Ethereum لندن ہارڈ فورک کیا ہے؟
امواد کا جدول
تعارف
Ethereum لندن اپڈیٹ میں کیا نیا ہے؟
EIP کیا ہے؟
EIP-1559 کیا ہے؟
EIP-3238 کیا ہے؟
کمیونٹی کیا سوچتی ہے؟
صارفین کے لیے لندن اپڈیٹ کیا معنی رکھتا ہے؟
اختتامی خیالات
Ethereum لندن ہارڈ فورک کیا ہے؟
ہوم
آرٹیکلز
Ethereum لندن ہارڈ فورک کیا ہے؟

Ethereum لندن ہارڈ فورک کیا ہے؟

جدید
شائع کردہ Jun 1, 2021اپڈیٹ کردہ Dec 2, 2022
6m

TL؛DR

Ethereum لندن ہارڈ فورک اپڈیٹ، بلاک چین کی ٹرانزیکشن فیس کا ماڈل اور ٹائم بم کی دشواری کو تبدیل کرتی ہے۔ اب Ethereum نیٹ ورک، گیس کی قیمتوں پر بولی لگانے کے قطع نظر بنیادی فیس کے ساتھ ہر بلاک کی ٹرانزیکشن فیس متعین کرتا ہے۔

ارادی طور پر ڈویلپرز نے، Ethereum 2.0 کے ریلیز پلان کے عین مطابق موافقت کے لیے، بلٹ ان ایونٹ، جس کو دشواری ٹائم بم کے طور پر جانا جاتا ہے، ملتوی کر دیا۔ یہ مائنرز کے پروف آف ورک (PoW) سے اسٹیک کا ثبوت (PoS) میں تبدیلی کے لیے حوصلہ افزائی کرے گا۔


تعارف

Ethereum لندن ہارڈ فورک، اپریل 2021 کے برلن ہارڈ فورک کے بعد، Ethereum بلاک چین کے لیے ایک اپڈیٹ ہے۔ لندن اپڈیٹ نے Ethereum کی ٹرانزیکشن فیس سسٹم میں مزید خاص قسم کی تبدیلیاں کیں، جو ایک لمبے عرصے سے متنازع موضوع تھا۔ اس اپڈیٹ نے بھی پلان شدہ Ethereum 2.0 ریلیز کے لیے، اس کے معاہداتی ماڈل میں ترامیم کرتے ہوئے، تیاریاں کیں۔

تاہم، لندن کرپٹو کی ٹرانزیکشن فیس اور مائننگ میں مخصوص تبدیلیوں کی بنا پر، کچھ لوگوں کی جانب سے متنازع تصور کیا جاتا ہے۔ صارفین اور مائنرز کے لیے تبدیلیوں کے تمام اثرات مکمل طور پر واضح نہیں کیے گئے، بلکہ وہ عارضی ہیں کیونکہ جلد ہی Ethereum 2.0 آنے والا ہے۔


Ethereum لندن اپڈیٹ میں کیا نیا ہے؟

Ethereum کی لندن اپڈیٹ ایک ہارڈ فورک ہے، جو دو نئی Ethereum کی بہتری کی تجاویز (EIP) متعارف کرواتی ہے۔ 2022 کے لیے پلان شدہ Ethereum 2.0 (Serenity) کے ریلیز کے ساتھ، لندن اپڈیٹ، اسٹیک کے ثبوت پر منتقل ہونے کے لیے چند تیاریاں کر رہی ہے۔ Serenity سے موافقت کے لیے، مائنرز نے مائننگ کی دشواری میں اضافے سے رفتار میں کمی ملاحظہ کی ہے۔ جیسا کہ لندن ایک ہارڈ فورک ہے، اس لیے تمام نوڈز نے مائننگ اور توثیق کاری کا عمل جاری رکھنے کے لیے، نئے اصولوں اور تازہ ترین ورژن کا استعمال کیا۔

مزید خاص قسم کی تبدیلی ٹرانزیکشن کی فیس میں تھی، جس میں ایک نیا انحطاط زر کا میکانزم شامل تھا۔ گزشتہ طور پر، صارفین نے ان کی گیس فیس کی ادائیگی کے لیے بولی درج کی۔ مائنرز شامل کردہ فیس کی بنیاد پر ٹرانزیکشنز کو ترجیح دیں گے اور فیس کو بطور انعام بلاک میں شامل کرنے کے لیے استعمال کریں گے۔ اب، اس کی بجائے ہر بلاک کی متعلقہ فیس مقرر کردہ ہے۔ لندن اپڈیٹ میں شامل، یہ تبدیلی EIP-3238 کے ساتھ EIP-1559 کے نتیجے میں سامنے آتی ہے۔


EIP کیا ہے؟

Ethereum کی بہتری کی تجاویز (EIP)، ایسی تکنیکی خصوصیات ہیں، جو Ethereum بلاک چین کے لیے نئے فیچرز کا تعین کرتی ہیں۔ ڈویلپرز نے، Ethereum کمیونٹی کی تجاویز کے ساتھ اپنی تجاویز بھی تخلیق کیں۔ کوئی بھی فرد EIP بنا سکتا ہے اور کمیونٹی کی تجویز کی منظوری سے قبل، اس پر بات چیت کے لیے جمع کروائیں۔

ہر EIP EIP1 میں طے کردہ ہ ہدایات کو فالو کرتا ہے:

"EIP کو، فیچر کی مختصر خصوصیت اور اس فیچر کے لیے منطق فراہم کرنی چاہیئے۔ EIP مصنف، کمیونٹی میں معاہدہ تخلیق کرنے اور اختلاف رائے کو دستاویزی شکل دینے کا ذمہ دار ہے۔

ایک EIP مصنف کو EIP کی منظوری سے قبل، بشمول پیئر جائزہ اور ڈرافٹس کے، ایک طے شدہ عمل کو فالو کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ، کمیونٹی کے تجویز پر خوشی کا اظہار کرنے پر، ان کو ریلیز میں شامل کر سکتے ہیں۔


EIP-1559 کیا ہے؟

Ethereum نیٹ ورک پر، EIP-1559 ایک طرح کی تبدیلی کا نام ہے، جس سے صارفین گیس فیس ادا کرتے ہیں۔ یہ EIP، Ethereum کے بانی، Vitalik Buterin اور دیگر ڈویلپرز کی ٹیم نے تخلیق کیا۔

وقت کے ساتھ، چھوٹی ٹرانزیکشنز کے لیے، Ethereum کے صارفین کی جانب سے ادا کی جانے والی اوسط فیس مہنگی ترین ہوتی گئی۔ مثلاً، اگر نیٹ ورک فیس $20 کی مالیت کا Ether (ETH) یا کوئی اور ڈیجیٹل اثاثہ بھیجنے پر، تقریباً $20 (USD) ہے، تو یہ مہنگا نہیں۔ خاص طور پر نو آموزوں کے لیے، یہ زیادہ فیسیں نیٹ ورک کو کم پرکشش بناتی ہیں۔

EIP-1559 نے، نئی ٹرانزیکشن قیمت کا میکانزم جو ہر بلاک کے لیے بنیادی فیس تخلیق کرتا ہے، کی تجویز دی ہے۔ بلاک چین، مجموعی طور پر Ether (ETH) کی سپلائی کم کرتے ہوئے فیس ضائع کرتا ہے۔ یہ اثر کرپٹو کرنسی پر انحطاط زر کا دباؤ پیدا کرے گا۔

ہر بلاک کے لیے بنیادی فیس کی تبدیلی ہر نیٹ ورک کی طلب پر منحصر ہے۔ اگر کوئی بلاک ٹرانزیکشنز سے 50% سے زائد مکمل بھر جائے، تو بنیادی فیس میں اضافہ ہوتا ہے اور اس کی برعکس صورت میں بھی یہی ہوگا۔ یہ میکانزم اکثر بلاکس کے لیے، نصف مکمل توازن کی سطح برقرار رکھنے کی کوششش کرتا ہے۔

آپ اپنی ٹرانزیکشن کی خاطر قطار سے بچنے کے لیے مائنرز کے لیے ایک ترغیب کے طور پر ٹپ شامل کر سکتے ہیں۔ تاہم، Ethereum بغیر ٹپس کے ہر بلاک کو تقریباً 50% مکمل رکھنے کی کوشش کرتا ہے۔ ہر بلاک میں موجود بہت ساری جگہ کے ساتھ، قطار میں آگے آنے کے لیے محض حسب ضرورت آپ کو کم ٹپ درکار ہو گی۔


EIP-3238 کیا ہے؟

دشواری ٹائم بم ایک ان بلٹ Ethereum ہے جو Ethereum مائننگ کے اضافے کو مزید مشکل تر بناتا ہے۔ ہمارے دشواری ٹائم بم تک پہنچنے پر، نئے بلاک کو مائن کرنے میں اتنا زیادہ وقت لیتا ہے کہ مائنرز کی منافع بخش مائننگ کم ہو جائے گی، اور ٹرانزیکشن کا عمل سست روی کا شکار ہو جائے گا۔ ڈویلپرز اس امر کو یقینی بنانا چاہتے ہیں کہ، مائنرز کے پاس سوائے Ethereum 1.0 کی مائننگ روکنے اور Ethereum 2.0 کے ریلیز ہوتے ہوئے اس پر منتقل ہو جانے کے، کوئی موقع نہیں۔

تاہم، بلاک چین اس مقام پر بہت جلد پہنچ جائے گا۔ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ نیٹ ورک صحیح وقت پر Ethereum 2.0 کے اسٹیک کا ثبوت معاہداتی ماڈل کے توثیق کاران کو ترغیب دیتا ہے، EIP-3238 نے ٹائم بم ملتوی کیا۔

اس کے علاوہ، اس بات کا امکان ہو سکتا ہے کہ مائنرز Ethereum 1.0 کا استعمال جاری رکھیں، جیسا کہ Ethereum اور Ethereum کلاسک کو یکساں طور پر تقسیم کا دعوٰی کیا جا سکتا ہے۔ 2022 کے Q2 کے قریب، 30 سیکنڈ بلاک ٹائم آئس ایج ٹائم بم کو ملتوی کرنے کی وجہ بنے گا۔ اس وقت تک، Ethereum 1.0 کا Ethereum 2.0 سے انضمام مکمل کرنا ہو گا۔


کمیونٹی کیا سوچتی ہے؟

لندن نیٹ ورک اپ گریڈ کی بات آتے ہی، خاص طور پر ٹرانزیکشن کی فیس کے متعلق ملے جلے احساسات پائے جاتے ہیں۔ اگرچہ مائنرز، Ethereum 2.0 سے پروف آف ورک کے خاتمے کے لیے تیار ہیں، انہوں نے خاص طور پر فیس مائنرز کو حاصل ہونے والی اپڈیٹ کو تبدیل کیا۔ یہ کمی ممکنہ طور پر مائنرز کے بنائے گئے منافع جات کم کرنے کا باعث بن سکتی ہے۔ ایک اور قابل غور بات یہ ہے کہ Ethereum مائننگ مزید مرکزی ہو سکتا ہے۔ کچھ لوگوں نے بحث کی کہ کم ترین توانائی کی لاگت کے ساتھ صرف بڑے مائنرز منافع کمانے کے قابل ہوں گے۔

جبکہ ہم یقینی طور پر نہیں کہہ سکتے کہ انحطاط زر کے میکانزمز ETH کی قیمت بڑھا سکتے ہیں۔ اس طرح کی امید حقیقت سے وابستہ ہو سکتی ہے کہ اپڈیٹ کے بعد سے Ethereum تمام بلاک چین ٹرانزیکشنز کی ETH بنیادی فیس ضائع کرنے کا آغاز کر چکا ہے۔


صارفین کے لیے لندن اپڈیٹ کیا معنی رکھتا ہے؟

Bitcoin کی طرح، پرانے میکانزم نے بھی بولی لگانے کی طرح کام کیا۔ آپ جتنی زیادہ ٹراینزیکشن فیس (یا گیس کی قیمت) ادا کریں گے، اتنا ہی آپ کی ٹرانزیکشن کا عمل تیز ہو گا اور مائنرز کی جانب سے اس امر کی توثیق کی جائے گی۔ لندن اپڈیٹ کے بعد، Ethereum ٹرانزیکشنز کی انجام دہی میں، آپ کو آپ کی واجب الادا گیس کی قیمت کے انتخاب کی مزید ضرورت نہیں پڑے گی۔

اس کی بجائے، آپ صرف بنیادی فیس، پلس مائنر کو ٹپ دینے کا آپشن ملاحظہ کریں۔ تاہم، بنیادی فیس، آپ کی ٹرانزیکشن کو جمع کرنے اور اسے بلاک میں شامل کرنے کے مابین تبدیل ہو سکتی ہے۔ اس سے بچنے کے لیے، جتنا زیادہ آپ ادا کرنا چاہتے ہیں آپ فیس کیپ متعین کر سکتے ہیں۔ اگر مائنر آپ کی ٹرانزیکشن کو کسی ایسے بلاک میں شامل کرتا ہے جس کی بنیادی فیس آپ کی فیس کیپ سے کم ہے، تو نیٹ ورک اس فرق کو ریفنڈ کر دے گا۔


اختتامی خیالات

لندن ایک مخصوص قسم کی اپڈیٹ ہے جو ہم نے صارفین کے Ethereum کے ساتھ تعامل کرنے کے لیے ملاحظہ کی۔ بہت سی گزشتہ اپڈیٹس نے سسٹمز کو تبدیل کر دیا ہے جو کہ ہم عمومی طور پر Ethereum کا استعمال کرتے ہوئے مدنظر نہیں رکھتے۔ اب، ٹرانزیکشن کے اوقات اور قیمتوں میں کمی کا امکان بہت زیادہ ہے، لیکن ابھی تک اس کی کوئی ضمانت نہیں۔

تاہم، 2022 کے لیے Ethereum 2.0 کی PoS منتقلی پلان شدہ ہے، لہٰذا لندن ہارڈ فورک کا نفاذ محدود مدتی اور عارضی ہے۔