بلاک چین ٹیکنالوجی کیا ہے؟ فوری دستیاب گائیڈ
امواد کی فہرست
باب 1 - بلاک چین 101
بلاک چین کیا ہے؟
بلاکس کس طرح مربوط ہوتے ہیں؟
بلاک چینز اور ڈیسینٹرلائزیشن
بائی زینٹائن جرنلز پرابلم
بلاک چینز ڈیسینٹرلائزڈ کرنے کی ضرورت کیوں ہے؟
پیئر ٹو پیئر نیٹ ورک کیا ہے؟
بلاک چین نوڈز کیا ہیں؟
عوامی بمقابہ نجی بلاک چینز
ٹرانزیکشنز کیسے کام کرتی ہیں؟
Bitcoin ٹرانزیکشنز کس طرح کی جائیں
بلاک چین ٹیکنالوجی کس نے ایجاد کی؟
بلاک چین ٹیکنالوجی کے فوائد و مضمرات
باب 2 - بلاک چین کس طرح کام کرتا ہے؟
بلاکس بلاک چین میں کیسے شامل کیا جاتا ہے؟
مائننگ (پروف آف ورک)
اسٹیکنگ (پروف آف اسٹیک)
دیگر رضامندی کے الگورتھمز
کیا میں بلاک چین کی ٹرانزیکشنز واپس کر سکتا ہوں؟
بلاک چین کے قابلِ اسکیل ہونے کی استعداد کیا ہے؟
بلاک چین اسکیل ہونے کی ضرورت کیوں پیش آتی ہے؟
بلاک چین فورک کیا ہے؟
باب 3 - بلاک چین کس لیے استعمال کی جاتی ہے؟
سپلائی چینز کے لیے بلاک چین
بلاک چین اور گیمنگ کی صنعت
بلاک چین برائے نگہداشت صحت
بلاک چین ترسیلِ زر
بلاک چین اور ڈیجیٹل شناخت
بلاک چین اور انٹرنیٹ آف تھنگز (IoT)
بلاک چین برائے گورننس
بلاک چین برائے خیرات
پیسہ لگانے کی بلاک چین
بلاک چین کے ساتھ کراؤڈ فنڈنگ
بلاک چین اور تقسیم کردہ فائل سسٹمز
بلاک چین ٹیکنالوجی کیا ہے؟ فوری دستیاب گائیڈ
ہومآرٹیکلز
بلاک چین ٹیکنالوجی کیا ہے؟ فوری دستیاب گائیڈ

بلاک چین ٹیکنالوجی کیا ہے؟ فوری دستیاب گائیڈ

جدید
Published Dec 30, 2019Updated Mar 16, 2022
28m

ابواب

  1. بلاک چین 101
  2. بلاک چین کس طرح کام کرتا ہے؟
  3. بلاک چین کو کس لیے استعمال کیا جاتا ہے؟


باب 1 - بلاک چین 101

مشمولات


بلاک چین کیا ہے؟

بلاک چین ایک خاص قسم کی ڈیٹا بیس ہے۔ آپ نے متعدد صورتوں میں ڈسٹریبیوٹڈ لیجر ٹیکنالوجی (یا DLT) کی اصطلاح سنی ہو گی، ان سے مراد بھی یہی چیز ہے۔

بلاک چین کی بعض خاص منفرد خصوصیات ہیں۔ یہ اصول اس بارے میں ہیں کہ ڈیٹا کو کیسے شامل کیا جا سکتا ہے، اور ڈیٹا ایک دفعہ اسٹور ہو جائے تو، اس میں تجدید یا حذف کاری ورچوئل طور پر ناممکن ہو جاتی ہے۔

ڈیٹا وقت کے ساتھ بلاکس نامی اسٹرکچرز میں شامل ہوتا ہے۔ ہر بلاک کو پچھلے کے اوپر بنایا جاتا ہے اور اس میں وہ معلومات شامل ہوتی ہے جو واپس پِچھلے کے ساتھ لنک ہوتی ہیں۔ سب سے زیادہ حالیہ ترین بلاک پہ دیکھ کر، ہم یہ چیک کر سکتے ہیں کہ یہ سابقہ کے بعد بنایا گیا ہے۔ تو اگر ہم "سلسلے" میں بالکل نیچے کا سفر جاری رکھیں، تو ہم بالکل پہلے بلاک پر پہنچ جائیں گے – جس کو جینیسس بلاک بھی کہا جاتا ہے۔

مثال کے طور پر، فرض کریں کہ آپ کے پاس دو کالمز والی اسپریڈ شیٹ موجود ہے۔ پہلی قطار کے پہلے سیل میں، آپ جس ڈیٹا کو بھی ہولڈ کرنا چاہتے ہیں وہ ڈالتے ہیں۔

پہلے سیل کا ڈیٹا دو حرفی شناخت کار میں تبدیل ہو جاتا ہے، جو کہ بعدازاں اگلے ان پٹ کے حصے کے طور پر استعمال ہو گا۔ اس مثال میں، دو حرفی شناخت کار KP دوسری قطار کا اگلا سیل پُر کرنے میں لازماً استعمال ہونا چاہیئے (defKP)۔ یعنی کہ اگر آپ پہلا ان پٹ ڈیٹا تبدیل کرتے ہیں (abcAA)، تو آپ کو ہر دوسرے سیل میں حروف کا ایک مختلف امتزاج ملے گا۔

ایک ڈیٹابیس جہاں پہ ہر اندراج گزشتہ سے پیوستہ ہے۔


اب قطار 4 کو ملاحظہ کرتے ہوئے، ہمارا حالیہ ترین شناخت کار TH ہے۔ یاد ہے کہ ہم نے کہا تھا کہ آپ واپس نہیں جا سکتے اور اندراجات مٹا نہیں سکتے یا حذف نہیں کر سکتے؟ اس لیے کیونکہ کوئی بھی یہ آسانی سے بتا دے گا کہ یہ ہو گیا ہے، اور وہ آپ کی کوشش کردہ تبدیلی نظر انداز کر دیں گے۔
فرض کریں کہ آپ بالکل پہلے سیل میں ڈیٹا کو تبدیل کرتے ہیں – آپ کو ایک مختلف شناخت کار موصول ہو گا، جس کا مطلب یہ ہو گا کہ آپ کے دوسرے بلاک میں ڈیٹا مختلف ہو گا، جس کی وجہ سے قطار 2 میں ایک مختلف شناخت کار ہو گا، اور اسی طرح یہ سلسلہ جاری رہے گا۔ TH، دراصل، اس تمام معلومات کا حاصل ہے جو کہ اس سے آگے آ رہی ہیں۔


بلاکس کس طرح مربوط ہوتے ہیں؟

ہم اوپر – اپنے دو حرفی شناخت کار کے ساتھ جس چیز کو زیرِ بحث لائے – وہ اس امر کی ایک سادہ سی تاویل ہے کہ بلاک چین ہیش افعال کیسے استعمال کرتی ہے۔ ہیشنگ وہ گوند ہے جو بلاکس کو آپس میں جوڑے رکھتی ہے۔ یہ کسی بھی سائز کا ڈیٹا اکٹھا کرنے اور وہ آؤٹ پٹ (ایک ہیش) کو حاصل کرنے کے لیے اسے کسی ریاضیاتی عمل سے گزارنے پر مشتمل ہوتی ہے جو ہمیشہ اسی طوالت کا حامل ہوتا ہے۔

بلاک چینز میں استعمال شدہ ہیشز دلچسپ ہوتے ہیں، کیونکہ آپ کے ایسے دو ڈیٹا حصہ جات تلاش کر لینے کے امکانات ہیئت کے لحاظ سے کم ہوتے ہیں کہ جو بالکل یکساں آؤٹ پٹ فراہم کرتے ہوں۔ ہمارے مندرجہ بالا شناخت کاروں کی طرح ہی، ہمارے آؤٹ پٹ ڈیٹا میں کسی بھی قسم کی معمولی تبدیلی ایک بالکل مختلف آؤٹ پٹ دے گی۔

آئیں SHA256 کے ساتھ اس کا مظاہرہ کریں، جو کہ Bitcoin میں بکثرت استعمال ہونے والا ایک عمل ہے۔ جیسا کہ آپ دیکھ سکتے ہیں، حروف کی کیپیٹلائزیشن تبدیل کرنا بھی آؤٹ پٹ مکمل طور پر متغیر کر دینے کے لیے کافی نہیں ہے۔


ان پٹ ڈیٹاSHA256 آؤٹ پٹ

Binance اکیڈمی

886c5fd21b403a139d24f2ea1554ff5c0df42d5f873a56d04dc480808c155af3

Binance اکیڈمی

4733a0602ade574551bf6d977d94e091d571dc2fcfd8e39767d38301d2c459a7

Binance اکیڈمی

a780cd8a625deb767e999c6bec34bc86e883acc3cf8b7971138f5b25682ab181


یہ حقیقت کہ یہاں کوئی معلوم SHA256 تصادم نہیں ہیں (یعنی، دو مختلف ان پٹس جو کہ ایک ہی یکساں آؤٹ پٹ دیتے ہوں)، بلاک چینز کے تناظر میں زبردست حد تک قابلِ قدر ہے۔ یعنی کہ ہر بلاک اپنے ہیش کو شامل کر کے پِچھلے کا اشارہ دے سکتا ہے، اور پرانے بلاکس ایڈٹ کرنے کی کوئی بھی کوشش فوری طور پر ظاہر ہو جائے گی۔

ہر بلاک پچھلے کے فنگر پرنٹ پر مبنی ہوتا ہے۔


بلاک چینز اور ڈیسینٹرلائزیشن

ہم نے بلاک چین کی بنیادی ساخت کو تفصیل سے بیان کیا ہے۔ لیکن جب آپ لوگوں کو بلاک چین ٹیکنالوجی کے متعلق بات کرتا سنیں، تو ممکن ہے کہ وہ صرف ڈیٹا بیس کے متعلق ہی بات نہ کر رہے ہوں، بلکہ بلاک چینز کے گرد بن جانے والے ایکو سسٹمز پر بھی کر رہے ہوں۔ 

اکیلے قائم شدہ ڈیٹا اسٹرکچرز کے طور پر، بلاک چینز صرف niche ایپلیکیشنز میں ہی نہایت کارآمد ہیں۔ چیزیں تب اور زیادہ دلچسپ ہو جاتی ہیں جب ہم ان کو اجنبیوں کے درمیان ربط کاری کے لئے بطور ٹولز استعمال کرتے ہیں۔ دیگر ٹیکنالوجیز اور کچھ گیم تھیوری کے ساتھ مل کر، بلاک چین ایک تقسیم شدہ لیجر کا کردار نبھا سکتی ہے جو کسی کے کنٹرول میں نہیں ہوتا۔
اس کا مطلب یہ ہے کہ کسی کے پاس سسٹم کے اصولوں (اصولوں کے بارے میں مختصراً مزید) سے ہٹ کر اندراجات کو ایڈٹ کرنے کا اختیار نہیں ہوتا۔ اس صورت میں، آپ اس حوالے سے بحث کر سکتے ہیں کہ لیجر بیک وقت ہر ایک کے زیرِ ملکیت ہے: شرکت کنندگان اس بابت ایک معاہدہ طے کر لیتے ہیں کہ کسی بھی موجودہ لمحے میں یہ کیسا نظر آتا ہے۔


بائی زینٹائن جرنلز پرابلم

اس طرح کے سسٹم کے راستے میں حائل اصل مشکل ایک ایسی چیز ہے جس کو بائی زینٹائن جرنلز پرابلم کہتے ہیں۔ 1980 میں ابھرنے والے اس خیال میں، ایک ایسی کشمکش کو بیان کیا گیا ہے جس میں علیحدہ کردہ شرکت کنندگان کو اپنے اقدامات پر لازمی طور پہ ربط کاری کرنی ہو گی۔ مخصوص کشمکش میں مٹھی بھر فوجی جرنلز شامل ہیں جو کوئی شہر گھیر لیتے ہیں، یہ فیصلہ لیتے ہوئے کہ آیا اس پر حملہ کیا جائے۔ جرنلز فقط میسنجز کے ذریعے بات چیت کر سکتے ہیں۔ 

ہر ایک کو لازمی طور پر یہ فیصلہ کرنا ہے کہ حملہ کیا جائے یا پیچھے ہٹا جائے۔ جب تک تمام جنرلز کسی ایک فیصلے پر متفق ہیں تب تک، اس سے فرق نہیں پڑتا کہ آیا وہ حملہ کرتے ہیں یا پیچھے ہٹتے ہیں۔ اگر وہ حملہ کرنے کا فیصلہ کرتے ہیں، تو وہ تب ہی کامیاب ہوں گے اگر وہ ایک ساتھ آگے بڑھیں۔ تو ہم کس طرح یقینی بناتے ہیں کہ وہ اس ہدف میں کامیاب ہوں؟ 

بالکل، وہ میسنجر کے ذریعے بات چیت کر سکتے ہیں۔ لیکن اگر میسنجر پر ایسا پیغام آیا جس میں کہا گیا "ہم صبح سویرے حملہ کریں گے،" اور یہ پیغام اس سے بدل دیا جائے کہ "ہم آج رات ہی حملہ کریں گے" تو کیا ہو گا؟ اگر کوئی ایک جنرل بدنیت ہوا اور اس نے جان بوجھ کر دوسروں کو گمراہ کیا تاکہ ان کی شکست کو یقینی بنا سکے تو کیا ہو گا؟

حملہ کرتے وقت تمام جنرلز کامیاب ہیں (بائیں)۔ جب بعض پیچھے ہٹیں جبکہ دیگر حملہ کریں، تو انہیں شکست ہو گی (دائیں)۔


ہمیں ایک حکمت عملی کی ضرورت ہے کہ جس میں اتفاق رائے ہو سکے، خواہ شرکت کنندگان بدنیت ہی کیوں نہ ہو جائیں یا پیغامات میں رکاوٹ ہی کیوں نہ آ جائے۔ ڈیٹا بیس قائم نہ رکھ پانا زندگی موت کا مسئلہ نہیں جیسے کہ زائد امداد کے بغیر کسی شہر پر حملہ آور ہونا، لیکن یہی اصول برقرار رہتا ہے۔ اگر بلاک چین کی نگرانی اور استعمال کنندگان کو "درست" معلومات فراہم کرنے کے لیے کوئی موجود نہیں، تو پھر استعمال کنندگان کو باہم بات چیت کرنے کے قابل ہونا چاہیئے۔

ایک (یا متعدد) صارفین کی ناکامی پر قابو پانے کے لیے، بلاک چین کا میکانزم احتیاط سے انجینئر کرنا چاہیئے تاکہ یہ اس طرح کی ناکامیوں کے خلاف مزاحمت کر سکیں۔ کوئی ایسا سسٹم جو اس کو حاصل کر سکتا ہے اسے Byzantine fault-tolerant کہا جاتا ہے۔ جیسا کہ ہم تھوڑی ہی دیر میں ملاحظہ کریں گے، رضامندی کے الگورتھمز کو مضبوط قوانین کے نفاذ کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔


بلاک چینز ڈیسینٹرلائزڈ کرنے کی ضرورت کیوں ہے؟

بلاشبہ، آپ از خود ایک بلاک چین آپریٹ کر سکتے ہیں۔ لیکن نتیجتاً آپ کو ایک ایسی ڈیٹا بیس مل سکتی ہے جو اعلیٰ سطحی متبادلات کے مقابلے میں زیادہ پیچیدہ ہوتی ہے۔ ایک غیر مرکزی ماحول – جہاں، تمام صارفین برابر ہوتے ہیں اس جگہ پر اس کی حقیقی استعداد استعمال کی جا سکتی ہے۔ اس طرح، بلاک چین کو حذف نہیں کیا جا سکتا یا دھوکے سے اس پر قابو نہیں پایا جا سکتا۔ یہ سچ کا وہ واحد ذریعہ ہے جس کو ہر کوئی دیکھ سکتا ہے۔


پیئر ٹو پیئر نیٹ ورک کیا ہے؟

پیئر ٹو پیئر (P2P) نیٹ ورک ہماری صارفین (یا ہماری پچھلی مثال کے مطابق عوام) کی لیئر ہوتی ہے۔ اس کا کوئی ایڈمنسٹریٹر نہیں ہوتا، لہٰذا جب بھی کوئی صارف کسی دوسرے صارف سے معلومات کا تبادلہ کرنا چاہتا ہے تو کسی مرکزی سرور پر فون کرنے کے بجائے، صارف اپنے پیئرز کو یہ براہ راست ارسال کر دیتا ہے۔ 

ذیل میں دی گئی گرافک کو فرض کریں۔ بائیں جانب، A کو F تک اپنے پیغام کو پہنچانے کے لیے اسے سرور سے گزارنے کی ضرورت پڑتی ہے۔ تاہم، دائیں جانب، یہ کسی درمیانی فریق کے بغیر مربوط ہوتے ہیں۔

مرکزی نیٹ ورک (بائیں جانب) بمقابلہ غیر مرکزی (دائیں)۔


عام طور پر، سرور ان تمام معلومات کو ہولڈ کرتا ہے جس کی صارفین کو ضرروت ہوتی ہے۔ جب آپ Binance اکیڈمی تک رسائی حاصل کرتے ہیں، تو آپ اس کے سرورز سے یہ مطالبہ کر رہے ہوتے ہیں کہ وہ آپ کو تمام آرٹیکلز فراہم کرے۔ ویب سائٹ آف لائن ہونے پر، آپ انہیں دیکھ نہیں پائیں گے۔ تاہم، اگر آپ نے تمام مواد ڈاؤن کو لوڈ کر لیا، تو آپ Binance اکیڈمی سے پوچھے بغیر اسے اپنے کمپیوٹر پر لوڈ کر سکتے ہیں۔ 

مختصراً، ہر پیئر بلاک چین کے ساتھ ایسا ہی کرتا ہے: مکمل ڈیٹا بیس ان کے کمپیوٹر پر اسٹور ہوتی ہے۔ اگر کوئی بھی فرد نیٹ ورک چھوڑ دیتا ہے، تو باقی ماندہ صارفین اب بھی بلاک چین تک رسائی حاصل کر پائیں گے اور ایک دوسرے کے ساتھ معلومات کو شیئر کر سکیں گے۔ جب چین پر کسی نئے بلاک کو شامل کیا جاتا ہے، تو نیٹ ورک پر ڈیٹا پھیلا دیا جاتا ہے، تاکہ ہر کوئی لیجر کی اپنی ذاتی کاپی اپڈیٹ کر سکے۔

اس قسم کے نیٹ ورک کے بارے میں مزید تفصیلی تبادلہ خیال کے لیے پیئر ٹو پیئر نیٹ ورکس کی وضاحت کو ملاحظہ کرنا یقینی بنائیں۔


بلاک چین نوڈز کیا ہیں؟

سادہ الفاظ میں نوڈز وہ چیزیں ہوتی ہیں جنہیں ہم نیٹ ورک سے مربوط مشینیں کہتے ہیں – یہ بلاک چین کی کاپیز اسٹور کرتی ہیں، اور دیگر مشینوں کے ساتھ معلومات شیئر کرتی ہیں۔ صارفین کو ایسے طریقے دستی طور پر ہینڈل کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔ عام طور پر، انہیں بس بلاک چین کے سافٹ ویئر ڈاؤن لوڈ کرنے اور چلانے کی ضرورت ہوتی ہے، اور باقی چیزوں کی دیکھ بھال خودکار طور پر ہو جاتی ہے۔

مندرجہ بالا اس چیز کی تفصیل ہے کہ نوڈ حقیقی ترین معنوں میں ہوتی کیا ہے، لیکن یہ تعریف ان دیگر صارفین کا احاطہ بھی کر سکتی ہے جو کسی بھی طرح سے نیٹ ورک کے ساتھ تعامل کرتے ہیں۔ مثال کے طور پر، کرپٹو کرنسی میں، آپ کے فون پر ایک سادہ والیٹ کی ایپلیکیشن وہ ہوتی ہے جس کو لائٹ نوڈ کہا جاتا ہے۔ 


عوامی بمقابہ نجی بلاک چینز

جیسا کہ آپ کے علم میں ہوگا، کہ بلاک چین انڈسٹری آج جس مقام پر کھڑی ہے، اس کی بنیاد Bitcoin نے رکھی تھی۔ جب سے Bitcoin نے خود کو ایک جائز مالیاتی اثاثہ کے طور پر ثابت کرنا شروع کیا ہے، اختراعات کرنے والے افراد دیگر شعبہ جات کے لیے بنیادی ٹیکنالوجی کی صلاحیت پر غور کر رہے ہیں۔ یہ چیز فنانس سے باہر بلاک چین کے استعمال کی ان گنت صورتوں کی دریافت کا سبب بنی ہے۔

Bitcoin وہ چیز ہے جس کو ہم عوامی بلاک چین کہتے ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ کوئی بھی شخص اس پر ٹرانزیکشنز دیکھ سکتا ہے، اور اس کام کے لے بس ایک انٹرنیٹ کنکشن اور ضروری سافٹ ویئر شامل کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ چونکہ حصہ لینے کے لیے مزید کوئی تقاضے نہیں ہیں، اس لیے ہم اسے عوامی ماحول قرار دے سکتے ہیں۔
اس کے برعکس، دیگر اقسام کی بلاک چینز بھی موجود ہیں جن کو نجی بلاک چینز کہا جاتا ہے۔ یہ سسٹمز ان امور سے متعلقہ اصول قائم کرتے ہیں کہ بلاک چین کون دیکھ سکتا ہے اور اس سے تعامل کر سکتا ہے۔ اس طرح، ہم انہیں اجازت یافتہ ماحول کہتے ہیں۔ اگرچہ پہلی نظر میں نجی بلاک چینز ناکارہ دکھائی دے سکتے ہیں، لیکن ان کے اطلاق کی کچھ اہم صورتیں ہوتی ہیں – جو بالخصوص انٹرپرائز کی ترتیبات میں ہوتی ہیں۔
اس موضوع سے متعلق مزید کے لیے، عوامی، نجی اور کنسورشیم بلاک چینز - فرق کیا ہے؟ ملاحظہ کریں


کرپٹو کرنسی پر آغاز کرنا چاہتے ہیں؟ Binance پر Bitcoin کو خریدیں!


ٹرانزیکشنز کیسے کام کرتی ہیں؟

اگر ایلس باب کو بینک ٹرانسفر کے ذریعے ادائیگی کرنا چاہتی ہے، تو وہ اپنے بینک کو اطلاع دیتی ہے۔ بالفرض دونوں فریق آسانی کی غرض سے یکساں بینک استعمال کرتے ہیں۔ بینک اپنا ڈیٹا بیس اپڈیٹ کرنے سے پہلے چیک کرتا ہے کہ ٹرانزیکشن کی انجام دہی کے لیے ایلس کے پاس فنڈز موجود ہیں (مثلاً ایلس کو -$50، باب کو +$50

بلاک چین پر جو کچھ ہو رہا ہوتا ہے وہ اس سے زیادہ مختلف نہیں ہوتا۔ بہرکیف، یہ بھی ایک ڈیٹا بیس ہی ہے۔ کلیدی فرق یہ ہے کہ یہاں کوئی فریقِ واحد پڑتالوں کی انجام دہی اور بیلنسز اپڈیٹ کرنے کا عمل انجام نہیں دیتا۔ تمام نوڈز کو لازماً ایسا کرنا چاہیئے۔ 

اگر ایلس باب کو پانچ bitcoins ارسال کرنا چاہتی ہے، تو وہ نیٹ ورک کو یہ کہتے ہوئے ایک پیغام نشر کرتی ہے۔ یہ فوری طور پر بلاک چین میں شامل نہیں کیا جائے گا – نوڈز اسے دیکھیں گے، لیکن ٹرانزیکشن کی تصدیق کے لیے دیگر تمام اقدامات لازماً مکمل ہونے چاہئیں۔ ملاحظہ کریں بلاکس کو بلاک چین میں کس طرح شامل کیا جاتا ہے؟
یہ ٹرانزیکشن بلاک چین پر ایڈ ہو جانے کے بعد، تمام نوڈز دیکھ سکتی ہیں کہ یہ ہو چکا ہے۔ یہ اسے ظاہر کرنے کے لیے بلاک چین کی اپنی کاپی اپڈیٹ کریں گے۔ اب، ایلس وہی پانچ یونٹس کیرول کو (یعنی، دوہرا خرچ) نہیں بھیج سکتی، کیونکہ نیٹ ورک ظاہر کرتا ہے کہ وہ ایک گزشتہ ٹرانزیکشن میں انہیں پہلے ہی خرچ کر چکی ہے۔
اس میں صارفی ناموں اور پاس ورڈز کا کوئی تصور نہیں ہوتا – عوامی کلید کی کرپٹو گرافی فنڈز کی ملکیت ثابت کرنے کے لیے استعمال کی جاتی ہے۔ سب سے پہلے فنڈز کو موصول کرنے کے لیے، باب کو ایک نجی کلید کو تخلیق کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ یہ اس قدر طویل نمبر ہوتا ہے کہ چاہے کسی کے پاس سینکڑوں ہا سال کا وقت بھی ہو تب بھی ان کے لیے ورچوئل طور پر اس کا اندازہ لگانا ناممکن ہوتا ہے۔ لیکن اگر وہ کسی کو اپنی نجی کلید بتا دیتا ہے، تو وہ اس کے فنڈز پر اپنی ملکیت ثابت (اور یوں انہیں خرچ) کر سکیں گے۔ اس لیے یہ چیز اہم ہے کہ وہ اس کو خفیہ رکھتا ہے۔
تاہم، باب اس نجی کلید سے ایک عوامی کلید کو اخذ کر سکتا ہے۔ اس کے بعد وہ کسی کو بھی عوامی کلید دے سکتا ہے کیونکہ دوسرے لوگوں کے لیے نجی کلید حاصل کرنے کی غرض سے اسے ریورس انجینئر کرنا تقریباً ناممکن ہوتا ہے۔ اکثر صورتوں میں، وہ عوامی کلید پر ایک دوسرا آپریشن (جیسا کہ ہیشنگ) انجام دے گا تاکہ عوامی ایڈریس کو حاصل کر سکے۔


وہ ایلس کو عوامی ایڈریس دے گا تاکہ اسے معلوم ہو کہ فنڈز کہاں بھیجنے ہیں۔ وہ ایک ٹرانزیکشن کو تخلیق کرے گی جس میں کہا جاتا ہے کہ ان فنڈز کو اس عوامی ایڈریس پر ادا کریں۔ اس کے بعد، نیٹ ورک کو اس بات کا ثبوت دینے کے لیے کہ وہ ان فنڈز کو خرچ کرنے کی کوشش نہیں کر رہی جو اس کی ملکیت نہیں ہیں، وہ اپنی ذاتی نجی کلید استعمال کرتے ہوئے ایک ڈیجیٹل دستخط کو تخلیق کرتی ہے۔ کوئی بھی ایلس کے دستخط شدہ پیغام کو لے سکتا ہے اور اپنی عوامی کلید کے ساتھ اس کا موازنہ کر سکتا ہے، اور یقین دہانی کے ساتھ یہ کہہ سکتا ہے کہ اسے باب تک ان فنڈز کو بھیجنے کا حق حاصل ہے۔


Bitcoin ٹرانزیکشنز کس طرح کی جائیں

اس بات کی وضاحت کے لیے کہ آپ Bitcoin ٹرانزیکشنز کیسے انجام دے سکتے ہیں، آئیں دو مختلف منظر ناموں کا تصور کرتے ہیں۔ پہلے میں آپ Binance سے bitcoins نکلواتے ہیں، اور دوسری صورت میں آپ TrustWallet سے اپنے Electrum والیٹ پر فنڈز بھیجتے ہیں۔


Binance سے Bitcoin کیسے نکلوائیں

1. اپنے Binance اکاؤنٹ میں لاگ ان کریں۔ اگر آپ کے پاس ابھی کوئی bitcoins نہیں ہیں، تو چند ایک کو خریدنے سے متعلق ہماری Bitcoin رہنمائی ملاحظہ کریں۔
2. والیٹ پر نظر ڈالیں اور اسپاٹ والیٹ منتخب کریں۔


3. بائیں جانب سائڈ بار پر موجود رقم کو نکلوائیں پر کلک کریں۔
4. اس کوائن کو منتخب کریں جسے آپ واپس لینا چاہتے ہیں – مذکورہ صورت میں BTC ہے۔
5. یہ ایڈریس کاپی کریں جس پر آپ اپنے bitcoins نکلوانا چاہتے ہیں، اور اسے وصول کنندہ کے BTC ایڈریس میں پیسٹ کریں۔


6. اس رقم کی تخصیص کریں جس کو آپ نکلوانا چاہیں گے۔
7. جمع کروائیں پر کلک کریں۔
8. آپ کو جلد ہی ایک تصدیقی ای میل موصول ہو گی۔ احتیاط سے چیک کریں کہ آیا ایڈریس صحیح ہے۔ اگر ایسا ہے تو، ای میل میں ٹرانزیکشن کی تصدیق کریں۔
9. بلاک چین پر اپنی ٹرانزیکشن کے مکمل ہونے کا انتظار کریں۔ آپ ڈپازٹ کریں اور رقم کو نکلوانے کی ہسٹری کی ٹیب کے تحت یا بلاک ایکسپلورر استعمال کرتے ہوئے اس کے اسٹیٹس کی نگرانی کر سکتے ہیں۔


ٹرسٹ والیٹ سے الیکٹرم میں Bitcoin کو کیسے بھیجا جائے

اس مثال میں، ہم ٹرسٹ والیٹ سے Electrum کو کچھ bitcoins ارسال کریں گے۔


1. ٹرسٹ والیٹ کی ایپ کھولیں۔
اپنے Bitcoin اکاؤنٹ پہ ٹیپ کریں۔
3. بھیجیں پہ ٹیپ کریں۔
4. اپنے Electrum والیٹ کو کھولیں۔
5. Electrum میں وصول کریں کی ٹیب پر کلک کریں اور ایڈریس کو کاپی کریں۔


متبادل طور پر، آپ ٹرسٹ والیٹ پر واپس جا سکتے ہیں اور اپنے Electrum ایڈریس کی جانب اشارہ کرنے والا QR کوڈ اسکین کرنے کے لیے [–] آئیکن پر ٹیپ کر سکتے ہیں۔


6. اپنا Bitcoin ایڈریس ٹرسٹ والیٹ میں وصول کنندہ کے ایڈریس پر پیسٹ کریں۔
7. رقم کی تخصیص کریں۔
8. اگر سب کچھ درست لگتا ہے، تو ٹرانزیکشن کی تصدیق کریں۔
9. آپ کا کام مکمل ہو چکا ہے! بلاک چین پہ اپنی ٹرانزیکشن کی تصدیق کا انتظار کریں۔ آپ کسی بلاک ایکسپلورر میں اپنا ایڈریس کاپی کر کے اس کے اسٹیٹس کی نگرانی کر سکتے ہیں۔


کرپٹو کرنسی پر آغاز کرنا چاہتے ہیں؟ Binance پر Bitcoin کو خریدیں!


بلاک چین ٹیکنالوجی کس نے ایجاد کی؟

Bitcoin جو اولین اور مقبول ترین بلاک چین ہے – اس کی 2009 میں ریلیز کے ساتھ بلاک چین ٹیکنالوجی کو باضابطہ شکل دی گئی تھی۔ تاہم، اس کے فرضی تخلیق کار Satoshi Nakamoto کو سابقہ ٹیکنالوجیز اور تجاویز سے ترغیب ملی۔

بلاک چینز ان ہیش فنکشنز اور کرپٹو گرافی کو وسیع پیمانے پر استعمال کرتے ہیں، جو Bitcoin کی ریلیز سے دہائیوں قبل موجود تھیں۔ دلچسپ بات یہ ہے، کہ 1990 کی دہائی کے اوائل میں بلاک چین کے اسٹرکچر کا سراغ لگایا جا سکتا ہے، گوکہ اسے دستاویزات کی اس نہج پر ٹائم اسٹیمپنگ کے لیے کبھی کبھار ہی استعمال کیا گیا تھا کہ یہ بعد میں تبدیل نہ ہو سکے۔

اس موضوع پر مزید تفصیل کے لیے، بلاک چین کی ہسٹری کو دیکھیں۔


بلاک چین ٹیکنالوجی کے فوائد و مضمرات

درست طور پر انجینئر کردہ بلاک چینز ایک ایسا مسئلہ حل کرتی ہیں جو مالیات سے لے کر زراعت تک متعدد انڈسٹریز کو پریشان کرتا ہے۔ روایتی کلائنٹ سرور ماڈل کے مقابلے میں ایک منقسم نیٹ ورک بہت سے فوائد کو پیش کرتا ہے، لیکن اس کے ساتھ بعض ٹریڈ کے سمجھوتے بھی آتے ہیں۔


فوائد

Bitcoin وائٹ پیپر میں قابلِ ذکر فوری فوائد میں سے ایک یہ ہے کہ کوئی درمیانی فریق شامل کیے بغیر ادائیگیاں منتقل کی جا سکتی ہیں۔ اس کے بعد کے بلاک چینز نے اسے مزید آگے بڑھایا ہے۔ جس سے صارفین کو تمام اقسام کی معلومات بھیجنے کا موقع ملتا ہے۔ فریقینِ مخالف ختم کرنے کا مطلب یہ ہے کہ صارفین کے لیے کم خطرہ شامل ہوتا ہے، اور کم فیس کا سبب بنتا ہے کیونکہ اس طریقے میں کوئی درمیانی فریق کٹوتی وصول نہیں کرتا۔

جیسا کہ ہم نے پہلے بیان کیا، ایک عوامی بلاک چین نیٹ ورک عوامی بھی ہوتا ہے – چونکہ اس میں کوئی عہدیدار نہیں ہوتا اس لیے اس میں داخلے پر کوئی رکاوٹ نہیں ہوتی۔ اگر کوئی ممکنہ صارف انٹرنیٹ سے مربوط ہو سکتا ہے، تو وہ نیٹ ورک پر موجود دوسرے پیئرز کے ساتھ بھی تعامل کرنے قابل ہوتے ہیں۔

بہت سے لوگ یہ دلیل دیں گے کہ بلاک چینز کی سب سے اہم خاصیت سینسر شپ سے نسبتاً زیادہ مزاحم ہونے کی استعداد ہے۔ کوئی مرکزی سروس ناکارہ کرنے کے لیے، مشتبہ ایکٹر کو بس ایک سرور کو ہدف بنانے کی ضرورت ہو گی۔ لیکن ایک پیئر ٹو پیئر نیٹ ورک میں، ہر نوڈ اپنے ذاتی سرور کے طور پر کردار ادا کرتا ہے۔ 

Bitcoin جیسے سسٹم کے 10,000 سے زائد ظاہری نوڈز ہوتے ہیں جو دنیا بھر میں بکھرے ہوئے ہیں، یہ چیز وسائل سے بھرپور حملہ آور کے لیے بھی نیٹ ورک کا سمجھوتہ ورچوئل طور پر ناممکن بناتی ہے۔ یہ بات قابلِ غور ہے کہ اس میں بہت سے خفیہ نوڈز بھی ہوتے ہیں، جن کو نسبتاً وسیع نیٹ ورک نہیں دیکھ سکتا۔

کچھ عمومی فوائد ہوتے ہیں۔ استعمال کی ایسی کئی خاص صورتیں ہیں جنہیں بلاک چینز سہولت فراہم کر سکتے ہیں، جیسا کہ آپ بلاک چین کس لیے استعمال کیا جاتا ہے؟ میں ملاحظہ کریں گے۔


نقصانات

بلاک چینز ہر مسئلے کے حل کے لیے کوئی گیڈر سنگی نہیں ہیں۔ پچھلے سیکشن میں بیان کردہ فوائد کے حوالے سے بہتر ہونے کے علاوہ، دوسرے شعبوں میں یہ کافی کمزور بھی واقع ہوتے ہیں۔ بلاک چینز کی عوامی قبولیت میں سب سے واضح رکاوٹ یہ ہے کہ یہ اچھے سے اسکیل نہیں ہوتے۔

یہ بات کسی بھی تقسیم شدہ نیٹ ورک کے حوالے سے سچ ہے۔ چونکہ تمام شرکاء کو لازماً ہم آہنگ رہنا چاہیئے، نئی معلومات اتنی تیزی سے شامل نہیں کی جا سکتیں کیونکہ نوڈز ان کے ساتھ مطابقت پذیری کے قابل نہیں ہوں گے۔ اس لیے، ڈیویلپرز ارادی طور پریہ رفتار کم کرنے کی کوشش کرتے ہیں جس پر بلاک چین سسٹم کی غیر مرکزیت برقرار رکھنے کو یقینی بنانے کے لیے اپڈیٹ کر سکتی ہے۔

نیٹ ورک کے صارفین کے لیے، اگر بہت سے لوگ ٹرانزیکشنز کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو یہ انتظار کی طویل مدتوں کی صورت میں ظاہر ہو سکتا ہے۔ بلاکس اتنا زیادہ ڈیٹا صرف ہولڈ کر سکتے ہیں، اور یہ فوری طور پر چین میں شامل نہیں ہوتا۔ اگر بلاک میں فٹ ہونے والی ٹرانزیکشنز سے زائد ٹرانزیکشنز ہوتی ہیں، تو اضافی کے لیے اگلے بلاک کا انتظار کرنا لازم ہوتا ہے۔

غیر مرکزی بلاک چین کے سسٹمز کا ایک اور ممکنہ نقصان یہ ہوتا ہے کہ ان کو بآسانی اپ گریڈ نہیں کیا جا سکتا۔ اگر آپ اپنا ذاتی سافٹ ویئر تیار کر رہے ہیں، تو آپ اپنی مرضی کے مطابق نئے فیچرز کو شامل کر سکتے ہیں۔ آپ کو تبدیلیاں کرنے کے لیے دوسروں کے ساتھ کام کرنے یا اجازت طلب کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔

ممکنہ طور پر لاکھوں صارفین کے ماحول میں، تبدیلیاں کرنا کافی زیادہ کٹھن ہوتا ہے۔ آپ اپنے نوڈ کے سافٹ ویئر کے کچھ پیرامیٹرز تبدیل کر سکتے ہیں، لیکن بالآخر آپ خود کو نیٹ ورک سے الگ تھلگ پائیں گے۔ اگر تبدیل شدہ سافٹ ویئر دیگر نوڈز کے ساتھ مطابقت پذیر نہ ہوا، تو وہ یہ چیز پہچان لیں گے اور آپ کے نوڈ کے ساتھ تعامل کرنے سے انکاری ہو جائیں گے۔

بالفرض آپ بلاکس کی لمبائی (1MB سے 2MB تک) سے متعلقہ کوئی اصول تبدیل کرنے کے خواہاں ہیں۔ آپ یہ بلاک ان نوڈز پر بھیجنے کی کوشش کر سکتے ہیں جن کے ساتھ آپ مربوط ہیں، لیکن ان کا ایک اصول ہوتا ہے جس کے مطابق "1MB سے زائد کے بلاکس قبول نہ کریں"۔ اگر انہیں اس سے کوئی بڑی چیز موصول ہوتی ہے، تو وہ اس کو بلاک چین کی اپنی کاپی میں شامل نہیں کریں گے۔

تبدیلیاں کرنے کا واحد طریقہ یہ ہے کہ ایکو سسٹم کی اکثریت انہیں قبول کرے۔ بڑے بلاک چینز کے ساتھ، تبدیلیاں منظم کرنے سے پہلے فورمز میں مہینوں – یا حتیٰ کہ سالوں تک – بہت زیادہ بحث مباحثے ہو سکتے ہیں۔ اس حوالے سے مزید جاننے کے لیے ہارڈ فورکس اور سافٹ فورکس کو دیکھیں۔



باب 2 - بلاک چین کس طرح کام کرتا ہے؟

مشمولات


بلاکس بلاک چین میں کیسے شامل کیا جاتا ہے؟

اب تک ہم کافی چیزوں کا احاطہ کر چکے ہیں۔ ہم جانتے ہیں کہ نوڈز آپس میں مربوط ہوتے ہیں اور یہ بلاک چین کی کاپیز اسٹور کرتے ہیں۔ یہ ایک دوسرے کو ٹرانزیکشنز اور نئے بلاکس کے حوالے سے معلومات فراہم کرتے ہیں۔ ہم اس پر پہلے ہی گفتگو کر چکے ہیں کہ نوڈز کیا ہوتے ہیں، لیکن آپ حیران ہو رہے ہوں گے: کہ نئے بلاکس بلاک چین پر کیسے شامل کیے جاتے ہیں؟

کوئی واحد ذریعہ ایسا نہیں کہ جس سے صارفین کو بتایا جا سکے کہ کیا کرنا چاہیئے۔ کیونکہ تمام نوڈز کی طاقت مساوی ہوتی ہے، تو اس صورت میں ایک ایسا میکانزم ضروری ہے جو منصفانہ فیصلہ کر سکے کہ بلاک چین پر کون بلاکس شامل کر سکتا ہے۔ ہمیں ایک ایسے سسٹم کی ضرورت ہے جو صارفین کے لیے دھوکہ دہی کو مہنگا بنا دے مگر دیانتدارانہ اقدامات پر انہیں انعامات سے نوازے۔ کوئی بھی ذی شعور صارف اس طریقے سے تعامل کرنا چاہے گا جو مالی لحاظ سے ان کے لیے مفید ہو۔

چونکہ نیٹ ورک عوامی ہوتا ہے، اس لیے بلاک کی تخلیق کا عمل ہر ایک تک قابلِ رسائی ہونے کی ضرورت ہوتی ہے۔ اکثر اوقات پروٹوکولز صارف سے کچھ "ذاتی سرمایہ کاری کرنے" کا مطالبہ کر کے یہ چیز یقینی بناتے ہیں – یعنی انہیں اپنا ذاتی پیسہ خطرے میں ڈالنا چاہیئے۔ ایسا کرنا انہیں بلاک تخلیق کرنے کے عمل میں حصہ لینے کی اجازت دے گا، اور اگر وہ کوئی درست تخلیق کر لیتے ہیں، تو انہیں ایک انعام کی ادائیگی کی جائے گی۔

تاہم، اگر وہ دھوکہ دینے کی کوشش کرتے ہیں، تو نیٹ ورک پر موجود باقی لوگوں کو معلوم پڑ جائے گا۔ وہ اپنی تمام تر اسٹیک کردہ رقوم سے محروم ہو جائیں گے۔ ہم ان میکانزمز کو رضامندی کے الگورتھمز کہتے ہیں کیونکہ یہ نیٹ ورک کے شرکاء کو اس امر کے بارے میں رضامندی حاصل کرنے کا موقع فراہم کرتے ہیں کہ اگلا کونسا بلاک شامل کیا جانا چاہیئے۔


مائننگ (پروف آف ورک)


مائننگ اب تک سب سے زیادہ عام استعمال ہونے والا رضامندی کا الگورتھم ہے۔ مائننگ میں، ایک پروف آف ورک (PoW) الگورتھم استعمال کیا جاتا ہے۔ اس میں صارفین پروٹوکول کی طرف سے سیٹ کردہ ایک پزل آزمانے اور حل کرنے کے لیے اپنی شماریاتی طاقت کی قربانی دیتے ہیں۔

یہ پزل صارفین سے بلاک میں شامل کردہ ٹرانزیکشنز اور دیگر معلومات ہیش کرنے کا تقاضا کرتی ہے۔ لیکن ہیش درست مانے جانے کے لیے، اسے لازماً ایک خاص نمبر سے نیچے ہونا چاہیے۔ چونکہ اس بات کی پیشن گوئی کا کوئی طریقہ نہیں ہے کہ کوئی دیا گیا نتیجہ کیسا ہو گا، اس لیے کوئی درست حل ملنے تک مائنرز کو معمولی سے تبدیل شدہ ڈیٹا کی ہیشنگ کا عمل جاری رکھنا ہوتا ہے۔

ظاہر ہے، ڈیٹا کو متواتر ہیش کرنے کا عمل شماریاتی لحاظ سے مہنگا ہے۔ پروف آف ورک کی بلاک چینز میں، صارفین جو چیز "اسٹیک" کرتے ہیں یہ وہ پیسہ ہوتا ہے جو کمپیوٹرز کی مائننگ اور انہیں تقویت بخشنے کے لیے استعمال ہونے والی بجلی میں سرمایہ کاری شدہ ہوتا ہے۔ وہ ایسا بلاک کا انعام حاصل کرنے کی امیدوں پر کرتے ہیں۔ 

یاد ہے جب ہم نے کہا تھا کہ عملی طور پر ہیش تبدیل کرنا ناممکن ہے، تاہم اس کو چیک کرنا آسان ہے؟ جب کوئی مائنر پورے نیٹ ورک پر ایک نئے بلاک کو بھیجتا ہے، تو دیگر تمام نوڈز اسے ہیش کے عمل میں بطور ان پٹ استعمال کرتے ہیں۔ انہیں اس امر کی توثیق کے لیے بس ایک بار چلانا پڑتا ہے کہ بلاک چین کے اصولوں کے تحت یہ بلاک درست ہے۔ اگر ایسا نہیں ہوتا، تو مائنر کو انعام موصول نہیں ہوتا، اور ان کی بجلی بھی بلا وجہ ضائع ہو جاتی ہے۔

پہلی پروف آف ورک بلاک چین Bitcoin تھی۔ اس کی تخلیق کے بعد سے، دیگر کئی بلاک چینز نے PoW میکانزم کو اختیار کیا ہے۔


پروف آف ورک کے فائدے

  • آزمودہ و ثابت شدہ – اب تک کا سب سے زیادہ پختہ معاہداتی الگورتھم، پروف آف ورک رہا ہے اور کئی بلینز کی مالیت بنا چکا ہے۔
  • عوامی – کوئی بھی فرد مائننگ کے مقابلے میں حصہ لے سکتا ہے یا پھر ایک توثیق کار نوڈ کو چلا سکتا ہے۔
  • غیر مرکزیت – مائنرز بلاک کی تخلیق کی خاطر ایک دوسرے کے ساتھ مقابلہ کرتے ہیں، جس کا مطلب ہے کہ ہیش کی طاقت کبھی بھی محض کسی ایک فریق کی طرف سے کنٹرول نہیں کی جاتی۔


پروف آف ورک کے نقصانات

  • زیاں کار – مائننگ کے لیے بہت زیاہ بجلی کی ضرورت ہوتی ہے۔
  • داخلے کی راہ میں شدید رکاوٹیں – جیسے جیسے زیادہ سے زیادہ مائنرز نیٹ ورک میں شامل ہونے لگتے ہیں، ویسے ہی پروٹوکولز مائننگ کے معمے کی مشکل میں اضافہ کر دیتے ہیں۔ مقابلے میں بنے رہنے کے لیے، صارفین پر لازم ہے کہ بہتر ایکوئپمنٹ پر سرمایہ کاری کریں۔ یہ قیمت میں کئی مائنرز پیچھے چھوڑ سکتا ہے۔
  • 51% حملے – اگرچہ مائننگ غیر مرکزیت کو فروغ دیتی ہے، تاہم اس بات کا امکان ہے کہ ایک ہی مائنر کو زیادہ تر ہیش پاور ملے۔ اگر ایسا ہی ہوتا ہے، تو اصولاً وہ ٹرانزیکشنز کو منسوخ کر سکتے ہیں اور بلاک چین سکیورٹی کی بیخ کنی بھی کر سکتے ہیں۔


اسٹیکنگ (پروف آف اسٹیک)

پروف آف ورک سسٹمز میں، وہ چیز جو آپ کو دیانتداری کے ساتھ کام کرنے کی طرف راغب کرتی ہے، وہ رقم ہے جو آپ نے مائننگ کرنے والے کمپیوٹرز اور بجلی کے لیے ادا کی۔ اگر آپ بلاکس کی درست مائننگ نہیں کرتے، تو آپ کو اپنی سرمایہ کاری پہ منافع حاصل نہیں ہو گا۔

پروف آف اسٹیک (PoS) کے ساتھ، کوئی بیرونی لاگت عائد نہیں ہوتی۔ مائنرز کی بجائے، ہمارے پاس توثیق کاران موجود ہوتے ہیں جو بلاکس کی پیشکش (یا انہیں "فورج") کرتے ہیں۔ یہ نئے بلاکس کو پیدا کرنے کے لیے ایک عام کمپیوٹر کا استعمال کر سکتے ہیں، تاہم ان پر لازم ہے کہ وہ اپنے فنڈز کا ایک خطیر حصہ اسٹیک پر لگائیں۔ ہر پروٹوکول کے اصولوں کے مطابق، اسٹیکنگ بلاک چین کی مقامی کرپٹو کرنسی کی پہلے سے وضع کردہ رقم کے ذریعے کی جاتی ہے۔ 

مختلف عملدرآمدگیوں کے مختلف تغیرات ہوتے ہیں، لیکن جب ایک بار توثیق کار اپنے یونٹس اسٹیک کر لے، تو وہ اگلے بلاک کا اعلان کرنے کے لیے پروٹوکول کے اعتبار سے بےترتیب طور پر منتخب ہو سکتے ہیں۔ ایسا درست طور پر کرنے میں، ان کو انعام موصول ہو گا۔ بصورتِ دیگر، ایسے کئی توثیق کار موجود ہو سکتے ہیں کہ جو اگلے بلاک پر متفق ہوں، اور انعام متناسب طور پر اس اسٹیک پر تقسیم کر دیا جاتا ہے جو ہر ایک نے پیش کی ہو۔

"Pure" PoS بلاک چینز DPoS (ڈیلیگیٹ کردہ پروف آف اسٹیک) سے کم عام ہیں، جس کے لیے یہ لازم ہے کہ تمام نیٹ ورک کے لیے بلاکس کی تصدیق کے لیے صارفین نوڈز (گواہان) پر ووٹ دیں۔
Ethereum، اسمارٹ معاہدات کی سب سے پہلی بلاک چین، ETH 2.0 پر تبادلے کے بعد جلد ہی پروف آف اسٹیک پر تبدیل کر دی جائے گی۔ 


پروف آف اسٹیک کے فائدے

  • ماحول دوست – PoS کی عین نقل PoW مائننگ ہی کا ایک حصہ ہے۔ اسٹیکنگ وسائل سے بھرپور ہیشنگ کی سرگرمیوں کی ضرورت ختم کر دیتی ہے۔
  • تیز تر ٹرانزیکشنز – چونکہ پروٹوکول کی طرف سے سیٹ کردہ بیک وقت خرید و فروخت کے معموں پر اضافی کمپیوٹنگ پاور صرف کرنے کی کوئی ضرورت نہیں، لہٰذا PoS کے کچھ حامی یہ دلیل پیش کرتے ہیں کہ یہ ٹرانزیکشن کی تھرو پٹ میں اضافہ کر سکتا ہے۔
  • اسٹیکنگ کے انعامات اور دلچسپی – مائنرز کے پاس جانے کی بجائے، نیٹ ورک محفوظ بنانے کے انعامات براہ راست ٹوکن ہولڈرز کو ادا کیے جاتے ہیں۔ بعض صورتوں میں، PoS صارفین کو اس قابل بناتے ہیں کہ وہ ایئر ڈراپس یا سود کی صورت میں غیر فعال آمدنی کو کما سکیں، وہ بھی محض اپنے فنڈز اسٹیک کرتے ہوئے۔


پروف آف اسٹیک کے نقصانات

  • نسبتاً غیر آزمودہ – PoS پروٹوکولز کو ابھی ایک وسیع پیمانے پر آزمانا باقی ہے۔ اس کے اطلاق یا کرپٹو معیشت میں بعض نامعلوم کمزوریوں کا سامنا بھی کرنا پڑ سکتا ہے۔
  • پلوٹوکریسی – اس حوالے سے بھی کچھ تحفظات لاحق ہیں کہ PoS ایک "امیر افراد امیر تر ہو جائیں" کے ایکو سسٹم کو فروغ دیتا ہے، جیسا کہ ایک بڑی اسٹیک کے حامل توثیق کاران کے انعامات بنانے کا امکان زیادہ ہوتا ہے۔
  • کچھ بھی داؤ پر نہیں کا مسئلہ – PoW میں، صارفین صرف ایک ہی چین پر "شرط" لگا سکتے ہیں – وہ اسی چین پر مائن کرتے ہیں جو ان کے خیال کے مطابق جیتنے کا سب سے زیادہ امکان رکھتی ہے۔ ایک ہارڈ فورک کے دوران، وہ یکساں ہیش پاور کی حامل متعدد چینز پر شرط نہیں لگا سکتے۔ تاہم، PoS میں موجود توثیق کاران نہایت ہی کم اضافی لاگتوں کے ساتھ متعدد چینز پر کام کر سکتے ہیں، جس سے معیشتی مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔


دیگر رضامندی کے الگورتھمز

پروف آف ورک اور پروف آف اسٹیک سب سے عام معاہداتی الگورتھمز ہیں، تاہم ایسے ہی متعدد اور بھی موجود ہیں۔ کچھ ایسے مرکبات ہیں جو دونوں سسٹمز کے عناصر کو یکجا کرتے ہیں، جبکہ دوسرا طریقہ کار یکسر مختلف ہیں۔ 

ہم یہاں ان کی تفصیل میں نہیں جائیں گے، لیکن اگر آپ دلچسپی رکھتے ہیں، تو مندرجہ ذیل آرٹیکلز کو ملاحظہ کریں:


کیا میں بلاک چین کی ٹرانزیکشنز واپس کر سکتا ہوں؟

بطور ڈیزائن، بلاک چینز ڈیٹا بیسز نہایت مضبوط ہوتے ہیں۔ ان کی موروثی خصوصیات بلاک چین ڈیٹا ریکارڈ ہو جانے کے بعد انہیں ہٹانا یا ان کے اندر ترمیم کرنا نہایت مشکل بنا دیتی ہیں۔  جب بات Bitcoin اور دوسرے بڑے نیٹ ورکس کی ہو، تو ایسا کرنا تقریباً ناممکن ہے۔ لہٰذا، جب آپ کسی بلاک چین پر ٹرانزیکشن کر رہے ہوتے ہیں، تو بہتر ہے کہ اس کو پتھر پر لکیر سمجھا جائے۔

اس کے ساتھ ہی، بلاک چین کے اطلاق کی کئی مختلف صورتیں موجود ہیں، اور ان کے مابین بنیادی فرق یہ ہے کہ یہ نیٹ ورک کے اندر معاہدے پر کس طرح سے متفق ہوتے ہیں۔ اس کا مطلب ہے، کہ اطلاق کی بعض صورتوں میں، شرکاء کا نسبتاً چھوٹا گروپ نیٹ ورک کے اندر اتنی طاقت اختیار کر سکتا ہے کہ مؤثر انداز میں ٹرانزیکشنز واپس لے سکے۔ یہ صورتحال خاص طور پر چھوٹے نیٹ ورکس (مائننگ میں کم مقابلے کے سبب ہیش کی کم سطحوں کے حامل) پر چلنے والے Altcoins کے لیے باعثِ تشویش ہے۔


بلاک چین کے قابلِ اسکیل ہونے کی استعداد کیا ہے؟

بلاک چین کی قابل اسکیل ہونے کی استعداد کو بلاک چین کے سسٹم کی بڑھتی ہوئی مانگ کو پورا کرنے کی صلاحیت کا حوالہ دینے کے لیے عموماً ایک جامع اصطلاح کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔ اگرچہ بلاک چینز کی خصوصیات خاصی دلچسپ ہیں (جیسے کہ غیر مرکزیت، سینسرشپ کی مزاحمت، ناقابل میوٹ ہونے کی صلاحیت)، تاہم اس کی قیمت چکانی پڑتی ہے۔
غیر مرکزی سسٹمز کے برعکس، ایک مرکزی ڈیٹا بیس نسبتاً تیز رفتار اور تھروپٹ کے ساتھ کام کر سکتا ہے۔ اس بات میں منطق ہے کیونکہ اس بات کی کوئی ضرورت نہیں کہ دنیا بھر میں پھیلے ہزاروں نوڈز ہر دفعہ نیٹ ورک کے مواد کی ترمیم کی صورت میں نیٹ ورک کے ساتھ ہم آہنگ ہوں۔ تاہم بلاک چینز کی صورت حال مختلف ہے۔ نتیجتاً، سالوں سے بلاک چین ڈویلپرز کے درمیان قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت کا موضوع کافی گرم رہا ہے۔

بلاک چینز کی کارکردگی کے حوالے سے بعض کمزوریاں دور کرنے کے لیے کئی ایک مختلف حل یا تو تجویز کیے جا چکے ہیں یا پھر نافذ کیے جا چکے ہیں۔ تاہم، اس پوائنٹ پہ کوئی واضح بہترین اپروچ موجود نہیں ہے۔ اس بات کا امکان ہے کہ بہت سے مختلف حل آزمانے کی ضرورت ہو گی جب تک کہ قابلِ اسکیل ہونے کی صلاحیت کے مسئلے کے زیادہ سیدھے جوابات دستیاب نہ ہوں۔

وسیع تناظر میں، قابلِ اسکیل ہونے کی صلاحیت کے حوالے سے ایک بنیادی سوال موجود ہے: کیا ہمیں خود سے بلاک چین کی کارکردگی (آن چین اسکیلنگ) بہتر بنانی چاہیئے، یا ہمیں مرکزی بلاک چین چھیڑے بغیر (آف چین اسکیلنگ) ٹرانزیکشنز پر عملدرآمد کی اجازت دینی چاہیئے؟ 

دونوں صورتوں میں واضح فائدے ہو سکتے ہیں۔ آن چین اسکیلنگ کے حل ٹرانزیکشنز کا سائز کم کر سکتے ہیں، یا محض یہ چیز بہتر بنا سکتے ہیں کہ ڈیٹا بلاکس میں کیسے اسٹور کیا جاتا ہے۔ دوسری طرف، آف چین حل مرکزی بلاک چین سے ٹرانزیکشنز وقتی طور پر ہٹانے، اور انہیں بعد میں شامل کرنے پر مشتمل ہوتے ہیں۔ قابلِ ذکر ترین آف چین حلوں میں سے کچھ کو سائیڈ چینز اور ادائیگی کے چینلز کہا جاتا ہے۔

اگر آپ اس موضوع کا تفصیلی جائزہ لینا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کی قابل اسکیل ہونے کی صلاحیت - سائڈ چینز اور ادائیگی کے ذرائع کا مطالعہ کریں۔


بلاک چین اسکیل ہونے کی ضرورت کیوں پیش آتی ہے؟

اگر بلاک چین سسٹمز کو اپنے مرکزی فریقین مخالف سے مقابلہ کرنا پڑے، تو انہیں کم سے کم ان کے مساوی کارآمد ہونے کی ضرورت ہوتی ہے۔ اگرچہ، حقیقی تناظر میں، انہیں شاید اس سے بھی بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنا پڑے گا تاکہ ڈیویلپرز اور صارفین کو بلاک چین پر مشتمل پلیٹ فارمز اور ایپلیکیشنز پر منتقل ہونے کی ترغیب دی جا سکے۔ 

اس کا مطلب یہ ہے کہ مرکزی سسٹمز کے مقابلے میں، بلاک چین کا استعمال صارفین اور ڈیویلپرز دونوں کے لیے زیادہ تیز رفتار، سستا اور آسان تر ہونے کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس سنگ میل کو بلاک چینز کی ان تعارفی خصوصیات کو برقرار رکھتے ہوئے حاصل کرنا کچھ آسان نہیں جسے ہم پہلے بیان کر چکے ہیں۔ 


بلاک چین فورک کیا ہے؟

دیگر کسی بھی سافٹ ویئر کی طرح، بلاک چینز کو مسائل حل کرنے، نئے اصولوں کو شامل کرنے، یا پرانوں کو ہٹانے کے لیے اپگریڈز کی ضرورت ہوتی ہے۔ چونکہ تھیوری میں بلاک چین کے زیادہ تر سافٹ ویئر اوپن سورس ہوتے ہیں، اس لیے کوئی بھی سافٹ ویئر میں وہ اپڈیٹس شامل کرنے کی تجویز دے سکتا ہے جو نیٹ ورک چلاتی ہیں۔ 

ذہن میں رہے کہ بلاک چینز منقسم نیٹ ورکس ہوتے ہیں۔ ایک بار جب سافٹ ویئر اپگریڈ ہو جاتا ہے، تو دنیا بھر میں بکھرے ہزاروں نوڈز کو مواصلت اور نئے ورژن کے نفوذ کی استعداد کی ضرورت ہوتی ہے۔ لیکن اگر شرکاء اپگریڈ کے نفوذ پر متفق نہ ہو سکیں تو کیا ہوتا ہے؟ عموماً، فیصلہ کرنے کے لیے قائم کردہ فیصلے کے بہاؤ کی حامل کوئی تنظیم موجود نہیں ہے۔ یہ ہمیں سافٹ اور ہارڈ فورکس تک لے جاتا ہے۔


سافٹ فورکس

اپ گریڈ کیسا نظر آنا چاہیے اگر اس بارے میں کوئی عمومی معاہدہ موجود ہے، تو یہ نسبتاً آسان معاملہ ہے۔ اس طرح کے منظر نامے میں، سافٹ ویئر بیک ورڈ مطابقت پذیر تبدیلی کے ساتھ اپڈیٹ کیا جاتا ہے، یعنی اپڈیٹ ہونے والے نوڈز اب بھی ان نوڈز کے ساتھ تعامل کر سکتے ہیں جو اپڈیٹ نہیں ہوئے۔ اگرچہ، درحقیقت، اس بات کی توقع کی جاتی ہے کہ تقریباً تمام نوڈز وقت کے ساتھ اپگریڈ ہو جائیں گے۔ یہ ایک سافٹ فورک کہلاتی ہے۔ 


ہارڈ فورکس

ایک ہارڈ فورک نسبتاً زیادہ پیچیدہ ہوتی ہے۔ ایک بار نافذ ہونے کے بعد، نئے اصول پرانے اصولوں کے ساتھ غیر مطابقت پذیر ہو جائیں گے۔ لہٰذا، اگر نئے اصولوں کو چلانے والی کوئی نوڈ پرانے اصول چلانے والی کسی نوڈ کے ساتھ تعامل کرتی ہے، تو وہ مواصلت کے قابل نہیں ہوں گے۔ یہ بلاک چین کے دو حصوں میں تقسیم کا باعث بنتا ہے – ایک حصے میں، پرانا سافٹ ویئر چل رہا ہوتا ہے، اور دوسرے میں، نئے اصول نافذ کیے جاتے ہیں۔

ہارڈ فورک کے بعد، لازماً دو مختلف نیٹ ورکس وجود میں آتے ہیں جو دو مختلف پروٹوکولز کو متوازی چلاتے ہیں۔ یہ نوٹ کرنا اہم ہے کہ فورک کے وقت، بلاک چین کے مقامی یونٹ کی باقیات کو پرانے نیٹ ورک سے نقل کیا جاتا ہے۔ لہٰذا، اگر فورک کے وقت پرانی چین پر آپ کا کوئی بیلنس تھا، تو نئی چین پر بھی آپ کا بیلنس موجود ہو گا۔ 

اس حوالے سے مزید جاننے کے لیے ہارڈ فورکس اور سافٹ فورکس کو دیکھیں۔



باب 3 - بلاک چین کس لیے استعمال کی جاتی ہے؟


مشمولات


بلاک چین کا استعمال استعمال کی کئی صورتوں کے لیے کیا جا سکتا ہے۔ آئیے ان میں سے بعض کا جائزہ لیتے ہیں۔ 


سپلائی چینز کے لیے بلاک چین

موثر سپلائی چینز بہت سے کامیاب کاروباری اداروں میں مرکزی حیثیت رکھتے ہیں سپلائر سے صارف تک اشیاء کی ہینڈلنگ کے متعلق خود کو ذمہ دار تصور کرتے ہیں۔ ایک دی گئی انڈسٹری میں کئی اسٹیک ہولڈرز کی ہم آہنگی کا عمل روایتی طور پر مشکل ثابت ہوا ہے۔ تاہم، بلاک چین ٹیکنالوجی بہت سی انڈسٹریز میں شفافیت کی نئی سطوحات کا موقع فراہم کر سکتی ہے۔ باہمی آپریٹ کرنے کی صلاحیت کا حامل سپلائی چین ایکوسسٹم جو ایک ناقابلِ تغیر ڈیٹا بیس کے گرد گھومتا ہے ایک ایسی چیز ہے جو انڈسٹریز زیادہ طاقتور اور پائیدار بنانے کے لیے ضروری ہے۔

اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین استعمال کی صورتیں: سپلائی چین کو ملاحظہ کریں۔


بلاک چین اور گیمنگ کی صنعت

گیمنگ کی صنعت تفریح کے لحاط سے دنیا کی اولین صنعتوں میں سے ایک بن چکی ہے، اور یہ بلاک چین ٹیکنالوجی سے کافی مستفید ہو سکتی ہے۔ عام طور پر، گیمرز کا دارومدار گیم ڈویلپرز پر ہوتا ہے۔ زیادہ تر آن لائن گیمز میں، گیمرز پر زور دیا جاتا ہے کہ ڈویلپر کے سرور کی اسپیس پر انحصار کریں اور ان کے آئے دن بدلتے اصولوں کی پابندی کریں۔ اس لحاظ سے، بلاک چین آن لائن گیمز کی ملکیت، انتظامیہ، اور بحالی غیر مرکزی بنانے میں مدد کر سکتی ہے۔

تاہم، بڑا مسئلہ جو پیش آ سکتا ہے، وہ یہ ہے کہ گیمنگ آئٹمز ٹائٹلز سے باہر وجود نہیں رکھتے، جس سے حقیقی ملکیت اور ثانوی مارکیٹس کے مواقع کم ہو جاتے ہیں۔ بلاک چین پر مبنی اپروچ کے ساتھ، گیم طویل مدت کے لیے زیادہ پائیدار ہو سکتی ہیں، اور کرپٹو کی قابلِ جمع چیزوں کے طور پر جاری ہونے والے آئٹمز حقیقی دنیا کی مالیت کو حاصل کر سکتے ہیں۔
اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کے استعمال کی صورتیں: گیمنگ کو ملاحظہ کریں۔


بلاک چین برائے نگہداشت صحت

کسی بھی نگہداشت صحت کے سسٹم کے لیے ایک معتبر انداز میں طبی ریکارڈز کو محفوظ کرنے کا عمل ناگزیر ہے، اور مرکزی سرورز پر اعتبار کرنے سے حساس معلومات کو خطرہ لاحق ہو سکتا ہے۔ بلاک چین ٹیکنالوجی کی شفافیت اور تحفظ اسے طبی ریکارڈز کو محفوظ کرنے کے حوالے سے ایک مثالی پلیٹ فارم بناتا ہے۔

بلاک چین پر اپنے ریکارڈز محفوظ کرنے کے حوالے سے، مریض اپنی پرائیویسی کو برقرار رکھ سکتے ہیں، جبکہ اس دوران اپنی طبی معلومات کسی بھی صحت کی نگہداشت کے ادارے کے ساتھ شیئر کر سکتے ہیں۔ اگر فی الحال منقسم ہونے والے نگہداشت صحت کے سسٹم کے تمام شرکاء ایک محفوظ، عالمی ڈیٹا بیس کے اندر یکجا ہو جائیں، تو ان کے درمیان معلومات کا بہاؤ بہت تیز رفتار ہو گا۔

اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کے استعمال کی صورتیں: نگہداشتِ صحت کو ملاحظہ کریں۔


بلاک چین ترسیلِ زر

روایتی بینکنگ کے ذریعے بین الاقوامی سطح پر رقم کو بھیجنا ایک بڑا مسئلہ ہے۔ بنیادی طور پر، درمیانی فریقین کے ایک پیچیدہ نیٹ ورک کی وجہ سے، فیس اور تصفیے کے اوقات فوری ٹرانزیکشنز کے لیے روایتی بینکس استعمال کرنا مہنگا اور غیر بھروسہ مند دونوں بنا دیتے ہیں۔

کرپٹو کرنسیز اور بلاک چینز ثالثی کا یہ ایکو سسٹم ختم کرتے ہیں اور دنیا بھر میں سستی، فوری منتقلیوں کی اجازت دیتے ہیں۔ اگرچہ بلاک چینز بلاشبہ اپنی کچھ مطلوبہ خصوصیات کے لیے کارکردگی پر سمجھوتہ کرتی ہیں، لیکن بہت سارے پراجیکٹس سستی، فوری ترین ٹرانزیکشنز ممکن بنانے کے لیے ٹیکنالوجی کا بھرپور استعمال کر رہے ہیں۔

اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کے استعمال کی صورتیں: منتقلیاں کو ملاحظہ کریں۔


کرپٹو کرنسی پر آغاز کرنا چاہتے ہیں؟ Binance پر Bitcoin کو خریدیں!


بلاک چین اور ڈیجیٹل شناخت

انٹرنیٹ پر شناخت محفوظ طریقے سے منظم کرنے کے لیے تیز رفتار حل کی اشد ضرورت ہے۔ ہمارے ذاتی ڈیٹا کی ایک غیر معمولی مقدار مرکزی سرورز پر محفوظ ہوتی ہے اور ہماری رضامندی یا ہمارے علم میں لائے بغیر مشین لرننگ کے الگورتھمز اس کا تجزیہ کرتے ہیں۔ 

بلاک چین ٹیکنالوجی صارفین کو اس قابل بناتی ہے کہ اپنے ڈیٹا کی ملکیت کو حاصل کریں اور صرف ضرورت پڑنے پر ہی فریقین ثالث کے آگے مخصوص ڈیٹا کو ظاہر کریں۔ اس طرح کا کرپٹوگرافک جادو رازداری پر سمجھوتہ کرنے کی ضرورت پڑے بغیر ایک ہموار تجربے کی اجازت دیتا ہے۔

اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کے استعمال کی صورتیں: ڈیجیٹل شناخت کو ملاحظہ کریں۔


بلاک چین اور انٹرنیٹ آف تھنگز (IoT)

انٹرنیٹ پرمتعدد مادی ڈیوائسز مربوط ہو رہی ہیں، اور اس تعداد میں صرف اضافہ ہی ہو گا۔ بعض لوگوں کا اندازہ ہے کہ ان ڈیوائسز کے درمیان مواصلات اور تعاون میں بلاک چین ٹیکنالوجی کے ذریعے ایک وسیع پیمانے پر اضافہ ہو سکتا ہے۔ مشین سے مشین (M2M) کی خودکار مائیکرو ادائیگیاں ایک ایسی نئی معیشت جنم دے سکتی ہیں جوکہ ایک محفوظ، اعلیٰ تھروپٹ کے حامل ڈیٹا بیس سولوشن پر منحصر ہو گی۔
اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کے استعمال کی صورتیں: انٹرنیٹ آف تھنگز (IoT) کو ملاحظہ کریں۔


بلاک چین برائے گورننس

منقسم نیٹ ورکس کمپیوٹر کوڈ کی صورت میں اپنے ضوابط وضع اور عائد کر سکتے ہیں۔ یہ کوئی اچنبھے کی بات نہیں کہ بلاک چین مقامی، قومی، یا حتیٰ کہ بین الاقوامی سطح پر بھی بہت سے گورننس عوامل میں ثالثی کی ضرورت کم کر سکتی ہے۔ 

مزید براں، یہ اوپن سورس ترقیاتی ماحول کو درپیش سب سے بڑے مسائل میں سے ایک کا حل دے سکتی ہے – یعنی فنڈنگ کی تقسیم کار کے لیے ایک معتبر میکانزم کی کمی۔ بلاک چین گورننس یہ امر یقینی بناتی ہے کہ تمام شرکاء کو فیصلہ سازی میں شریک کیا جا سکے، اور اس حوالے سے ایک شفاف جائزے کو پیش کرتی ہے کہ کن پالیسیوں کا اطلاق کیا جا رہا ہے۔
اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کے استعمال کی صورتیں: گورننس کو ملاحظہ کریں۔


بلاک چین برائے خیرات

خیراتی تنظیموں کی راہ میں ہمیشہ یہ امر رکاوٹ بنتا ہے کہ وہ کس طرح سے فنڈز کو قبول کرتی ہیں۔ مزید الجھن یہ کہ عطیہ کردہ فنڈز کی حتمی منزل کا درست ٹریک رکھنا مشکل ثابت ہو سکتا ہے، جوکہ بہت سارے لوگوں کے لیے اس طرح کی تنظیموں کی معاونت کی حوصلہ شکنی کرتا ہے۔

"Crypto-filanthropy" یہ حدود دور کرنے کے لیے بلاک چین ٹیکنالوجی کے استعمال سے وابستہ ہے۔ زیادہ شفافیت، عالمی شرکت، اور کم اخراجات یقینی بنانے کے لیے ٹیکنالوجی کی موروثی خصوصیات پر انحصار کرتے ہوئے، یہ ابھرتا ہوا شعبہ خیراتی اداروں کے اثرات زیادہ سے زیادہ بنانے کی کوشش کرتا ہے۔ اسی قسم کی تنظیم میں شامل ہے بلاک چین خیراتی فاؤنڈیشن۔
اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کے استعمال کی صورتیں: خیرات کو ملاحظہ کریں۔


پیسہ لگانے کی بلاک چین

بلا شبہ، بلاک چین ٹیکنالوجی کے استعمال کی مقبول ترین صورتوں میں پیسہ لگانا شامل ہے۔ ایکسچینجز کے مابین رکاوٹ سے پاک ٹرانسفرز، غیر تحویلی ٹریڈنگ کے حل، اور ڈیریویٹوز پراڈکٹس کا بڑھتا ہوا ایکو سسٹم پیسہ لگانے والے ہر قسم کے افراد کے لیے کھیلنے کی ایک مثالی فیلڈ کو بناتا ہے۔

اپنی موروثی خصوصیات کی بنا پر، بلاک چین ایسے افراد کے لیے ایک بہترین آلہ ہے جو اثاثے کی اس پھلتی پھولتی کلاس میں حصہ لینے کا خطرہ اٹھانے کے لیے تیار ہیں۔ کچھ تو ایسا بھی سوچتے ہیں کہ ایک دفعہ اس ٹیکنالوجی اور اس سے منسوب ضابطے میں بہتری آ جانے کے بعد، بلاک چین پر موجود پیسہ لگانے والی تمام عالمی مارکیٹس ٹوکنائز ہو سکتی ہیں۔

اگر آپ مزید پڑھنا چاہتے ہیں، تو بلاک چین کے استعمال کی صورتیں: ڈیجیٹل مارکیٹس کو ملاحظہ کریں۔


بلاک چین کے ساتھ کراؤڈ فنڈنگ

آآن لائن کراؤڈ فنڈنگ کے پلیٹ فارم تقریباً ایک دہائی سے پیئر ٹو پیئر معیشت کی بنیاد ڈال رہے ہیں۔ ان سائٹس کی کامیابی سے معلوم ہوتا ہے کہ کراؤڈ فنڈڈ پراڈکٹ کی ترقی میں لوگ کافی دلچسپی رکھتے ہیں۔ تاہم، چونکہ یہ پلیٹ فارمز فنڈز کے محافظ کے طور پر کام کرتے ہیں، لہٰذا وہ ان میں سے ایک بڑے حصے کو فیس کے طور پر لے سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ، مختلف شرکاء کے مابین معاہدے آسان بنانے کے لیے ان میں سے ہر ایک اپنے اپنے اصولوں کا حامل ہو گا۔
بلاک چین ٹیکنالوجی، اور خاص طور پر اسمارٹ معاہدات، زیادہ محفوظ، خودکار کراؤڈ فنڈنگ کی اجازت دے سکتے ہیں جہاں معاہدوں کی شرطوں کو کمپیوٹر کوڈ میں بیان کیا جاتا ہے۔ 
بلاک چین استعمال کرتے ہوئے کراؤڈ فنڈنگ کے استعمال کی ایک اور صورت میں ابتدائی کوائن کی آفرز (ICOs) اور ابتدائی ایکسچینج کی آفرز (IEOs) شامل ہیں۔ اس طرح کے ٹوکن کی سیلز میں، سرمایہ کاران اس امید پر فنڈز جمع کرتے ہیں کہ نیٹ ورک مستقبل میں کامیاب ہو گا، اور انہیں اپنی سرمایہ کاری پر منافع حاصل گا۔


بلاک چین اور تقسیم کردہ فائل سسٹمز

روایتی مرکزی متبادلات کے مقابلے میں انٹرنیٹ پر فائل اسٹوریج کی تقسیم کے بہت سے فائدے ہیں۔ کلاؤڈ کے اندر محفوظ زیادہ تر ڈیٹا مرکزی سرورز اور سروس فراہم کنندگان پر انحصار کرتا ہے، جن کو حملوں اور ڈیٹا کے نقصان کا زیادہ خطرہ لاحق ہوتا ہے۔ بعض صورتوں میں، صارفین کو مرکزی سرورز سے سینسر شپ کے سبب رسائی سے متعلقہ مسائل کا سامنا بھی کرنا پڑ سکتا ہے۔

صارف کے نقطہ نظر سے، بلاک چین فائل اسٹوریج سولوشنز بالکل دوسرے کلاؤڈ اسٹوریج سولوشنز کی مانند کام کرتے ہیں – آپ فائلیں اپلوڈ، اسٹور، اور ان تک رسائی حاصل کر سکتے ہیں۔ تاہم، پس منظر بالکل ہی مختلف ہوتا ہے۔

جب آپ کسی بلاک چین اسٹوریج پر کسی فائل کو اپلوڈ کرتے ہیں، تو اسے متعدد نوڈز پر تقسیم اور نقل کیا جاتا ہے۔ بعض صورتوں میں، ہر نوڈ آپ کی فائل کا کوئی مختلف حصہ اسٹور کرے گی۔ وہ جزوی ڈیٹا سے متعلق کچھ خاص نہیں کر سکتے، لیکن آپ بعد میں مختلف نوڈز کو ہر حصہ فراہم کرنے کی درخواست کر سکتے ہیں، تاکہ آپ مکمل فائل کو واپس حاصل کرنے کے لیے انہیں یکجا کر سکیں۔

اسٹوریج کی جگہ ان شرکاء سے اخذ ہوتی ہے جو نیٹ ورک کو اپنی اسٹوریج اور بینڈ وڈتھ دیتے ہیں۔ عموماً، ان شرکاء کو وہ وسائل فراہم کرنے کے لیے معاشی طور پر ترغیب دی جاتی ہے، اور اگر وہ اصولوں کی تعمیل نہیں کرتے یا فائلز اسٹور اور پیش کرنے میں ناکام رہتے ہیں تو انہیں معاشی طور پر سزا دی جاتی ہے۔

آپ اس قسم کے نیٹ ورک Bitcoin کی طرح سمجھ سکتے ہیں۔ تاہم، اس صورت میں، نیٹ ورک کا مرکزی ہدف مالیاتی اقدار کی ٹرانسفرز کی معاونت کے بجائے سینسر شپ سے مزاحم، فائل کی غیر مرکزی اسٹوریج فعال کرنا ہوتا ہے۔

دیگر اوپن سورس پروٹوکولز جیسا کہ InterPlanetary File System (IPFS) پہلے ہی اس نئے، مزید مستقل، اور تقسیم شدہ ویب کے لیے راستہ ہموار کر رہے ہیں۔ اگرچہ IPFS ایک پروٹوکول اور پیئر ٹو پیئر نیٹ ورک ہے، لیکن یہ قطعاً ایک بلاک چین نہیں ہے۔ لیکن، یہ سکیورٹی اور اثر پذیری بہتر بنانے کے لیے بلاک چین ٹیکنالوجی کے کچھ اصول لاگو کرتی ہے۔