کرپٹو والیٹ کسے کہا جاتا ہے؟
امواد کا جدول
کرپٹو والیٹس کی تفصیل
کرپٹو کرنسی والیٹس کس طرح سے کام کرتے ہیں؟
کیا مجھے کرپٹو ٹریڈ کرنے کے لیے کرپٹو والیٹ درکار ہے؟
ہاٹ بمقابل کولڈ والیٹس
سافٹ ویئر والیٹس
ویب والیٹس
ڈیسک ٹاپ والیٹس
موبائل والیٹس
ہارڈ ویئر والیٹس
کاغذی والیٹس
بیک اپس کی اہمیت
مجھے کون سا کرپٹو والیٹ استعمال کرنا چاہیئے؟
اختتامی خیالات
کرپٹو والیٹ کسے کہا جاتا ہے؟
ہومآرٹیکلز
کرپٹو والیٹ کسے کہا جاتا ہے؟

کرپٹو والیٹ کسے کہا جاتا ہے؟

نو آموز
شائع کردہ Jun 18, 2019اپڈیٹ کردہ Sep 1, 2022
10m

کرپٹو والیٹس کی تفصیل

مختصراً، کرپٹو والیٹ ایک ایسا ٹول ہوتا ہے جسے آپ ایک بلاک چین نیٹ ورک کے ساتھ تعامل انجام دینے کے لیے استعمال کر سکتے ہیں۔ کرپٹو والیٹ کی کئی اقسام ہیں، جنہیں تین گروپس میں تقسیم کیا جا سکتا ہے: سافٹ ویئر، ہارڈ ویئر، اور کاغذی والیٹس۔ ان کے عملی میکانزمز کی بنیاد پر، انہیں ہاٹ یا کولڈ والیٹس بھی کہا جا سکتا ہے۔

کرپٹو والیٹ کے زیادہ تر فراہم کنندگان ایک ایسے سافٹ ویئر پر مشتمل ہوتے ہیں، جوکہ ہارڈ ویئر والیٹ کی نسبت ان کے استعمال کو زیادہ آسان بناتا ہے۔ تاہم، ہارڈ ویئر والیٹ کو سب سے زیادہ محفوظ متبادل سمجھا جاتا ہے۔ جبکہ دوسری طرف، کاغذی والیٹس، کاغذ پر پرنٹ شدہ "والیٹ" پر مشتمل ہوتے ہیں، تاہم اب ان کے استعمال کو متروک اور ناقابل اعتبار سمجھا جاتا ہے۔


کرپٹو کرنسی والیٹس کس طرح سے کام کرتے ہیں؟

ایک مقبول رائے کے برعکس، کرپٹو والیٹس درحقیقت ڈیجیٹل اثاثہ جات کو محفوظ نہیں کرتے۔ اس کی بجائے، وہ بلاک چین کے ساتھ تعامل انجام دینے کے لیے درکار ٹولز فراہم کرتے ہیں۔ دوسرے الفاظ میں، یہ والیٹس بلاک چین کی ٹرانزیکشنز کے ذریعے کرپٹو کرنسی بھیجنے اور وصول کرنے کے لیے درکار ضروری معلومات پیدا کرتے ہیں۔ دیگر پہلوؤں کے ساتھ ساتھ، اس قسم کی معلومات ایک یا اس سے زائد عوامی اور نجی کلیدوںپر مشتمل ہوتی ہیں۔

اس والیٹ میں ایک ایڈریس بھی شامل ہوتا ہے، جوکہ عوامی اور نجی کلیدوں کی بنیاد پر پیدا کردہ حروف و اعداد پر مشتمل شناخت کار ہوتا ہے۔ یوں کہہ لیں، کہ اس قسم کا ایڈریس، بلاک چین پر موجود ایک خاص "مقام" پر مشتمل ہوتا ہے جہاں کوائنز بھیجے جا سکتے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ آپ فنڈز حاصل کرنے کے لیے دیگر افراد کے ساتھ اپنا ایڈریس شیئر کر سکتے ہیں، تاہم آپ کو چاہیئے کہ کبھی بھی کسی کے سامنے اپنی نجی کلید عیاں نہ کریں۔

یہ نجی کلید اس امر سے قطع نظر آپ کی کرپٹو کرنسیز تک رسائی فراہم کرتی ہے، کہ آپ کون سا والیٹ استعمال کر رہے ہیں۔ لہٰذا اگر آپ کا کمپیوٹر یا اسمارٹ فون سمجھوتے کا شکار ہو جاتا ہے، تو تب بھی آپ کسی اور ڈیوائس کے ذریعے اپنے فنڈز تک رسائی حاصل کر سکتے ہیں – بشرطیکہ آپ کے پاس متعلقہ نجی کلید (یا سیڈ عبارت) موجود ہو۔ یاد رکھیں کہ یہ کوائنز بلاک چین سے یکسر خارج نہیں ہوتے؛ بلکہ صرف ایک ایڈریس سے دوسرے پر ٹرانسفر کر دیے جاتے ہیں۔


کیا مجھے کرپٹو ٹریڈ کرنے کے لیے کرپٹو والیٹ درکار ہے؟

سادہ سا جواب ہے، جی ہاں۔ چاہے آپ ایک باقاعدہ ٹریڈر ہوں یا پھر Bitcoin HODLer، آپ کے پاس کرپٹو محفوظ کرنے اور ٹریڈ کرنے کے لیے ایک والیٹ ایڈریس موجود ہونا چاہیئے۔ آپ اپنے کرپٹو ایکسچینج کی جانب سے فراہم کردہ ہاٹ والیٹ، اپنے فون میں انسٹال شدہ موبائل والیٹ، ایک براؤزر ایکسٹینشن، ڈیسک ٹاپ والیٹ، یا ہارڈ ویئر والیٹ استعمال کر سکتے ہیں۔ آپ کے پاس بہت سے آپشنز موجود ہیں۔ والیٹ کی مختلف اقسام کی چند مثالیں پیش ہیں:

1۔ ہاٹ والیٹ: Binance ایکسچینج۔

2۔ موبائل کرپٹو والیٹس: ٹرسٹ والیٹ، MetaMask۔

3۔ براؤزر ایکسٹینشن کرپٹو والیٹس: MetaMask، MathWallet، Binance چین والیٹ۔

4۔ ڈیسک ٹاپ کرپٹو والیٹس: Electrum، Exodus۔

نوٹ: اگر آپ Binance اسمارٹ چین (BSC) استعمال کر رہے ہیں، تو Binance اسمارٹ چین (BSC) کے لیے بہترین کرپٹو والیٹسچیک کرنا نہ بھولیں۔ 


ہاٹ بمقابل کولڈ والیٹس

جیسا کہ تذکرہ کیا جا چکا ہے، کرپٹو کرنسی والیٹس کو، ان کے عمل کاری کے طریقہ کار کی بنیاد پر، "ہاٹ" یا "کولڈ" والیٹس بھی کہا جا سکتا ہے۔

ایک ہاٹ والیٹ کوئی بھی ایسا والیٹ ہو سکتا ہے جو کسی نہ کسی طریقے سے انٹرنیٹ سے مربوط ہو۔ مثلاً، جب آپ Binance پر اکاؤنٹ بناتے ہیں اور اپنے والیٹس پر فنڈز بھیجتے ہیں، تو دراصل آپ Binance کے ہاٹ والیٹ پر ڈپازٹ کروا رہے ہوتے ہیں۔ ان والیٹس کو سیٹ کرنا کافی آسان ہوتا ہے، اور ان میں موجود فنڈز تک فوری طور پر رسائی حاصل کی جا سکتی ہے، جوکہ انہیں ٹریڈرز اور دیگر باقاعدہ صارفین کے لیے استعمال میں آسان بناتا ہے۔

جبکہ دوسری جانب، کولڈ والیٹس کا انٹرنیٹ سے کوئی تعلق نہیں ہوتا۔ اس کی بجائے، وہ کلیدوں کو آف لائن محفوظ کرنے کے لیے مادی ذرائع کا استعمال کرتے ہیں، جوکہ انہیں آن لائن ہیکنگ کی کوششوں کی مزاحمت کے قابل بناتا ہے۔ لہٰذا، آپ کو کوائنز کو "محفوظ" کرنے کے لیے کولڈ والیٹس زیادہ محفوظ ہوتے ہیں۔ اس طریقہ کار کو کولڈ اسٹوریج بھی کہا جاتا ہے اور یہ خاص طور پر طویل مدتی سرمایہ کاران یا "HODLers" کے لیے موزوں ہوتا ہے۔

صارفین کے فنڈز کی حفاظت کے لیے، Binance اپنے ہاٹ والیٹس میں کوائنز کی محض ایک معمولی سی فیصد ہی محفوظ رکھتی ہے۔ جبکہ باقی کو انٹرنیٹ سے غیر مربوط کرتے ہوئے، کولڈ اسٹوریج میں محفوظ رکھا جاتا ہے۔ یاد رکھیں، Binance DEX ایسے صارفین کے لیے متبادل فراہم کرتا ہے جوکہ اپنے فنڈز کو مرکزی ایکسچینج میں محفوظ رکھنے کو ترجیح نہیں دیتے۔ یہ ٹریڈنگ کا غیر مرکزی پلیٹ فارم ہوتا ہے جوکہ آپ کو اپنی نجی کلیدوں پر مکمل اختیار فراہم کرتا ہے، نیز اس قابل بھی بناتا ہے کہ آپ براہ راست ان کی کولڈ اسٹوریج کی ڈیوائسز (ہارڈ ویئر والیٹس) سے ٹریڈ کر سکیں۔


سافٹ ویئر والیٹس

سافٹ والیٹس کی مختلف اقسام ہیں، جن میں سے ہر ایک منفرد خصوصیات کی حامل ہے۔ ان میں سے زیادہ تر کسی نہ کسی طرح سے انٹرنیٹ سے مربوط ہوتی ہیں (ہاٹ والیٹس)۔ چند عام ترین اور اہم ترین اقسام کی تفصیلات مندرجہ ذیل ہیں: ویب، ڈیسک ٹاپ، اور موبائل والیٹس۔


ویب والیٹس

آپ کچھ بھی ڈاؤن لوڈ یا انسٹال کرنے کی ضرورت پڑے بغیر براؤزر انٹرفیس کے ذریعے بلاک چینز تک رسائی کے لیے ویب والیٹس استعمال کر سکتے ہیں۔ اس میں ایکسچینج والیٹس اور براؤزر پر مشتمل والیٹس کے دیگر فراہم کنندگان بھی شامل ہیں۔ زیادہ تر صورتوں میں، آپ ایک نیا والیٹ تخلیق کر سکتے ہیں اور اس تک رسائی حاصل کرنے کے لیے نجی پاس ورڈ سیٹ کر سکتے ہیں۔ تاہم، سروس کے بعض فراہم کنندگان آپ کی جانب سے نجی کلیدیں ہولڈ میں رکھتے ہیں اور ان کی نظم کاری کرتے ہیں۔ اگرچہ ناتجربہ کار صارفین کے لیے یہ چیز آسان ہو سکتی ہے، تاہم یہ خطرناک بھی ہے۔ 

اگر آپ کے ہولڈ میں اپنی نجی کلیدیں موجود نہیں، تو اس کا مطلب ہے کہ آپ اپنی رقم کو لے کر کسی اور پر اعتبار کر رہے ہیں۔ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے، اب بہت سے ویب والیٹس آپ کو اس قابل بناتے ہیں کہ ان کی کلیدوں کی نظم کاری کر سکیں، آیا پوری طرح سے یا پھر مشترکہ کنٹرول (بذریعہ  ملٹی دستخط) کے ذریعے۔ لہٰذا اپنے لیے موزوں ترین والیٹ کا انتخاب کرنے سے پہلے یہ اہم ہے کہ ہر والیٹ کی تکنیکی حکمت عملی کا جائزہ لے لیا جائے۔
کرپٹو کرنسی ایکسچینجز کا استعمال کرتے ہوئے، آپ کو چاہیئے کہ دستیاب حفاظتی ٹولز کے استعمال پر غور کریں۔ 

یہ  Binance ایکسچینج بہت سی حفاظتی خصوصیات فراہم کرتا ہے، جیسے کہ ڈیوائس مینجمنٹ، ملٹی فیکٹر منظوری، انسداد فشنگ کوڈ، اور رقم نکلوانے کے ایڈریس کی نظم کاری۔


ڈیسک ٹاپ والیٹس

جیسا کہ نام سے ظاہر ہے، ڈیسک ٹاپ والیٹ ایک ایسا سافٹ ویئر ہوتا ہے جسے آپ مقامی طور پر اپنے کمپیوٹر پر ڈاؤن لوڈ کرتے ہیں اور اس کے ساتھ تعامل انجام دیتے ہیں۔ بعض ویب پر مشتمل ورژنز کے برعکس، ڈیسک ٹاپ والیٹس آپ کو اپنی کلیدوں اور فنڈز کے اوپر مکمل اختیار فراہم کرتے ہیں۔ جب آپ ایک نیا ڈیسک ٹاپ والیٹ تخلیق کرتے ہیں، تو "wallet.dat" نامی ایک فائل مقامی طور پر آپ کے کمپیوٹر پر محفوظ کر دی جاتی ہے۔ یہ فائل نجی کلید کی ان معلومات پر مشتمل ہوتی ہے جوکہ آپ کے کرپٹو کرنسی ایڈریس تک رسائی کے لیے استعمال کی جاتی ہیں، لہٰذا آپ کو چاہیئے کہ ایک ذاتی پاس ورڈ کے ذریعے اس کی مرموز کاری کر لیں۔

اگر آپ اپنے ڈیسک ٹاپ والیٹ کی مرموز کاری کرتے ہیں، تو آپ کو ہر بار اپنا سافٹ ویئر چلانے پر اپنا پاس ورڈ فراہم کرنا ہو گا تاکہ یہ wallet.dat فائل کو پڑھ سکے۔ اگر آپ کی یہ فائل کھو جاتی ہے یا آپ اپنا پاس ورڈ بھول جاتے ہیں، تو ممکن ہے کہ آپ اپنے فنڈز تک رسائی سے محروم ہو جائیں۔

لہٰذا، اپنی wallet.dat فائل کا بیک اپ بنانا اور اسے کہیں محفوظ رکھنا ناگزیر ہے۔ بصورت دیگر، آپ متعلقہ نجی کلید یا سیڈ عبارت کو برآمد کر سکتے ہیں۔ ایسا کرنے سے، آپ اس صورت میں دیگر ڈیوائسز پر بھی اپنے فنڈز تک رسائی حاصل کر سکیں گے، اگر آپ کا کمپیوٹر خراب ہو جاتا ہے یا کسی وجہ سے ناقابل رسائی ہو جاتا ہے۔

عموماً، ڈیسک ٹاپ والیٹس کو بہت سے ویب ورژنز سے زیادہ محفوظ تصور کیا جاتا ہے، تاہم کسی کرپٹو کرنسی والیٹ کو سیٹ اپ اور استعمال کرنے سے قبل یہ یقینی بنانا ناگزیر ہے کہ آپ کا کمپیوٹر وائرسز اور مالویئر سے پاک ہو۔


موبائل والیٹس

موبائل والیٹس کا عملی طریقہ کار اپنے ڈیسک ٹاپ کے مماثل سے ملتا جلتا ہی ہوتا ہے، تاہم انہیں خاص طور پر اسمارٹ فون ایپلیکیشنز کی حیثیت سے ڈیزائن کیا جاتا ہے۔ یہ کافی حد تک سہولت فراہم کرتے ہیں جیسا کہ یہ QR کوڈز کے ذریعے آپ کو کرپٹو کرنسیز بھیجنے اور وصول کرنے کے قابل بناتے ہیں۔

اسی لیے، موبائل والیٹس خاص طور پر روزمرہ کی ٹرانزیکشنز اور ادائیگیوں کے لیے موزوں ہیں، جوکہ انہیں حقیقی دنیا میں Bitcoin، BNB، اور دیگر کرپٹو کرنسیز خرچ کرنے کے لیے ایک معقول آپشن بناتا ہے۔ ٹرسٹ والیٹ موبائل کرپٹو والیٹ کی نمایاں مثال ہے۔

تاہم، کمپیوٹرز کی طرح، موبائل ڈیوائسز کو بھی  خطرناک ایپس اور مالویئر انفیکشن کا خطرہ لاحق ہوتا ہے۔ لہٰذا یہ تجویز کی جاتی ہے کہ آپ ایک پاس ورڈ کے ذریعے اپنے موبائل والیٹ کی مرموز کاری کریں، اور اپنی نجی کلیدوں (یا سیڈ عبارت) کا بیک اپ بنا لیں تاکہ اگر آپ کا اسمارٹ فون کھو جائے یا ٹوٹ جائے تو یہ آپ کے پاس محفوظ ہو۔


ہارڈ ویئر والیٹس

ہارڈ ویئر والیٹس وہ مادی، اور الیکٹرانک ڈیوائسز ہوتی ہیں جوکہ عوامی اور نجی کلیدوں کے لیے ایک بے ترتیب نمبر کا تخلیق کار (RNG) پیدا کرتی ہیں۔ اس کے بعد یہ کلیدیں از خود ڈیوائس میں محفوظ کر لی جاتی ہیں، جوکہ انٹرنیٹ سے مربوط نہیں ہوتی۔ اسی لیے، ہارڈ ویئر اسٹوریج ایک قسم کا کولڈ والیٹ قائم کرتی ہے اور اسے محفوظ ترین متبادلات میں سے ایک مانا جاتا ہے۔

اگرچہ یہ والیٹس آن لائن حملوں کے خلاف تحفظ کی اعلیٰ سطحیں فراہم کرتے ہیں، تاہم اس صورت میں یہ خطرناک ثابت ہو سکتے ہیں اگر فرم ویئر کا اطلاق درست انداز میں نہ کیا جائے۔ مزید براں ہاٹ والیٹس کے مقابلے میں ہارڈ ویئر والیٹس کا استعمال، اور فنڈز تک رسائی زیادہ مشکل ہوتی ہے۔

رسائی کی قابلیت میں کمی سے نمٹنے کے لیے، آپ ٹریڈنگ پلیٹ فارم کے ساتھ براہ راست اپنی ڈیوائس کو مربوط کرنے کے لیے Binace DEX استعمال کر سکتے ہیں۔ یہ آپ کے فنڈز تک رسائی حاصل کرنے کا ایک محفوظ طریقہ ہے کیونکہ یہ نجی کلیدیں کبھی بھی آپ کی ڈیوائس سے نہیں نکلتیں۔ ویب والیٹ سروس کے بعض فراہم کنندگان پھی کچھ ایسی ہی سروس کی پیشکش کرتے ہیں، جوکہ ہارڈ ویئر والیٹس کو ان کے براؤزر انٹرفیس کے ساتھ مربوط کرنے کے قابل بناتی ہے۔

اگر آپ ایک طویل مدت کے لیے اپنی کرپٹو ہولڈ میں رکھنے کا ارادہ کر رہے ہیں یا اگر آپ اپنے ہولڈ میں کرپٹو کرنسی کی ایک بڑی تعداد رکھ رہے ہیں تو آپ کو ایک ہارڈ ویئر والیٹ کے استعمال پر غور کرنا چاہیئے۔ فی الوقت، زیادہ تر ہارڈ ویئر والیٹس آپ کو اس قابل بناتے ہیں کہ آپ اپنی ڈیوائس کے تحفظ کے لیے ایک PIN، اور اس کے ساتھ ساتھ ایک بحالی کی عبارت بھی سیٹ اپ کر سکیں – جوکہ آپ کا والیٹ کھو جانے کی صورت میں استعمال کی جا سکتی ہے۔


کاغذی والیٹس

ایک کاغذی والیٹ ایک کاغذ کا ٹکڑا ہوتا ہے جس پر QR کوڈز کی صورت میں کرپٹو ایڈریس اور نجی کلید مادی طور پر پرنٹ کیا گیا ہوتا ہے۔ بعد ازاں کرپٹو کرنسی ٹرانزیکشنز پر عمل درآمد کے لیے ان کوڈز کو اسکین کیا جا سکتا ہے۔

بعض کاغذی والیٹ کی ویب سائٹس آپ کو اس قابل بناتی ہیں کہ آف لائن ہوتے ہوئے نئے ایڈریسز اور کلیدیں تخلیق کرنے کے لیے ان کا کوڈ ڈاؤن لوڈ کر سکیں۔ اسی لیے، یہ والیٹس آن لائن ہونے والے ہیکنگ کے حملوں کے خلاف شدید مزاحمت کا مظاہرہ کرتے ہیں اور کولڈ اسٹوریج کا متبادل سمجھے جا سکتے ہیں۔

تاہم، کئی نقائص کے سبب، کاغذی والیٹس کے استعمال کو خطرناک تصور کیا جاتا ہے اور ان کی حوصلہ افزائی نہیں کی جانی چاہیئے۔ اگر آپ اب بھی انہیں استعمال کرنا چاہتے ہیں، تو خطرات کو سمجھنا نہایت ضروری ہے۔ کاغذی والیٹس میں موجود ایک بڑا نقص یہ ہے کہ یہ جزوی طور پر فنڈز بھیجنے کے لیے موزوں نہیں، بلکہ ایک ہی ساتھ پورا بیلنس بھیجنے کے لیے ٹھیک ہیں۔

مثلاً، فرض کریں کہ آپ نے کاغذی والیٹ تخلیق کیا ہوا اور اسے فنڈ کرنے کے لیے کئی ٹرانزیکشنز بھیجی ہوں، جو کہ کل ملا کر 10 BTC بنی ہوں۔ اگر آپ 2 BTC خرچ کرنے کا فیصلہ کرتے ہیں، تو آپ کو چاہیئے کہ اس سے پہلے تمام 10 کوائنز کو والیٹ کی کسی اور قسم (مثلاً، ڈیسک ٹاپ والیٹ) پر بھیجیں، اور صرف اس کے بعد ہی فنڈز کا کچھ حصہ خرچ کریں (2 BTC)۔ بعد ازاں آپ 8 BTC کو ایک نئے کاغذی والیٹ پر واپس بھیج سکتے ہیں، اگرچہ ایک ہارڈ ویئر یا سافٹ ویئر والیٹ کا انتخاب بہتر ہو گا۔

تکنیکی طور پر، اگر آپ اپنے کاغذی والیٹ کی نجی کلید کو ڈیسک ٹاپ والیٹ پر درآمد کرتے ہیں اور فنڈز میں سے ذرا سا حصہ خرچ کرتے ہیں، تو بقایا کوائنز ایک "چینج ایڈریس" پر بھیج دیے جائیں گے جوکہ خودکار طور پر Bitcoin پروٹوکول کی جانب سے تخلیق کیا جاتا ہے۔ اگر آپ دستی طور پر اپنے چینج ایڈریس کو ایک ایسے ایڈریس پر سیٹ نہیں کرتے جو آپ کے کنٹرول میں ہو، تو آپ اپنے فنڈز کھو سکتے ہیں۔

آج کل کے زیادہ تر سافٹ ویئر والیٹس ہی اس چینج کو آپ کے لیے ہینڈل کریں گے، اور بقایا کوائنز کو ایک ایسے ایڈریس پر بھیج دیں گے جو آپ ہی کے والیٹ کا حصہ ہو گا۔ تاہم یہ بات یاد رکھنا اہم ہے کہ اپنی پہلی ٹرانزیکشن بھیجنے کے بعد کاغذی والیٹ خالی رہ جائے گا – قطع نظر اس کے کہ آپ نے کتنی رقم بھیجی تھی۔ لہٰذا بعد میں دوبارہ سے اس کے استعمال کی توقع مت رکھیں۔


بیک اپس کی اہمیت

اپنے کرپٹو کرنسی والیٹس تک رسائی کھو دینا کافی مہنگا پڑ سکتا ہے۔ لہٰذا باقاعدگی کے ساتھ ان کا بیک اپ بنانا اہم ہے۔ بہت سی صورتوں میں، یہ عمل محض wallet.dat فائلز یا سیڈ عبارت کو بیک اپ کرتے ہوئے انجام دیا جاتا ہے۔ یہ بات ثابت ہے، کہ ایک سیڈ عبارت ایک بنیادی کلید کی طرح کام کرتی ہے جوکہ کسی کرپٹو والیٹ میں موجود تمام کلیدوں اور ایڈریسز کے تخلیق کرتی ہے اور ان تک رسائی فراہم کرتی ہے۔ اس کے علاوہ، اگر آپ نے پاس ورڈ کی مرموز کاری کا انتخاب کیا تھا، تو اپنے پاس ورڈ کا بیک اپ بنانا بھی یاد رکھیں۔


مجھے کون سا کرپٹو والیٹ استعمال کرنا چاہیئے؟

اس بات کا کوئی واضح جواب نہیں کہ آپ کو کون سا کرپٹو والیٹ استعمال کرنا چاہیئے۔ اگر آپ ایک باقاعدہ ٹریڈر ہیں، تو ایک ویب والیٹ کا استعمال آپ کو اس قابل بناتا ہے کہ فوری طور پر اپنے فنڈز تک رسائی حاصل کر سکیں اور سہولت کے ساتھ ٹریڈ کر سکیں۔ اس بات کو مدنظر رکھتے ہوئے کہ آپ دو عوامل پر مشتمل منظوری (2FA) کے ذریعے اپنے اکاؤنٹ کے تحفظ کے لیے اضافی اقدامات لے چکے ہوں گے، آپ کی کرپٹو عموماً محفوظ رہے گی۔ تاہم، اگر آپ کرپٹو کی ایک بڑی تعداد کو HODL کرتے ہیں اور اس دوران اسے بیچنے کا ارادہ نہیں رکھتے، تو اس صورت میں کولڈ والیٹس بہتر متبادلات ہیں کیونکہ یہ انٹرنیٹ سے مربوط نہیں ہوتے، لہٰذا یہ زیادہ محفوظ ہوتے ہیں اور آن لائن ہونے والے فشنگ کے حملوں یا جعلسازیوں کی مزاحمت بھی کرتے ہیں۔


اختتامی خیالات

کرپٹو والیٹس Bitcoin اور دیگر کرپٹو کرنسیز کے استعمال کا لازمی جزو ہیں۔ یہ انفراسٹرکچر کے ان بنیادی حصوں میں سے ایک ہیں جوکہ بلاک چین نیٹ ورکس کے ذریعے فنڈز بھیجنا اور وصول کرنا ممکن بناتے ہیں۔ والیٹ کی ہر قسم کے اپنے فوائد و نقصانات ہوتے ہیں، لہٰذا اپنے فنڈز کو منتقل کرنے سے قبل انہیں سمجھ لینا ناگزیر ہے۔