اوسط حقیقی حد کیا ہے؟
امواد کا جدول
تعارف
اوسط حقیقی حد کیا ہے؟ 
آپ اوسط حقیقی حد کا حساب کیسے کرتے ہیں؟
کرپٹو کرنسی کے ٹریڈرز اوسط حقیقی حد کا استعمال کیوں کرتے ہیں؟
اوسط حقیقی حد استعمال کرنے کی خامیاں کیا ہیں؟
اختتامی خیالات 
اوسط حقیقی حد کیا ہے؟
ہوم
آرٹیکلز
اوسط حقیقی حد کیا ہے؟

اوسط حقیقی حد کیا ہے؟

جدید
شائع کردہ Sep 21, 2022اپڈیٹ کردہ Dec 23, 2022
4m

TL؛DR

اوسط حقیقی حد (ATR) ایک بتائی گئی مدت کے دوران مارکیٹ کے اتار چڑھاؤ کا تخمینہ لگانے کے لیے عام طور پر استعمال ہونے والا تکنیکی تجزیہ جاتی انڈیکیٹر ہے۔ اتار چڑھاؤ کا تعین کرنے کے لیے ٹول کے طور پر استعمال ہونے والے، ATR کو تکنیکی تجزیہ کار J. Welles Wilder Jr. نے 1978 میں شائع ہونے والی اپنی کتاب "New Concepts in Technical Trading Systems" میں تخلیق کیا تھا۔ 

14 دنوں کی مدت میں، ATR کو اوسط کا تعین کرنے کے لیے مختلف حقیقی حدود میں حساب کرنے اور تخمینہ شدہ قیمت میں اتار چڑھاؤ فراہم کرنے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ اگرچہ ATR کے بہت سے فائدے ہیں، بشمول ٹریڈرز کے لیے ایک امداد کے طور پر تاکہ اسٹاپ خسارے کی قیمتوں کا تعین کر سکیں، مگر اس کی کچھ تحدیدات بھی ہیں۔

تعارف

ٹریڈنگ، خصوصاً کرپٹو کرنسیز کے ساتھ اپنے اتار چڑھاؤ کے لیے مشہور ہے۔ ٹریڈرز اکثر قیمت کے ان ردوبدل کا فائدہ اٹھانے کے منتظر ہوتے اور ان کی پیشن گوئی کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ ایک ممکن طریقہ تکنیکی تجزیہ اور قیمت کے اتار چڑھاؤ کے انڈیکیٹرز جیسا کہ اوسط حقیقی حد (ATR) ہے۔ بہت سے ٹریڈرز کے لیے یہ سمجھنے اور اپنی تکنیکی تجزیے کی ٹول کٹ میں شامل کرن کے لیے ایک قابل قدر ٹول ہے۔ 

اوسط حقیقی حد کیا ہے؟ 

ATR کو تکنیکی تجزیہ کار J. Welles Wilder Jr. کی جانب سے 1978 میں اتار چڑھاؤ کی پیمائش کے ٹول کے طور پر تخلیق کیا گیا تھا۔ ATR تب سے تکنیکی اتار چڑھاؤ کی مشہور ترین اشکال میں سے ایک بن گیا ہے۔ 

اب یہ ایسے دیگر انڈیکیٹرز کا ایک اہم حصہ ہے جو مارکیٹ کی سمتی ردوبدل کی شناخت کر سکتے ہیں، جیسا کہ اوسط سمتی ردوبدل کا انڈیکس (ADX) اور اوسط سمتی ردوبدل کے انڈیکس کی درجہ بندی (ADXR)۔ ATR کے ساتھ، ٹریڈرز متغیر مدتوں میں ٹریڈ کے لیے بہترین وقت کے تعین کی کوشش کریں گے۔

انڈیکیٹر مارکیٹ کے اثاثوں کی اوسط قیمت کا حساب 14 دنوں کی حد میں کرتا ہے۔ ATR رجحان کی معلومات یا قیمت کی سمت فراہم نہیں کرتا لیکن اس مدت کے دوران قیمت میں اتار چڑھاؤ کے نقطہ نظر کی پیشکش کرتا ہے۔ زیادہ ATR دی گئی مدت میں قیمت کے زیادہ اتار چڑھاؤ کو ظاہر کرتا ہے اور کم ATR قیمت کے کم اتار چڑھاؤ کو ظاہر کرتا ہے۔ 

یہ تعین کرتے وقت کہ آیا وہ مدت کے دوران اثاثے خریدنا یا بیچنا چاہتے ہیں، تو یہ وہ کم یا زیادہ قیمت کے اتار چڑھاؤ وہ چیزیں ہیں جنہیں ٹریڈرز کو زیر غور لانے کی ضرورت ہے۔ یہ نوٹ کرنا اہم ہے کہ ATR صرف قیت کے اتار چڑھاؤ کا اندازہ لگاتا ہے اور اسے صرف امداد کے طور پر استعمال کیا جانا چاہیئے۔

آپ اوسط حقیقی حد کا حساب کیسے کرتے ہیں؟

ATR کا حساب کرنے کے لیے، آپ پر بتائی گئی مدت کی سب سے زیادہ حقیقی حد یا TR تلاش کرنا لازم ہے۔ اس کا مطلب تین مختلف حدود کا حساب کرنا اور تین میں سے سب سے بڑی کا انتخاب کرنا ہے:

  1. حالیہ ترین مدت کا سب سے زیادہ منفی حالیہ ترین مدت کا سب سے کم

  2. تازہ ترین قیمت کی اعلیٰ سطح کی حتمی مالیت (کوئی منفی اشارے نظر انداز کرتے ہوئے) منفی پچھلی اختتامی قیمت

  3. تازہ ترین قیمت کی کم ترین سطح منفی گزشتہ اختتامی قیمت

مدت ٹریڈر کی توجہ کے دور پر منحصر مختلف ہو سکتی ہے۔ مثال کے طور پر، کرپٹو کے ساتھ، مدت 24 گھنٹے ہو سکتی ہے، جبکہ اسٹاکس کے لیے یہ ایک ٹریڈنگ کا دن ہو سکتی ہے۔ وقت کی مدت کے دوران اوسط حقیقی حد کا تعین کرنے کے لیے (عموماً 14 دن کے اندر)، حقیقی حد کا حساب ہر مدت کے لیے کیا جاتا ہے اور مجموعہ نکالا جاتا ہے اور عام اوسط حاصل کی جاتی ہے۔ 

مذکورہ مدت کے ATR کا تعین کرنا ٹریڈرز کو اس وقت کے دوران اثاثے کی قیمتوں کے اتار چڑھاؤ کے بارے میں جاننے کی اجازت دیتا ہے۔ عام طور پر ٹریڈر اپنے چارٹس پر ایک لائن کے طور پر ATR کو ڈسپلے ہوا دیکھے گا۔ ذیل میں، آپ دیکھ سکتے ہیں کہ ATR لائن اتار چڑھاؤ میں اضافے کے ساتھ (قیمت کی دو میں سے ایک سمت میں) بڑھ رہی ہے۔

کرپٹو کرنسی کے ٹریڈرز اوسط حقیقی حد کا استعمال کیوں کرتے ہیں؟

کرپٹو کرنسی کے ٹریڈرز اکثر مدت کے دوران قیمت کے اتار چڑھاؤ کا تخمینہ لگانے کے لیے ATR استعمال کرتے ہیں۔ ATR بالخصوص کرپٹو میں کرپٹو مارکیٹس میں دیکھے گئے زیادہ اتار چڑھاؤ کی وجہ سے فائدہ مند ہے۔ ایک عام حکمت عملی ATR کو منافع لیں اور اسٹاپ خسارہ آرڈرز سیٹ کرنے کے لیے استعمال کرنا ہے۔

اس طرح ATR استعمال کرتے ہوئے، آپ اپنی ٹریڈنگ کی حکمت عملیوں کو متاثر کرتے ہوئے مارکیٹ کے شور سے اجتناب کر سکتے ہیں۔ اگر آپ مشتبہ طویل مدتی رجحان ٹریڈ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں، تو آپ نہیں چاہتے کہ روزانہ کا اتار چڑھاؤ آپ کی پوزیشنز قبل از وقت بند کرے۔

ایک عام طریقہ ATR کو 1.5 یا 2 سے ضرب دینا، پھر اپنی اندراجی قیمت کے تحت اسٹاپ خسارے کو سیٹ کرنے کے لیے اس تصویر کا استعمال کرنا ہے۔ آپ کا روزانہ کا اتار چڑھاؤ آپ کی اسٹاپ خسارے کی ٹریگر قیمت تک نہیں پہنچنا چاہیئے؛ اگر ایسا ہوتا ہے، تو یہ ایک واضح انڈیکیٹر ہے کہ مارکیٹ تنزلی کی طرف جا رہی ہے۔

اوسط حقیقی حد استعمال کرنے کی خامیاں کیا ہیں؟

اگرچہ ATR اپنے صارفین کو اپنی موافقت پذیری اور قیمت میں تبدیلی کی شناخت کے لیے فائدے دیتا ہے، لیکن اس کی دو بڑی خامیاں بھی ہیں:

1. ATR اکثر وضاحت کے لیے کھلا ہوتا ہے۔ یہ نقصان شمار ہو سکتا ہے کیونکہ اگر رجحان ریورس کرے یا نہ کرے تو کسی ایک ATR قدر کی بھی واضح طور پر تخصیص نہیں کی جا سکتی۔ 

2. چونکہ ATR صرف قیمت کے اتار چڑھاؤ کی پیمائش کرتا ہے، تو یہ ٹریڈرز کو اثاثے کی قیمت کی سمت میں کسی تبدیلی سے مطلع نہیں کرتے۔ ایک مثال یہ ہے کہ جب ATR میں اچانک اضافہ ہوتا ہے، تو کچھ ٹریڈرز یقین کر سکتے ہیں کہ یہ ایک عروج یا زوال کے رجحان کی تصدیق کر رہا ہے جو غلط ہو سکتا ہے۔

اختتامی خیالات 

ATR اتار چڑھاؤ کے پیٹرنز کو سمجھنے کے لیے کئی ٹریڈرز کی ٹول کٹس میں انتہائی اہم ہے۔ چونکہ کرپٹو کرنسی ٹریڈنگ میں اتار چڑھاؤ زیر غور لائے جانے والی کلیدی بات ہے، اس لیے یہ زیادہ بہتر طور پر ڈیجیٹل کرپٹو اثاثوں کے لیے موزوں ہے۔ اس کی قوت اس کی سادگی ہے، لیکن اگر آپ اپنی ٹریڈنگ کی سرگرمیوں میں اس کے ساتھ تجربہ کرنے کا فیصلہ کرتے ہیں تو اس کی تحدیدات کو بھی مدنظر رکھیں۔