف اپنے PC پر ہی نہیں چلا رہے – بلکہ آپ Ethereum ایکو سسٹم میں موجود ہر ایک فرد کو بھی اسے چلانے کا کہہ رہے ہیں۔
اس سے درج ذیل سوالات ابھر کر آتے ہیں: جب دسیوں ہزار لوگ یہ بہتر معاہدات چلا رہے ہوں تو کیا ہوتا ہے؟ اگر کوئی اپنے معاہدے کو ایک ہی کوڈ سے بار بار گزرنے کے لیے سیٹ کرتا ہے، تو ہر نوڈ کو اسے غیرمعینہ مدت تک چلانا پڑے گا۔ اس سے وسائل پر بہت زیادہ دباؤ آئے گا اور سسٹم نتیجتاً شاید ناکارہ ہو جائے۔
خوش قسمتی سے، ایتھریم اس خطرے کو کم کرنے کے لیے گیس کا تصور متعارف کرواتا ہے۔ جیسے آپ کی گاڑی بغیر ایندھن کے نہیں چل سکتی، معاہدے بھی گیس کے بغیر نہیں چل سکتے۔ معاہدے گیس کی ایک مقدار طے کرتے ہیں جو کہ استعمال کنندہ کو کامیابی سے چلانے کی خاطر لازماً ادا کرنا ہوتی ہے۔ اگر گیس ناکافی ہو، تو معاہدہ رُک جائے گا۔ 

حقیقت میں، یہ ایک فیس میکانزم ہے۔ یہی تصور ٹرانزیکشنز تک بھی جاتا ہے: مائنرز کو منافع سے سب سے زیادہ تحریک ملتی ہے، سو وہ کم فیس والی ٹرانزیکشنز کو نظرانداز کر سکتے ہیں۔

نوٹ Ether اور گیس ایک ہی چیز نہیں۔ گیس کی اوسط قیمت بڑھتی گھٹتی رہتی ہے اور بڑی حد تک مائنرز کی جانب سے طے کی جاتی ہے۔ جب آپ ٹرانزیکشن کرتے ہیں، تو آپ گیس کے لیے ETH میں ادائیگی کرتے ہیں۔ یہ اس لحاظ سے Bitcoin کی فیس جیسا ہے – اگر نیٹ ورک پُرہجوم ہو اور بہت سے استعمال کنندگان ٹرانزیکٹ کرنے کی کوشش کریں، تو گیس کی اوسط قیمت ممکنہ طور پر بڑھ جائے گی۔ بصورتِ دیگر، اگر سرگرمی زیادہ نہ ہو، تو اس میں کمی آئے گی۔
اگرچہ گیس کی قیمت بدلتی ہے، مگر ہر عمل میں ایک طے شدہ مقدار میں گیس درکار ہوتی ہے۔ یعنی کہ پیچیدہ معاہدات ایک سادہ ٹرانزیکشن سے کہیں زیادہ مقدار کا استعمال کریں گے۔ اسی لیے، گیس حسابی طاقت کی پیمائش ہوتی ہے۔ یہ یقینی بناتی ہے کہ سسٹم اپنے صارفین کو ان کے Ethereum کے وسائل کے استعمال کی بنا پر ایک مناسب فیس فراہم کر سکے۔
گیس بالعموم Ether کے ایک معمولی سے حصے جتنی قیمت رکھتی ہے۔ اسی لیے، ہم اس کی نشاندہی کے لیے نسبتاً چھوٹا یونٹ (Gwei) استعمال کرتے ہیں۔ ایک Gwei Ether کے ایک بلینتھ حصے سے مطابقت رکھتا ہے۔
قصہ مختصر، آپ ایک ایسا پروگرام چلا سکتے ہیں جو دیر تک دہرایا جاتا رہے۔ لیکن جلد ہی یہ آپ کی استعداد سے باہر ہو جاتا ہے۔ اس کے سبب، Ethereum نیٹ ورک پر موجود نوڈز اسپام میں تخفیف کر سکتے ہیں۔
وقت کے ساتھ Gwei میں گیس کی اوسط قیمت۔ ماخذ: etherscan.io


گیس اور گیس کی حد

فرض کریں کہ Alice معاہدے کے لیے ٹرانزیکشن کر رہی ہے۔ وہ یہ حساب لگائے گی کہ وہ گیس پر کتنا خرچ کرنا چاہتی ہے (مثال کے طور پر، ETH Gas Station استعمال کر کے)۔ مائنرز کو سہولت دینے کے لیے وہ زیادہ قیمت بھی سیٹ کر سکتی ہے تاکہ اس کی ٹرانزیکشن کو حتی الامکان فوری طور پر شامل کیا جائے۔ 
لیکن وہ گیس کی حد بھی سیٹ کرے گی، جو اس کے تحفظ کا کام کرے گی۔ معاہدے میں کچھ غلط ہو سکتا ہے، جس سے اس سے زیادہ گیس استعمال ہو سکتی ہے جتنی اس نے مقرر کی ہوئی ہے۔ گیس کی حد یہ یقینی بنانے کے لیے عائد کی جاتی ہے کہ، ایک بار x مقدار میں گیس استعمال ہو جائے، تو عمل رُک جائے گا۔ معاہدہ ناکام ہو جائے گا، لیکن Alice کو آخر میں اس سے زیادہ ادائیگی نہیں کرنا ہو گی جتنی اس نے ادا کرنے پر اتفاق کیا تھا۔

ابتدا میں اس تصور کو سمجھنا تھوڑا الجھن کا باعث بن سکتا ہے۔ پریشان نہ ہوں – آپ گیس کی وہ قیمت (اور گیس کی حد) سیٹ کر سکتے ہیں جو آپ گیس کے لیے ادا کرنے پر آمادہ ہوں، لیکن زیادہ تر والیٹس آپ کے لیے اس کا دھیان رکھیں گے۔ مختصراً، گیس کی قیمت یہ وضاحت دیتی ہے کہ مائنرز آپ کی ٹرانزیکشن کتنی جلدی لے لیں گے، اور گیس کی حد وضاحت دیتی ہے کہ آپ کو اس کے لیے زیادہ سے زیادہ کتنی رقم ادا کرنا ہو گی۔ 


Ethereum بلاک مائن کرنے میں کتنا وقت لگتا ہے؟

ایک نئے بلاک کو چین میں شامل کرنے میں لگنے والا اوسط وقت 12-19 سیکنڈز کے بیچ ہوتا ہے۔ نیٹ ورک کے اسٹیک کے ثبوت کی جانب منتقل ہو جانے پر اس میں تبدیلی کا قوی امکان ہے، جو کہ، دیگر چیزوں کے ساتھ، بلاک کے تیز تر اوقات کو فعال کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ اگر آپ اس بارے میں مزید جاننا چاہتے ہیں، تو Ethereum Casper کی تفصیل ملاحظہ کریں۔


Ethereum ٹوکنز کیا ہوتے ہیں؟

Ethereum کی اپیل کا ایک بڑا حصہ ہی صارفین کو یہ صلاحیت فراہم کرتا ہے کہ وہ چین پر اپنے اثاثے تخلیق کر سکیں، جن کو Ether کی مانند اسٹور اور ٹرانسفر کیا جا سکتا ہے۔ ان کا انتظام چلانے والے اصول اسمارٹ معاہدات میں پیش کردہ ہیں جو کہ تخلیق کاروں کو موقع دیتے ہیں کہ اپنے ٹوکنز کے حوالے سے مخصوص پیمانے سیٹ کریں۔ ان میں شامل ہو سکتے ہیں کہ ان کو کس تعداد میں، کس طرح جاری کیا جائے، آیا وہ قابلِ تقسیم ہیں، آیا ہر کوئی فنجیل ہے، نیز اس میں مزید بہت کچھ شامل ہو سکتا ہے۔ تکنیکی معیارات میں سے وہ نمایاں ترین معیار، جو Ethereum پر ٹوکنز کی تخلیق کا موقع دیتا ہے، ERC-20 – کہلاتا ہے اور اسی لیے ٹوکنز ERC-20 ٹوکنز کے نام سے معروف ہیں۔

ٹوکن کی فعالیت تجدید کاروں کو مالیات و ٹیکنالوجی کی جدت پر ایپلیکیشنز کے ساتھ تجربہ کرنے کے لیے وسیع میدانِ عمل فراہم کرتی ہے۔ درون ایپ کرنسی کے طور پر استعمال ہونے والے یونیفارم ٹوکنز جاری کرنے سے لے کر، مادی اثاثہ جات سے تقویت یافتہ منفرد والے تخلیق کرنے تک، ڈیزائن کی بہت زیادہ لچک پذیری موجود ہے۔ یہ مکمل طور پر ممکن ہے کہ آسان اور اسٹریم لائن شدہ ٹوکن کی تخلیق کے لئے کچھ بہترین استعمال کے کیسز اب تک معلوم بھی نہیں ہیں۔ 



باب 3 - Ethereum کے ساتھ شروعات کرنا

مشمولات


میں ETH کیسے خرید سکتا ہوں؟

کریڈٹ/ڈیبٹ کارڈ کے ذریعے ETH کیسے خریدیں

Binance آپ کو بلا رکاوٹ اپنے براؤزر سے ETH خریدنے کے قابل بناتا ہے۔ ایسا کرنے کے لیے:


  1. کرپٹو کرنسی خریدنے اور بیچنے کے پورٹل پر جائیں۔ 
  2. وہ کرپٹو کرنسی منتخب کریں جو آپ خریدنا چاہتے ہیں (ETH)، اور جس کے ساتھ آپ ادائیگی کرنا چاہتے ہیں۔
  3. Binance میں لاگ ان کریں، یا اگر آپ کے پاس پہلے سے کوئی اکاؤنٹ نہیں ہے تو رجسٹر کریں۔
  4. اپنا ادائیگی کا طریقہ منتخب کریں۔
  5. اگر ہدایت دی جائے، تو اپنے کارڈ یا بینک کی معلومات داخل کریں، اور شناختی توثیق مکمل کریں۔
  6. بس اتنی سی بات تھی! آپ کی ETH کو آپ کے Binance اکاؤنٹ میں کریڈٹ کر دیا جائے گا۔


پیئر ٹو پیئر مارکیٹس میں ETH کیسے خریدیں

آپ پیئر ٹو پیئر مارکیٹس میں ETH خرید اور بیچ بھی سکتے ہیں۔ یہ آپ کو اس قابل بناتا ہے کہ Binance موبائل ایپ کے ذریعے براہ راست دیگر صارفین سے کوائنز خریدیں۔ ایسا کرنے کے لیے:


  1. ایپ لانچ کریں اور لاگ یا رجسٹر کریں۔
  2. انٹرفیس کے بالائی بائیں کنارے پر موجود ٹیب پر ایک کلک پر خرید و فروخت، اور اس کے بعد خریدیں کی ٹیب پر کلک کریں۔
  3. آپ کو مختلف پیشکشوں کا حامل ایک نمبر دیا جائے گا – اس نمر پر موجود خریدیں پر کلک کریں جس کے ساتھ آپ آگے بڑھنا چاہیں گے۔
  4. آپ دیگر کرپٹو کرنسیز (By کرپٹو ٹیب) یا دیگر فیاٹ کرنسی (By فیاٹ ٹیب) کے ساتھ ادائیگی کر سکتے ہیں۔ 
  5. مندرجہ ذیل پر، آپ سے آپ کی ادائیگی کا طریقہ پوچھا جائے گا۔ اس کا انتخاب کریں جو آپ کے لیے موزوں ہے۔،
  6. ETH خریدیں منتخب کریں۔
  7. اب آپ کو ادائیگی کرنی ہو گی۔ جب آپ کر لیں، تو ادائیگی ہو چکی ہے کے طور پر نشان زد کریں، اور تصدیق کریں پر کلک کریں۔
  8. ٹرانزیکشن اس صورت میں مکمل ہو جاتی ہے جب فروخت کنندہ آپ کے کوائنز بھیج دیتا ہے۔


Ether (ETH) کے ساتھ میں کیا خرید سکتا ہوں؟

Bitcoin کے برعکس، Ethereum کے استعمال کا مقصد محض کرپٹو کرنسی نیٹ ورک تک محدود نہیں۔ یہ غیر مرکزی ایپلیکیشنز بنانے کا ایک پلیٹ فارم ہے، اور ایک قابل ٹریڈ ٹوکن کی حیثیت سے، Ether اس ایکو سسٹم کی فیول ہے۔ لہٰذا، Ether کے استعمال کی بنیادی صورت وہ سہولت ہے جو یہ Ethereum نیٹ ورک کے اندر فراہم کرتا ہے۔

اس کے ساتھ ہی، Ether کو بھی روایتی کرنسی کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے، یعنی آپ کسی بھی دیگر کرنی کی طرح ETH کے ساتھ بھی اشیاء اور سروسز خرید سکتے ہیں۔

Ether کو بطور ادائیگی قبول کرنے والے ریٹیلرز کے لیے ہیٹ میپ۔ ماخذ: cryptwerk.com/coinmap


Ethereum کس لیے استعمال کی جاتی ہے؟

لوگ Ethereum کی مقامی کرنسی، ETH کو ڈیجیٹل پیسے یا ضمانت کے طور پر استعمال کر سکتے ہیں۔ بہت سے لوگ، Bitcoin کی طرح اسے اثاثے کا ذخیرہ بھی سمجھتے ہیں۔ تاہم، Bitcoin کے برعکس، Ethereum بلاک چین کی قابل پروگرام ہونے کی صلاحیت زیادہ ہے، لہٰذا ETH کے ساتھ آپ بہت کچھ کر سکتے ہیں۔ یہ غیر مرکزی مالیاتی ایپلیکیشنز، غیر مرکزی مارکیٹس، ایکسچینجز، گیمز، اور دیگر بہت سی چیزوں کے لیے لازمہ حیات کے طور پر استعمال کی جا سکتی ہے۔ 


ETH سے محروم ہو جانے کی صورت میں کیا ہو گا؟

کیونکہ ان میں کسی قسم کے بینکس کا عمل دخل نہیں، لہٰذا اپنے فنڈز کے ذمہ دار آپ ہیں۔ آپ کسی ایکسچینج، یا پھر اپنے والیٹ پر اپنے کوائنز محفوظ کر سکتے ہیں۔ یہ نوٹ کرنا اہم ہے کہ اگر آپ اپنا والیٹ استعمال کرتے ہیں، تو آپ کو اپنی سیڈ عبارت کی حفاظت بھی خود ہی کرنی ہو گی۔ اسے محفوظ رکھیں کیونکہ اس صورت میں آپ کو اپنے فنڈز بازیاب کرنے کے لیے اس کیی ضرورت ہو گی اگر آپ اپنے والیٹ تک رسائی کھو دیتے ہیں۔


کیا میں Ethereum کی ٹرانزیکشنز واپس کر سکتا ہوں؟

ایک مرتبہ ڈیٹا Ethereum بلاک چین پر شامل ہو جانے کے بعد، اسے تبدیل کرنا یا ہٹانا تقریباً ناممکن ہے۔ اس کا مطلب ہے، کہ جب آپ کوئی ٹرانزیکشن کریں، تو اسے پتھر پر لکیر سمجھ لیں۔ لہٰذا، درست ایڈریس پر فنڈز بھیجنے کی صورت میں آپ کو چاہیئے کہ دو مرتبہ یقین دہانی کر لیں۔ اگر آُ ایک بڑی رقم بھیج رہے ہیں، تو پہلے ایک چھوٹی رقم بھیجنا زیادہ کارآمد ثابت ہو گا تاکہ اس بات کی یقین دہانی کی جا سکے کہ آپ درست ایڈریس پر بھیج رہے ہیں۔
اس کے ساتھ ہی، اسمارٹ معاہدے میں ایک ہیک کے سبب، 2016 میں Ethereum کو ہارڈ فورک کیا گیا، جہاں بدنیتی پر مبنی ٹرانزیکشنز کو مؤثر انداز میں "پلٹ" دیا گیا۔ تاہم، یہ ایک غیر معمولی صورتحال کے لیے اٹھایا جانے والا قدم تھا،کوئی رواج نہیں۔


کیا Ethereum کی ٹرانزیکشنز نجی ہیں؟

ایتھریم بلاک چین پر شامل کردہ تمام ٹرانزیکشنز عوامی طور پر دستیاب نہیں ہوتیں۔ حالانکہ آپ کا اصل نام آپ کے ایتھریم ایڈریس پتے پر نہیں ہوتا، لیکن کوئی مشاہدہ کار اسے دیگر طریقوں سے آپ کی شناخت سے مربوط کر سکتا ہے۔


کیا میں Ethereum سے پیسہ بنا سکتا ہوں؟

چونکہ یہ ایک ایسا اثاثہ ہے جس میں اتار چڑھاؤ آتا رہتا ہے، لہٰذا ETH کے ساتھ پیشہ بنانے کا بھی اتنا ہی امکان ہے جتنا کھونے کا۔ بعض افراد ایک طویل مدت تک Ether ہولڈ میں رکھ سکتے ہیں، تاکہ نیٹ ورک پر انحصار کر سکیں جوکہ عالمی سطح پر، تصفیہ کی قابل پروگرام سطح بن چکا ہے۔ دیگر افراد اسے دیگر Altcoins کے خلاف ٹریڈ کرنے کا انتخاب کرتے ہیں۔ اس کے باوجود، ان دونوں حکمت عملیوں میں اپننے اپنے مالی خطرات موجود ہیں۔
کیونکہ یہ غیر مرکزی فنانس (DeFi) تحریک کی اہم بنیاد ہے، لہٰذا ETH کو ادھار دینے، قرضہ نکلوانے کے لیے بطور ضمانت، مصنوعی اثاثہ جات کو منٹ کرنے، اور – مستقبل میں کسی وقت پر – اسٹیکنگ کے لیے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔
ہو سکتا ہے کہ بعض سرمایہ کاران Bitcoin میں سرف ایک طویل مدتی پوزیشن ہی ہولڈ کریں، اور اپنے پورٹفولیو میں دیگر کسی بھی قسم کے ڈیجیٹل اثاثہ جات شامل نہ کریں۔ اس کے برعکس، دیگر افراد اپنے پورٹفولیو میں ETH اور دیگر Altcoins شامل کرنے کا انتخاب کر سکتے ہیں، یا اپنی قلیل مدتی ٹریڈنگ کی ایک مخصوص فیصد مختص کر سکتے ہیں (مثلاً ایک روزہ ٹریڈنگ یا سوئنگ ٹریڈنگ)۔ مارکیٹس میں پیسہ بنانے کے لیے سب پر لاگو ہونے والی کوئی حکمت عملی موجود نہیں، اور ہر سرمایہ کار کو یہ فیصلہ خود لینا ہو گا کہ ان کی پروفائل اور صورتحال کے لیے کون سی حکمت عملی موزوں ہے۔


میں اپنا ETH کیسے محفوظ کروں؟

کوائنز محفوظ کرنے کے بہت سے آپشنز موجود ہیں، جن میں سے ہر ایک اپنے فوائد اور نقصانات رکھتے ہیں۔ خطرے کی حامل دیگر کسی بھی چیز کی طرح، آپ کے لیے بہترین یہی ہے کہ دستیاب ہونے والے مختلف آپشنز اختیار کریں۔
عموماً، یہ حفاظتی سالوشنز یا تو تحویلی یا پھر غیر تحویلی ہو سکتے ہیں۔ ایک تحویلی سالوشن کا مطلب ہے کہ آپ اپنے کوائنز کو لے کر کسی فریق ثالث (جیسے کہ کسی ایکسچینج) پر بھروسہ کر رہے ہیں۔ اس صورت میں، آپ کے تحویل کار کے پلیٹ فارم پر لاگ ان کرنا پڑے گا تاکہ اپنے کرپٹو اثاثہ جات کے ساتھ ٹرانزیکشنز انجام دے سکیں۔
ایک غیر تحویل یافتہ حل اس کے برعکس ہے – آپ کرپٹو کرنسی والیٹ استعمال کرتے ہوئے، اپنے فنڈز کا کنٹرول قائم کرتے ہیں۔ ایک والیٹ آپ کے کوائنز آپ کے مادی والیٹ کی طرح ہولڈ میں نہیں رکھتا – بلکہ، یہ کرپٹوگرافک کیز رکھتا ہے جو آپ کو بلاک چین پر اپنے اثاثہ جات تک رسائی کی اجازت دیتی ہیں۔ ایک مرتبہ پھر، یہ بات یاد رکھنا اہم ہے: کہ  یہ لازم ہے کہ آپ اپنی سیڈ عبارت کو غیر تحویلی والیٹ استعمال کرتے وقت بیک اپ کر لیں!


Binance پر ETH کیسے ڈپازٹ کریں

اگر آپ کے پاس پہلے سے ہی Ether موجود ہے اور آپ اسے Binance پر ڈپازٹ کروانا چاہتے ہیں، تو آپ بس ان فوری مراحل پر عمل کر سکتے ہیں:

  1. Binance میں لاگ ان کریں، یا اگر آپ کے پاس پہلے سے کوئی اکاؤنٹ نہیں ہے تو رجسٹر کریں۔
  2. اہنے اسپاٹ والیٹ میں جائیں اور ڈپازٹ منتخب کریں۔
  3. کوائن کی فہرست میں سے ETH منتخب کریں۔
  4. نیٹ ورک منتخب کریں اور اپنا ETH متعلقہ پتے پر بھیجیں۔
  5. بس اتنی سی بات تھی! ٹرانزیکشن کی تصدیق کے بعد، آپ کا Ether آپ کے Binance اکاؤنٹ پر کریڈٹ کر دیا جائے گا۔


Binance پر ETH کیسے محفوظ کریں

اگر آپ کو اپنے Ether کے ساتھ فعال ٹریڈ کرنی ہو، تو آپ کو اسے اپنے Binance اکاؤنٹ پر اسٹور کرنا ہو گا۔ Binance پر اپنا ETH اسٹور کرنا آسان اور سکیور ہے۔ اور اس سے آپ کو ادھار لینے، اسٹیکنگ، ایئر ڈراپ تشہیرات، اور گیو اویز کے ذریعے Binance ایکو سسٹم کی مراعات سے باآسانی مستفید ہونے کا موقع بھی ملتا ہے۔


Binance سے NFT کو کیسے نکلوائیں

اگر آپ کے پاس پہلے سے ہی Ether موجود ہے اور آپ اسے Binance سے نکلوانا چاہتے ہیں، تو آپ بس ان فوری مراحل پر عمل کر سکتے ہیں:

  1. Binance پر لاگ ان کریں۔
  2. اہنے اسپاٹ والیٹ میں جائیں اور نکلوانا منتخب کریں۔
  3. کوائن کی فہرست میں سے ETH منتخب کریں۔
  4. نیٹ ورک منتخب کریں
  5. وصول کنندہ کا پتہ اور رقم درج کریں۔
  6. بذریعہ ای میل عمل کی تصدیق کریں۔
  7. بس اتنی سی بات تھی! ٹرانزیکشن کی تصدیق کے بعد، آپ کا ETH آپ کے Binance اکاؤنٹ پر کریڈٹ کر دیا جائے گا۔


Ethereum والیٹ پر اپنا ETH کیسے محفوظ کیا جائے

اگر آپ اپنا ETH اپنی والیٹ میں اسٹور کرنا چاہیں، تو آپ کو دو بنیادی آپشنز ملیں گے: ہاٹ والیٹس اور کولڈ والیٹس۔


ہاٹ والیٹس

کرپٹو کرنسی والیٹ جو کہ انٹرنیٹ سے کسی طرح سے مربوط ہو ہاٹ والیٹ کہلاتا ہے۔ عموماً، یہ موبائل یا ڈیسک ٹاپ ایپلیکیشنز ہوتی ہیں جو آپ کو اپنے بیلنسز چیک کرنے، اور ٹوکنز بھیجنے یا وصول کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ چونکہ ہاٹ والیٹس آن لائن ہیں، اس لیے وہ حملوں کی زد میں زیادہ رہتے ہیں، تاہم روزمرہ کی ادائیگیوں کے لیے زیادہ باسہولت بھی ہوتے ہیں۔ ٹرسٹ والیٹ استعمال میں آسان موبائل والیٹ کی مثال ہے جس میں بہت سارے معاونت یافتہ کوائنز پائے جاتے ہیں۔

کولڈ والیٹس

کولڈ والیٹ ایک کرپٹو والیٹ ہے جو کہ انٹرنیٹ پر نہیں ہوتا۔ چونکہ، وہاں کوئی آن لائن حملے کا ویکٹر موجود نہیں ہوتا، تو حملے کے امکانات مجموعی طور پر کم ہوتے ہیں۔ دریں اثناء، کولڈ والیٹس ہاٹ والیٹس کی نسبت عموماً کم سادہ ہوتے ہیں۔ کولڈ والیٹس کی مثالوں میں شامل ہو سکتے ہیں ہارڈ ویئر والیٹس یا کاغذی والیٹس، لیکن کاغذی والیٹس کے استعمال کی اکثر حوصلہ شکنی کی جاتی ہے کیونکہ بہت سے لوگ ان کو استعمال میں متروک اور خطرناک سمجھتے ہیں۔
والیٹ کی اقسام کے بریک ڈاؤن کے لیے، کرپٹو والیٹ کی اقسام کی تفصیل ملاحظہ کریں۔


Ethereum لوگو اور علامت کیا ہوتی ہے؟

Vitalik Buterin نے قدیم ترین Ethereum کا علامتی نشان ڈیزائن کیا تھا۔ یہ دو گردش پذیر سمیشن علامتوں Σ (یونانی حرف سگما) سے مل کر بنی تھی۔ لوگو کا حتمی ڈیزائن (جو کہ اس علامتی نشان پر مبنی تھا) ہیرے کی شکل کا بنا ہوتا ہے جسے چار مثلثوں سے گھرا ہوا ہشت سطحی کہا جاتا ہے۔ دیگر کرنسیز کی طرح، یہ Ether کے لیے مفید ہو سکتا ہے کہ وہ مروجہ یونی کوڈ علامت اپنائے تاکہ ایپس اور ویب سائٹس Ether کی قدروں کو باآسانی نمایاں کر سکیں۔ اگرچہ اتنی زیادہ استعمال میں نہیں ہے جتنا کہ ازراہِ مثال، USD کے لیے $ ہے، لیکن Ether کے لیے سب سے زیادہ مستعمل علامت Ξ ہے۔



باب 4 - قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت، ETH 2.0 اور Ethereum کا مستقبل

مشمولات


قابل اسکیل ہونے کی علامت کیا ہے؟

سادہ لفظوں میں، قابلِ اسکیل ہونے کی صلاحیت سے مراد سسٹم کی بڑھوتری کی صلاحیت ہے۔ مثال کے طور پر، کمپیوٹنگ میں، مختلف طریقوں سے زیادہ مانگ کو اسکیل کرنے کے لیے کسی نیٹ ورک یا سرور کو اسکیل کیا جا سکتا ہے۔

کرپٹو کرنسی میں، قابلِ اسکیل ہونے کی صلاحیت سے مراد یہ ہے کہ بلاک چین زیادہ صارفین کو گنجائش فراہم کرنے کے لیے کتنی اچھی پیشرفت دکھا سکتا ہے۔ زیادہ صارفین کا مطلب یہ ہو گا کہ زیادہ آپریشنز اور ٹرانزیکشنز بلاک چین میں شامل ہونے کے لیے "مقابلہ" کر رہے ہیں۔


Ethereum کو اسکیل کیوں کرنا پڑتا ہے؟

Ethereum کے حامیوں کا ماننا ہے کہ انٹرنیٹ کا اگلا سلسلہ اسی پلیٹ فارم پر تیار کیا جائے گا۔ ویب 3.0 کے طور پر پہچانے جانے والی چیز ثالثی میں کمی، رازداری پر توجہ، اور اپنے ڈیٹا کی حقیقی ملکیت کی جانب منتقلی کی خصوصیت کے اعتبار سے ایک غیر مرکزی ٹوپولوجی لے کر آئے گی۔ اس کی بنیاد کو اسمارٹ معاہدوں اور تقسیم شدہ اسٹوریج/مواصلاتی پروٹوکول کی شکل میں تقسیم شدہ کمپیوٹنگ کو استعمال کرتے ہوئے تیار کیا جائے گا۔
اگرچہ، اس کو حاصل کرنے کے لیے، Ethereum کو نیٹ ورک کی غیر مرکزیت کو نقصان پہنچائے بغیر ٹرانزیکشن کی تعداد میں بڑے پیمانے پر اضافہ کرنے کی ضرورت ہو گی۔ فی الحال، Ethereum Bitcoin کی طرح بلاک سائز کو محدود کرتے ہوئے ٹرانزیکشن کے حجم کو محدود نہیں کرتا ہے۔ اس کے بجائے، اس پر ایک بلاک گیس کی حد - موجود ہوتی ہے یعنی صرف ایک مخصوص مقدار میں گیس کو بلاک میں فٹ کیا جا سکتا ہے۔

مثال کے طور پر، اگر آپ کے پاس بلاک گیس کی حد 100,000 Gwei ہے اور آپ ایسی دس ٹرانزیکشنز کو شامل کرنا چاہتے ہیں جن میں سے ہر ایک 10,000 Gwei گیس کی حد کی حامل ہے، تو یہ کام کرے گا۔ تو 50,000 Gwei کی دو ٹرانزیکشنز ہوں گی۔ ان کے ساتھ جمع ہونے والی کسی قسم کی دوسری ٹرانزیکشنز کو اگلے بلاک کا انتظار کرنے کی ضرورت ہو گی۔ 

یہ ایک ایسے سسٹم کے لیے مناسب نہیں جسے ہر کوئی استعمال کر رہا ہے۔ اگر کسی بلاک میں دستیاب اسپیس کی نسبت زیر التواء ٹرانزیکشنز کی تعداد زیادہ ہے، تو آپ کو جلد ہی بیک لاگ کا سامنا ہو سکتا ہے۔ گیس کی قیمت میں اضافہ ہو جائے گا، اور صرفین کو اپنی ٹرانزیکشنز پہلے شامل کروانے کے لیے دیگر صارفین کو بولی میں ہرانا ہو گا۔ نیٹ ورک کی مصروفیت کی بنیاد پر، استعمال کی چند مخصوص صورتوں کے لیے یہ آپریشنز بہت مہنگے پڑ سکتے ہیں۔

CryptoKitties کی مقبولیت میں اضافہ اس مقام پر Ethereum کی حدود کی بہترین مثال تھا۔ 2017 میں، Ethereum پر مشتمل اس گیم نے بہت سے صارفین کو تحریک دی کہ اپنی ڈیجیٹل بلیاں بریڈ کرنے کے لیے شرکت کی خاطر ٹرانزیکشنز کریں (جن کی نمائندگی نان فنجیبل ٹوکنز کے طور پر کی جاتی ہے)۔ یہ اس قدر مقبول ہو گئی تھی کہ زیر التواء ٹرانزیکشنز آسمانوں کو چھونے لگیں، جس کی وجہ سے کچھ عرصہ نیٹ ورک پر شدید رش رہا۔


بلاک چین کی قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت کا مسئلہ

ایسا معلوم ہوتا ہے کہ محض بلاک کی گیس کی حد میں اضافہ ہی قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت کے تمام مسائل کو حل کر دے گا۔ سیلنگ جتنی اونچی ہو گی، مذکورہ وقت میں اتنی ہی زیادہ ٹرانزیکشنز انجام دی جا سکیں گی، ہے نا؟

افسوس، کہ Ethereum کی کلیدی خصوصیات پر سمجھوتہ کیے بغیر ایسا کرنا ممکن نہیں۔ Vitalin Buterin نے اس نازک توازن کی تفصیل بیان کرنے کے لیے Trilemma (ذیل میں بصری مظاہرہ کیا گیا ہے) نامی بلاک چین پیش کی جو بلاک چینز کے لیے قائم کرنا لازم ہے۔

بلاک چین Trilemma کی قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت (1)، سکیورٹی (2)، اور غیر مرکزیت (3)۔


مندرجہ بالا تین خصوصیات میں سے دو کو منتخب کرنے سے، تیسری کی کمی باقی رہے گی۔ Ethereum اور Bitcoin جیسی بلاک چینز سکیورٹی اور غیر مرکزیت کو ترجیح دیتی ہیں۔ ان کے رضامندی کے الگورتھمز ان نیٹ ورکس کی سکیورٹی کو یقینی بناتے ہیں، جو ہزاروں نوڈز سے مل کر بنے ہیں، لیکن یہ قابلِ اسکیل ہونے کی خراب صلاحیت کا سبب بنتا ہے۔ اس قدر زیادہ نوڈز کی جانب سے ٹرانزیکشنز کی توثیق اور وصولی کے سبب، سسٹم کی رفتار اپنے مرکزی متبادلات کے مقابلے میں سست ہوتی ہے۔
ایک اور منظر نامے میں، بلاک گیس کی حد کو اٹھایا جا سکتا ہے تاکہ نیٹ ورک سکیورٹی اور قابلِ اسکیل ہونے کی صلاحیت حاصل کر لے، لیکن پھر یہ اس قدر غیر مرکزی نہیں رہے گا۔ 

اس کی وجہ یہ ہے کہ کسی بلاک میں زیادہ ٹرانزیکشنز بڑے بلاکس کا سبب بنتی ہیں۔ اس کے باوجود، نیٹ ورک پر موجود نوڈز کو انہیں سلسلہ وار انداز میں ڈاؤن لوڈ کرنے اور پھیلانے کی ضرورت ہوتی ہے۔ اور ہارڈ ویئر پر یہ عمل شدید ثابت ہوتا ہے۔ جب بلاک کی گیس کی حد میں اضافہ ہوتا ہے، تو نوڈز کے لیے بلاکس کی توثیق، اسٹور کرنا، اور نشر کرنا مزید مشکل ہو جاتا ہے۔

نتیجتاً، آپ ایسے نوڈز کی توقع کریں گے جو نیٹ ورک سے ڈراپ آف ہونے تک برقرار نہیں رہ پائے۔ اس انداز میں جاری رکھنے سے، مضبوط نوڈز کا ایک معمولی سا حصہ ہی شرکت کے قابل ہو گا – جس کی وجہ سے زیادہ مرکزیت پیدا ہو گی۔ اس کے نتیجے میں آپ کو ایک ایسی بلاک چین کا سامنا ہو سکتا ہے، جو محفوظ اور قابلِ اسکیل تو ہو گی، لیکن غیر مرکزی نہیں ہو گی۔

آخر میں، ہم ایک ایسی بلاک چین کا تصور کر سکتے ہیں جو غیر مرکزیت اور قابلِ اسکیل ہونے کی صلاحیت پر توجہ مرکوز کرتی ہے۔ تیز اور غیر مرکزی ہونے کے حوالے سے، جب زیر استعمال رضامندی کے الگورتھمز کی بات آتی ہے، تو کچھ ایسی قربانیاں دینی پڑتی ہیں، جو کمزور سکیورٹی کا سبب بن سکتی ہیں۔


Ethereum کتنی ٹرانزیکشنز پر عمل درآمد کر سکتا ہے؟

حالیہ سالوں میں، Ethereum شاذ و نادر ہی دس ٹرانزیکشنز فی سیکنڈ (TPS) سے آگے بڑھ پایا ہے۔ ایک ایسے پلیٹ فارم کے لیے یہ تعداد حیرت انگیز طور پر کم ہے، جو "عالمی کمپیوٹر" بننے کا عزم رکھتا ہے۔
اگرچہ، اسکیلنگ کے حل ایک طویل عرصے سے Ethereum کے روڈ میپ کا حصہ رہے ہیں۔ پلازما اسکیلنگ کے حل کی ایک مثال ہے۔ یہ Ethereum کی افادیت میں اضافے کا عزم رکھتی ہے، لیکن یہ تکنیک دیگر بلاک چین کے نیٹ ورکز پر بھی لوگو کی جا سکتی ہے۔


Ethereum 2.0 کیا ہے؟

اپنی تمام تر استعداد کے باوجود، فی الوقت Ethereum میں خاطر خواہ کمزوریاں موجود ہیں۔ ہم قابلِ اسکیل ہونے کی صلاحیت کے مسئلے پر پہلے ہی تبادلہ خیال کر چکے ہیں۔ مختصراً، اگر Ethereum کا مقصد نئے مالیاتی سسٹم کا لازمی جزو بننا ہے، تو اسے فی سیکنڈ بہت زیادہ ٹرانزیکشنز پر عمل کاری قابل ہونے کی ضرورت ہو گی۔ نیٹ ورک کی منقسم ماہیت ہوتے ہوئے، اس مسئلے کو حل کرنا انتہائی مشکل ہے، اور Ethereum کے ڈیویلپرز کئی سالوں سے اس پر غور و خوض کر رہے ہیں۔

ایک ات تو طے ہے، کہ نیٹ ورک کو خاطر خواہ حد تک مرکزی رکھنے کے لیے، حدود کو لازماً نافذ کیا جانا چاہیئے۔ کسی نوڈ کو آپریٹ کرنے کے تقاضے جتنے زیادہ ہوتے ہیں، اس میں شرکاء اتنے ہی کم ہوں گے، اور نیٹ ورک اتنا ہی مرکزی بن جائے گا۔ لہٰذا، Ethereum کی عمل کاری کے قابل ٹرانزیکشنز میں اضافہ سسٹم کی سلامتی کے لیے خطرہ پیدا کر سکتا ہے، کیونکہ یہ نوڈز پر دباؤ میں بھی اضافہ کر دے گا۔

Ethereum (اور پروف آف ورک کی دیگر کرپٹو کرنسیز) پر ایک اور تنقید یہ کی جاتی ہے کہ یہ ناقابل یقین حد تک زیادہ وسائل طلب کرتی ہے۔ بلاک چین میں بلاک کو کامیابی کے ساتھ شامل کرنے کے لیے، ان کے لیے مائن کرنا لازم ہے۔ اگرچہ، اس طرح سے بلاک تخلیق کرنے کے لیے، ان کو جلد از جلد ایسی کمپیوٹیشنز لازماً انجام دینی چاہیئں جو بجلی کی زیادہ مقدار خرچ کرتی ہیں۔

مندرجہ بالا مسائل کے حل کے لیے، اپگریڈز کا ایک بڑا سیٹ تجویز کیا جا چکا ہے، جو مجموعی طور پر Ethereum 2.0 (یا ETH 2.0) کہلاتا ہے۔ مکمل طور پر نافذ ہونے کے بعد، ETH 2.0 کو نیٹ ورک کی کارکردگی کو بہت بہتر کرنا چاہیئے۔


Ethereum شارڈنگ سے کیا مراد ہے؟

جیسا کہ اوپر بیان کیا جا چکا ہے، ہر نوڈ مکمل بلاک چین کی کاپی کو اسٹور کرتا ہے۔ اس کی ہر توسیع کے وقت، تمام نوڈز کو لازماً اپڈیٹ ہونا چاہیئے، جو کہ ان کی بینڈ وڈتھ اور دستیاب میموری کو خرچ کرتی ہے۔

شارڈنگ نامی طریقہ کار کو استعمال کرتے ہوئے، ہو سکتا ہے اس کی مزید ضرورت نہ رہے۔ اس نام سے مراد نیٹ ورک کو نوڈز کے ذیلی سیٹس میں تقسیم کرنے کا عمل ہے – یہ ہمارے شارڈز ہیں۔ ان میں سے ہر شارڈ اپنے ذاتی ٹرانزیکشنز اور معاہدوں پر عمل کاری کرے گا، لیکن اس کے باوجود ضرورت کے مطابق شارڈز کے وسیع تر نیٹ ورک سے مواصلت نہیں کر سکتا۔ چونکہ ہر شارڈ کی آزادانہ توثیق ہوتی ہے، اس لیے دیگر شارڈز سے ان کے لیے مزید ڈیٹا کو اسٹور کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔

مارچ 2020 میں نیٹ ورک بمقابلہ شارڈنگ کے نفاذ کے بعد نیٹ ورک۔


شارڈنگ اسکیلنگ کے سب سے پیچیدہ طریقوں میں سے ایک ہے جس کو ڈیزائن اور نافذ کرنے کے لیے بہت زیادہ کام کی ضرورت ہوتی ہے۔ تاہم، اگر کامیابی سے نفاذ کی صورت میں، یہ بھی سب سے زیادہ مؤثر چیزوں میں سے ایک ہو گا، جس سے نیٹ ورک کی تھرو پٹ صلاحیت میں اضافہ ہو گا۔


Ethereum پلازما کیا ہوتا ہے؟

Ethereum پلازما وہ چیز ہے جسے ہم آف چین قابل اسکیل صلاحیت کا حل کہتے ہیں - یعنی اس کا مقصد ٹرانزیکشن کو بلاک چین سے دور کر کے ٹرانزیکشن تھرو پٹ کو بڑھانا ہے۔ اس تناظر میں، سائیڈ چینز اور ادائیگی کے چینلز کے ساتھ اس کی کچھ مماثلتیں ہوتی ہیں۔

پلازما کے ذریعے، Ethereum کے مرکزی بلاک چین میں ثانوی چینز کو اینکر کیا جاتا ہے، لیکن یہ مواصلت کو کم سے کم سطح پر رکھتے ہیں۔ یہ کم و بیش آزادانہ طور پر کام کرتے ہیں، اگرچہ صارفین اب بھی تنازعات کے تصفیے اور ثانوی چینز پر اپنی سرگرمیاں "مکمل" کرنے کے لیے اب بھی مرکزی چین پر انحصار کرتے ہیں۔

نوڈز کے اسٹور کرنے کے لیے لازمی ڈیٹا کی مقدار کو کم کرنا Ethereum کی کامیاب اسکیلنگ کے لیے از حد ضروری ہے۔ پلازما اپروچ ڈویلپرز کو مرکزی چین پر اسمارٹ معاہدے میں اپنی "چائلڈ" چینز کے کام کا خاکہ بنانے کی اجازت دیتی ہے۔ اس کے بعد، یہ معلومات یا طریقوں کے ذریعے ایسی ایپلیکیشنز بنانے کے لیے آزاد ہوتے ہیں جو مرکزی چین پر اسٹور کرنے/چلانے کے حوالے سے بہت مہنگی ہوں گی۔

پلازما کے مفصل تعارف کے لیے، چیک کریں کہ Ethereum پلازما کیا ہے؟


Ethereum رول اپس کیا ہوتے ہیں؟

رول اپس اس تناظر میں پلازما سے مماثل ہوتے ہیں کہ یہ ٹرانزیکشنز کو مرکزی بلاک چین سے باہر لے جا کر Ethereum کو اسکیل کرنے کا عزم رکھتے ہیں۔ تو، یہ کیسے کام کرتے ہیں؟ 
مرکزی چین پر ایک ہی معاہدہ ثانوی چین پر تمام فنڈز کو ہولڈ کرتا ہے اور اس چین کی موجودہ حالت کا کرپٹو گرافک ثبوت رکھتا ہے۔ مین نیٹ کے معاہدے میں ایک بانڈ داخل کرنے والے ثانوی چین کے آپریٹرز اس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ صرف درست حالت میں منتقلیاں ہی مین نیٹ معاہدے کے لیے مختص کی جائیں۔ مرکزی تصور یہ ہے کہ، چونکہ اس حالت کو آف چین برقرار رکھا جاتا ہے، اس لیے بلاک چین پر ڈیٹا کو اسٹور کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔ تاہم، پلازما اور رول اپس کے مابین کلیدی فرق یہ ہے کہ ٹرانزیکشنز مرکزی چین پر جمع کروائی جاتی ہیں۔ ٹرانزیکشن کی ایک خاص قسم کو استعمال کرتے ہوئے، ٹرانزیکشنز کی ایک بڑی تعداد کو مجموعی طور پر ایک خاص بلاک میں "رول اپ" (یکجا) کیا جا سکتا ہے جو کہ رول اپ بلاک کہلاتا ہے۔   
رول اپ کی دو اقسام ہوتی ہیں: پر امید اور ZK رول اپ۔ دونوں مختلف طریقوں سے حالت کی تبدیلیوں کے ضمن میں درستگی کی ضمانت دیتے ہیں۔ 
ZK رول اپس ایک کرپٹو گرافک توثیقی طریقہ کار کو استعمال کرتے ہوئے ٹرانزیکشنز کو جمع کرواتے ہیں جسے معلومات فراہم کیے بنا توثیق کرنے والے ثبوت کہا جاتا ہے۔ مزید مفصل انداز میں، اس کے لیے ایک حکمت عملی موجود ہے جسے zk-SNARK کہتے ہیں۔ ہم یہاں اس بات کی تفصیلات میں نہیں جائیں گے کہ یہ کیسے کام کرتا ہے، لیکن رول اپس کے لیے اس کے استعمال کا طریقہ پیش ہے۔ یہ مختلف فریقین کے لیے ایک ایسا طریقہ ہے جس کے ذریعے وہ ایک دوسرے پر معلومات کی حقیقت ظاہر کی بغیر یہ ثابت کر سکتے ہیں کہ ان کے پاس معلومات کا ایک خاص حصہ موجود ہے۔ 

ZK رول اپس کے معاملے میں، یہ معلومات حالت کی وہ تبدیلیاں ہوتی ہیں جنہیں مرکزی چین پر جمع کروایا جاتا ہے۔ اس کا ایک بڑا فائدہ یہ ہے کہ یہ عمل فوراً واقع ہو سکتا ہے، اور ورچوئل طور پر خراب حالت میں اندراجات کا کوئی امکان نہیں ہوتا۔ 

امید افزاء رول اپس زیادہ لچک پذیری کے لیے قابلِ اسکیل ہونے کی کچھ صلاحیت کو قربان کرتے ہیں۔ Optimistic Virtual Machine (OVM) کہلائے جانے والی ایک مشین کو استعمال کرتے ہوئے، یہ اسمارٹ معاہدوں کو ثانوی چینز پر چلنے کی اجازت دیتے ہیں۔ دوسری جانب، اس بات کا کوئی کرپٹو گرافک ثبوت نہیں ہوتا کہ مرکزی چین پر جمع کروائی گئی حالت کی تبدیلی درست ہے۔ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے، صارفین کو مرکزی چین پر جمع کروائے گئے غیر درست بلاکس کو چیلنج کرنے اور مسترد کرنے کی اجازت دینے کے لیے تھوڑی سی تاخیر کی جاتی ہے۔ 


Ethereum پروف آف اسٹیک (PoS) کیا ہے؟

پروف آف اسٹیک (PoS) بلاکس کی توثیق کے لیے پروف آف ورک کا متبادل طریقہ ہے۔ پروف آف اسٹیک کے سسٹم میں، بلاکس کو کچھ خاص مائن نہیں کیا جاتا، بلکہ منٹ کیا جاتا ہے (جو بعض اوقات فورجڈ کہلاتا ہے)۔ ہیش کی طاقت کے ساتھ مقابلہ کرنے والے مائنرز کے بجائے، امیدوار بلاک کی توثیق کے لیے کسی نوڈ (یا توثیق کار) کو سلسلہ وار انداز میں اتفاقی طور پر منتخب کیا جاتا ہے۔ درستگی سے ہو جانے کی صورت میں، وہ اس بلاک کی تمام ٹرانزیکشن کی فیس وصول کریں گے، اور پروٹوکول کے لحاظ سے، انہیں ممکنہ طور پر ایک بلاک کا انعام بھی حاصل ہو سکتا ہے۔

چونکہ اس میں کسی قسم کی مائننگ شامل نہیں ہوتی، اس لیے پروف آف اسٹیک کو ماحول کے لیے نسبتاً کم نقصان دہ تصور کیا جاتا ہے۔ توثیق کاران اس قدر توانائی خرچ نہیں کرتے جتنی کہ مائنرز کرتے ہیں، اور اس کے بجائے صارفی درجے کی ہارڈ ویئر پر بلاکس کو منٹ کر سکتے ہیں۔

Ethereum کا معمول ایک Casper نامی اپ گریڈ کے ساتھ، Ethereum 2.0 کے ایک حصے کے طور پر PoW سے PoS میں منتقلی کے لیے مقرر کیا جاتا ہے۔ گوکہ کسی واضح تاریخ کا تعین ابھی باقی ہے، تاہم پہلا حصہ ممکنہ طور پر 2020 میں لانچ کیا جائے گا۔


Ethereum اسٹیکنگ کیا ہے؟

پروف آف ورک کے پروٹوکولز میں، مائنرز، نیٹ ورک کی سکیورٹی کی یقین دہانی کرواتے ہیں۔ مائنرز دھوکہ نہیں دیں گے، کیونکہ اس سے ان کی بجلی ضائع ہو گی اور وہ ممکنہ انعامات سے محروم ہو سکتے ہیں۔ پروف آف اسٹیک میں، کوئی واضح گیم تھیوری نہیں ہے، اور نیٹ ورک کی سکیورٹی کو یقینی بنانے کے لیے مختلف کرپٹو معیشت کے اقدامات اٹھائے جاتے ہیں۔
زیاں کے خطرے کے علاوہ، بددیانتی پر مبنی رویے سے جو چیز روکتی ہے، وہ فنڈز سے محرومی کا خطرہ ہے۔ توثیق کاران کو توثیق کی اہلیت کے لیے کوئی اسٹیک (یعنی کوئی ٹوکن ہولڈنگ) داخل کرنا لازم ہوتا ہے۔ یہ Ether کی طے شدہ رقم ہوتی ہے جو نوڈ کی جانب سے دھوکہ دہی کی کوشش کی صورت میں ضائع ہو جاتی ہے، یا اگر نوڈ جواب نہ دے یا آف لائن رہے تو یہ آہستہ آہستہ ختم ہو جاتی ہے۔ تاہم، اگر توثیق کار اضافی نوڈز کو چلاتا ہے، تو وہ زیادہ انعامات حاصل کرنے کے حقدار ہوتے ہیں۔


Ethereum پر اسٹیک کرنے کے لیے مجھے کتنے ETH درکار ہیں؟

Ethereum کے لیے تخمینہ شدہ فی توثیق کار کم از کم اسٹیک 32 ETH ہے۔ یہ 51% حملے کی کوشش کی قیمت کو بلند رکھنے کے لیے ہی اس قدر زیادہ مقرر کیا جاتا ہے۔


Ethereum پر اسٹیک کرنے کے لیے میں کتنے ETH کما سکتا ہوں؟

اس سوال کا جواب دینا آسان نہیں ہے۔ بلاشبہ، یہ آپ کے اسٹیک پر مبنی ہوتا ہے، لیکن اس کا دارومدار نیٹ ورک پر اسٹیک کردہ ETH کی کُل رقم اور افراط زر کی شرح پر بھی ہوتا ہے۔ ایک سرسری اندازے کے مطابق، موجودہ حسابات تقریباً 6% سالانہ منافع کی نوید سناتے ہیں۔ یہ بات ذہن نشین رکھیں کہ یہ فقط ایک تخمینہ ہے، اور مستقبل میں تبدیل ہو سکتا ہے۔


اسٹیکنگ کے دوران میرے ETH کتنی دیر لاک رہیں گے؟

اپنے توثیق کار سے اپنے ETH نکلوانے کے لیے ایک قطار موجود ہو گی۔ اگر کوئی قطار نہیں، تو رقم نکلوانے کا کم از کم وقت 18 گھنٹے ہے، لیکن اس کو متحرک طور پر اس بنیاد پر ایڈجسٹ کیا جاتا ہے کہ کسی دیے گئے وقت میں کتنے توثیق کاران رقم نکلوا رہے ہیں۔


کیا ETH کی اسٹیکنگ میں خطرات لاحق ہیں؟

چونکہ آپ نیٹ ورک کے ایسے توثیق کار ہیں جو نیٹ ورک کی سکیورٹی کو برقرار رکھنے کا ذمہ دار ہے، لہٰذا کچھ خطرات پر غور کرنا ضروری ہے۔ اگر آپ کا توثیق کار نوڈ ایک طویل مدت کے لیے آف لائن چلا جاتا ہے، تو آپ اپنے ڈپازٹ کے خاطر خواہ حصے سے محروم ہو سکتے ہیں۔ مزید برآں، اگر کسی بھی پوائنٹ پر آپ کے ڈپازٹ کی سطح 16 ETH سے کم ہوتی ہے، تو آپ کو توثیق کار سیٹ سے ہٹا دیا جائے گا۔

خطرے کے مزید منظم عنصر پر غور کرنا بھی اہمیت کا حامل ہے۔ پروف آف اسٹیک کو اس سے قبل اتنے بڑے پیمانے پر نافذ نہیں کیا گیا، لہٰذا ہم مکمل یقین سے نہیں کہہ سکتے کہ یہ ناکام نہیں ہو گا۔ سافٹ ویئر کو ہمیشہ بگز اور خطرات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے، اور اس کا اثر تباہ کن ہو سکتا ہے – بالخصوص جب اربوں کی تعداد میں ڈالرز اسٹیک پر ہوں۔



باب 5 - Ethereum اور غیر مرکزی فنانس (DeFi)

مشمولات


غیر مرکزی فنانس (DeFi) کیا ہوتا ہے؟

غیر مرکزی فنانس (یا سادہ لفظوں میں، DeFi) ایک ایسی تحریک ہے جو مالیاتی ایپلیکیشنز کو غیر مرکزی بنانے کا عزم رکھتی ہے۔ DeFi کو عوامی، اوپن سورس کے بلاک چینز پر تیار کیا جاتا ہے جن تک انٹرنیٹ کنکشن کا حامل کوئی بھی فرد (عوامی) رسائی حاصل کر سکتا ہے۔ یہ ممکنہ طور پر اربوں کی تعداد میں لوگوں کو اس نئے عالمی مالیاتی سسٹم پر لانے کے لیے ایک اہم عنصر ہے۔ 
ابھرتے ہوئے DeFi ایکو سسٹم میں، صارفین پیئر ٹو پیئر (P2P) نیٹ ورکس اور غیر مرکزی ایپلیکیشنز (DApps) کے ذریعے اسمارٹ معاہدوں اور ایک دوسرے کے ساتھ تعامل انجام دیتے ہیں۔ DeFi کا ایک زبردست فائدہ یہ ہے کہ ان تمام امور کو ممکن بنانے کے باوجود بھی، صارفین تمام اوقات میں اپنے فنڈز کی ملکیت کو برقرار رکھتے ہیں۔ 

سادہ لفظوں میں، غیر مرکزی فنانس (DeFi) کی تحریک ایک ایسا نیا مالیاتی سسٹم تخلیق کرنے کا عزم رکھتی ہے جو موجودہ سسٹم میں درپیش حدود سے پاک ہو گا۔ موجودہ حالات میں، اپنی نسبتاً زیادہ غیر مرکزیت اور ایک بڑی ڈویلپر بیس کی وجہ سے، زیادہ تر DeFi فی الحال Ethereum پر تیار کیا جا رہا ہے۔  


غیر مرکزی فنانس (DeFi) کو کس مقصد کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے؟

آپ کو شاید پہلے ہی علم ہو، لیکن Bitcoin کے بہترین فوائد میں سے ایک یہ ہے کہ نیٹ ورک کے آپریشن کو منظم کرنے کے لیے کسی مرکزی فریق کی ضرورت نہیں ہوتی۔ لیکن اگر ہم اسے اپنے مرکزی خیال کے طور پر استعمال کریں اور اس پر پروگرام کیے جانے کے قابلِ ایپلیکیشنز بنائیں تو کیا ہو گا؟ DeFi ایپلیکیشنز کی یہی استعداد ہوتی ہے۔ ان میں کوئی مرکزی کوآرڈینیٹرز یا ثالثین نہیں ہوتے، اور ناکامی کا بھی کوئی نقطہ مقرر نہیں ہوتا۔ 

جیسا کہ اوپر بیان کیا جا چکا ہے، کہ DeFi کے اولین فوائد میں سے ایک اس تک کھلی رسائی ہے۔ دنیا بھر میں ایسے اربوں لوگ موجود ہیں جن کو کسی قسم کی اچھی مالیاتی سروسز تک رسائی حاصل نہیں۔ کیا آپ تصور کر سکتے ہیں کہ آپ اپنی مالیات کے حوالے سے کسی بھی قسم کی ضمانت کے بغیر اپنی روزمرہ کی سرگرمیوں کی نظم کاری کس طرح سے کریں گے؟ ایسے اربوں لوگ موجود ہیں جو اس انداز میں رہتے ہیں، اور حتمی طور پر، اسی ڈیموگرافک میں DeFi اپنی خدمات سرانجام دینے کے لیے کوشاں ہے۔


کیا غیر مرکزی فنانس (DeFi) کبھی مین اسٹریم تک پہنچ پائے گا؟

یہ سب کچھ کافی اچھا معلوم ہوتا ہے، لیکن DeFi اب تک دنیا میں مقبول کیوں نہیں ہوا؟ دراصل، فی الوقت، اکثر DeFi ایپلیکیشنز استعمال میں مشکل ہیں، پیچیدہ ہیں، مسلسل بند ہوتی رہتی ہیں، اور محض تجرباتی مراحل میں ہیں۔ جیسا کہ ثابت ہو چکا ہے، کہ اس ایکو سسٹم کے فریم ورکس کی انجینیئرنگ بھی انتہائی مشکل ہے، خاص طور پر ڈیویلپمنٹ کے منقسم ماحول میں۔

DeFi ایکو سسٹم کی تعمیر سے متعلقہ تمام چیلنجز کو حل کرنا سافٹ ویئر انجینئرز، گیم تھیورسٹ، میکانزم ڈیزائنرز اور بہت سے لوگوں کے لیے ایک طویل جدوجہد ہے۔ اسی لیے، اس بات کا تعین ابھی باقی ہے کہ آیا DeFi ایپلیکیشنز کبھی مین اسٹریم قبولیت حاصل کر پائیں گی۔


غیر مرکزی فنانس (DeFi) کی کون سی ایپلیکیشنز موجود ہیں؟

غیر مرکزی فنانس (DeFi) کے استعمال کی سب سے مشہور صورتوں میں سے ایک اسٹیبل کوائنز ہے۔ بنیادی طور پر، یہ بلاک چین پر موجود ایسے ٹوکنز ہوتے ہیں جن کی قیمت حقیقی دنیا کے کسی اثاثے جیسا کہ فیاٹ کرنسی سے پیگ شدہ یوتی ہے۔ مثال کے طور پر، BUSD کو USD کی قیمت سے پیگ کیا جاتا ہے۔ جو چیز ان ٹوکنز کو استعمال کرنے میں آسان بناتی ہے وہ ان کی بلاک چین پر موجودگی ہے، جس کے سبب انہیں محفوظ اور ٹرانسفر کرنا بہت آسان ہے۔
ان کا ایک اور مقبول استعمال ادھار پر دینے کا عمل ہے۔ ایسی بہت زیادہ پیئر ٹو پیئر (P2P) سروسز موجود ہیں جو آپ کو دوسروں کو اپنے فنڈز ادھار دینے اور بدلے میں سود کی ادائیگیاں جمع کرنے کی اجازت دیتی ہیں۔ درحقیقت، ایسا کرنے کا آسان ترین طریقہ Binance ادھار کے ذریعے ہے۔ آپ کو بس اپنے ادھار دینے والے والیٹ میں اپنے فنڈز کو ٹرانسفر کرنا ہوتا ہے، اور آپ اگلے ہی روز سے سود کی کمائی شروع کر سکتے ہیں!
تاہم، دلائل کے تناظر میں DeFi کا سب سے دلچسپ حصہ وہ ایپلیکیشنز ہیں جن کی زمرہ بندی کرنا مشکل ہے۔ ان میں تمام اقسام کی پیئر ٹو پیئر، غیر مرکزی مارکیٹ پلیسز شامل ہو سکتی ہیں جہاں صارفین منفرد کرپٹو کی قابل جمع چیزوں اور دیگر ڈیجیٹل آئٹمز کا تبادلہ کر سکتے ہیں۔ یہ مصنوعی اثاثہ جات کی تخلیق کو بھی فعال کر سکتی ہیں، جہاں کوئی بھی شخص کسی بھی قیمتی چیز کے لیے مارکیٹ تخلیق کر سکتا ہے۔ استعمال کی دیگر صورتوں میں پیشگوئی کی مارکیٹس، ڈیریویٹوز، اور مزید بہت کچھ شامل ہو سکتی ہیں۔


Ethereum پر غیر مرکزی ایکسچینجز (DEXs)

ایک غیر مرکزی ایکسچینج (DEX) ایسا مقام ہوتا ہے جو ٹریڈز کو صارف کے والیٹس کے مابین براہ راست ٹریڈز کی اجازت دیتا ہے۔ جب آپ ایک مرکزی ایکسچینج، یعنی Binance پر ٹریڈ کرتے ہیں، تو آپ Binance کو اپنے فنڈز بھیجتے ہیں، اور اس کے اندرونی سسٹمز کے ذریعے ٹریڈ کرتے ہیں۔
غیر مرکزی ایکسچینجز مختلف ہیں۔ اسمارٹ معاہدوں کے سحر کے ذریعے، یہ آپ کو براہ راست اپنے کرپٹو والیٹ سے ٹریڈ کرنے کے قابل بناتے ہیں، اور ایکسچینج ہیکس اور دیگر خطرات کے امکان کو ختم کر دیتے ہیں۔
غیر مرکزی ایکسچینج کی ایک بہترین مثال Binance DEX ہے۔ Ethereum پر تیار ہونے والی کچھ دیگر قابل ذکر مثالیں Uniswap، Kyber نیٹ ورک، اور IDEX ہیں۔ ان میں سے کئی تو آپ کو زیادہ سے زیادہ سکیورٹی فراہم کرنے کے لیے ہارڈ ویئر والیٹ سے ٹریڈ کرنے کی بھی اجازت دیں گی۔

مرکزی بمقابلہ غیر مرکزی ایکسچینجز۔


اوپر، ہم مرکزی اور غیر مرکزی ایکسچیجز کے مابین فرق کو واضح کر چکے ہیں۔ بائیں جانب، ہم دیکھ سکتے ہیں کہ Binance صارفین کے مابین ٹرانزیکشنز کے وسط میں کھڑی ہے۔ تو اگر ایلس ٹوکن A کو باب کے ٹوکن B کے عوض ٹریڈ کرنا چاہتی ہے، تو اسے پہلے ایکسچینج پر اپنے اثاثے ڈپازٹ کرنا ہوں گے۔ ٹریڈ کے بعد، Binance اسی کے مطابق ان کے بیلنسز کو دوبارہ مختص کرے گی۔

تاہم، دائیں جانب، ایک غیر مرکزی ایکسچینج ہے۔ آپ نوٹ کریں گے، کہ کوئی تیسرا فریق ٹرانزیکشن میں شامل نہیں۔ اس کے بجائے، اسمارٹ معاہدے کا استعمال کرتے ہوئے ایلس کے ٹوکن کو باب کے لیے براہ راست سواپ کیا جاتا ہے۔ اس طرح، کسی بھی فریق کو کسی درمیانی فریق پر بھروسہ کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی، کیونکہ ان کے معاہدے کی شرائط خود کار طور پر قابل نفاذ ہیں۔

فروری 2020 تک، Ethereum بلاک چین پر DEXs سب سے زیادہ استعمال ہونے والی ایپلیکیشنز کے طور پر سامنے آئی ہیں۔ تاہم، مرکزی ایکسچینجز کی نسبت ٹریڈنگ کا حجم ابھی بھی کم ہے. اس کے باوجود، اگر DEX ڈیویلپرز اور ڈیزائنرز صارف کے تجربے کو زیادہ خوش آئند قرار دیتے ہیں، تو DEXs مستقبل میں مرکزی ایکسچینجز کا مقابلہ کر سکتے ہیں۔



Ethereum نیٹ ورک میں حصہ لینا

مشمولات


Ethereum 2.0 کیا ہے؟

"Ethereum نوڈ" ایک ایسی اصطلاح ہے جو کسی ایسے پروگرام کی وضاحت کے لیے استعمال کی جا سکتی ہے جو Ethereum نیٹ ورک کے ساتھ کسی طرح سے تعامل کرتا ہے۔ ایک Ethereum نوڈ ایک سادہ موبائل فون والیٹ ایپلیکیشن سے لے کر کسی ایسے کمپیوٹر تک کچھ بھی ہو سکتی ہے جو بلاک چین کی مکمل کاپی کو اسٹور کرتی ہے۔ 

تمام نوڈز کسی نہ کسی طرح سے مواصلاتی پوائنٹ کے طور پر کام کرتے ہیں، لیکن Ethereum کے نیٹ ورک پر مختلف قسم کے نوڈز موجود ہیں۔


Ethereum 2.0 کیسے کام کرتا ہے؟

Bitcoin کے برعکس، Ethereum کے پاس اس کے نفاذ کے حوالے کے طور پر ایک بھی پروگرام موجود نہیں ہے۔ جہاں Bitcoin کے ایکو سسٹم میں اس کے مرکزی نوڈ کے طور پر Bitcoin Core mwjwd ہے، وہیں Ethereum کے پاس بھی اپنے پیلے پیپر کی بنیاد پر انفرادی (لیکن مطابقت پذیر) پروگراموں کی ایک رینج موجود ہے۔ مقبول آپشنز میں Geth اور Parity شامل ہیں۔


Ethereum کے مکمل نوڈز

Ethereum نیٹ ورک کے ساتھ اس طریقے سے انٹرفیس کرنے کے لیے کہ وہ آپ کو بلاک چین ڈیٹا کو آزادانہ طور پر درست کرنے کی اجازت دے، آپ کو مندرجہ بالا سافٹ ویئر جیسے کسی سافٹ ویئر کا استعمال کرتے ہوئے ایک مکمل نوڈ چلانے کی ضرورت ہو گی۔ 

سافٹ ویئر دیگر نوڈز سے بلاکس کو ڈاؤن لوڈ کرے گا اور اس بات کی توثیق کرے گا کہ آیا شامل کردہ ٹرانزیکشنز درست ہیں۔ یہ ان تمام اسمارٹ معاہدوں کو بھی چلائے گا جو اس بات کو یقینی بنانے کے لیے بلائے گئے ہیں کہ آپ کو وہی معلومات موصول ہو رہی ہیں جو دوسرے پیئرز کو مل رہی ہیں۔ اگر سب کچھ حسبِ منشا ہو رہا ہے، تو ہم ہر نوڈ سے اس بات کی توقع رکھ سکتے ہیں کہ ان کی مشینوں پر بلاک چین کی مماثل کاپی موجود ہو گی۔

مکمل نوڈز Ethereum کی فعالیت کے حوالے سے اہمیت کے حامل ہیں۔ دنیا بھر میں تقسیم شدہ متعدد نوڈز کے بغیر، نیٹ ورک اپنی سینسر شپ سے مزاحم اور غیر مرکزی خصوصیات سے محروم ہو جائے گا۔


Ethereum کے ہلکے نوڈز

مکمل نوڈ کو چلانے کا عمل آپ کو نیٹ ورک کی صحت اور سکیورٹی میں براہ راست حصہ ڈالنے کا موقع دیتا ہے۔ لیکن ایک مکمل نوڈ کو کام کرنے کے ساتھ فوقتاً فوقتاً نگہداشت کے لیے اکثر ایک الگ مشین کی ضرورت ہوتی ہے۔ ہلکے نوڈز ان صارفین کے لیے ایک بہتر آپشن ہو سکتے ہیں جو مکمل نوڈ کو چلانے سے قاصر ہیں (یا وہ اسے استعمال نہ کرنے کو ترجیح دیتے ہیں)۔

جیسا کہ نام سے ظاہر ہے، ہلکے نوڈز ہلکے وزن کے حامل ہوتے ہیں، یہ کم وسائل کو استعمال کرتے ہیں اور کم سے کم جگہ گھیرتے ہیں۔ اس طرح، وہ فون یا لیپ ٹاپ جیسی کم جگہ کی حامل ڈیوائسز پر چل سکتے ہیں۔ لیکن ان سہولیات کی کچھ قیمت بھی چکانا پڑتی ہے: ہلکے نوڈز مکمل طور پر کبھی کفایت نہیں کرتے۔ وہ بلاک چین کو مکمل طور پر سنک نہیں کرتے اور اس لیے انہیں متعلقہ معلومات پُر کرنے کے لیے مکمل نوڈز کی ضرورت ہوتی ہے۔

ہلکے نوڈز مرچنٹس، سروسز اور صارفین میں مقبول ہیں۔ انہیں ایسے منظرناموں میں ادائیگیاں کرنے اور وصول کرنے کے لیے بڑے پیمانے پر استعمال کیا جاتا ہے جہاں مکمل نوڈز کو غیر ضروری اور چلانے کے حوالے سے بہت مہنگا تصور کیا جاتا ہے۔

Ethereum کے مائننگ نوڈز

مائننگ نوڈ یا تو مکمل کلائنٹ یا پھر ہلکا ہو سکتا ہے۔ "مائننگ نوڈ" کی اصطلاح ٹھیک اس طرح سے استعمال نہیں کی جاتی جیسا کہ Bitcoin کے ایکو سسٹم میں اس سے مراد ہے، لیکن اس کے باوجود یہ ان شرکاء کی شناخت کے قابل ہے۔

Ethereum کو مائن کرنے کے لیے، صارفین کو اضافی ہارڈ ویئر کی ضرورت ہوتی ہے۔ ایک عمومی عمل میں مائننگ رِگ کی تعمیر شامل ہے۔ ان کے ذریعے، صارفین تیز رفتاری سے ڈیٹا ہیش کرنے کے لیے متعدد GPUs (گرافکس پروسیسنگ یونٹس) کو ایک ساتھ مربوط کرتے ہیں۔
مائنرز کے پاس دو آپشنز ہوتے ہیں: اکیلے مائننگ کرنا، یا مائننگ پول میں ایسا کرنا۔ اکیلے مائننگ کرنے کا مطلب یہ ہے کہ مائنر بلاکس کو تخلیق کرنے کے لیے اکیلے مائن کرتا ہے۔ اگر وہ کامیاب ہو جاتے ہیں، تو وہ اپنے مائننگ کے انعامات کسی اور کے ساتھ شیئر نہیں کرتے۔ متبادل طور پر، مائننگ پول میں شامل ہوتے وقت، وہ اپنی ہیشنگ کی طاقت کو دیگر صارفین کے ساتھ یکجا کرتے ہیں۔ اس سے ان کے لیے کسی بلاک کو تلاش کرنے کا امکان بڑھ جائے گا، لیکن انہیں پول کے ممبرز کے ساتھ اپنے انعامات تقسیم کرنے کی بھی ضرورت ہو گی۔


Ethereum نوڈ کو کیسے چلایا جاتا ہے

بلاک چین کے بہترین پہلوؤں میں سے ایک اس تک کھلی رسائی ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ کوئی بھی Ethereum نوڈ کو چلا سکتا ہے اور ٹرانزیکشنز اور بلاکس کی توثیق کر کے نیٹ ورک کو قوت فراہم کر سکتا ہے۔ 

Bitcoin کی طرح، ایسے بہت سے کاروباری ادارے موجود ہیں جو پلگ اینڈ پلے Ethereum نوڈز کی پیشکش کرتے ہیں۔ اگر آپ صرف نوڈ کو لے کر چلانا چاہتے ہیں تو یہ بہترین آپشن ہو سکتا ہے – تاہم، سہولت کے بدلے اضافی فیس کی ادائیگی کے لیے تیار رہیں۔
جیسا کہ بیان کیا جا چکا ہے، کہ Ethereum کے پاس Geth یا Parity جیسے نوڈ سافٹ ویئرز کے استعمال کی مختلف صورتیں موجود ہیں۔ اگر آپ اپنا ذاتی نوڈ چلانے کے خواہشمند ہیں، تو آپ کو اپنے چناؤ کردہ نفاذ کے عمل کو چلانے کے لیے سیٹ اپ کے طریقہ کار سے واقف ہونے کی ضرورت ہو گی۔
جب تک کہ آپ آرکائیول نوڈ نامی خصوصی نوڈ کو چلانے کے خواہشمند نہ ہوں، تو Ethereum کے مکمل نوڈ کو چلانے کے لیے ایک صارفی درجے کا لیپ ٹاپ ہی کافی ہو گا۔ نیز، بہتر یہ ہے کہ اپنی روزمرہ استعمال کی مشین کو استعمال نہ ہی کریں، کیونکہ یہ اس کی رفتار کو خاطر خواہ حد تک کم کر سکتا ہے۔ 

اپنے ذاتی نوڈ کو ان ڈیوائسز پر چلانا بہتر ہوتا ہے جو ہمیشہ آن لائن رہ سکتی ہیں۔ اگر آپ کا نوڈ آف لائن چلا جاتا ہے، تو دوبارہ آن لائن ہونے پر نیٹ ورک کے ساتھ مطابقت پذیر ہونے میں اسے خاطر خواہ وقت لگ سکتا ہے۔ اسی طرح، بہترین حل وہ ڈیوائسز ہوتی ہیں جو تیار کرنے میں سستی ہوتی ہیں اور ان کی مرمت آسانی سے ہو جاتی ہے۔ مثال کے طور پر، آپ Raspberry Pi پر بھی کسی ہلکے نوڈ کو چلا سکتے ہیں۔


Ethereum پر کیسے مائن کیا جائے

چونکہ نیٹ ورک جلد ہی پروف آف اسٹیک پر منتقل ہو رہا ہے، تو Ethereum پر مائننگ کا عمل طویل مدت کے لیےایک محفوظ فیصلہ نہیں ہو گا۔ منتقلی وقوع پذیر ہونے کے بعد، Ethereum کے مائنرز ممکنہ طور پر اپنے مائننگ کے ساز و سامان کو کسی اور نیٹ ورک پر منتقل کر دیں گے یا اسے مکمل طور پر بیچ دیں گے۔
پھر بھی، اگر آپ Ethereum کی مائننگ میں حصہ لینے کے خواہشمند ہوں، تو آپ کو GPUs یا ASICs جیسے خصوصی ہارڈ ویئر کی ضرورت پیش آئے گی۔ اگر آپ معقول منافع جات کی تلاش میں ہیں، تو بہت حد تک ممکن ہے کہ آپ کو ایک ذاتی بنائی گئی مائننگ رِگ اور سستی بجلی تک رسائی درکار ہو گی۔ علاوہ ازیں، آپ کو ایک Ethereum والیٹ سیٹ اپ کرنے اور اسے استعمال کرنے کے لیے مائننگ کے سافٹ ویئر کو ترتیب دینے کی ضرورت ہو گی۔ ان تمام امور کے لیے وقت اور پیسے کی خاطر خواہ سرمایہ کاری کی ضرورت ہو گی، لہٰذا اگر آپ چیلنج کے لیے تیار ہیں تو احتیاط سے فیصلہ کریں۔ 


Ethereum گیس کیا ہوتی ہے؟

ProgPoW سے مراد پروگرامیٹک پروف آف ورک ہوتا ہے۔ یہ Ethereum مائننگ کے الگورتھم، Ethash کی مجوزہ توسیع ہے جسے GPUs کو ASICs کے ساتھ زیادہ مسابقتی بنانے کی غرض سے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ 
ASIC سے مزاحمت ایک ایسا موضوع ہے جس پر Bitcoin اور Ethereum کمیونٹی دونوں میں سالوں تک دقیق بحث کی جا چکی ہے۔ Bitcoin کے معاملے میں، ASICs نیٹ ورک پر مائننگ کی غالب قوت بن چکے ہیں۔ 

تاہم، Ethereum پر ASICs موجود تو ہوتے ہیں، لیکن اتنے زیادہ نمایاں نہیں ہوتے – مائنرز کی قابلِ ذکر تعداد ابھی تک GPUs کو استعمال کر رہی ہے۔ اگرچہ، ہو سکتا ہے یہ صورتحال جلد تبدیل ہو جائے، کیونکہ کافی زیادہ کمپنیاں Ethereum ASIC کے مائنرز کو مارکیٹ میں لا رہی ہیں۔ لیکن ASICs کوئی مسئلہ کیوں پیدا کر سکتے ہیں؟ 

ایک لحاظ سے، ASICs نیٹ ورک کی غیر مرکزیت کو تباہ کن حد تک کم کر سکتے ہیں۔ اگر GPU مائنرز منافع بخش نہ ہوں اور انہیں اپنے مائننگ آپریشنز بند کرنے پڑیں، تو ہیش کا ریٹ مٹھی بھر مائنرز کے ہاتھوں میں یرغمال بن سکتا ہے۔ مزید برآں، ASIC چپس کو ڈویلپ کرنا مہنگا پڑتا ہے، اور صرف چند کمپنیوں کے پاس ایسا کرنے کی صلاحیتیں اور وسائل موجود ہیں۔ یہ چیز Ethereum مائننگ کی انڈسٹری کو محض چند کارپوریشنز کے ہاتھوں تک محدود بناتے ہوئے مصنوعہ سازی کے حوالے سے اجارہ داری کا خطرہ پیدا کر سکتی ہے۔
2018 سے ProgPow کے انضمام کا موضوع تنازعے کا شکار رہا ہے۔ اگرچہ بعض لوگوں کا خیال ہے کہ یہ Ethereum ایکو سسٹم کے لیے صحت مند ہو سکتا ہے، لیکن دیگر اس کے خلاف ہیں کیونکہ یہ ہارڈ فورک کا سبب بننے کا امکان رکھتا ہے۔ پروف آف اسٹیک پر آنے والی منتقلی کے ساتھ، یہ دیکھنا ابھی باقی ہے کہ آیا ProgPow کو کبھی نیٹ ورک پر نافذ کیا جا سکتا ہے۔


Ethereum کے سافٹ ویئر کو کون چلاتا ہے؟

Bitcoin کی طرح، Ethereum بھی عوامی ہوتا ہے۔ کوئی بھی شخص پروٹوکول کو از خود ڈویلپ کرنے، یا اس پر ایپلیکیشنز تخلیق کرنے کے حوالے سے آزاد ہوتا ہے۔ درحقیقت، بلاک چین اسپیس میں فی الوقت Ethereum کے پاس سب سے بڑی ڈیویلپر کمیونٹی ہے۔
وسائل جیسے Andreas Antonopoulos اور Gavin Wood کے Mastering Ethereum اور Ethereum.org کے ڈویلپر کے وسائل ان ڈویلپرز کے لیے بہترین نقطۂ آغاز ہیں جو اس میں شامل ہونے کے خواہشمند ہیں۔ 


Solidity کیا ہے؟

اسمارٹ معاہدوں کو ابتدائی طور پر 1990 کی دہائی میں بیان کیا گیا تھا، لیکن بلاک چینز پر ان کو فعال کرنے کی وجہ سے نت نئی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ 2014 میں Gavin Wood نے Solidity کو تجویز کیا تھا، اور اس کے بعد سے یہ Ethereum پر اسمارٹ معاہدے تیار کرنے کے لیے پروگرامنگ کی بنیادی زبان بن چکی ہے۔ لغوی اعتبار سے، یہ Java، JavaScript، اور C++ سے مماثل ہے۔
لازمی طور پر، Solidity ہی وہ چیز ہے جو ڈیویلپرز کے لیے ایسے کوڈ کو لکھنا ممکن بناتی ہے جسے ان ہدایات میں تقسیم کیا جا سکتا ہے جنہیں Ethereum ورچوئل مشین (EVM) سمجھ سکتی ہے۔ اگر آپ مزید گہرائی میں جا کر سمجھنا چاہیں کہ یہ کیسے کام کرتی ہے، تو شروعات کرنے کے لیے Solidity GitHub ایک اچھی جگہ ہو گی۔
واضح رہے کہ Ethereum ڈویلپرز کے لیے دستیاب ہونے والی زبانوں میں Solidity ہی واحد زبان نہیں۔ ایک اور مقبول آپشن Vyper بھی ہے، جو اپنی لغت کے اعتبار سے Python سے زیادہ مشابہت رکھتا ہے۔