ERC-20 ٹوکنز کا تعارف
امواد کا جدول
تعارف
ERC-20 کا معیار کیا ہوتا ہے؟
Ethereum ٹوکنز کا ایک فوری خلاصہ
ERC-20 ٹوکنز کس طرح سے تخلیق کیے جاتے ہیں؟
ERC-20 ٹوکنز کیا کر سکتے ہیں؟
کیا آپ ERC-20 ٹوکنز کو مائن کر سکتے ہیں؟
ERC-20 ٹوکنز کے فوائد اور نقصانات
ERC-20، ERC-1155، ERC-223، ERC-721 – فرق کیا ہے؟
اختتامی خیالات
ERC-20 ٹوکنز کا تعارف
ہوم
آرٹیکلز
ERC-20 ٹوکنز کا تعارف

ERC-20 ٹوکنز کا تعارف

جدید
شائع کردہ Jul 31, 2020اپڈیٹ کردہ Nov 11, 2022
12m

تعارف

Ethereum کی سنگ بنیاد 2014 میں Vitalik Buterin کی جانب سے رکھی گئی تھی، جو غیر مرکزی ایپلیکیشنز (DApps) لانچ کرنے کے لیے خود کو ایک اوپن سورس پلیٹ فارم کے طور پر پوزیشن کرتا ہے۔ ایک نئی بلاک چین کی تخلیق کے لیے Buterin کی بہت سی ترغیبات نے Bitcoin پروٹوکول کی لچک میں کمی سے جڑ پکڑی۔

اپنے لانچ کے بعد سے، Ethereum کی بلاک چین نے ڈویلپرز، کاروباروں، اور کاروباری افراد کو اپنی طرف متوجہ کیا ہے، جس نے اسمارٹ معاہدات اور تقسیم کردہ ایپلیکیشنز لانچ کرنے والے صارفین کی بڑھتی ہوئی صنعت کو جنم دیا ہے۔

اس آرٹیکل میں، ہم ERC-20 معیار پر نظر ڈالیں گے، جو کہ ٹوکنز تخلیق کرنے کے لیے ایک اہم فریم ورک ہے۔ اگرچہ یہ Ethereum کے نیٹ ورک کے لیے مخصوص ہے، تاہم اس فریم ورک نے دیگر بلاک چین کے معیارات، جیسا کہ Binance چین کے BEP-2 کو بھی متاثر کیا ہے۔


ERC-20 کا معیار کیا ہوتا ہے؟

Ethereum میں، ERC تبصروں کے لیے Ethereum کی درخواست ہوتی ہے۔ یہ تکنیکی دستاویزات ہیں جو Ethereum پر پروگرامنگ کے لیے معیارات کا خاکہ بناتی ہیں۔ انہیں Ethereum کی بہتری کی تجاویز (EIPs) کے معنوں میں نہیں لیا جانا چاہیئے، جو، Bitcoin کے BIPs کی مانند، خود پروٹوکول کے لیے بہتری کا مشورہ دیتی ہیں۔ اس کی بجائے ERCs کا مقصد ایک ایسے رواج کو قائم کرنا ہے جو ایپلیکیشنز اور معاہدات کے لیے ایک دوسرے کے ساتھ تعامل انجام دینے کا عمل آسان بناتا ہے۔

Vitalik Buterin اور Fabian Vogelsteller کی جانب سے 2015 میں تصنیف کردہ، ERC-20 Ethereum پر مبنی ٹوکنز کے لیے نسبتاََ آسان فارمیٹ کو تجویز کرتا ہے۔ خاکے پر عمل کرتے ہوئے، ڈویلپرز کو دوبارہ سے وہیل کو ایجاد کرنے کی ضرورت نہیں پڑتی۔ اس کی بجائے، وہ صنعت میں پہلے سے استعمال ہونے والی بنیاد پر ہی تعمیر کر سکتے ہیں۔

ایک دفعہ جب نئے ERC-20 ٹوکنز تخلیق کر لیے جاتے ہیں، تو وہ ERC-20 کے معیار کی معاونت کرنے والی سروسز اور سافٹ ویئرز (سافٹ ویئر والیٹس، ہارڈ ویئر والیٹس، ایکسچینجز، وغیرہ۔) کے ساتھ خودکار طور پر باہم عمل انجام دے سکتے ہیں۔

یہ بات ذہن نشین رہے کہ ERC-20 معیار ایک EIP (بالخصوص، EIP-20) میں ڈویلپ کیا گیا تھا۔ یہ وسیع پیمانے پر اپنے استعمال کی وجہ سے اصل تجویز کے چند سال بعد واقع ہوا۔ تاہم، سالوں بعد بھی، "ERC-20" کا نام باقی ہے۔


Ethereum ٹوکنز کا ایک فوری خلاصہ

ETH (Ethereum کی مقامی کرپٹو کرنسی) کے برعکس، ERC-20 ٹوکنز اکاؤنٹس کی جانب سے نہیں رکھے جاتے۔ ٹوکنز صرف معاہدے کے اندر وجود رکھتے ہیں، جوکہ ایک خود کفیل ڈیٹا بیس کی مانند ہے۔ یہ ٹوکنز کے لیے اصول (یعنی کہ، نام، علامت، تقسیم ہونے کی صلاحیت) واضح کرتا ہے اور ایسی فہرست کو برقرار رکھتا ہے جو صارفین کے Ethereum کے ایڈریسز کے لیے ان کے بیلنسز کا نقشہ کھینچتی ہے۔

ٹوکنز منتقل کرنے کے لیے، صارفین کو لازماً معاہدے کے لیے ایک ٹرانزیکشن بھیجنی چاہیئے جو اس سے اپنے بیلنس کا کچھ حصہ کہیں اور مختص کرنے کا کہے گا۔ مثلاً، اگر Alice Binance اکاڈیمی کے 5,000 ٹوکنز Bob کو بھیجنا چاہتی ہے، تو وہ ایسا کرنے کے لیے Binance اکاڈیمی ٹوکن کے اسمارٹ معاہدے کے اندر موجود فنکشن کو کال کرتی ہے۔



ظاہری طور پر اس کی کال Ethereum کی ایک باقاعدہ ٹرانزیکشن کے اندر موجود ہوتی ہے جو ٹوکن کے معاہدے کو 0 ETH کی ادائیگی کرتی ہے۔ یہ کال ٹرانزیکشن میں موجود ایک اضافی فیلڈ میں شامل ہوتی ہے، جو اس چیز کو واضح کرتی ہے کہ Alice کیا کرنا چاہتی ہے – ہماری صورتحال میں، Bob کو ٹوکنز ٹرانسفر کرنا چاہتی ہے۔

اگرچہ وہ Ether نہیں بھیج رہی، تاہم اسے پھر بھی بلاک میں اپنی ٹرانزیکشن شامل کرنے کے لیے اس میں متعین کردہ فیس لازماً ادا کرنی ہو گی۔ اگر اس کے پاس کوئی ETH نہیں ہیں، تو اسے ٹوکنز ٹرانسفر کرنے سے قبل کچھ ETH حاصل کرنے کی ضرورت ہے۔

مندرجہ بالا کی حقیقی دنیا کی ایک مثال یہاں Etherscan پر پیش ہے: کوئی شخص BUSD معاہدے کو کال کر رہا ہے۔ آپ ملاحظہ کر سکتے ہیں کہ ٹوکنز ٹرانسفر کیے گئے تھے، اور فیس بھی ادا کر دی گئی ہے، حالانکہ قدر کی جگہ ظاہر کرتی ہے کہ 0 ETH بھیجے گئے ہیں۔

اب جبکہ ہم رفتار پکڑ چکے ہیں، تو آئیں اب ERC-20 کے عمومی معاہدے کے ڈھانچے کو بہتر طریقے سے سمجھنے کے لیے اس کی گہرائی میں جاتے ہیں۔ 


ERC-20 ٹوکنز کس طرح سے تخلیق کیے جاتے ہیں؟



ERC-20 کی تعمیل کے لیے، آپ کے معاہدے میں 6 لازمی فنکشنز شامل ہونے چاہئیں: totalSupply، balanceOf، ٹرانسفر، transferFrom، منظوری، اور الاؤنس۔ اس کے علاوہ، آپ اختیاری فنکشنز، جیسا کہ نام، علامت، اور اعشاریہ واضح کر سکتے ہیں۔ ممکن ہے کہ ان فنکشنز کے نام سے ہی آپ پر یہ واضح ہو گیا ہو کہ یہ فنکشنز کیا کرتے ہیں۔ اگر نہیں ہوا، تو پریشان مت ہوں – ہم ان کا ایک ایک کر کے جائزہ لیں گے۔ 

ذیل میں کچھ ایسے فنکشنز موجود ہیں جیسے کہ وہ Ethereum کی خاص مقصد کے لیے بنائی گئی سالیڈیٹی زبان میں ظاہر ہوتے ہیں۔


totalSupply

function totalSupply() public view returns (uint256)
جب کسی صارف کی جانب سے کال دی جائے، تو مندرجہ بالا فنکشن ٹوکنز کی اس کُل سپلائی کو واپس کر دیتا ہے جو معاہدے کے پاس موجود ہوتی ہے۔


balanceOf 

function balanceOf(address _owner) public view returns (uint256 balance)
totalSupply کے برعکس، balanceOf ایک پیرا میٹر (ایک ایڈریس) کو لیتا ہے۔ کال کیے جانے پر، یہ اس ایڈریس کے ٹوکن کی ہولڈنگز کا بیلنس واپس کر دیتا ہے۔ یاد رکھیں کہ Ethereum کے نیٹ ورک پر موجود اکاؤنٹس عوامی ہوتے ہیں، لہذا آپ کسی بھی صارف کے بیلنس کے بارے میں استفسار کر سکتے ہیں بشرطیکہ آپ کو اس کا ایڈریس معلوم ہو۔


ٹرانسفر

function transfer(address _to, uint256 _value) public returns (bool success)
ٹرانسفر مناسب انداز میں ٹوکنز کو ایک صارف سے دوسرے کو ٹرانسفر کرتا ہے۔ یہاں، آپ وہ ایڈریس، جس پر آپ بھیجنا چاہتے ہیں اور ٹرانسفر کی جانے والی رقم فراہم کرتے ہیں۔
کال کیے جانے پر، ٹرانسفر ایونٹ (اس صورتحال میں، ایونٹ ٹرانسفر) کہلائی جانے والی ایک چیز حرکت میں لاتا ہے، جو بنیادی طور پر بلاک چین کو اپنے لیے ایک ریفرنس کو شامل کرنے کا کہتی ہے۔


transferFrom

function transferFrom(address _from, address _to, uint256 _value) public returns (bool success)
transferFrom کا فنکشن ٹرانسفر کا ایک باسہولت متبادل ہے جو غیر مرکزی ایپلیکیشنز میں مزید پروگرام ایبیلیٹی فعال کرتا ہے۔ ٹرانسفر کی طرح، یہ ٹوکنز منتقل کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے، لیکن ضروری نہیں کہ وہ ٹوکنز اسی شخص سے تعلق رکھتے ہوں جو معاہدے کو کال کر رہا ہے۔ 

دیگر الفاظ میں، آپ کسی اور شخص – یا کسی اور معاہدے کو – اپنی طرف سے فنڈز کو ٹرانسفر کرنے کے لیے مجاز بنا سکتے ہیں۔ استعمال کی ممکنہ صورت میں سبسکرپشن پر مبنی سروسز کی ادائیگی شامل ہے، جہاں آپ ہر روز/ہفتے/مہینے دستی طور پر ادائیگی نہیں کرنا چاہتے۔ اس کی بجائے، آپ کسی پروگرام کو اپنے لیے یہ سب کرنے کی اجازت دیتے ہیں۔

یہ فنکشن ٹرانسفر ہی کی طرح کے ایونٹ متحرک کرتا ہے۔


منظوری

function approve(address _spender, uint256 _value) public returns (bool success)
منظوری پروگرام ایبیلیٹی کے نقطہ نگاہ سے ایک اور مفید فنکشن ہے۔ اس فنکشن کے ساتھ، آپ ان ٹوکنز کی تعداد محدود کر سکتے ہیں جو ایک اسمارٹ معاہدہ آپ کے بیلنس سے نکلوا سکتا ہے۔ اس کے بنا، آپ معاہدے کی خرابی (یا استحصال) اور اپنے تمام فنڈز چوری ہو جانے کے خطرے سے دوچار ہوتے ہیں۔ 

ہماری سبسکرپشن ماڈل کی مثال کو ہی دوبارہ لے لیں۔ فرض کریں کہ آپ کے پاس Binance اکاڈیمی ٹوکنز کی ایک بڑی تعداد موجود ہے، اور آپ ایک اسٹریمنگ DApp کے لیے ہفتہ وار متواتر ادائیگیاں ترتیب دینا چاہتے ہیں۔ آپ دن اور رات Binance اکاڈیمی کے مواد کو پڑھنے میں مصروف رہتے ہیں، اس لیے آپ ہر ہفتے ٹرانزیکشن دستی طور پر تخلیق کرنے میں وقت صرف نہیں کرنا چاہتے۔

آپ کے پاس Binance اکاڈیمی کے ٹوکنز کی شکل میں بہت زیاہ بیلنس موجود ہے، جو سبسکرپشن کی ادائیگی کے لیے درکار رقم سے کئی گنا زیادہ ہے۔ DApp کو ان تمام کو نکالنے سے روکنے کے لیے، آپ منظوری کے ذریعے ایک حد کو سیٹ کر سکتے ہیں۔ فرض کریں کہ آپ کی سبسکرپشن پہ ہر ہفتے Binance اکاڈیمی کے ایک ٹوکن کی لاگت آتی ہے۔ اگر آپ نے بیس ٹوکنز پر منظور کردہ قدر کو شمار کیا تھا، تو آپ پانچ ماہ کے لیے خود کار طور پر اپنی سبسکرپشن کی ادائیگی کروا سکتے ہیں۔

بد ترین صورت میں، اگر DApp آپ کے تمام فنڈز نکالنے کی کوشش کرتی ہے یا اگر کوئی بگ پایا جاتا ہے، تو آپ کو صرف بیس ٹوکنز کا ہی نقصان ہو گا۔ ہو سکتا ہے کہ یہ صورتحال مثالی نہ ہو، تاہم اپنے تمام فنڈز کھونے کی نسبت تو بہتر ہی ہے۔

کال کیے جانے پر، منظوری کی خصوصیت منظوری کے ایونٹ کو متحرک کرتی ہے۔ ٹرانسفر ایونٹ کی طرح، یہ بلاک چین پر ڈیٹا تحریر کرتی ہے۔


الاؤنس 

function allowance(address _owner, address _spender) public view returns (uint256 remaining)
الاؤنسکو منظوری کے ساتھ باہم ملا کر استعمال کیا جا سکتا ہے۔ جب آپ نے کسی معاہدے کو اپنے ٹوکنز کی نظم کاری کی اجازت دی ہوئی ہو، تو آپ یہ چیک کرنے کے لیے اسے استعمال کر سکتے ہیں کہ یہ اب بھی مزید کتنے ٹوکنز کو نکلوا سکتا ہے۔ مثال کے طور پر، اگر آپ کی سبسکرپشن آپ کے منظور کردہ بیس ٹوکنز میں سے بارہ استعمال کر چکی ہے، تو الاؤنس کے فنکشن کو کال کرنے پرکل آٹھ ٹوکنز واپس آنے چاہئیں۔


اختیاری فنکشنز

گزشتہ طور پر زیر بحث لائے گئے فنکشز لازمی ہیں۔ دوسری جانب، نام، علامت، اور اعشاریہ شامل کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی، لیکن وہ آپ کے ERC-20 معاہدے کو مزید دلکش ضرور بنا سکتے ہیں۔ بالترتیب، وہ آپ کو اس قابل بناتے ہیں کہ آپ انسانوں کی جانب سے پڑھے جانے کے قابل نام شامل کر سکیں، کوئی علامت سیٹ کر سکیں (جیسے کہ، ETH، BTC، BNB)، اور یہ واضح کر سکیں کے ٹوکنز کتنے اعشاری مقامات پر تقسیم کے قابل ہیں۔ مثال کے طور پر، وہ ٹوکنز جو کرنسیز کے طور پر استعمال کیے جاتے ہیں قابل تقسیم ہونے کے لحاظ سے ان ٹوکنز کے مقابلے میں زیادہ نفع حاصل کر سکتے ہیں جو کسی جائیداد کی ملکیت کی نمائندگی کرتے ہیں۔


حقیقی معاہدے میں یہ عوامل دیکھنے کے لیے GitHub پر یہ مثال ملاحظہ کریں۔


ERC-20 ٹوکنز کیا کر سکتے ہیں؟



مندرجہ بالا تمام فنکشنز باہم ملا کر ہی، ہمیں یہ ERC-20 معاہدہ حاصل ہوا ہے۔ ہم کُل سپلائی کا استفسار کر سکتے ہیں، بیلنسز کو چیک کر سکتے ہیں، فنڈز ٹرانسفر کر سکتے ہیں، اور دیگر DApps کو یہ اجازت دے سکتے ہیں کہ وہ ہمارے لیے ٹوکنز کی نظم کاری کریں۔

ERC-20 ٹوکنز کی اپیل کا ایک بڑا حصہ ان کی لچک پذیری ہے۔ طے شدہ رواج ڈویلپمنٹ کو محدود نہیں کرتے، لہذا فریقین اضافی خصوصیات لاگو کر سکتی ہیں اور اپنی ضروریات کے لیے موزوں ثابت ہونے والے مخصوص پیرا میٹرز سیٹ کر سکتی ہیں۔


اسٹیبل کوائنز

اسٹیبل کوائنز (فیاٹ کرنسیز کے لیے پیگ کردہ ٹوکنز) اکثر ERC-20 ٹوکن کے معیار استعمال کرتے ہیں۔ BUSD معاہدے کی وہ ٹرانزیکشن جس کا حوالہ ہم نے شروع میں دیا صرف ایک مثال ہے، اور زیادہ تر بڑے اسٹیبل کوائنز اس فارمیٹ میں دستیاب ہیں۔

فیاٹ سے تقویت یافتہ ایک عمومی اسٹیبل کوائن کے لیے، جاری کنندہ اپنے پاس یوروز، ڈالرز، وغیرہ کے ذخائر رکھتا ہے۔ پھر، اپنے ذخیرے میں موجود ہر یونٹ کے بدلے، وہ ایک ٹوکن جاری کرتے ہیں۔ اس سے مراد یہ ہے کہ اگر والٹ میں $10,000 لاک کیے گئے تھے، تو جاری کنندہ 10,000 ٹوکنز کو تخلیق کر سکتا ہے، جس میں سے ہر ایک $1 کے بدلے ریڈیم کیا جا سکتا ہے۔

تکنیکی لحاظ سے بات کی جائے، تو Ethereum میں اس کا اطلاق کافی آسان ہے۔ جاری کنندہ بس 10,000 ٹوکنز کے ساتھ ایک معاہدہ کو لانچ کر دیتا ہے۔ پھر، وہ انہیں اس وعدے کے ساتھ صارفین کو تقسیم کریں گے کہ وہ بعد ازاں فیاٹ کرنسی کی ایک متناسب مقدار کے ساتھ ٹوکنز ریڈیم کر سکتے ہیں۔ 

صارفین اپنے ٹوکنز کے ساتھ بہت سے کام انجام دے سکتے ہیں – وہ اشیاء اور سروسز کو خرید سکتے ہیں یا انہیں DApps میں استعمال کر سکتے ہیں۔ متبادل طور پر، وہ درخواست کر سکتے ہیں کہ جاری کنندہ انہیں فوری طور پر ایکسچینج کرے۔ اس صورت میں، جاری کنندہ واپس آنے والے ٹوکنز (انہیں ناقابل استعمال بناتے ہوئے) ضائع کر دیتا ہے اور اپنے ذخائر سے فیاٹ کی درست رقم نکال لیتا ہے۔

جیسا کہ پہلے بیان کیا گیا ہے، کہ اس سسٹم کی نگرانی کرنے والا معاہدہ نسبتاً سادہ ہے۔ تاہم، اسٹیبل کوائن لانچ کرنے کے لیے بیرونی عوامل پر بہت سا کام کرنے کی ضرورت ہوتی ہے، جیسا کہ، لاجسٹکس، انضباطی تعمیل، وغیرہ۔


سکیورٹی ٹوکنز

سکیورٹی ٹوکنز اسٹیبل کوائنز سے مماثل ہوتے ہیں۔ معاہدے کی سطح پر، دونوں ایک جیسے ہو سکتے ہیں چونکہ وہ ایک ہی طرح سے کام کرتے ہیں۔ یہ فرق جاری کنندہ کی سطح پر پیدا ہوتا ہے۔ سکیورٹی ٹوکنز سکیورٹیز، جیسا کہ اسٹاکس، بانڈز، یا مادی اثاثوں کی نمائندگی کرتے ہیں۔ اکثر(اگرچہ ہمیشہ یہ صورتحال نہیں ہوتی)، وہ ہولڈر کو کاروبار یا اشیاء میں کسی طرح کا اسٹیک عطا کر دیتے ہیں۔


سہولتی ٹوکنز

سہولتی ٹوکنز شاید آج کے دور میں پائے جانے والی ٹوکنز کی سب سے زیادہ عام قسم ہیں۔ گزشتہ دو پیشکشوں کے برعکس، وہ کسی چیز کی جانب سے تقویت یافتہ نہیں ہوتے۔ اگر اثاثے کی جانب سے تقویت یافتہ ٹوکنز کسی ایئر لائن کمپنی میں شیئرز جیسے ہوتے ہیں، تو سہولتی ٹوکنز اکثر پرواز کرنے والے پروگرامز کی طرح ہوتے ہیں: وہ ایک مخصوص فنکشن تو انجام دیتے ہیں، تاہم ان کی کوئی بیرونی مالیت نہیں ہوتی۔ سہولتی ٹوکنز استعمال کی بے شمار صورتوں پر توجہ مرکوز کر سکتے ہیں، جوکہ درون گیم کرنسی، غیر مرکزی ایپلیکیشنز کے لیے فیول، وفا داری کے پوائنٹس، اور بہت سی چیزوں کے طور پر کام کر سکتے ہیں۔



کیا آپ ERC-20 ٹوکنز کو مائن کر سکتے ہیں؟

آپ Ether (ETH) کو مائن کر سکتے ہیں، لیکن ٹوکنز مائن نہیں کیے جا سکتے – نئی تخلیق پر، ہم کہہ سکتے ہیں کہ وہ منٹ کردہ ہیں۔ جب کوئی معاہدہ لانچ کیا جاتا ہے، تو ڈویلپرز اپنے منصوبوں اور روڈ میپ کے مطابق سپلائی کو تقسیم کرتے ہیں۔
عموماََ، یہ کوائن کی ابتدائی پیشکش (ICO)، ایکسچینج کی ابتدائی پیشکش (IEO)، یا سکیورٹی ٹوکن کی پیشکش (STO) کے ذریعے کیا جاتا ہے۔ آپ ان مخففات کی مختلف اقسام کا سامنا کر سکتے ہیں، لیکن یہ نظریات کافی مماثل ہیں۔ سرمایہ کاران، معاہدے کے ایڈریس پر Ether بھیجتے ہیں، اور بدلے میں، نئے ٹوکنز وصول کرتے ہیں۔ جمع شدہ پیسے پراجیکٹ پر مزید ڈویلپمنٹ کو فنڈ کرنے کے لیے استعمال کیے جاتے ہیں۔ صارفین اس قابل ہونے کی توقع کرتے ہیں کہ وہ اپنے ٹوکنز کو استعمال کر سکیں (یا تو فوری طور پر یا بعد میں کسی تاریخ پر) یا پراجیکٹ ڈویلپ ہونے پر انہیں دوبارہ فروخت کر سکیں۔

ٹوکن کی تقسیم کو خودکار بننے کی ضرورت نہیں ہوتی۔ کراؤڈ فنڈنگ کے بہت سے ایونٹس صارفین کو مختلف ڈیجیٹل کرنسیز (جیسا کہ BNB، BTC، ETH، اور USDT) کی اقسام کے ساتھ ادائیگی کرنے کی اجازت دیتے ہیں۔ متعلقہ بیلنسز پھر صارفین کی جانب سے فراہم کردہ ایڈریسز کے لیے مختص کر دیے جاتے ہیں۔


ERC-20 ٹوکنز کے فوائد اور نقصانات

ERC-20 ٹوکنز کے فوائد

فنجیبل

ERC-20 ٹوکنز فنجیبل ہوتے ہیں – ہر یونٹ دوسرے کے ساتھ قابل تبادلہ ہوتا ہے۔ اگر آپ کے پاس Binance اکاڈیمی کا کوئی ٹوکن موجود تھا، تو یہ معنی نہیں رکھتا کہ آپ کے پاس کون سا مخصوص ٹوکن موجود تھا۔ آپ اسے کسی اور کے لیے ٹریڈ کر سکتے ہیں، اور فنکشن کے اعتبار سے وہ تب بھی مماثل ہوں گے، بالکل نقد یا سونے کی طرح۔

اس وقت یہ صورتحال مثالی ثابت ہو گی، اگر آپ کا ٹوکن کسی قسم کی کرنسی بننے کا ارادہ رکھتا ہے۔ یقیناً آپ مختلف خصوصیات کے حامل ایسے انفرادی یونٹس تو نہیں چاہیں گے، جو انہیں نان فنجیبل بنا دیں گے۔ اس کے سبب کچھ ٹوکنز دوسروں کے مقابلے میں زیادہ – یا کم – مالیت کے حامل ہو سکتے ہیں، جس کی وجہ سے ان کے مقصد کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔


لچک پذیر

جیسا کہ ہم نے پِچھلے سیکشن میں دریافت کیا، کہ ERC-20 ٹوکنز بہت حد تک حسب منشاء بنائے جا سکتے ہیں اور کئی مختلف ایپلیکیشنز کے لیے مختص کیے جا سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر، یہ درون گیم کرنسی کے طور پر، وفاداری کے پوائنٹس کے پروگرامز میں، قابل جمع ڈیجیٹل اشیاء کے طور پر، یا حتیٰ کہ فائن آرٹ اور ملکیتی حقوق کی نمائندگی کے لیے بھی استعمال کیے جا سکتے ہیں۔


مقبول

کرپٹو کرنسی کی صنعت میں ERC-20 کی مقبولیت اس کو بلیو پرنٹ کے طور پر استعمال کرنے کی ایک انتہائی پرزور وجہ ہے۔ حال ہی میں لانچ کردہ ٹوکنز کے ساتھ پہلے سے مسابقت پذیر بے شمار ایکسچینجز،والیٹس، اور اسمارٹ معاہدات موجود ہیں۔ مزید یہ کہ، ڈویلپر کی معاونت اور دستاویز کاری کی کثرت ہے۔ 


ERC-20 ٹوکنز کے نقصانات

توسیع پذیری

کرپٹو کرنسی کے بہت سے نیٹ ورکس کی طرح، Ethereum بڑھتے ہوئے درد سے پاک نہیں ہے۔ اپنی موجودہ حالت میں، یہ صحیح طرح سے وسعت حاصل نہیں کر سکتے – مصروفیت کے اوقات میں ٹرانزیکشن بھیجنے کی کوشش کرنے کا نتیجہ زیادہ فیس اور تاخیر کی صورت میں نکل سکتا ہے۔ اگر آپ کوئی ERC-20 ٹوکن لانچ کرتے ہیں اور نیٹ ورک پر رش بڑھ جاتا ہے، تو اس کی قابل استعمال ہونے کی صلاحیت متاثر ہو سکتی ہے۔

یہ مسئلہ صرف Ethereum تک محدود نہیں۔ بلکہ، یہ ایک محفوظ، منقسم سسٹمز میں ایک ضروری ٹریڈ آف ہے۔ کمیونٹی Ethereum 2.0 پر منتقلی میں ان مسائل کا احاطہ کرنے کا ارادہ رکھتی ہے، جو Ethereum Plasma اور Ethereum Casper جیسی اپ گریڈز کو نافذ کرے گی۔
بلاک چین کی توسیع پذیری: سائیڈ چینز اور ادائیگی کے چینلز میں توسیع پذیری کے مسائل کے بارے میں مزید جانیں۔


جعلسازیاں

اگرچہ ٹیکنالوجی کے ساتھ بذات خود کوئی مسئلہ نہیں ہے، تاہم کچھ پہلوؤں سے اس آسانی کو ایک منفی پہلو سمجھا جا سکتا ہے، جس کے ساتھ ٹوکن لانچ کیا جا سکتا ہے۔ ایک سادہ سے ERC-20 ٹوکن کی تخلیق میں بہت کم کوشش درکار ہوتی ہے، یعنی کہ کوئی بھی ایسا کر سکتا ہے – اچھے کے لیے یا برے کے لیے۔

اسی لیے، آپ کو اس بارے میں محتاط رہنا چاہیئے کہ آپ کس چیز میں سرمایہ کاری کر رہے ہیں۔ بلاک چین پراجیکٹس کے بھیس میں متعدد Pyrami اور Ponzi اسکیمز موجود ہیں۔  اس حوالے سے کسی حتمی فیصلے پر پہنچنے کے لیے بذات خود تحقیق کر لیں کہ آیا کوئی موقع جائز ہے یا نہیں۔

 

ERC-20، ERC-1155، ERC-223، ERC-721 – فرق کیا ہے؟

ERC-20، Ethereum ٹوکن کا پہلا (اور، اب تک، مقبول ترین) معیار تھا، لیکن اس دوڑ میں یہ اکیلا ہی شامل نہیں۔ سالہا سال سے، بہت سے دوسرے معیارات ابھر کر سامنے آئے ہیں، جو یا تو ERC-20 پر بہتری کی تجویز پیش کرتے ہیں یا مکمل طور پر مختلف اہداف پورے کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

کچھ کم عام معیارات وہ ہیں جو نان فنجیبل ٹوکنز (NFTs) میں استعمال کیے جاتے ہیں۔ کبھی کبھار، آپ کے استعمال کی صورت دراصل مختلف خصوصیات کے حامل منفرد ٹوکنز کے حصول سے فائدہ اٹھاتی ہے۔ اگر آپ کسی منفرد فن پارے، یا درون گیم اثاثے، وغیرہ، کو ٹوکنائز کرنا چاہتے ہیں، تو معاہدات کی ان اقسام میں سے کوئی ایک دلچسپ ثابت ہو سکتی ہے۔

مثال کے طور پر، ERC-721 کا معیار، انتہائی مقبول CryptoKitties DApp کے لیے استعمال کیا گیا تھا۔ ایسا معاہدہ صارفین کے لیے ان کے ذاتی نان فنجیبل ٹوکنز کو منٹ کرنے اور میٹا ڈیٹا (تصاویر، تفصیلات، وغیرہ۔) کو انکوڈ کرنے کے لیے API فراہم کرتا ہے۔ 

ERC-1155 معیار کو ERC-721 اور ERC-20 دونوں پر ایک بہتری کے طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔ یہ ایسے معیار کا خاکہ پیش کرتا ہے جو اسمارٹ معاہدے میں فنجیبل اور نان فنجیبل دونوں ٹوکنز کی معاونت کرتا ہے۔

ERC-223 یا ERC-621 جیسے دوسرے آپشنز کا مقصد قابل استعمال ہونے کی صلاحیت کو بہتر بنانا ہے۔ ٹوکن کو حادثاتی ٹرانسفرز سے بچانے کے لیے اول الذکر حفاظتی اقدامات لاگو کرتا ہے۔ ثانی الذکر ٹوکن کی سپلائی میں اضافہ کرنے یا کمی لانے کے لیے اضافی فنکشنز کو شامل کرتا ہے۔

NFTs کے موضوع پر مزید جاننے کے لیے، کرپٹو کی قابل جمع اشیاء اور نان فنجیبل ٹوکنز (NFTs) کا ہدایت نامہ ملاحظہ کرنے کو یقینی بنائیں۔


اختتامی خیالات

ERC-20 کا معیار سالوں سے کرپٹو کے اثاثے کی اسپیس پر غالب رہا ہے، اور یہ دیکھنا مشکل نہیں کہ آخر ایسا کیوں ہے۔ نسبتاََ آسانی کے ساتھ، کوئی بھی وسیع پیمانے پر استعمال کی صورتوں (سہولتی ٹوکنز، اسٹیبل کوائنز، وغیرہ۔) کو پورا کرنے کے لیے ایک سادہ سا معاہدہ وضع کر سکتا ہے۔ اس کے باوجود، ERC-20 میں، دوسرے معیارت کی جانب سے متعارف کروائی گئی کچھ خصوصیات کی کمی ہے۔ یہ دیکھنا باقی ہے کہ آیا معاہدے کی بعد میں آنے والی اقسام اس کی جگہ لیں گی یا نہیں۔