کرپٹو میں اسٹیکنگ کیا ہے؟
امواد کا جدول
تعارف
پروف آف اسٹیک (PoS) کیا ہے؟
پروف آف اسٹیک کو کس نے تخلیق کیا؟
ڈیلیگیٹڈ پروف آف اسٹیک (DPoS) کیا ہے؟
اسٹیکنگ کس طرح کام کرتا ہے؟
اسٹیکنگ کے انعامات کا حساب کیسے لگایا جاتا ہے؟
اسٹیکنگ پول کیا ہے؟
کولڈ اسٹیکنگ کیا ہے؟
تمام کرپٹو کرنسیز میں اسٹیکنگ کیوں نہیں ہوتی؟
Binance پر اسٹیک کس طرح کیا جائے
اختتامی خیالات
کرپٹو میں اسٹیکنگ کیا ہے؟
ہوم
آرٹیکلز
کرپٹو میں اسٹیکنگ کیا ہے؟

کرپٹو میں اسٹیکنگ کیا ہے؟

جدید
شائع کردہ Sep 22, 2019اپڈیٹ کردہ Nov 11, 2022
8m

TL؛DR

اسٹیکنگ سرمایہ کاروں کے لیے اپنے ڈیجیٹل اثاثے فروخت کیے بغیر اپنی ہولڈنگز میں اضافہ کرنے کے حوالے سے ایک مقبول طریقہ کار بن چکی ہے۔ اسٹیکنگ کو آپ کے سیونگز اکاؤنٹ میں فنڈز شامل کرنے کے حوالے سے کرپٹو کے متبادل کے طور پر سمجھا جا سکتا ہے۔ فرق یہ ہے کہ، جب آپ اپنے سیونگز اکاؤنٹ میں رقم ڈپازٹ کرتے ہیں، تو بینک آپ کو سود کی ادائیگی کرتے ہوئے، اسے دیگر لوگوں کو فراہم کرتا ہے۔ جب آپ اپنی کرپٹو اسٹیک کرتے ہیں، تو آپ اس کے عوض انعامات کماتے ہوئے، بلاک چین نیٹ ورک کی سکیورٹی کو برقرار رکھنے کی خاطر شامل ہونے کے لیے اپنے ڈیجیٹل اثاثوں کو لاک کر سکتے ہیں۔

تعارف

آپ یہ فرض کر سکتے ہیں کہ کرپٹو اسٹیک کرنا مائننگ کا ایک ایسا متبادل ہے جس میں وسائل کی ضرورت اس قدر کثرت سے نہیں ہوتی۔ اس میں کسی بلاک چین نیٹ ورک کی سکیورٹی اور آپریشنز کی معاونت کرنے کے لیے فنڈز کو کرپٹو کرنسی والیٹ میں ہولڈ کرنے کا عمل شامل ہے۔ آسان لفظوں میں، اسٹیکنگ انعامات کو وصول کرنے کے لیے کرپٹو کرنسیز لاک کرنے کا عمل ہے۔

اکثر صورتوں میں، آپ اپنے کرپٹو والیٹ، جیسے کہ ٹرسٹ والیٹ سے براہِ راست اپنے کوائنز کو اسٹیک کر سکیں گے۔ دوسری طرف، بہت سارے ایکسچینجز اپنے صارفین کو اسٹیکنگ سروسز کی پیشکش کرتے ہیں۔ Binance اسٹیکنگ آپ کو ایک آسان طریقے سے انعامات کمانے کی اجازت دیتا ہے – آپ کو محض ایکسچینج (ذیل میں اس کے متعلق مزید) میں اپنے کوائنز کو ہولڈ کرنا ہے۔

بہتر طور پر سمجھنے کے لیے کہ کرپٹو اسٹیکنگ کیا ہے، آپ کو پہلے یہ سمجھنا ہو گا کہ پروف آف اسٹیک (PoS) کا مفاہمتی میکانزم کیسے کام کرتا ہے۔ PoS بلاک چینز کو غیر مرکزیت کا ایک مناسب پیمانہ برقرار رکھتے ہوئے توانائی کا بہتر استعمال کر کے عمل میں آنے کی اجازت دیتا ہے، کم از کم تصوراتی اعتبار سے۔ آئیں اس بات پر تفصیلی بحث کرتے ہیں کہ PoS کیا ہے اور کرپٹو اسٹیکنگ کس طرح کام کرتا ہے۔

پروف آف اسٹیک (PoS) کیا ہے؟

اگر آپ جانتے ہیں کہ Bitcoin کیسے کام کرتا ہے، تو شاید آپ پروف آف ورک (PoW) سے بھی واقف ہوں گے۔ اس میکانزم کے تحت، ریاضی کے پیچیدہ پزلز حل کرنے کے لیے ٹرانزیکشنز کو ریکارڈ کرتے ہیں اور انہیں مکمل کرتے ہیں، نیز چین پر اگلے بلاک کو شامل کرنے کا موقع حاصل کرنے کے لیے شماریاتی وسائل کو بڑھاتے ہیں۔

پروف آف ورک ایک غیر مرکزی کردہ طریقے سے معاہدے کا حصول آسان بنانے کے لیے ایک بہت مؤثر طریقہ ثابت ہوا ہے۔ مسئلہ یہ ہے کہ اس کے اندر بہت سی خود ساختہ شماریات شامل ہوتی ہیں۔ وہ پزل جس کو مائنرز حل کرنے کے لیے مقابلہ کرتے ہیں، وہ نیٹ ورک محفوظ رکھنے کے علاوہ اور کوئی کام نہیں کرتا۔ اکثر کا ماننا ہے کہ یہ اپنے آپ میں شماریات کے اضافے کو قابل جواز بناتا ہے۔ تاہم، یہ پوچھنا بھی مناسب ہے کہ: کیا زیادہ شماریاتی لاگت کے بغیر غیر مرکزی معاہدے کو برقرار رکھنے کا کوئی طریقہ کار موجود ہے؟

پروف آف اسٹیک درج کریں۔ مرکزی خیال یہ ہے کہ شرکاء کوائنز (ان کے "اسٹیک") کو لاک کر سکتے ہیں، اور مخصوص وقفوں پر، پروٹوکول بے ترتیب طور پر ان میں سے کسی ایک کو اگلے بلاک کی تصدیق کا حق دے دیتا ہے۔ عموماً، منتخب کیے جانے کا امکان کوائنز کی تعداد سے متناسب ہوتا ہے – جتنے زیادہ کوائنز لاک کردہ ہوں گے، امکانات بھی اتنے ہی زیادہ ہوں گے۔

اس طرح، اس بات کا تعین کہ کون سے شرکاء بلاک کو تخلیق کریں گے، اس بنیاد پر نہیں ہوتا کہ ان کی ہیش کی مشکلات کو حل کرنے کی صلاحیت کیسی ہے، جیسا کہ عام طور پر پروف آف ورک میں ہوتا ہے۔ اس کی بجائے، اس کا اندازہ اس بات سے لگایا جاتا ہے کہ ان کے پاس کتنے کوائنز موجود ہیں۔

کچھ لوگ یہ دلیل دے سکتے ہیں کہ اسٹیکنگ کے ذریعے بلاکس تخلیق کرنا بلاک چینز کو توسیع کے زائد پیمانے کے حصول کے قابل بنا سکتا ہے۔ یہ ان وجوہات میں سے ایک ہے جن کی بنا پر کا نیٹ ورک مجموعی طور پر ETH 2.0 کے نام سے پہنچانے جانے والی تکنیکی اپ گریڈز کے ایک سیٹ میں PoW سے PoS پر منتقل ہوا ہے۔

پروف آف اسٹیک کو کس نے تخلیق کیا؟

پروف آف اسٹیک میکانزم کی ابتدائی وضاحتیں Sunny King اور Scott Nadal نے اپنے 2012 کے پیپر میں پیش کی تھیں۔ وہ اس کی وضاحت "Satoshi Nakamoto کے Bitcoin سے اخذ کردہ پیئر ٹو پیئر کرپٹو کرنسی کے ڈیزائن" کے طور پر کرتے ہیں۔

دو مرتبہ واضح کردہ Peercoin نیٹ ورک ایک ہائبرڈ PoW/PoS میکانزم کے ساتھ لانچ کیا گیا تھا، جس میں PoW کو بنیادی طور پر کوائنز کی ابتدائی سپلائی کو منٹ کرنے کے لیے استعمال کیا گیا تھا۔ تاہم، یہ نیٹ ورک کی طویل المدتی پائیداری کے لیے درکار نہیں تھا، اور اس کی اہمیت بتدریج کم پڑتی گئی۔ دراصل، نیٹ ورک کا زیادہ تر سکیورٹی کا عمل PoS پر انحصار کرتا تھا۔

ڈیلیگیٹڈ پروف آف اسٹیک (DPoS) کیا ہے؟

اس میکانزم کا متبادل ورژن، جسے ڈیلیگیٹڈ پروف آف اسٹیک (DPoS)کہا جاتا ہے، 2014 میں Daniel Larimer کی جانب سے تخلیق کیا گیا۔ پہلے اس کا استعمال BitShares کے حصے کے طور پر کیا گیا، لیکن جلد ہی، دیگر نیٹ ورکس نے اس ماڈل کو اپنا لیا۔ ان کے اندر Steem اور EOS شامل ہیں، جن کی تخلیق بھی Larimer نے کی تھی۔

DPoS، صارفین کو ان کا کوائن بیلنس بطور ووٹس کے مختص کرنے کی اجازت دیتا ہے، جہاں ووٹنگ کی طاقت ہولڈ کردہ کوائنز کی تعداد سے متناسب ہے۔ یہ ووٹس پھر ڈیلیگیٹس کی تعداد کو منتخب کرنے کے لیے استعمال کیے جاتے ہیں جو کہ اپنے ووٹرز کی طرف سے بلاک چین کا نظم کرتے ہیں، جس سے سکیورٹی اور رضامندی کو یقینی بنایا جاتا ہے۔ عموماً، اسٹیکنگ کے انعامات ان منتخب کردہ ڈیلیگیٹس میں تقسیم کیے جاتے ہیں، پھر وہ ان انعامات کا حصہ اپنے منتخب کرنے والوں میں ان کے انفرادی حصوں کے تناسب سے دوبارہ تقسیم کرتے ہیں۔

DPoS ماڈل رضامندی کا حصول کم تصدیقی نوڈز کے ذریعے ممکن بناتا ہے۔ اس طرح سے، یہ نیٹ ورک کی کارکردگی بہتر بنانے کی کوشش کرتا ہے۔ اس کے برعکس، یہ کم پیمانے پر غیر مرکزیت کے حصول کا باعث بھی بن سکتا ہے کیونکہ نیٹ ورک ایک چھوٹے، منتخب کردہ تصدیقی نوڈز کے گروہ پر منحصر ہے۔ یہ تصدیقی نوڈز بلاک چین کے عوامل اور مجموعی گورننس سنبھالتے ہیں۔ یہ رضامندی کے حصول اور گورننس کے کیی پیرامیٹرز کو وضع کرنے کے عمل کی تکمیل میں حصہ لیتے ہیں۔ 

آسان لفظوں میں، DPoS صارفین کو نیٹ ورک کے دیگر شرکاء کے ذریعے اپنے اثر و رسوخ کو استعمال کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

اسٹیکنگ کس طرح کام کرتا ہے؟

جیسا کہ ہم پہلے بات کر چکے ہیں، پروف آف ورک سسٹمز بلاک چین میں نئے بلاکس شامل کرنے کے لیے مائننگ پر انحصار کرتے ہیں۔ اس کے برعکس پروف آف اسٹیک کے چینز اسٹیکنگ کے عمل کے ذریعے نئے بلاکس کو تخلیق اور ان کی تصدیق کرتے ہیں، جہاں اپنے کوائنز کو لاک کرنے والے توثیق کار پروٹوکول کی طرف سے مخصوص مدت کے وقفوں کے بعد بلاک کو تخلیق کرنے کے لیے بے ترتیب طور پر منتخب کیے جا سکتے ہیں۔ عموماً، زیادہ مقدار میں اسٹیک کرنے والے شرکاء کا اگلے بلاک کے توثیق کار کے طور پر منتخب ہونے کا امکان بھی زیادہ ہوتا ہے۔

یہ مخصوص مائننگ ہارڈرویئر، جیسے کہ ASICs، پر انحصار کیے بغیر بلاکس کی تخلیق کی اجازت دیتا ہے۔ جہاں ASIC مائننگ کے لیے ہارڈ ویئر میں کافی سرمایہ کاری درکار ہوتی ہے، وہیں اسٹیکنگ میں براہِ راست کرپٹو کرنسی میں سرمایہ کاری کی ضرورت ہوتی ہے۔ تو، بجائے اس کے کہ شماریاتی کام کے ذریعے اگلے بلاک کے لیے مقابلہ کیا جائے، PoS توثیق کاران ان کوائنز کی تعداد کی بنیاد پر منتخب کیے جاتے ہیں جو کہ انہوں نے اسٹیک کی ہوئی ہے۔ "اسٹیک" (ہولڈ کردہ کوائن) توثیق کاروں کو نیٹ ورک سکیورٹی کو برقرار رکھنے پر راغب کرتی ہے۔ اگر وہ ایسا کرنے میں ناکام ہو جائیں، تو ان کا پورا اسٹیک خطرے میں پڑ سکتا ہے۔

اگرچہ ہر پروف آف اسٹیک بلاک چین کی ایک مخصوص اسٹیکنگ کرنسی ہے، کچھ نیٹ ورکس ایک دو ٹوکن پر مشتمل سسٹم اختیار کرتے ہیں جس میں انعامات دوسرے ٹوکن میں ادا کیے جاتے ہیں۔

ایک بہت ہی خاص سطح پر، اسٹیکنگ کا مطلب صرف یہ ہے کہ فنڈز کو مناسب والیٹ میں رکھا جائے۔ یہ لازمی طور پر کسی کو بھی اس قابل بناتا ہے کہ وہ اسٹیکنگ کے انعامات کے بدلے میں مختلف نیٹ ورک فنکشنز کو انجام دے سکیں۔ اس میں اسٹیکنگ پول میں فنڈز کو شامل کرنا بھی شامل ہو سکتا ہے، جس پر ہم جلد ہی بات کریں گے۔

اسٹیکنگ کے انعامات کا حساب کیسے لگایا جاتا ہے؟

اس سوال کا کوئی ایک جواب نہیں ہے۔ ہر بلاک چین نیٹ ورک اسٹیکنگ کے انعامات کا حساب لگانے کے لیے ایک الگ طریقہ استعمال کر سکتا ہے۔

کچھ بلاک در بلاک بنیاد پر ایڈجسٹ ہو سکتے ہیں، جو کہ کئی مختلف عوامل پیش نظر رکھیں گے۔ ان میں یہ شامل ہو سکتے ہیں:

  • توثیق کار کتنے کوائنز کو اسٹیک کر رہا ہے 

  • توثیق کار فعال طور پر کب سے اسٹیک کر رہا ہے

  • نیٹ ورک پر کُل کتنے کوائنز اسٹیک کردہ ہیں 

  • افراط زر کی شرح

  • دیگر عوامل

بعض دوسرے نیٹ ورکس کے لیے، اسٹیکنگ کے انعامات کا تعین ایک مقررہ فیصد کے طور پر کیا جاتا ہے۔ یہ انعامات توثیق کاروں میں افراطِ زر کے معاوضے کے طور پر تقسیم کیے جاتے ہیں۔ افراط زر صارفین کو اپنے کوائنز ہولڈ کرنے کی بجائے خرچ کرنے کی ترغیب دیتا ہے، جس سے کرپٹو کرنسی کے طور پر ان کے استعمال میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ لیکن اس ماڈل کے ساتھ، توثیق کار اس بات کا حساب لگا سکتے ہیں کہ انہیں اسٹیکنگ کے کس انعام کی توقع کرنی چاہیئے۔

بلاک انعام کو حاصل کرنے کے امکانات پر مبنی موقع کے بجائے پیش گوئی کرنے کے قابل انعاماتی معمول بعض لوگوں کے لیے زیادہ بہتر ثابت ہو سکتا ہے۔ اور چونکہ یہ عوامی معلومات ہے، لہٰذا اس سے زیادہ شرکاء کو اسٹیکنگ میں شامل ہونے کی ترغیب مل سکتی ہے۔ 

اسٹیکنگ پول کیا ہے؟

اسٹیکنگ پول کوائن ہولڈرز کا ایک گروپ ہے جو اپنے وسائل کو اکٹھا کر کے بلاکس کی توثیق کرنے اور انعامات کو حاصل کرنے کے لیے اپنے امکانات بڑھاتا ہے۔ وہ اپنی اسٹیکنگ کی طاقت کو اکٹھا کرتے ہیں اور پول میں اپنے تعاون کے تناسب سے انعامات کو تقسیم کرتے ہیں۔

اسٹیکنگ پول سیٹ کرنے اور اس کو برقرار رکھنے کے لیے اکثر وقت اور مہارت درکار ہوتی ہے۔ اسٹیکنگ پول ان نیٹ ورکس پر سب سے زیادہ مؤثر ثابت ہوتے ہیں جہاں داخل ہونے کی رکاوٹ (تکنیکی یا مالی) نسبتاً زیادہ ہوتی ہے۔ اس طرح بہت سے پول فراہم کنندگان اسٹیکنگ کے انعامات سے فیس کو چارج کرتے ہیں جو کہ شرکاء میں تقسیم کیے جاتے ہیں۔

اس کے علاوہ، پولز انفرادی اسٹیکرز کو اضافی لچک پذیری دے سکتے ہیں۔ روایتی طور پر، اسٹیک ایک مقررہ مدت کے لیے لاک کرنا پڑتا ہے اور عام طور پر پروٹوکول کی جانب سے سیٹ کردہ ایک رقم کو نکلوانے یا غیر منسلک کرنے کا وقت ہوتا ہے۔ مزید برآں، مشکوک رویوں کی حوصلہ شکنی کے لیے ایک مناسب کم سے کم بیلنس کی اسٹیک درکار ہے۔

زیادہ تر اسٹیکنگ پولز میں کم سے کم بیلنس درکار ہوتا ہے اور رقم کو نکلوانے کا کوئی اضافی وقت شامل نہیں کیا جاتا۔ اس طرح، نئے صارفین کے لیے اکیلے اسٹیک کرنے سے اسٹیکنگ پول میں شامل ہونا زیادہ موزوں ثابت ہو سکتا ہے۔

کولڈ اسٹیکنگ کیا ہے؟

کولڈ اسٹیکنگ سے مراد ایسے والیٹ پر اسٹیک کرنے کا عمل ہے جو انٹرنیٹ سے مربوط نہیں ہے۔ یہ ہارڈ ویئر والیٹ استعمال کرتے ہوئے کیا جا سکتا ہے، لیکن یہ ایئر گیپڈ سافٹ ویئر والیٹ کے ذریعے بھی ممکن ہے۔

ایسے نیٹ ورکس جو کولڈ اسٹیکنگ کی اجازت دیتے ہیں، صارفین کو اپنے فنڈز آف لائن محفوظ طور پر ہولڈ کر کے اسٹیک کرنے کے قابل بناتے ہیں۔ یہ بات ذہن نشین کرنے کے قابل ہے کہ اگر اسسٹیک ہولڈر کولڈ اسٹوریج سے اپنے کوائنز کو نکال لے، تو وہ انعامات کو وصول کرنا بند کر دیں گے۔

کولڈ اسٹیکنگ خصوصاً بڑے اسٹیک ہولڈرز کے لیے مفید ہے جو نیٹ ورک کی معاونت کرتے ہوئے اپنے فنڈز کا زیادہ سے زیادہ تحفظ یقینی بنانا چاہتے ہیں۔

تمام کرپٹو کرنسیز میں اسٹیکنگ کیوں نہیں ہوتی؟

یا تو بلاک چین نیٹ ورک اسٹیکنگ استعمال کرتا ہے یا اس کے مفاہمتی میکانزم پر انحصار نہیں کرتا۔ مفاہمتی میکانزم بیان کرتا ہے کہ جمع کروائی گئی ٹرانزیکشنز کی تصدیق اور توثیق کرنے کا اختیار کس کو حاصل ہے۔ پروف آف ورک سسٹمز میں، توثیق کار ایک عمل میں شماریاتی پزلز کو مکمل کرنے کی کوشش کرتے ہیں جسے مائننگ کہا جاتا ہے۔

جیسا کہ آپ دیکھ سکتے ہیں، Bitcoin جیسے پروف آف ورک نیٹ ورک پر، اسٹیکنگ بلاک جنریشن پروسیس کا حصہ نہیں ہے۔ آج کل، اکثر نیٹ ورکس پروف آف اسٹیک کی قسم استعمال کرتے ہیں، جو کہ اس کو بآسانی سب سے زیادہ مشہور میکانزم بناتا ہے۔ تاہم، یہ بات یاد رکھنا اہم ہے کہ ہر کوئی اسٹیکنگ استعمال نہیں کرتا۔

Binance پر اسٹیک کس طرح کیا جائے

ایک طرح سے، آپ یہ فرض کر سکتے ہیں کہ اپنے کوائنز Binance کمائی - لاک کردہ اسٹیکنگ پر ہولڈ کرنا انہیں اسٹیکنگ پول میں شامل کرنے کے مترادف ہے۔ تاہم، اس کی کوئی فیس نہیں ہوتی، اور آپ 100 سے زائد مختلف کرپٹو کرنسیز میں سے انتخاب کر سکتے ہیں!

اختتامی خیالات

کرپٹو کی اسٹیکنگ بلاک چینز کی مرمت اور گورننس میں حصہ لینے کے خواہشمند ہر فرد کے لیے مزید مواقع فراہم کرتی ہے۔ مزید یہ کہ، صرف ڈیجیٹل اثاثوں کو ہولڈ کر کے کمانے کا یہ ایک آسان طریقہ کار ہے۔ چونکہ اسٹیک کرنا آسان ہوتا جا رہا ہے، لہٰذا بلاک چین کے ایکو سسٹم میں داخلے کی رکاوٹیں کم ہوتی جا رہی ہیں۔

لیکن، یہ بات بھی ذہن نشین کرنا اہم ہے کہ اسٹیکنگ مکمل طور پر خطرے سے خالی نہیں ہے۔ فنڈز کو لاک کرنے کے لیے استعمال ہونے والے اسمارٹ معاہدے بگز کا باعث بن سکتے ہیں، چنانچہ یہ ضروری ہے کہ آپ ہمیشہ DYOR کریں اور اعلیٰ معیار کے والیٹس، جیسا کہ ٹرسٹ والیٹ کا استعمال کریں۔ 

یہ دیکھنے کے لیے ہمارے اسٹیکنگ صفحے کو ضرور ملاحظہ کریں کہ کون سے کوائنز اسٹیکنگ کے لیے معاونت یافتہ ہیں اور آج ہی انعامات کو حاصل کرنا شروع کریں!