قابل جمع کرپٹو اور نان فنجیبل ٹوکنز (NFTs) کے لیے گائیڈ
امواد کی فہرست
تعارف
نان فنجیبل ٹوکن (NFT) کیا ہے؟
NFTs کس طرح سے کام کرتے ہیں؟
NFTs کس لیے استعمال کیے جاتے ہیں؟
میں NFTs کس طرح سے بناؤں؟
میں NFTs کس طرح سے خریدوں؟
CryptoKitties اور Ethereum کی کہانی 
NFTs اور کرپٹو کی قابل جمع اشیاء استعمال کرنے والی مقبول پراجیکٹس
اختتامی خیالات
قابل جمع کرپٹو اور نان فنجیبل ٹوکنز (NFTs) کے لیے گائیڈ
ہومآرٹیکلز
قابل جمع کرپٹو اور نان فنجیبل ٹوکنز (NFTs) کے لیے گائیڈ

قابل جمع کرپٹو اور نان فنجیبل ٹوکنز (NFTs) کے لیے گائیڈ

جدید
Published Feb 26, 2020Updated Mar 22, 2022
9m

تعارف

Bitcoin کی تخلیق نے ٹرسٹ سے مبرا، ڈیجیٹل نوادرات کا تصور متعارف کروایا۔ اس سے قبل، ڈیجیٹل سطح پر کسی بھی چیز کو کاپی کرنے کی مالیت تقریباً صفر ہوا کرتی تھی۔ بلاک چین ٹیکنالوجی کی آمد کے ساتھ، قابل پروگرام ڈیجیٹل نوادرات کا وجود اب ممکن ہو چکا ہے – جوکہ ہمیں ڈیجیٹل دنیا کو حقیقی دنیا کے مطابق ڈھالنے کے قابل بناتا ہے۔

نان فنجیبل ٹوکنز (NFTs)، جنہیں عموماً کرپٹو کی قابل جمع اشیاء بھی کہا جاتا ہے، اس تصور میں توسیع کا سبب بنتی ہیں۔ کرپٹو کرنسیز کے برعکس، جہاں ہر ٹوکن مساوی ہوتا ہے، نان فنجیبل ٹوکنز منفرد اور تعداد میں محدود ہوتے ہیں۔ 

ایک نئی، اور بلاک چین سے تقویت یافتہ ڈیجیٹل معیشت کے لیے NFTs ایک کلیدی تعمیراتی بلاک ہیں۔ بہت سے پراجیکٹس نے استعمال کے مختلف طریقوں کے تناظر میں NFTs کے ساتھ تجربہ کیا ہے، جس میں گیمنگ، ڈیجیٹل شناخت، لائسنسنگ، سرٹیفکیٹس، اور فائن آرٹ شامل ہیں۔ مزید براں، NFTs آپ کو اس قابل بھی بناتے ہیں کہ زائد مالیت کے حامل آئٹمز کی جزوی ملکیت حاصل کر سکیں۔ 

NFTs جاری کرنا اب کہیں گنا آسان ہو چکا ہے، اور ہم روزمرہ کی بنیاد پر بڑھتی ہوئی تعداد کو منٹ ہوتا دیکھ رہے ہیں۔  یہ آرٹیکل اس بات کی گہرائی میں جائے گا کہ NFTs کیا ہیں، انہیں کس لیے استعمال کیا جا سکتا ہے، اور یہ کہ 2017 کے آخر میں کیسے CryptoKitties کہلائی جانے والی گیم نے Ethereum بلاک چین کو منجمد کر دیا تھا۔


نان فنجیبل ٹوکن (NFT) کیا ہے؟

نان فنجیبل ٹوکن (NFT) کرپٹو گرافک ٹوکن کی ایک قسم ہے جو کہ ایک منفرد اثاثے کی نمائندگی کرتی ہے۔ یہ یا تو مکمل طور پر ڈیجیٹل اثاثہ جات ہو سکتے ہیں یا اصل دنیا کے اثاثہ جات کے ٹوکن میں تبدیل شدہ ورژنز ہو سکتے ہیں۔ چونکہ NFTs کا ایک دوسرے کے ساتھ تبادلہ نہیں کیا جا سکتا، اس لیے یہ ڈیجیٹل میدان میں صداقت اور ملکیت کے ثبوت کے طور پر عمل انجام دیتے ہیں۔
فنجیبیلیٹی کا مطلب ہے کہ کسی اثاثے کے انفرادی یونٹس ایک دوسرے کے ساتھ قابل مبادلہ اور لازماً مماثل ہوں۔ مثلاً، فیاٹ کرنسیز اس لیے فنجیبل ہوتی ہیں کیونکہ ہر یونٹ کسی اور مساوی انفرادی یونٹ کے ساتھ قابل مبادلہ ہوتا ہے۔ ایک دس ڈالر کا بل کسی بھی اور قابل مبادلہ دس ڈالر کے جائز بل کے ساتھ قابل مبادلہ ہوتا ہے۔ یہ امر ایک ایسے اثاثے کے لیے ضروری ہے جوکہ ایکسچینج کے ذریعے کے طور پر کام کرنے کا ہدف رکھتا ہے۔ 

فنجیبیلیٹی کرنسی کی ایک مطلو خصوصیت ہوتی ہے کیونکہ یہ مفت ایکسچینج کو فعال کرتی ہے، اور در حقیقت، ہر انفرادی یونٹ کی تاریخ جاننے کا کوئی طریقہ نہیں۔ تاہم، یہ خصوصیت قابل جمع اشیاء کے لیے مفید نہیں۔ 

اس صورت میں کیا ہو گا اگر ہم Bitcoin جیسے ڈیجیٹل اثاثہ جات تخلیق کر سکیں تاہم اس کی بجائے ہر یونٹ میں ایک منفرد شناخت کار شامل کر دیں؟ یہ انہیں دیگر تمام یونٹس سے مختلف بنا دے گا (جیسے کہ نان فنجیبل)۔ درحقیقت، یہی ایک NFT کہلاتا ہے۔


NFTs کس طرح سے کام کرتے ہیں؟

NFTs کی تخلیق اور اجراء کے لیے کئی فریم ورکس موجود ہیں۔ ان میں سے سب سے اہم ہے ERC-721، جوکہ ؑEthereum بلاک چین پر نان فنجیبل اثاثہ جات کئ اجراء اور ٹریڈنگ کا معیار ہے۔
ایک مزید جدید، اور بہتر معیار ہے ERC-1155۔ یہ امکانات کے ایک وسیع در کو وا کرتے ہوئے، معاہدے کو اس قابل بناتا ہے کہ اس میں فنجیبل اور نان فنجیبل دونوں ٹوکنز شامل کیے جا سکیں۔ NFTs کے اجراء کو معیاری بنانے کا عمل باہم عمل کے امکان میں اضافہ کرتی ہے، جوکہ بالآخر صارفین کے لیے مفید ثابت ہوتا ہے۔ عموماً اس سے یہ مراد ہے کہ منفرد اثاثہ جات مختلف ایپلیکیشنز کے مابین نسبتاً آسانی کے ساتھ ٹرانسفر کیے جا سکتے ہیں۔ 

Binance اسمارٹ چین (BSC) NFT کے اپنے معیارات کی حامل ہوتی ہے: یعنی BEP-721 اور BEP-1155۔ یہ دونوں Ethereum کے اس سے قبل بیان کیے گئے معیارات کے لیے یکساں خصوصیات فراہم کرتے ہیں۔ یہ دونوں ہی ایسے تخلیق کاران کی توجہ کا مرکز بن چکے ہیں جوکہ NFTs کو منٹ کرنا چاہتے ہیں جیسے کہ اس کی لاگت Ethereum سے کافی کم ہے۔ 

اگر آپ اپنے NFTs کو محفوظ کرنے اور ان کی خوبصورتی کو سراہنے کے بارے میں سوچ رہے ہیں، تو آپ ٹرسٹ والیٹ میں یہ عمل انجام دے سکتے ہیں۔ دیگر بلاک چین ٹوکنز کی طرح، آپ کا NFT ایک ایڈریس پر واقع ہو گا۔ یہ یاد رکھنا اہم ہے کہ NFTs کو مالک کی اجازت کے بغیر نقل یا ٹرانسفر نہیں کیا جا سکتا – حتیٰ کہ NFT کے اجراء کار کی جانب سے بھی۔

NFTs کھلی مارکیٹ پلیسز میں ٹریڈ کیے جا سکتے ہیں، جن میں شامل ہیں Treasureland، BakerySwap، اور BSC پر Juggerworld، اور Ethereum پر OpenSea۔ یہ مارکیٹس خریدار حضرات کو فروخت کنندگان کے ساتھ مربوط کرتی ہیں، اور ہر ٹوکن کی مالیت منفرد ہوتی ہے۔ فطری طور پر، مارکیٹ کی فراہمی اور مانگ کے سبب NFTs میں قیمت کی تبدیلیوں کا امکان زیادہ ہوتا ہے۔ 

لیکن اس قسم کی چیزوں کی مالیت کس طرح سے بڑھ سکتی ہے؟ دیگر کسی بھی قیمتی شئے کی طرح، مالیت از خود کسی شئے کی نہیں ہوتی بلکہ ان لوگوں کی جانب سے مقرر کی جاتی ہے جو اسے قیمتی سمجھتے ہیں۔ بنیادی طور پر، مالیت ایک مشترکہ سوچ ہوتی ہے۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ آیا یہ فیاٹ رقم ہے، قیمتی دھاتیں ہیں، یا کوئی سواری ہے – ان چیزوں کی مالیت اس لیے ہے کیونکہ لوگوں کا ماننا ہے کہ یہ قیمتی ہیں۔ جب اسی طرح ہر قیمتی چیز کو قیمتی بنایا جاتا ہے، تو پھر ڈیجیٹل اثاثہ جات کو کیوں نہیں؟


NFTs کس لیے استعمال کیے جاتے ہیں؟

NFTs منفرد ڈیجیٹل آئٹمز اور کرپٹو کی قابل جمع اشیاء جاری کرنے کے لیے غیر مرکزی ایپلیکیشنز (DApps) کی جانب سے استعمال کیے جا سکتے ہیں۔ ان ٹوکنز میں یا تو قابل جمع شئے، سرمایہ کاری کی کوئی پراڈکٹ، یا کوئی اور چیز شامل ہو سکتی ہے۔ 

گیمنگ کی معیشت کوئی نئی چیز نہیں۔ اور چونکہ پہلے سے ہی بہت سی آن لائن گیمز کی معیشت قائم ہے، لہٰذا گیمنگ کے اثاثہ جات کو ٹوکنائز کرنے کے لیے بلاک چین کا استعمال محض آگے کی جانب ایک قدم ہے۔ در حقیقت، NFTs کا استعمال بہت سی گیمز کو درپیش افراط زر کا مسئلہ حل کر سکتا ہے یا انہیں کم کر سکتا ہے۔

جہاں ورچوئل دنیا پہلے سے ہی پھل پھول رہی ہے، وہیں NFTs کے استعمال کی دلچسپ صورتوں میں سے ایک حقیقی دنیا کے اثاثہ جات کو ٹوکنائز کرنا ہے۔ یہ NFTs حقیقی دنیا کے اثاثہ جات کے چند حصوں کی عکاسی کرتے ہیں جنہیں بلاک چین پر بطور ٹوکنز محفوظ اور ٹریڈ کیا جا سکتا ہے۔ یہ بہت سی ایسی مارکیٹس کے لیے نہایت ضروری ہونے والی لیکویڈیٹی متعارف کروا سکتا ہے جنہیں بصورت دیگر اس کی معقول مقدار حاصل نہ ہو پاتی، جیسے کہ فائن آرٹ، ریئل اسٹیٹ، نادر قابل جمع اشیاء، اور مزید بہت کچھ۔

ڈیجیٹل شناخت بھی ایک ایسا سیکٹر ہے جوکہ NFTs کی خصوصیات سے فائدہ اٹھا سکتا ہے۔ بلاک چین پر شناخت اور ملکیت کا ڈیٹا اسٹور کرنے سے دنیا بھر میں موجود بہت سے لوگوں کے لیے رازداری اور ڈیٹا کی سالمیت میں اضافہ ہو جائے گا۔ بیک وقت، ان اثاثہ جات کے آسان اور ٹرسٹ سے مبرا ٹرانسفرز عالمی معیشت میں تنازعات کو کم کر سکتے ہیں۔


میں NFTs کس طرح سے بناؤں؟

BSC یا Ethereum پر اپنے NFTs تخلیق کرنا ایک سادہ سا عمل ہے جوکہ بہت سے پلیٹ فارمز اور NFT ایکسچینجز کی جانب سے پیش کیا جاتا ہے۔ شروعات کے لیے آپ کو اپنی منٹنگ فیس کی ادائیگی کے لیے چند کرپٹو اور کوئی ایسی چیز درکار ہے جسے آپ NFT میں بدل سکیں۔ آپ کو یہ فیصلہ بھی لینا ہو گا کہ آیا آپ اپنے NFT کو Ethereum پر منٹ کریں گے یا پھر Binance اسمارٹ چین پر۔

روایتی طور پر Ethereum ہی NFTs اور ان کی ترقی کا گڑھ رہا ہے۔ صارفین کے درمیان اس کا استعمال کافی مقبول ہے اور اس کی NFT کمیونٹی بھی خاصی وسیع ہے، تاہم ٹرانزیکشن فیس کافی زیادہ ہے۔ اسی وجہ سے صارفین کے لیے خریدنے، بیچنے، اور ٹرانزیکشنز انجام دینے جیسی سرگرمیاں کافی مہنگی پڑتی ہیں۔ BSC ایک نئی بلاک چین ہے تاہم NFT مارکیٹس میں اب تک کافی ترقی کر چکی ہے۔ اس کی ٹرانزیکشنز بھی کافی سستی ہیں۔

اپنے NFTs کیسے تخلیق کیے جائیں کے حوالے سے ہمارا ہدایت نامہ آپ کو وہ طریقہ بتائے گا جس کے ذریعے آپ اپنی تخلیقات کو نان فنجیبل ٹوکنز میں تبدیل کر سکتے ہیں۔


میں NFTs کس طرح سے خریدوں؟

جیسا کہ ہم نے تذکرہ کیا، اگر آپ نان فنجیبل ٹوکنز خریدنا چاہتے ہیں تو آپ کو چاہیئے کہ سب سے پہلے NFT مارکیٹ پلیسز کا جائزہ لیں۔ تاہم آپ کے لیے صرف یہی معلومات کافی نہیں۔ آپ محض کسی کریڈت کارڈ یا PayPal کے ذریعے NFTs نہیں خرید سکتے۔ اس عمل کے لیے ایک کرپٹو والیٹ اور چند کرپٹو بھی درکار ہے۔

Binance اسمارٹ چین کے NFTs کے لیے، قیمتیں تقریباً ہمیشہ ہی BNB کی صورت میں ہوں گی۔ Ethereum کے NFTs عموماً Ether (ETH) کا استعمال کریں گے۔ یہ دونوں کرپٹو کرنسیز Binance ایکسچینج پر خریدنے کے لیے دستیاب ہیں۔ ایک مرتبہ اپنی منتخب کردہ کرپٹو خرید لینے کے بعد، فنڈز کو کسی ایسے والیٹ میں ڈالیں جو NFT مارکیٹ پلیسز کے ساتھ تعامل انجام دے سکے۔
براؤز ایکسٹینشن والیٹس کے لیے Binance چین والیٹ اور MetaMask اچھے آپشنز ہیں۔ دونوں کو ہی ایک NFT مارکیٹ پلیس سے مربوط کیا جا سکتا ہے۔ بس آپ کو اپنے Binance میں موجود کرپٹو اپنے والیٹ پر ٹرانسفر کرنی ہو گی، مارکیٹ پلیس کی ویب سائٹ پر جانا ہو گا، اور اپنا والیٹ مربوط کرنا ہو گا (مربوط کریں کا بٹن عموماً بالائی دائیں کونے پر موجود ہوتا ہے)۔ جعلی اور مشکوک وی سائٹس سے بچ کر رہیں۔ URL کو دو مرتبہ چیک کر لیں اور اس صورت میں اسے بک مارک کرنے پر غور کریں اگر آپ اس کا زیادہ استعمال کرتے ہیں۔

اگر آپ موبائل کے تجربے کو ترجیح دیتے ہیں، تو ٹرسٹ والیٹ کو ایک نظر دیکھیں۔ یہ iOS اور Android دونوں کے لیے دستیاب ہے اور کئی بلاک چینز کی معاونت بھی کرتا ہے۔ یاد رکھیں کہ Ethereum اور BSC کے ساتھ تعامل مفت میں انجام نہیں دیا جا سکتا! لہٰذا ٹرانزیکشن کی فیس کی ادائیگی کے لیے چند اضافی کرپٹو رکھنا کارآمد ثابت ہوتا ہے۔


CryptoKitties اور Ethereum کی کہانی 

ایک بڑے پیمانے پر توجہ حاصل کرنے والے اولین NFT پراجیکٹس میں سے ایک CryptoKitties تھا، جوکہ Ethereum پر بنی ایک ایسی گیم تھی جوکہ پلیئرز کو اس قابل بناتی ہے کہ ورچوئل بلیاں جمع، بریڈ، اور ایکسچینج کر سکیں۔


ہر CryptoKitty کئی مختلف خصوصیات کے مرکب کی حامل ہو سکتی ہیں، جیسے کہ عمر، نسل، یا رنگ۔ اس کے علاوہ، ان میں سے ہر ایک منفرد ہوتی ہے، اور انہیں ایک دوسرے کے ساتھ تبدیل نہیں کیا جا سکتا۔ اس کے علاوہ، یہ ناقابل تقسیم ہوتی ہیں، یعنی کہ ایک CryptoKitty ٹوکن کو چھوٹے حصوں میں تقسیم کرنے کا کوئی طریقہ نہیں (جیسے کہ Ether کے عوض Gwei)۔

نیٹ ورک پر ہلچل مچانے والی اضافی سرگرمی کے سبب Ethereum بلاک چین کو مسدود کرنے والی CryptoKitties کی کافی بدنامی ہوئی۔ دسمبر 2017 میں Ethereum پر موجود 25% ٹریفک کا تعلق انہیں قابل جمع بلیوں سے تھا۔ یہ واضح ہے کہ اس گیم نے Ethereum نیٹ ورک پر واضح اثرات مرتب کیے، تاہم دیگر عوامل نے بھی اس میں کردار ادا کیا، جس میں ابتدائی کوائن کی آفر (ICO) کا فروغ بھی شامل ہے۔

CryptoKitties بلاک چین کے استعمال کی صورت کی ایک ابتدائی مثال ہے جو کسی کرنسی پر مشتمل نہیں، بلکہ محض فرصت و تفریح کے لیے استعمال کی جاتی ہے۔ مجموعی طور پر، ان ورچوئل بلیوں نے لاکھوں ڈالرز منتقل کیے، اور اور بعض نادر یونٹس میں سے کچھ یوں بکے کہ جن میں سے ہر ایک کی مالیت ہزاروں ڈالرز تھی۔


NFTs اور کرپٹو کی قابل جمع اشیاء استعمال کرنے والی مقبول پراجیکٹس

بہت سے مختلف پراجیکٹس پہلے سے ہی NFTs کو قابل جمع اور قابل ٹریڈ اشیاء کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ آیئے ان میں سے چند مقبول ترین کا جائزہ لیتے ہیں۔


Decentraland

Decentraland ورچوئل سطح پر موجود ایک غیر مرکزی حقیقی دنیا ہے جہاں پلیئرز ورچوئل زمین اور درون گیم NFT آئٹمز کے مالک بن سکتے ہیں اور انہیں ایکسچینج کر سکتے ہیں۔ Cryptovoxels بھی اسی طرح کی ایک گیم ہے جہاں پلیئرز ورچوئل ملکیت بنا سکتے ہیں، اس پر کام کر سکتے ہیں، اور اسے ایکسچینج کر سکتے ہیں۔


PancakeSwap

PancakeSwap حجم کے حساب سے BSC میں سب سے زیادہ استعمال کیا جانے والا خودکار مارکیٹ میکر ہے، اور یہ مقبول ترین NFTs میں سے چند کا حامل ہے۔ یہ پراجیکٹ پلیٹ فارم کے صارفین کے لیے انعامات اور مقابلہ جات کی مد میں قابل جمع بنیز ریلیز کرتا ہے۔ ان میں سے چند صرف زیبائش کے لیے ہوتے ہیں، جبکہ دیگر CAKE کے عوض قابل مبادلہ ہوتے ہیں، جوکہ پلیٹ فارم کا مقامی ٹوکن ہے۔


Gods Unchained

Gods Unchained ایک ڈیجیٹل قابل جمع کارڈ گیم ہے جہاں بلاک چین پر کارڈز بطور NFTs جاری کیے جاتے ہیں۔ چونکہ ہر ڈیجیٹل کارڈ منفرد ہوتا ہے، لہٰذا پلیئرز ملکیت کی اسی سطح کے ساتھ ان کے مالک بن سکتے ہیں اور انہیں ٹرید کر سکتے ہیں جیسے کہ یہ اصل کارڈز ہوں۔


CryptoPunks

CryptoPunks ڈیجیٹل آرٹ کے قابل جمع حصے ہوتے ہیں، جن میں سے ہر ایک، ایک منفرد، 8 bit طرز کا NFT کردار پیش کرتا ہے۔ یہ پراجیکٹ ERC-721 ٹوکن کے لیے ایک مثال تھا اور کرپٹو آرٹ کے جنون کی اولین مثالوں میں سے ایک تھا۔ اس کے بعد سے لے کر اب تک CryptoPunks لاکھوں ڈالرز میں بک چکے ہیں اور دنیا بھر میں اس قسم کے کئی پراجیکٹس کے لیے سنگ بنیاد بن چکے ہیں۔


Binance کی قابل جمع اشیاء اور NFTs

Binance خاص انعامات کی صورت میں صارفین کو ان Binance پر ان کی سرگرمی کی بنیاد پر NFTs فراہم کرتی ہے۔ Futures پر ٹریڈنگ سے لے کر Pizza Day NFTs تک، آپ باقاعدگی کے ساتھ Binance کی ایسی قابل جمع اشیاء حاصل کر سکتے ہیں جوکہ قابل ٹریڈ بھی ہیں۔


Binance کی قابل جمع اشیاء بھی ایک مثال ہیں۔ یہ وہ NFTs ہیں جو Enjin کے تعاون سے جاری کیے گئے تھے۔ اگر آپ ان میں سے کچھ حاصل کرنا چاہتے ہیں، تو اس امر کو یقینی بنائیں کہ Twitter پر Binance کو فالو کریں اور اگلے انعامات ملاحظہ کریں! اگر آپ NFT کے انعامات کی تقسیم میں حصہ لینا چاہتے ہیں، تو ان مختصر مراحل پر عمل کریں:

1۔ ایک ایسا والیٹ ڈاؤن لوڈ کریں جو Ethereum کی معاونت کرتا ہو، جیسے کہ ٹرسٹ والیٹ۔ 

2۔ اپنا Ethereum ایڈریس کاپی کریں اور انعامات کی تقسیم کے اصولوں کے تحت اسے فراہم کریں۔ ممکن ہے کہ آپ کو یہ ایک فارم کی صورت میں جمع کروانا پڑے یا ایک Twitter کے تبصرے کے طور پر چھوڑنا پڑے۔ یہ جاننے کے لیے دو مرتبہ اصولوں کو جائزہ لینا یقینی بنائیں کہ داخل ہونے کے لیے آپ کو کیا کرنا ہو گا۔

3۔ اگر آپ نے ایک NFT جیتا ہے اور اس کی تقسیم کی جا چکی ہے، تو یہ آپ کو ٹرسٹ والیٹ کے تحت قابل جمع اشیاء کی ٹیب میں دکھائی دے گا۔ اس کے بعد سے، آپ یا تو P2P مارکیٹ پلیس پر HODL یا بیچنے کا انتخاب کر سکتے ہیں۔


Binance NFT مارکیٹ پلیس صارفین کو اس قابل بناتی ہے کہ اپنے تخلیق کردہ NFTs کو منٹ اور ٹریڈ کریں۔ اس میں دنیا کے مقبول تخلیق کاران کی جانب سے تیار کردہ خصوصی NFTs بھی شامل ہیں، جیسے کہ موسیقار Lewis Capaldi اور کرپٹو آرٹسٹ Trevor Jones۔ یہ پلیٹ فارم اس مارکیٹ پلیس کے ذریعے ہونے والی فروخت پر تخلیق کاران کو اعزازیہ بھی فراہم کرتا ہے۔


کرپٹو اسٹامپس

کرپٹو اسٹاپمس آسٹریائی ڈاک سروس کی جانب سے جاری کیے جاتے ہیں اور ڈیجیٹل دنیا کو حقیقی دنیا کے ساتھ مربوط کرتے ہیں۔ یہ اسٹامپس دیگر کسی بھی اسٹامپ کی طرح ڈاک کے تبادلے کے لیے استعمال کی جاتی ہیں۔ تاہم، انہیں Ethereum بلاک چین پر ڈیجیٹل تصاویر کی حیثیت سے بھی محفوظ کیا جاتا ہے، جوکہ انہیں ایک قابل ٹریڈ اور قابل جمع شئے بناتا ہے۔


اختتامی خیالات

ڈیجیٹل قابل جمع اشیاء بلاک چین ٹیکنالوجی کے لیے روایتی مالیاتی ایپلیکیشنز کے علاوہ بھی نئے در وا کرتی ہیں۔ ڈیجیٹل دنیا میں مادی اثاثہ جات کی عکاسی کرتے ہوئے، NFTs بلاک چین ایکو سسٹم اور وسیع تر معیشت کا اہم حصہ بن سکتے ہیں۔

اس کے استعمال کی کئی صورتیں ہیں، اور اس بات کا بہت زیادہ امکان ہے کہ اس بہترین ٹیکنالوجی کو لے کر بہت سے ڈویلپرز نئی اور دلچسپ اختراعات متعارف کروائیں گے۔