پیئر-ٹو-پیئر نیٹ ورکس بیان کیے جا چکے ہیں
امواد کا جدول
پیئر ٹو پیئر (P2P) کیا ہوتا ہے؟
P2P کس طرح کام کرتا ہے؟
منقسم بمقابلہ غیر مرکزی
P2P کا بلاک چینز میں کردار
اختتامی خیالات
پیئر-ٹو-پیئر نیٹ ورکس بیان کیے جا چکے ہیں
ہوم
آرٹیکلز
پیئر-ٹو-پیئر نیٹ ورکس بیان کیے جا چکے ہیں

پیئر-ٹو-پیئر نیٹ ورکس بیان کیے جا چکے ہیں

جدید
شائع کردہ Sep 30, 2019اپڈیٹ کردہ Nov 16, 2022
7m

پیئر ٹو پیئر (P2P) کیا ہوتا ہے؟

کمپیوٹر سائنس میں، پیئر ٹو پیئر (P2P) نیٹ ورک مجموعی طور پر فائلز محفوظ اور شیئر کرنے والے ڈیوائسز کے گروپ پر مشتمل ہوتا ہے۔ ہر صارف کا (نوڈ) بطور انفرادی پیئر کام کرتا ہے۔ عمومی طور پر، تمام نوڈز کے پاس ایک جیسی طاقت ہوتی ہے اور ایک جیسے ٹاسکس انجام دیتے ہیں۔

مالیاتی ٹیکنالوجی میں، پیئر-ٹو-پیئر سے مراد کرپٹو کرنسیز یا ڈیجیٹل اثاثہ جات کو منقسم نیٹ ورک کے ذریعے ایکسچینج کرنا ہے۔ P2P کا پلیٹ فارم خریداروں اور فروخت کنندگان کو ثالثین کی معاونت کے بغیر ٹریڈ انجام دینے کی اجازت دیتا ہے۔ کچھ صورتوں میں، ویب سائٹس قرض دہندہ اور قرض لینے والے افراد کو مربوط کرنے والا P2P ماحول فراہم کر سکتی ہیں۔

P2P آرکیٹیکچر استعمال کی کئی صورتوں کے لیے مناسب ہو سکتا ہے، لیکن یہ فائل شیئر کرنے والے پہلے پروگرامز تخلیق ہونے پر، بالخصوص 1990 کی دہائی میں مشہور ہوئے تھے۔ P2P نیٹ ورکس آج کل متعدد کرپٹو کرنسیز کی بنیاد میں شامل ہیں، جس کے باعث بلاک چین کی انڈسٹری کا کافی حصہ تشکیل پاتا ہے۔ تاہم، یہ کمپیوٹنگ کی دیگر منقسم ایپلیکیشنز میں بھی لیوریج شدہ ہیں، جس میں ویب سرچ انجن، اسٹریمنگ پلیٹ فارمز، آن لائن مارکیٹ پلیسز، اور InterPlanetary File System (IPFS) ویب پروٹوکول شامل ہیں۔


P2P کس طرح کام کرتا ہے؟

حقیقت میں، P2P سسٹم کی صارفین کے منقسم نیٹ ورک کے ذریعے حفاظت کی جاتی ہے۔ عمومی طور پر، یہ کسی مرکزی منتظم یا سرور پر مشتمل نہیں ہوتی، کیونکہ ہر نوڈ فائلز کی کاپی ہولڈ کرتے ہوئے - دیگر نوڈز کے لیے صارف اور سرور کے طور پر کام کرتے ہیں۔ اس لیے، ہر نوڈ دیگر نوڈز سے فائلز ڈاؤن لوڈ کر سکتا ہے یا ان میں فائلز اپلوڈ کر سکتا ہے۔ یہی بات P2P نیٹ ورکس کو صارف-سرور کے مزید روایتی سسٹمز سے منفرد کرتی ہے، جن میں صارف کی ڈیوائسز کسی مرکزی سرور سے فائلز ڈاؤن لوڈ کر سکتی ہیں۔

P2P نیٹ ورکس میں، مربوط ڈیوائسز اپنی ہارڈ ڈرائیوز میں محفوظ فائلز شیئر کرتی ہیں۔ ڈیٹا شیئر کرنے کے لیے ثالثی کرنے والی بنائی گئی سافٹ ویئر ایپلیکیشنز استعمال کرنے پر، صارفین فائلز تلاش اور ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے نیٹ ورک پر دیگر ڈیوائسز سے استفسار کر سکتے ہیں۔ کسی صارف کی جانب سے دی گئی فائل ڈاؤن لوڈ کرنے پر، وہ پھر اُس فائل کے ماخذ کے طور پر کام کر سکتی ہیں۔

دوسرے الفاظ میں، کسی نوڈ کے صارف کی طرح کام کرنے پر، وہ دیگر نیٹ ورک نوڈز سے فائلز ڈاؤن لوڈ کرتی ہیں۔ لیکن ان کی جانب سے سرور کے طور پر کام کرنے پر، وہ ایسے ماخذ کے طور پر کام کر سکتی ہیں، جس سے دیگر نوڈز فائلز ڈاؤن لوڈ کر سکتی ہیں۔ عملی طور پر، بلاشبہ دونوں فنکشنز (مثلاً، فائل A کو ڈاؤن لوڈ کرنا، اور فائل B کو اپلوڈ کرنا) پر ایک ساتھ عمل درآمد کروایا جا سکتا ہے۔

جیسا کہ ہر نوڈ فائلز محفوظ، منتقل اور حاصل کرتی ہے، P2P نیٹ ورکس اپنی صارفی بنیاد بڑھنے پر تیز اورمزید موثر ہوتے ہیں۔ اس کے علاوہ، ان کا منقسم آرکیٹیکچر، P2P سسٹمز کو سائبر حملوں سے بہت مزاحم بناتا ہے۔ روایتی ماڈلز کے برخلاف، P2P نیٹ ورکس میں ناکام ہونے کا کوئی امکان نہیں ہے۔

ہم پیئر-ٹو-پیئر سسٹمز کو ان کے آرکیٹیکچر کے مطابق زمرہ بند کر سکتے ہیں۔ تین مرکزی اقسام میں ان اسٹرکچرڈ، اسٹرکچر، اور ہائبرڈ P2P نیٹ ورکس شامل ہیں۔


ان اسٹرکچرڈ P2P نیٹ ورکس

ان اسٹرکچرڈ P2P نیٹ ورکس، نوڈز کی کوئی مخصوص تنظیم نہیں بناتے۔ شرکاء ایک دوسرے کے ساتھ بے ترتیب انداز میں مواصلات انجام دیتے ہیں۔ ان سسسٹمز کو صارف کی جانب سے کاروبار چھوڑنے کی سرگرمی کے خلاف نہایت مضبوط سمجھا جاتا ہے (مثلاً، متعدد نوڈز کا باقاعدگی سے نیٹ ورک میں آنا اور جانا)۔

بلاشبہ ان کی تشکیل آسان ہے، ان اسٹرکچرڈ P2P نیٹ ورکس کو CPU اور میموری کے وسیع استعمال کی ضرورت ہوتی ہے، کیونکہ تلاش کرنے کے استفسار جتنی ممکن ہو سکے، اتنے پیئرز کو بھیجے جاتے ہیں۔ اس سے نیٹ ورک میں استفسار چھا جاتے ہیں، بلخصوص اگر نوڈز کی کم تعداد درکار مواد کی پیشکش کر رہی ہو۔


اسٹرکچرڈ P2P نیٹ ورکس

اس کے برخلاف، اسٹرکچرڈ P2P نیٹ ورکس منظم آرکیٹیکچر دیتے ہیں، جس سے مواد کے وسیع انداز میں میسر نہ ہونے کی صورت میں بھی، نوڈز کو موثر انداز میں فائلز تلاش کرنے کی اجازت ملتی ہے۔ زیادہ تر صورتوں میں، اسے ہیش فنکشنز کے ذریعے حاصل کیا جاتا ہے، جو ڈیٹا بیس کی تلاش کی سہولت کاری کرتے ہیں۔

جیسا کہ اسٹرکچرڈ نیٹ ورکس زیادہ موثر ہو سکتے ہیں، وہ مرکزیت کی اعلیٰ سطح دیتے ہیں، اور عمومی طور پر انہیں سیٹ اپ اور دیکھ بھال کی وسیع لاگتیں درکار ہوتی ہیں۔ علاوہ ازیں، اسٹرکچرڈ نیٹ ورکس صارف کی جانب سے چھوڑنے کی زیادہ شرح کا مقابلہ کرنے پر اتنے مضبوط نہیں ہوتے۔


ہائبرڈ P2P نیٹ ورکس

ہائبرڈ P2P نیٹ ورکس، صارف-سرور کے روایتی ماڈل کو پیئر-ٹو-پیئر آرکیٹیکچر کے چند پہلوؤں کے ساتھ یکجا کرتے ہیں۔ مثلاً، یہ پیئرز کے مابین رابطے کی سہولت کاری کرنے والے مرکزی سرور کو تیار کرتے ہیں۔

دیگر دو اقسام سے موازنہ کرنے پر، ہائبرڈ ماڈلز مجموعی طور پر بہتر کردہ کارکردگی دیتے ہیں۔ وہ عمومی طور پر ہر تصور کے چند مرکزی فوائد کو یکجا کرتے ہیں، جس سے بیک وقت موثر ہونے کی نمایاں سطحیں اور غیر مرکزیت حاصل کرتے ہیں۔


منقسم بمقابلہ غیر مرکزی

بلاشبہ P2P آرکیٹیکچر فطری طور پر منقسم ہوتا ہے، یہ امر نوٹ کرنا اہم ہے کہ غیر مرکزیت کی کئی سطحیں موجود ہیں۔ اس لیے، P2P کے سارے نیٹ ورکس غیر مرکزی نہیں ہوتے۔ 

درحقیقت، بہت سارے سسٹمز نیٹ ورک سرگرمی کی رہنمائی کرنے کے لیے مرکزی اتھارٹی پر اعتماد کرتے ہیں، جس سے یہ کچھ حد تک مرکزی ہو جاتے ہیں۔ مثلاً، P2P فائل شیئر کرنے والے کچھ سسٹم صارفین کو دیگر صارفین کی جانب سے فائلز تلاش اور ڈاؤن لوڈ کرنے کی اجازت دیتے ہیں، لیکن یہ تلاش کا استفسار کرنے کے جیسے دیگر عوامل میں شمولیت حاصل کرنے کے اہل نہیں ہوتے۔

اضافی طور پر، ایسے چھوٹے نیٹ ورکس جنہیں ایک جیسے اہداف شیئر کرنے والی صارف کی محدود بیس کی جانب سے کنٹرول کیا جاتا ہے، وہ بھی نیٹ ورک کے مرکزی انفراسٹرکچر کی عدم موجودگی کے باوجود، مرکزیت کی اعلیٰ سطحیں رکھ سکتے ہیں۔


P2P کا بلاک چینز میں کردار

Bitcoin کے شروعاتی مراحل میں، Satoshi Nakamoto کی جانب سے اسے، "پیئر-ٹو-پیئر کیش سسٹم" کے طور پر متعارف کروایا گیا تھا۔ Bitcoin ڈیجیٹل رقم کے طور پر تخلیق کی گئی تھی۔ P2P نیٹ ورک کے ذریعے اسے ایک صارف سے دوسرے کی جانب ٹرانسفر کیا جا سکتا ہے، جو منقسم لیجر بلاک چین کی نظم کاری کرتا ہے۔

اس حساب سے، بلاک چین ٹیکنالوجی میں فطری طور پر پایا جانے والا P2P آرکیٹیکچر، ثالثین یا کسی مرکزی سرور کے بناء دنیا بھر میں Bitcoin اور دیگر کرپٹو کرنسیز ٹرانسفر کرنے کی اجازت دیتا ہے۔ بلاکس کی توثیق اور تصدیق کے عمل میں شمولیت اختیار کرنے والا کوئی بھی خواہش مند فرد، Bitcoin نوڈ تشکیل کر سکتا ہے۔

اس لیے، Bitcoin نیٹ ورک میں ٹرانزیکشنز پر عمل کاری اور ریکارڈ کرنے والے کوئی بینکس موجود نہیں ہیں۔ درحقیقت، بلاک چین عوامی سطح پر تمام سرگرمی ریکارڈ کرنے والے ڈیجیٹل لیجر کے طور پر کام کرتی ہے۔ ہر نوڈ کی جانب سے بنیادی طور پر بلاک چین کی کاپی ہولڈ کی جاتی ہے اور ڈیٹا کی درستگی یقینی بنانے کے لیے دیگر نوڈز سے موازنہ کیا جاتا ہے۔ نیٹ ورک فوری طور پر کسی مشکوک سرگرمی یا غلطی کو رد کر دیتا ہے۔

کرپٹو کرنسی بلاک چینز کے زمرے میں، نوڈز کئی کردار ادا کر سکتی ہیں۔ مثلاً، مکمل نوڈز سسٹم کے رضامندی اصولوں کے برخلاف ٹرانزیکشنز کی توثیق کرتے ہوئے نیٹ ورک کو سیکورٹی فراہم کرنے والی نوڈز ہیں۔

ہر نوڈ کی جانب سے بلاک چین کی مکمل، اپڈیٹ کردہ کاپی برقرار رکھی جاتی ہے - جس کے باعث انہیں منقسم لیجر کی درست حالت کی توثیق کرنے کے مجموعی عمل میں شمولیت اختیار کرنے کی اجازت ملتی ہے۔ یہ امر قابل توجہ ہے کہ، بلاشبہ توثیق کرنے والی تمام مکمل نوڈز مائنرز نہیں ہیں۔


فوائد

بلاک چینز کے پیئر-ٹو-پیئر آرکیٹیکچر سے بیشتر فوائد حاصل ہوتے ہیں۔ ان سب میں اہم یہ حقیقت ہے کہ P2P نیٹ ورکس، روایتی صارف-سرور منصوبہ بندیوں کی نسبت زیادہ سیکورٹی کی پیشکش کرتے ہیں۔ بلاک چینز کی نوڈز کی کثیر تعداد پر تقسیم ہونے سے ان کو سروس کے استراد (DoS) کے ایسے حملوں سے دور کرتی ہے، جن کے متعدد سسٹمز پر اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

جیسا کہ بلاک چین میں ڈیٹا شامل کرنے سے قبل ہی، نوڈز کی اکثریت پر رضامندی کا اظہار لازم ہے، اسی باعث کوئی حملہ آور ڈیٹا میں تبدیلی نہیں کر سکتا۔ یہ بالخصوص بڑے نیٹ ورکس جیسا کہ Bitcoin، کے لیے ٹھیک ہے۔ چھوٹی بلاک چینز کے حملے کی زد میں آنے کے زیادہ امکانات ہوتے ہیں، کیونکہ بالآخر ایک فرد یا گروپ نوڈز کی اکثریت کا کنٹرول حاصل کر لیتا ہے (اس کو 51 فیصد حملے کے نام سے موسوم کیا جاتا ہے)۔

نتیجتاً، پیئر-ٹو-پیئر کا منقسم نیٹ ورک، رضامندی کی اکثر شرائط کے ساتھ منسلک ہو کر، بلاک چینز کو مشکوک سرگرمیوں سے مزاحمت کی اعلیٰ سطحیں فراہم کرتا ہے۔ P2P ماڈل کے باعث، Bitcoin (اور دیگر بلاک چینز) نام نہاد بائی زینٹائن نقص کی گنجائش حاصل کرنے کے اہل ہوئے تھے۔

سیکورٹی سے قطع نظر، کرپٹو کرنسی بلاک چینز میں P2P آرکیٹیکچر کا استعمال انہیں مرکزی اتھارٹیز کی جانب سے سنسر شپ سے مزاحم بناتا ہے۔ اسٹینڈرڈ بینک اکاؤنٹس کے علاوہ، حکومتوں کی جانب سے کرپٹو کرنسی والیٹس کو منجمد یا خالی نہیں کیا جا سکتا۔ ادائیگی کی نجی عمل کاری اور مواد کے پلیٹ فارمز کی جانب سے سنسر شپ کی کوششوں تک، یہ مزاحمت موثر ہے۔ مواد کے چند تخلیق کاروں اور آن لائن مرچنٹس کی جانب سے کسی فریق ثالث کے باعث ان کی ادائیگیاں بلاک ہونے سے بچانےکے لیے، کرپٹو کرنسی ادائیگیوں کو اپنایا گیا ہے۔


حدود

اس کے کثیر فوائد کے ہوتے ہوئے، بلاک چینز پر P2P نیٹ ورکس استعمال کرنے کی مخصوص حدود موجود ہیں۔

جیسا کہ منقسم لیجر کو مرکزی سرور کی بجائے ہر نوڈ پر اپڈیٹ کرنا لازم ہے، بلاک چین میں ٹرانزیکشنز شامل کرنے کے لیے کمپیوٹنگ کی وافر توانائی کا ہونا ضروری ہے۔ جبکہ اس کی جانب سے اضافی سیکورٹی فراہم کی جاتی ہے، یہ کارکردگی میں خاطر خواہ کمی کا باعث بنتا ہے اور توسیع پذیری اور وسیع پیمانے پر اپنانے کے عمل کی بات آنے پر، یہ مرکزی مشکلات میں سے ایک ہے۔ بلاشبہ، کرپٹوگرافرز اور بلاک چین ڈویلپرز اسکیلنگ کے حل کے لیے استعمال ہونے والے متبادل طریقے تلاش کر رہے ہیں۔ اہم مثالوں میں لائٹننگ نیٹ ورکس، Ethereum پلازما، اور Mimblewimble پروٹوکول شامل ہیں۔

ہارڈ فورک ایونٹس کے دوران ابھرنے والی حملوں سے متعلق ایک اور ممکنہ حد۔ جیسا کہ زیادہ تر بلاک چینز غیر مرکزی اور اوپن سورس ہوتی ہیں، نئے، متوازی نیٹ ورک کو تشکیل کرنے کے لیے نوڈز کے گروپ کو مرکزی چین سے مفت میں کاپی اور کوڈ میں ترمیم اور منتشر کیا جا سکتا ہے۔ ہارڈ فورکس مکمل طور پر عمومی ہیں اور یہ کوئی خطرہ نہیں ہیں۔ لیکن چند مخصوص سیکورٹی کے طریقہ کار درست انداز میں نہ اپنانے کی صورت میں، دونوں چینز دوبارہ کیے جانے والے حملوں کی زد میں آ سکتی ہیں۔

اس کے علاوہ، P2P نیٹ ورکس کی منقسم فطرت کے باعث انہیں نہ صرف بلاک چین میں کنٹرول اور باضابطہ کرنا نسبتاً مشکل ہے۔ P2P کی متعدد ایپلیکیشنز اور کمپنیاں غیر قانونی سرگرمیوں اور حق اشاعت کی خلاف ورزیوں میں شامل ہو گئیں۔


اختتامی خیالات

پیئر-ٹو-پیئر آرکیٹیکچر مختلف صورتوں میں تیار اور استعمال کیا جا سکتا ہے، اور یہ کرپٹو کرنسی کو ممکن بنانے والی بلاک چینز کی بنیاد میں شامل ہے۔ نوڈز کے وسیع نیٹ ورکس میں ٹرانزیکشن لیجرز تقسیم کرنے سے، P2P آرکیٹیکچر سیکورٹی، غیرمرکزیت، اور سنسرشپ سے مزاحمت کی پیشکش کرتا ہے۔

ان کے بلاک چین ٹیکنالوجی میں استعمال ہونے کے علاوہ، P2P سسٹمز کی جانب سے کمپیوٹنگ کی دیگر منقسم ایپلیکیشنز کی مدد بھی کی جا سکتی ہے، جس میں فائل شیئر کرنے سے لے کر توانائی کی ٹریڈنگ کرنے والے پلیٹ فارمز شامل ہیں۔