Schnorr دستخط کی Bitcoin کے لیے کیا اہمیت ہے؟
امواد کا جدول
تعارف
ڈیجیٹل دستخطوں کا مختصر خلاصہ
Schnorr دستخط کیا ہیں؟
Schnorr دستخط کیوں فائدہ مند ہوتے ہیں؟
Bitcoin میں Schnorr دستخط کب نافذ کیے جائیں گے؟
اختتامی خیالات
Schnorr دستخط کی Bitcoin کے لیے کیا اہمیت ہے؟
ہومآرٹیکلز
Schnorr دستخط کی Bitcoin کے لیے کیا اہمیت ہے؟

Schnorr دستخط کی Bitcoin کے لیے کیا اہمیت ہے؟

درمیانہ
شائع کردہ Jul 8, 2020اپڈیٹ کردہ Feb 3, 2022
5m

امواد

تعارف

جیسا کہ شاید آپ جانتے ہیں،  Bitcoin کسی چیز کے ذریعے سے ملکیتی حقوق نافذ کرتا ہے جسے Elliptic Curve ڈیجیٹل دستخط الگورتھم (ECDSA) کہا جاتا ہے۔ یہ الگورتھم آپ کو ایک عدد (یعنی  نجی کلید) لینے اور اس سے عوامی کلید اخذ کرنے کی اجازت دیتا ہے۔
اس کا کمال یہ ہے کہ، اگرچہ نجی کلید سے عوامی کلید حاصل کرنا آپ کے لیے آسان ہے، لیکن اس کا الٹ کرنا ممکن نہیں۔ آپ کی نجی کلید Bitcoin نیٹ ورک پر آپ کا پاسپورٹ ہوتا ہے۔ یہی چیز آپ کو کوانز وصول کرنے کے لیے ایک ایڈریس تخلیق کرنے کی اجازت دیتی ہے، اور یہی چیز بعد میں آپ کو انہیں خرچ کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ 

اس آرٹیکل میں، ہم Schnorr دستخط کے الگورتھم کو ایک نظر دیکھیں گے، ECDSA کا ایک متبادل جو Bitcoin میں کچھ دلچسپ تبدیلیاں لے کر آ سکتا ہے۔


ڈیجیٹل دستخطوں کا مختصر خلاصہ

ڈیجیٹل دستخط بالکل اپنے قلم اور کاغذ کے سابقین کی طرح ہیں، لیکن یہ ان سے بہت زیادہ محفوظ ہیں۔ کوئی بھی تھوڑے سے وقت اور کوشش کے ساتھ قلم اور کاغذ والے دستخط کی نقالی کر سکتا ہے۔ ڈیجیٹل دستخط اسکیم کے ساتھ آپ اس طرح نہیں کر سکتے، خواہ آپ کے تصرف میں سینکڑوں ہزاروں سال بھی ہوں۔

ڈیجیٹل دستخطوں کے استعمال کی کئی صورتیں ہیں۔ ان میں سے ایک مشہور دنیا کے سامنے یہ چیز ثابت کرنا شامل ہے کہ آپ نے مخصوص پیغام لکھا۔ جیسا کہ بیان کیا گیا، آپ ایک نجی کلید (ایک بڑا نمبر جو آپ کو صیغۂ راز میں رکھنا چاہیئے) سے عوامی کلید تخلیق کر سکتے ہیں۔ آپ secp256k1 curve پر کچھ تخیلاتی ریاضی انجام دیتے ہوئے ایسا کرتے ہیں۔ وہاں سے، آپ اپنی عوامی کلید سے عوامی ایڈریس بھی تخلیق کر سکتے ہیں۔

یاد رہے کہ اپنی عوامی کلید کسی کو بھی دکھانا پوری طرح محفوط ہے۔ آپ اسے اپنی ویب سائٹ یا Twitter بائیو پر شامل کر سکتے ہیں تاکہ دوسرے لوگ آپ کی شناخت کی توثیق کر سکیں۔ اسی طرح، آپ دوسروں کے ساتھ اپنے عوامی ایڈریسز بھی شیئر کر سکتے ہیں تاکہ وہ آپ کو کرپٹو کرنسیز بھیج سکیں۔

آپ کی نجی کلید آپ کو ڈیجیٹل دستخط تخلیق کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ ایک پیغام کو لکھنے اور اپنی نجی کلید کو استعمال کرتے ہوئے اس پر کوئی کارروائی انجام دے کر، آپ ایک دستخط شدہ پیغام تخلیق کرتے ہیں۔ کوئی بھی اسے لے سکتا ہے اور آپ کی عوامی کلید کے ساتھ اس کا موازنہ کر سکتا ہے کہ آیا کیا واقعی یہ آپ کی جانب سے ہی دستخط شدہ ہے۔

یہ چیز Bitcoin کے ساتھ کیسے مربوط ہے؟ اچھا، جب بھی آپ کوئی Bitcoin ٹرانزیکشن کرتے ہیں، تو آپ ڈیجیٹل طور پر ایک پیغام پر دستخط کر رہے ہوتے ہیں جو کہتا ہے میں یہ کوائنز بھیج رہا ہوں جو پہلے مجھے بھیجے گئے تھے۔ اس کے بعد، جب یہ نیٹ ورک پر موجود دیگر نوڈز کو بھیج دیا جاتا ہے، تو وہ ECDSA دستخط کی پیغام کے ساتھ مماثلت کو چیک کر سکتے ہیں۔ اگر ایسا نہیں ہوتا، تو وہ اسے فوراً مسترد کر دیں گے۔


Schnorr دستخط کیا ہیں؟

Schnorr دستخط ایک مختلف قسم کی اسکیم ہوتے ہیں۔ یہ بالکل Elliptic Curve ڈیجیٹل دستخط الگورتھم کی طرح کام کرتا ہے جو ہم موجودہ طور پر استعمال کر رہے ہیں، لیکن اس کی نسبت کافی بڑی تعداد میں فائدے رکھتا ہے۔ Schnorr دستخط درحقیقت ECDSA سے پہلے وجود رکھتے ہیں، یہ چیز بہت سوں کو حیران کرنے کا سبب بنتی ہے کہ یہ Bitcoin میں شروع سے ہی انضمام کردہ کیوں نہ تھے۔ 

ایک ممکنہ توجیہہ یہ ہے کہ اسکیم کے تخلیق کار – Claus P. Schnorr نے انہیں پیٹنٹ کروایا۔ پیٹنٹس Bitcoin کا وائٹ پیپر ریلیز ہونے سے مہینوں پہلے 2008 کی ابتداء میں ہی زائد المیعاد ہو گئے تھے، لیکن اسکیم اب تک بھی تمام طبقات میں معیاری نہیں تھی۔ اسی طرح، ساتوشی ناکاموٹو نے بڑے پیمانے پر قبول شدہ (اور اوپن سورس) ECDSA کو منتخب کیا۔


Schnorr دستخط کیوں فائدہ مند ہوتے ہیں؟

Schnorr دستخط دوسری اسکیمز کی نسبت بالکل سادہ ہیں۔ نتیجتاً، وہ اپنے متبادلات کی نسبت زیادہ محفوظ ثابت ہوتے ہیں۔ ہو سکتا ہے پہلی نظر میں یہ آپ کو کچھ خاص نہ لگیں، لیکن یہ ایک اور مضبوط خصوصیت: خطیّت کے بھی حامل ہوتے ہیں۔ 
سادے الفاظ میں، یہ چیز اسکیم کو کئی سرگرمیوں کے لیے پُر کشش بناتی ہے – جن میں سب سے قابلِ ذکر، ملٹی سگنیچر ٹرانزیکشنز ہیں۔ ہو سکتا ہے آپ کو معلوم ہو کہ Bitcoin پہلے ہی ملٹی سگنیچر کی معاونت کرتا ہے، لیکن یہ بہترین طریقوں سے ایسا نہیں کرتا۔

جب آپ کوئی ملٹی سگنیچر ایڈریس تخلیق کرتے ہیں، تو جو کوئی بھی آپ کو فنڈز بھیجتا ہے اسے یہ جاننے کی ضرورت نہیں ہوتی کہ آپ نے اندراجات خرچ کرنے کے لیے کون سی شرائط سیٹ کر رکھی ہیں۔ ہو سکتا ہے انہیں یہ بھی معلوم نہ ہو کہ وہ ایک ملٹی سگنیچر سیٹ اپ کو فنڈز بھیج رہے ہیں – ایڈریس سے متعلق ایک ہی خصوصیت یہ ہوتی ہے کہ "3" سے اس کی ابتداء ہوتی ہے۔ 

تاہم، جب آپ فنڈز منتقل کرنا چاہتے ہوں تو آپ اس کی فطرت کو عیاں کر دیتے ہیں۔ فرض کریں کہ آپ نے ایلس (Alice) اور باب (Bob) کے ساتھ 3 کا 3 سیٹ اپ کو استعمال کیا۔ بالفرض، 5 BTC، خرچ کرنے کے لیے، آپ تینوں کو عوامی کلیدیں اور درست دستخط لازماً فراہم کرنے ہوں گے۔ جب آپ ایڈریس سے باہر فنڈز کو منتقل کرتے ہیں، تو پورا نیٹ ورک بلاک چینکو دیکھ کر جان سکتا ہے کہ کیا ہوا ہے۔ 

رازداری کے نقطہ نظر سے، یہ اچھی بات نہیں ہے۔ اس میں شامل کرنے کے لیے، اگر ہم نسبتاً بڑا ملٹی سگنیچر (مثلاً 10 میں سے 8) تخلیق کرتے ہیں، تو اس کا مطلب ہے کہ ہم بلاک چین پر بالکل تھوڑی سی جگہ لے رہے ہیں۔ چونکہ یہ ایک طویل ٹرانزیکشن کا سبب بنے گا، اس لیے یہ مہنگا ہو سکتا ہے – یاد رکھیں کہ آپ کی ٹرانزیکشن میں جتنی زیادہ بائٹس ہوں گی، آپ کو اتنی ہی زیادہ ادائیگی کرنے کی ضرورت ہو گی۔

ان رازداری اور اسکیل ہونے کی صلاحیت کے مسائل کے لیے Schnorr دستخطوں کو ایک حل بتایا جاتا ہے۔ آپ دیکھتے ہیں، یہ دستخط اکٹھے کرنے جیسی چیزوں کی اجازت دیتے ہیں، جو متعدد دستخط کنندگان کے دستخطوں کو ایک واحد دستخط میں جمع کرتی ہے۔ نئے وجود آنے والے ماسٹر دستخط اب بھی ایک شخص کے دستخطوں جتنی، حسب معمول لمبائی کے ہوں گے، جو خاطر خواہ اسپیس سیونگز کا سبب بنے گا۔ 
اس کے علاوہ، جمع شدہ دستخط ناظر کے لیے یہ تعین کرنا مزید مشکل بنا دیتے ہیں کہ کس نے ٹرانزیکشن پر دستخط کیے (یا دستخط نہیں کیے) ہیں۔  m-of-m اسکیمز (جہاں تمام شرکاء کو فنڈز خرچ کرنے کے لیے لازماً دستخط کرنا ہوتے ہیں) میں، آپ واحد فریق کی ٹرانزیکشنز اور ملٹی سگنیچرز کی حامل کے مابین تفریق نہیں کر سکیں گے۔
اہم طور پر، Schnorr دستخط مزید پیشرفتوں کے لیے ایک بلڈنگ بلاک ہوتے ہیں۔ ایک بار نفاظ ہو جانے کے بعد، انہیں کرپٹو میں اٹامک سواپس اور روشنی کا نیٹ ورک جیسی ٹیکنالوجیز کو بہتر بنانے کے لیے لیوریج کیا جا سکتا ہے۔



Bitcoin میں Schnorr دستخط کب نافذ کیے جائیں گے؟

ہم پر یقین نہیں ہیں۔ Bitcoin پروٹوکول پر اکثر اپ گریڈز کی طرح، Bitcoin صارفین کی وسیع کمیونٹی کو Schnorr دستخط کی شمولیت پر رضامند ہونے میں وقت لگ سکتا ہے۔ Bitcoin Core معاونین پیٹر وائل (Pieter Wuille)، جوناس نک (Jonas Nick)، اور ٹم رفنگ (Tim Ruffing) نے Bitcoin کی بہتری کی تجویز (BIP) کا ڈرافٹ جمع کروا دیا ہے، لیکن ابھی بھی تھوڑا سا کام ہونا باقی ہے۔
بلاک اسٹریم نے پہلے ہی ایک نفاذ – MuSig ریلیز کر دیا ہے۔ دستخط اور کلید جمع کرنے کی اجازت دیتے ہوئے، یہ Bitcoin کی اپنی Schnorr دستخط اسکیم کی بنیاد کے طور پر کام کر سکتا ہے۔
Schnorr دستخطوں کو ایک سافٹ فورک کے طور پر کوڈ میں ضم کیا جا سکتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ کوئی بھی تبدیلی نیٹ ورک کو تقسیم نہیں کرے گی۔ اس کی بجائے، یہ ایک "انتخاب" اپ گریڈ ہو گا۔ اس کے باوجود، اس سوچ کی امید رکھی جا سکتی ہے کہ ہم انہیں مستقبل قریب میں ضم دیکھیں گے – ابھی بھی رضامندی تک پہنچنے میں چند سال لگ سکتے ہیں۔


اختتامی خیالات

Schnorr دستخط Bitcoin کے موجودہ روڈ میپ پر بہت زیادہ متوقع سنگ میلوں میں سے ایک ہیں۔ محض ایک اپ گریڈ کے ساتھ، وہ رازداری اور اسکیل ہونے کی صلاحیت کے اہم فائدے فراہم کر سکتے ہیں۔ شاید زیادہدلچسپ طور پر، یہ Bitcoin اسمارٹ معاہدوں اور Taproot جیسے زیادہ جدید تصورات میں مزید ترقیوں کیلیئے منظرنامہ بھی سیٹ کرتے ہیں۔